Sayings of the Messenger

 

123

وَ قَولِ اللهِ تَعَالى: وَيَسْأَلُونَكَ عَنِ الْمَحِيضِ قُلْ هُوَ أَذًى فَاعْتَزِلُوا النِّسَاءَ فِي الْمَحِيضِ وَلا تَقْرَبُوهُنَّ حَتَّى يَطْهُرْنَ فَإِذَا تَطَهَّرْنَ فَأْتُوهُنَّ مِنْ حَيْثُ أَمَرَكُمُ اللَّهُ إِنَّ اللَّهَ يُحِبُّ التَّوَّابِينَ وَيُحِبُّ الْمُتَطَهِّرِينَ. الاية(البقرة: ٢٢٢)

And the Statement of Allah, "And they ask you about menstruation. Say, "It is harm, so keep away from wives during menstruation. And do not approach them until they are pure. And when they have purified themselves, then come to them from where Allah has ordained for you. Indeed, Allah loves those who are constantly repentant and loves those who purify themselves." (V.2:222)

اور اللہ تعالیٰ نے (سورت بقرہ میں) فرمایا اے پیغمبر لوگ تجھ سے حیض کے باب میں پوچھتے ہیں کہہ دے وہ گندگی ہے تو حیض کے دنوں میں عورتوں سے الگ رہو اور جب تک پاک نہ ہو لیں ان کے پاس نہ جاؤ پھر جب ستھرائی کر لیں تو جدھر سے اللہ تعالیٰ نے حکم دیا ہے اس طرف سے آؤ بیشک اللہ توبہ کرنے والوں کو چاہتا ہے اور ستھرائی کرنے والوں کو چاہتا ہے۔

 

Chapter No: 1

باب كَيْفَ كَانَ بَدْءُ الْحَيْضِ ، باب الأَمْرِ بِالنُّفَسَاءِ إِذَا نُفِسْنَ

How the menses started.

باب: حیض آنا کیونکر شروع ہوا ،

وَقَوْلِ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ هَذَا شَىْءٌ كَتَبَهُ اللَّهُ عَلَى بَنَاتِ آدَمَ ‏"‏‏.‏ وَقَالَ بَعْضُهُمْ كَانَ أَوَّلُ مَا أُرْسِلَ الْحَيْضُ عَلَى بَنِي إِسْرَائِيلَ، وَحَدِيثُ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم أَكْثَرُ

And the statement of the Prophet (s.a.w), "This is the thing which Allah has ordained for the daughters of Adam." Some people said that the menses first came for Bani Israel. But what the Prophet (s.a.w) said, is more comprehensive (the truth). Menses (a thing) ordained (by the Allah and instructions) for women when they get their menses.

اور نبی ﷺ کا یہ فرمانا حیض ایک چیز ہے جس کو اللہ تعالٰی نے آدم کی بیٹیوں کی قسمت میں لکھ دیا اور بعضوں نے کہا پہلے حیض بنی اسرائیل (کی عورتوں) پر بھیجا گیا امام بخاری نے کہا اور نبی ﷺ کی حدیث سب عورتوں کو شامل ہے۔

حَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ، قَالَ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ، قَالَ سَمِعْتُ عَبْدَ الرَّحْمَنِ بْنَ الْقَاسِمِ، قَالَ سَمِعْتُ الْقَاسِمَ، يَقُولُ سَمِعْتُ عَائِشَةَ، تَقُولُ خَرَجْنَا لاَ نَرَى إِلاَّ الْحَجَّ، فَلَمَّا كُنَّا بِسَرِفَ حِضْتُ، فَدَخَلَ عَلَىَّ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم وَأَنَا أَبْكِي قَالَ ‏"‏ مَا لَكِ أَنُفِسْتِ ‏"‏‏.‏ قُلْتُ نَعَمْ‏.‏ قَالَ ‏"‏ إِنَّ هَذَا أَمْرٌ كَتَبَهُ اللَّهُ عَلَى بَنَاتِ آدَمَ، فَاقْضِي مَا يَقْضِي الْحَاجُّ، غَيْرَ أَنْ لاَ تَطُوفِي بِالْبَيْتِ ‏"‏‏.‏ قَالَتْ وَضَحَّى رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم عَنْ نِسَائِهِ بِالْبَقَرِ‏

Narrated By Al-Qasim : 'Aisha said, "We set out with the sole intention of performing Hajj and when we reached Sarif, (a place six miles from Mecca) I got my menses. Allah's Apostle came to me while I was weeping. He said 'What is the matter with you? Have you got your menses?' I replied, 'Yes.' He said, 'This is a thing which Allah has ordained for the daughters of Adam. So do what all the pilgrims do with the exception of the Taw-af (Circumambulation) round the Ka'ba." 'Aisha added, "Allah's Apostle sacrificed cows on behalf of his wives."

قاسم سے روایت ہے کہ میں نے حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا سے سنا وہ کہتی تھیں ہم صرف حج ہی کی نیت سےنکلے جب ہم سرف(مقام) پہنچے تو (اتّفاق سے)مجھ کو حیض آ گیا رسول اللہ ﷺ میرے پاس تشریف لا ئے میں رو رہی تھی آپ ﷺ نے فرمایا: کیو ں کیا حال ہے کیا تجھ کو حیض آ گیا، میں نے عرض کیا: جی ہاں آپﷺ نے فرمایا یہ تو وہ امر ہے جو اللہ نے آدم کی بیٹیو ں پر لکھ دیا ہے تم حا جیو ں کے سب کام کرتی رہو، صرف بیت اللہ کا طو اف مت کرنا (جب تک حیض سے پا ک نہ ہو ) حضرت عا ئشہ رضی اللہ عنہا نے کہا اور رسول اللہﷺ نے اپنی بیویوں کی طرف سے ایک گائےقر با نی کی۔

Chapter No: 2

باب غَسْلِ الْحَائِضِ رَأْسَ زَوْجِهَا وَتَرْجِيلِهِ

The washing of the husband's head and the combing of his by a menstruating wife.

باب: حیض والی عورت اپنے خاوند کا سر دھو سکتی ہے اور اس میں کنگھی کر سکتی ہے۔

حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ يُوسُفَ، قَالَ حَدَّثَنَا مَالِكٌ، عَنْ هِشَامِ بْنِ عُرْوَةَ، عَنْ أَبِيهِ، عَنْ عَائِشَةَ، قَالَتْ كُنْتُ أُرَجِّلُ رَأْسَ رَسُولِ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم وَأَنَا حَائِضٌ

Narrated By 'Aisha : While in menses, I used to comb the hair of Allah's Apostle.

حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا سے مروی ہے کہ اُنہوں نے کہا: میں حیض کی حالت میں رسول اللہﷺ کے سر مبارک میں کنگھی کیا کرتی ۔


حَدَّثَنَا إِبْرَاهِيمُ بْنُ مُوسَى، قَالَ أَخْبَرَنَا هِشَامُ بْنُ يُوسُفَ، أَنَّ ابْنَ جُرَيْجٍ، أَخْبَرَهُمْ قَالَ أَخْبَرَنِي هِشَامٌ، عَنْ عُرْوَةَ، أَنَّهُ سُئِلَ أَتَخْدُمُنِي الْحَائِضُ أَوْ تَدْنُو مِنِّي الْمَرْأَةُ وَهْىَ جُنُبٌ فَقَالَ عُرْوَةُ كُلُّ ذَلِكَ عَلَىَّ هَيِّنٌ، وَكُلُّ ذَلِكَ تَخْدُمُنِي، وَلَيْسَ عَلَى أَحَدٍ فِي ذَلِكَ بَأْسٌ، أَخْبَرَتْنِي عَائِشَةُ أَنَّهَا كَانَتْ تُرَجِّلُ ـ تَعْنِي ـ رَأْسَ رَسُولِ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم وَهِيَ حَائِضٌ، وَرَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم حِينَئِذٍ مُجَاوِرٌ فِي الْمَسْجِدِ، يُدْنِي لَهَا رَأْسَهُ وَهْىَ فِي حُجْرَتِهَا، فَتُرَجِّلُهُ وَهْىَ حَائِضٌ

Narrated By 'Urwa : A person asked me, "Can a woman in menses serve me? And can a Junub woman come close to me?" I replied, "All this is easy for me. All of them can serve me, and there is no harm for any other person to do the same. 'Aisha told me that she used to comb the hair of Allah's Apostle while she was in her menses, and he was in Itikaf (in the mosque). He would bring his head near her in her room and she would comb his hair, while she used to be in her menses."

عروہ سے کسی نے پو چھا حائضہ عورت میری خد مت کر سکتی ہےیا جنبی عورت (جس پر غسل واجب ہوا ہو) میرے قر یب آ سکتی ہے عروہ نے کہا: یہ دونوں باتیں مجھ پر آسان ہے اور ان میں سے ہر ایک عورت میری خدمت کرسکتی ہے اور جو کوئی ایسا کر ے تو اس کو کچھ حرج نہیں ہے حضر ت عا ئشہ رضی اللہ عنہا نے مجھ سے بیا ن کیا وہ رسول اللہ ﷺ کے سر میں حیض کی حالت میں کنگھی کیا کر تی تھیں اور آپﷺ اس وقت مسجد میں اعتکا ف میں ہوتے آپ (مسجد ہی میں سے) اپنا سر ان کے نز دیک کردیتے وہ اپنے حجر ے میں رہتیں اور حیض کی حالت میں آپ کے سر میں کنگھی کر دیتیں۔

Chapter No: 3

باب قِرَاءَةِ الرَّجُلِ فِي حَجْرِ امْرَأَتِهِ وَهْىَ حَائِضٌ

To recite the Quran while lying in the lap of one's own menstruating wife.

باب: مرد اپنی عورت کی گود میں جب وہ حیض سے ہو قرآن پڑھ سکتا ہے ،

وَكَانَ أَبُو وَائِلٍ يُرْسِلُ خَادِمَهُ وَهْىَ حَائِضٌ إِلَى أَبِي رَزِينٍ، فَتَأْتِيهِ بِالْمُصْحَفِ فَتُمْسِكُهُ بِعِلاَقَتِهِ

Abu Wail used to send his menstruating maid servant to bring the Quran from Abi Razin by carrying it from the hanger (of its case).

اور ابو وائل (شقیق بن سلمہ) اپنی لونڈی کو جو حیض سے ہوتی ابو رزین (مسعود بن مالک) کے پاس بھیجتے وہ قرآن مجید کو اس کا فیتہ پکڑ کر لے آتی۔

حَدَّثَنَا أَبُو نُعَيْمٍ الْفَضْلُ بْنُ دُكَيْنٍ، سَمِعَ زُهَيْرًا، عَنْ مَنْصُورٍ ابْنِ صَفِيَّةَ، أَنَّ أُمَّهُ، حَدَّثَتْهُ أَنَّ عَائِشَةَ حَدَّثَتْهَا أَنَّ النَّبِيَّ صلى الله عليه وسلم كَانَ يَتَّكِئُ فِي حَجْرِي وَأَنَا حَائِضٌ، ثُمَّ يَقْرَأُ الْقُرْآنَ

Narrated By 'Aisha : The Prophet used to lean on my lap and recite Qur'an while I was in menses.

حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا سے مروی ہے کہ نبیﷺ میری گود پر تکیہ لگا تے اور میں حیض سے ہو تی پھر آپﷺ قرآ ن پڑ ھتے۔

Chapter No: 4

باب مَنْ سَمَّى النِّفَاسَ حَيْضًا

Using the word Nifas for menses.

باب: حیض کو نفاس کہنا۔

حَدَّثَنَا الْمَكِّيُّ بْنُ إِبْرَاهِيمَ، قَالَ حَدَّثَنَا هِشَامٌ، عَنْ يَحْيَى بْنِ أَبِي كَثِيرٍ، عَنْ أَبِي سَلَمَةَ، أَنَّ زَيْنَبَ ابْنَةَ أُمِّ سَلَمَةَ، حَدَّثَتْهُ أَنَّ أُمَّ سَلَمَةَ حَدَّثَتْهَا قَالَتْ، بَيْنَا أَنَا مَعَ النَّبِيِّ، صلى الله عليه وسلم مُضْطَجِعَةً فِي خَمِيصَةٍ إِذْ حِضْتُ، فَانْسَلَلْتُ فَأَخَذْتُ ثِيَابَ حِيضَتِي قَالَ ‏"‏ أَنُفِسْتِ ‏"‏‏.‏ قُلْتُ نَعَمْ‏.‏ فَدَعَانِي فَاضْطَجَعْتُ مَعَهُ فِي الْخَمِيلَةِ

Narrated By Um Salama : While I was laying with the Prophet under a single woolen sheet, I got the menses. I slipped away and put on the clothes for menses. He said, "Have you got "Nifas" (menses)?" I replied, "Yes." He then called me and made me lie with him under the same sheet.

حضرت ام سلمہ رضی اللہ عنہا فرماتی ہیں کہ ایک بار میں نبی ﷺ کے سا تھ ایک چادر میں لیٹی ہوئی تھی اتنے میں مجھ کو حیض آ گیا میں آہستہ سے سرک گئی ، اور اپنے حیض کے کپڑ ے سنبھالے، آپﷺ نے فرمایا: کیا تجھ کو نفا س ہوا میں نے کہا: جی ہاں، پھر آپﷺ نےمجھ کو بلایا تو میں چادر میں آپ کے سا تھ لیٹی رہی۔

Chapter No: 5

باب مُبَاشَرَةِ الْحَائِضِ

Fondling a menstruating wife.

باب: حیض والی عورت سے مباشرت کرنا۔

حَدَّثَنَا قَبِيصَةُ، قَالَ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ، عَنْ مَنْصُورٍ، عَنْ إِبْرَاهِيمَ، عَنِ الأَسْوَدِ، عَنْ عَائِشَةَ، قَالَتْ كُنْتُ أَغْتَسِلُ أَنَا وَالنَّبِيُّ، صلى الله عليه وسلم مِنْ إِنَاءٍ وَاحِدٍ، كِلاَنَا جُنُبٌ

Narrated By 'Aisha : The Prophet and I used to take a bath from a single pot while we were Junub.

حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا سے مروی ہے کہ میں اور نبی ﷺ (دو نو ں مل کر )ایک برتن سےغسل کیا کرتے اور ہم دو نو ں جنابت سے ہوتے۔


وَكَانَ يَأْمُرُنِي فَأَتَّزِرُ، فَيُبَاشِرُنِي وَأَنَا حَائِضٌ‏.

During the menses, he used to order me to put on an Izar (dress worn below the waist) and used to fondle me.

اور حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا فرماتی ہیں کہ میں حیض سے ہوتی اور آپﷺ حکم دیتے میں ازار باندھ لیتی پھر آپ مجھ سےمبا شرت کرتے۔


وَكَانَ يُخْرِجُ رَأْسَهُ إِلَىَّ وَهُوَ مُعْتَكِفٌ، فَأَغْسِلُهُ وَأَنَا حَائِضٌ‏.

While in Itikaf, he used to bring his head near me and I would wash it while I used to be in my periods (menses).

(حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا فرماتی ہیں) اور آپﷺ اعتکاف کی حا لت میں اپنا سر میری طر ف نکا ل دیتے میں اسکو دھو دیتی اس حال میں کہ میں حیض سے ہوتی۔


حَدَّثَنَا إِسْمَاعِيلُ بْنُ خَلِيلٍ، قَالَ أَخْبَرَنَا عَلِيُّ بْنُ مُسْهِرٍ، قَالَ أَخْبَرَنَا أَبُو إِسْحَاقَ ـ هُوَ الشَّيْبَانِيُّ ـ عَنْ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ الأَسْوَدِ، عَنْ أَبِيهِ، عَنْ عَائِشَةَ، قَالَتْ كَانَتْ إِحْدَانَا إِذَا كَانَتْ حَائِضًا، فَأَرَادَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم أَنْ يُبَاشِرَهَا، أَمَرَهَا أَنْ تَتَّزِرَ فِي فَوْرِ حَيْضَتِهَا ثُمَّ يُبَاشِرُهَا‏.‏ قَالَتْ وَأَيُّكُمْ يَمْلِكُ إِرْبَهُ كَمَا كَانَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم يَمْلِكُ إِرْبَهُ‏.‏ تَابَعَهُ خَالِدٌ وَجَرِيرٌ عَنِ الشَّيْبَانِيِّ

Narrated By 'Abdur-Rahman bin Al-Aswad : (On the authority of his father) 'Aisha said: "Whenever Allah's Apostle wanted to fondle anyone of us during her periods (menses), he used to order her to put on an Izar and start fondling her." 'Aisha added, "None of you could control his sexual desires as the Prophet could."

حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا سے مروی ہے کہ انہو ں نےکہا ہم میں جب کسی عورت کو حیض آتا رسول اللہﷺ اس سے مبا شرت(بدن لگانا)چاہتے تو اس کو ازار باندھنے کا حکم دیتے اس وقت حیض زور پر ہوتا پھر اس سے مباشرت کرتے حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا نے کہا: تم میں کون ایسا ہے جو اپنی شہوت پر ایسا اختیار رکھتا ہے جیسے نبیﷺ رکھتے تھے علی بن مسہر کے ساتھ اس حدیث کو خالد بن عبداللہ اور جریر بن عبد الحمید نے بھی شیبا نی سے روایت کیا۔


حَدَّثَنَا أَبُو النُّعْمَانِ، قَالَ حَدَّثَنَا عَبْدُ الْوَاحِدِ، قَالَ حَدَّثَنَا الشَّيْبَانِيُّ، قَالَ حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ شَدَّادٍ، قَالَ سَمِعْتُ مَيْمُونَةَ، كَانَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم إِذَا أَرَادَ أَنْ يُبَاشِرَ امْرَأَةً مِنْ نِسَائِهِ أَمَرَهَا فَاتَّزَرَتْ وَهْىَ حَائِضٌ‏.‏ وَرَوَاهُ سُفْيَانُ عَنِ الشَّيْبَانِيِّ

Narrated By Maimuna : When ever Allah's Apostle wanted to fondle any of his wives during the periods (menses), he used to ask her to wear an Izar.

عبد اللہ بن شداد سے مروی ہے وہ فرماتے ہیں کہ میں نے حضرت میمونہ رضی اللہ عنہا سے سنا کہ رسول اللہ ﷺ جب اپنی بیویوں میں سے کسی بیوی سےحیض کی حالت میں مبا شرت کرنا چا ہتے تو وہ اس کو حکم دیتے وہ ازار باندھ لیتی اور اس حدیث کو سفیا ن ثوری نے بھی شیبانی سے روایت کیا۔

Chapter No: 6

باب تَرْكِ الْحَائِضِ الصَّوْمَ

A menstruating woman should leave observing Saum (fasting).

باب: حیض والی عورت روزہ نہ رکھے۔

حَدَّثَنَا سَعِيدُ بْنُ أَبِي مَرْيَمَ، قَالَ أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ جَعْفَرٍ، قَالَ أَخْبَرَنِي زَيْدٌ ـ هُوَ ابْنُ أَسْلَمَ ـ عَنْ عِيَاضِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ، عَنْ أَبِي سَعِيدٍ الْخُدْرِيِّ،قَالَ خَرَجَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم فِي أَضْحًى ـ أَوْ فِطْرٍ ـ إِلَى الْمُصَلَّى، فَمَرَّ عَلَى النِّسَاءِ فَقَالَ ‏"‏ يَا مَعْشَرَ النِّسَاءِ تَصَدَّقْنَ، فَإِنِّي أُرِيتُكُنَّ أَكْثَرَ أَهْلِ النَّارِ ‏"‏‏.‏ فَقُلْنَ وَبِمَ يَا رَسُولَ اللَّهِ قَالَ ‏"‏ تُكْثِرْنَ اللَّعْنَ، وَتَكْفُرْنَ الْعَشِيرَ، مَا رَأَيْتُ مِنْ نَاقِصَاتِ عَقْلٍ وَدِينٍ أَذْهَبَ لِلُبِّ الرَّجُلِ الْحَازِمِ مِنْ إِحْدَاكُنَّ ‏"‏‏.‏ قُلْنَ وَمَا نُقْصَانُ دِينِنَا وَعَقْلِنَا يَا رَسُولَ اللَّهِ قَالَ ‏"‏ أَلَيْسَ شَهَادَةُ الْمَرْأَةِ مِثْلَ نِصْفِ شَهَادَةِ الرَّجُلِ ‏"‏‏.‏ قُلْنَ بَلَى‏.‏ قَالَ ‏"‏ فَذَلِكَ مِنْ نُقْصَانِ عَقْلِهَا، أَلَيْسَ إِذَا حَاضَتْ لَمْ تُصَلِّ وَلَمْ تَصُمْ ‏"‏‏.‏ قُلْنَ بَلَى‏.‏ قَالَ ‏"‏ فَذَلِكَ مِنْ نُقْصَانِ دِينِهَا ‏"

Narrated By Abu Said Al-Khudri : Once Allah's Apostle went out to the Musalla (to offer the prayer) o 'Id-al-Adha or Al-Fitr prayer. Then he passed by the women and said, "O women! Give alms, as I have seen that the majority of the dwellers of Hell-fire were you (women)." They asked, "Why is it so, O Allah's Apostle ?" He replied, "You curse frequently and are ungrateful to your husbands. I have not seen anyone more deficient in intelligence and religion than you. A cautious sensible man could be led astray by some of you." The women asked, "O Allah's Apostle! What is deficient in our intelligence and religion?" He said, "Is not the evidence of two women equal to the witness of one man?" They replied in the affirmative. He said, "This is the deficiency in her intelligence. Isn't it true that a woman can neither pray nor fast during her menses?" The women replied in the affirmative. He said, "This is the deficiency in her religion."

حضرت ابو سعید خدری رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺ عید الاضحیٰ یا عید الفطر میں عیدگاہ جانے کےلیے نکلے (راستے میں) عورتوں سے گزرے تو فرمایا: اے عورتوں کی جماعت! تم صدقہ خیرات کرو ، کیونکہ مجھ کو دکھایا گیا دوزخ میں عورتیں( مردو ں سے) زیا دہ تھیں، عورتوں نے کہا: یا رسو ل اللہﷺ! اس کی وجہ ۔آپﷺ نے فرمایا: تم لعنت بہت کیا کرتی ہو اور خاوند کی نا شکری کرتی ہو، میں نے ناقص عقل و دین اورعقل مندشخص کو کھو نے والیاں تم سے بڑ ھ کر کسی کو نہیں دیکھا انہوں نے کہا: یا رسول اللہﷺ ہما رے دین اور عقل میں کیا نقصا ن ہے آپﷺ نے فرمایا: دیکھو عورت کی گواہی آ دھے مرد کی گوا ہی کے برابر ہے یا نہیں، انہوں نے کہا: بیشک ہے،آپﷺ نے فرمایا: بس یہی اس کے عقل کا نقصان ہے۔دیکھو! عورت کو جب حیض آتا ہے تو وہ نما ز نہیں پڑھتی اور روزہ نہیں رکھتی انہو ں نے کہا: ہاں یہ تو ہے، آپﷺ نے فرمایا: بس یہی اس کے دین کا نقصان ہے ۔

Chapter No: 7

باب تَقْضِي الْحَائِضُ الْمَنَاسِكَ كُلَّهَا إِلاَّ الطَّوَافَ بِالْبَيْتِ

A menstruating woman should perform all the ceremonies of Hajj except the Tawaf around the Kabah.

باب: حیض والی عورت حج کے سب کام کرتی رہے صرف خانہ کعبہ کا طواف نہ کرے ،

وَقَالَ إِبْرَاهِيمُ لاَ بَأْسَ أَنْ تَقْرَأَ الآيَةَ‏.‏ وَلَمْ يَرَ ابْنُ عَبَّاسٍ بِالْقِرَاءَةِ لِلْجُنُبِ بَأْسًا‏.‏ وَكَانَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم يَذْكُرُ اللَّهَ عَلَى كُلِّ أَحْيَانِهِ‏.‏ وَقَالَتْ أُمُّ عَطِيَّةَ كُنَّا نُؤْمَرُ أَنْ يَخْرُجَ الْحُيَّضُ، فَيُكَبِّرْنَ بِتَكْبِيرِهِمْ وَيَدْعُونَ‏.‏ وَقَالَ ابْنُ عَبَّاسٍ أَخْبَرَنِي أَبُو سُفْيَانَ أَنَّ هِرَقْلَ دَعَا بِكِتَابِ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم فَقَرَأَ فَإِذَا فِيهِ ‏"‏ بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيمِ وَ‏{‏يَا أَهْلَ الْكِتَابِ تَعَالَوْا إِلَى كَلِمَةٍ‏}‏ ‏"‏‏.‏ الآيَةَ‏.‏ وَقَالَ عَطَاءٌ عَنْ جَابِرٍ حَاضَتْ عَائِشَةُ فَنَسَكَتِ الْمَنَاسِكَ غَيْرَ الطَّوَافِ بِالْبَيْتِ، وَلاَ تُصَلِّي‏.‏ وَقَالَ الْحَكَمُ إِنِّي لأَذْبَحُ وَأَنَا جُنُبٌ‏.‏ وَقَالَ اللَّهُ ‏{‏وَلاَ تَأْكُلُوا مِمَّا لَمْ يُذْكَرِ اسْمُ اللَّهِ عَلَيْهِ‏}‏‏

Ibrahim said, "There is no harm in reciting a Verse of the Quran by a menstruating woman." Ibn Abbas considers that there was no harm in the recitation of the Quran by a Junub. Prophet (s.a.w) used to remember (glorify) Allah at all times. Umm Attia said that they were ordered to let the menstruating women come out (on Eid) to say Takbirat and to invoke Allah. Ibn Abbas narrated on the authority of Abu Sufyan, Heraclius asked for the letter of the Prophet (s.a.w) and read it. It began, "In the Name of Allah, the Most Gracious, the Most Merciful. O people of the Scripture, come to a word that is common between us and you that we worship none but Allah ..." (V.3:64). And Ata quoted from Jabir, "Aisha got her menses and she performed all the ceremonies of Hajj except the Tawaf and she did not offer Salat." Al-Hakim said, "I slaughter the animal even if I were a Junub." And Allah said, "Eat not of that on which Allah's Name has not been pronounced." (V.6:121)

ابراہیم نخعی نے کہا حیض والی عورت اگر ایک آیت پڑھے تو کوئی قباحت نہیں اور ابن عباسؓ نے کہا جنب اگر قرآن پڑھے تو کوئی برائی نہیں اور نبی ﷺ اللہ کی یاد اپنے سب وقتوں میں کیا کرتے اور ام عطیہ نے کہا ہم کو (آپﷺ کے زمانے میں) حائضہ عورتوں کوعید گاہ میں لیجا نے کا حکم دیا جاتا کہ لوگوں کے ساتھ تکبیر اور دعا میں شریک ہوں اور ابن عباسؓ نے کہا مجھ سے ابو سفیان نے بیان کیا کہ ہر قل (روم کے بادشاہ) نے نبیﷺ کے خط کو منگوایا اور اس کو پڑھا اس میں یہ لکھا تھا شروع اللہ کے نام سے جو بڑا مہربان ہے رحم والا اور (یہ آیت لکھی تھی) اے کتاب والو ایسی بات پر آجاؤ جو ہم میں تم میں برابر مانی جاتی ہے کہ اللہ کے سوا ہم کسی کو نہ پوجیں اور اس کے ساتھ کسی چیز کو شریک نہ کریں اخیر آیت تک اور عطاء نے جابرؓ سے روایت کی کہ حضرت عائشہؓ کو حیض آیا انہوں نے حج کے سب کام کئے فقط خانہ کعبہ کاطواف نہیں کیا اور نماز نہیں پڑھتی تھیں اور حکم بن عتیبہ نے کہا میں جنابت کی حالت میں جانور ذبح کرتا ہوں حالانکہ اللہ عزوجل نے فرمایا اس جانور میں سےمت کھاؤ جس پر (کاٹتے وقت) اللہ کانام نہ لیا گیا ہو۔

حَدَّثَنَا أَبُو نُعَيْمٍ، قَالَ حَدَّثَنَا عَبْدُ الْعَزِيزِ بْنُ أَبِي سَلَمَةَ، عَنْ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ الْقَاسِمِ، عَنِ الْقَاسِمِ بْنِ مُحَمَّدٍ، عَنْ عَائِشَةَ، قَالَتْ خَرَجْنَا مَعَ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم لاَ نَذْكُرُ إِلاَّ الْحَجَّ، فَلَمَّا جِئْنَا سَرِفَ طَمِثْتُ، فَدَخَلَ عَلَىَّ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم وَأَنَا أَبْكِي فَقَالَ ‏{‏مَا يُبْكِيكِ‏}‏‏.‏ قُلْتُ لَوَدِدْتُ وَاللَّهِ أَنِّي لَمْ أَحُجَّ الْعَامَ‏.‏ قَالَ ‏{‏لَعَلَّكِ نُفِسْتِ‏}‏‏.‏ قُلْتُ نَعَمْ‏.‏ قَالَ ‏"‏ فَإِنَّ ذَلِكَ شَىْءٌ كَتَبَهُ اللَّهُ عَلَى بَنَاتِ آدَمَ، فَافْعَلِي مَا يَفْعَلُ الْحَاجُّ، غَيْرَ أَنْ لاَ تَطُوفِي بِالْبَيْتِ حَتَّى تَطْهُرِي ‏"

Narrated By 'Aisha : We set out with the Prophet for Hajj and when we reached Sarif I got my menses. When the Prophet came to me, I was weeping. He asked, "Why are you weeping?" I said, "I wish if I had not performed Hajj this year." He asked, "May be that you got your menses?" I replied, "Yes." He then said, "This is the thing which Allah has ordained for all the daughters of Adam. So do what all the pilgrims do except that you do not perform the Tawaf round the Ka'ba till you are clean."

حضرت عائشہ رضی اللہ عنہ سے مروی ہے وہ فرماتی ہیں ہم نبیﷺکے ساتھ نکلے (مدینہ سے) صرف حج کی غرض سے، جب سرف(مقام) میں پہنچے تو مجھ کو حیض آگیا نبی ﷺ میرے پاس آئے میں رو رہی تھی آپ نے فرمایا: کیوں روتی ہے میں نے کہا: مجھے یہ آرزو ہے کاش میں اس سال حج کےلیے نہ آئی ہوتی آپﷺ نے فرمایا: شاید تجھ کونفا س آگیا میں نے کہا: جی ہاں، آپﷺ نے فرمایا: پھر یہ تو ایک ایسی چیز ہے جس کو اللہ تعالیٰ نے آدم کی بیٹیوں کیلئے لکھ دیا ہے اب تم حاجیو ں کے سب کام کرتی رہو صرف خانہ کعبہ کا طواف نہ کرنا جب تک پاک نہ ہو جاؤ۔

Chapter No: 8

باب الاِسْتِحَاضَةِ

Al-Istihada (irregular bleeding from the womb in between a woman's periods).

باب: استحاضے کا بیان۔

حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ يُوسُفَ، قَالَ أَخْبَرَنَا مَالِكٌ، عَنْ هِشَامِ بْنِ عُرْوَةَ، عَنْ أَبِيهِ، عَنْ عَائِشَةَ، أَنَّهَا قَالَتْ قَالَتْ فَاطِمَةُ بِنْتُ أَبِي حُبَيْشٍ لِرَسُولِ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم يَا رَسُولَ اللَّهِ إِنِّي لاَ أَطْهُرُ، أَفَأَدَعُ الصَّلاَةَ فَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ إِنَّمَا ذَلِكِ عِرْقٌ وَلَيْسَ بِالْحَيْضَةِ، فَإِذَا أَقْبَلَتِ الْحَيْضَةُ فَاتْرُكِي الصَّلاَةَ، فَإِذَا ذَهَبَ قَدْرُهَا فَاغْسِلِي عَنْكِ الدَّمَ وَصَلِّي ‏"

Narrated By 'Aisha : Fatima bint Abi Hubaish said to Allah's Apostle, "O Allah's Apostle! I do not become clean (from bleeding). Shall I give up my prayers?" Allah's Apostle replied: "No, because it is from a blood vessel and not the menses. So when the real menses begins give up your prayers and when it (the period) has finished wash the blood off your body (take a bath) and offer your prayers."

حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا سے مروی ہے وہ فرماتی ہیں کہ ابو حبیش کی بیٹی فاطمہ رضی اللہ عنہا نے رسول اللہﷺ سے عرض کیا یا رسول اللہﷺ! میں پاک نہیں ہوتی (خون نہیں رکتا) کیا میں نماز چھوڑ دوں؟ رسول اللہﷺ نے فرمایا: یہ ایک رگ کا خون ہےحیض نہیں ہے تو جب حیض کا خو ن آئے تو نماز چھوڑ دے پھر جب (انداز سے ) وہ گزر جائے تو اپنے بدن سے خون دھو ڈالو اور نماز پڑھ لو۔

Chapter No: 9

باب غَسْلِ دَمِ الْمَحِيضِ

Washing out the menstrual blood.

باب: حیض کا خون دھونا۔

حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ يُوسُفَ، قَالَ أَخْبَرَنَا مَالِكٌ، عَنْ هِشَامٍ، عَنْ فَاطِمَةَ بِنْتِ الْمُنْذِرِ، عَنْ أَسْمَاءَ بِنْتِ أَبِي بَكْرٍ، أَنَّهَا قَالَتْ سَأَلَتِ امْرَأَةٌ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم فَقَالَتْ يَا رَسُولَ اللَّهِ، أَرَأَيْتَ إِحْدَانَا إِذَا أَصَابَ ثَوْبَهَا الدَّمُ مِنَ الْحَيْضَةِ، كَيْفَ تَصْنَعُ فَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ إِذَا أَصَابَ ثَوْبَ إِحْدَاكُنَّ الدَّمُ مِنَ الْحَيْضَةِ، فَلْتَقْرُصْهُ ثُمَّ لِتَنْضَحْهُ بِمَاءٍ، ثُمَّ لِتُصَلِّي فِيهِ ‏"

Narrated By Asma' bint Abi Bakr : A woman asked Allah's Apostle, "O Allah's Apostle! What should we do, if the blood of menses falls on our clothes?" Allah's Apostle replied, "If the blood of menses falls on the garment of anyone of you, she must take hold of the blood spot, rub it, and wash it with water and then pray in (with it)."

حضرت اسماء بنت ابی بکر رضی اللہ عنہا سے مروی ہے وہ فرماتی ہیں کہ ایک عورت نے رسول اللہﷺ سے پوچھا تو عر ض کیا یا رسول اللہ ﷺ بتلائیے اگر ہم میں سے کسی کے کپڑے پر حیض کا خو ن لگ جائے تو وہ کیا کرے ۔آپﷺ نے فرمایا: تم میں سے کسی کےکپڑ ے کو حیض کا خون لگ جائے تو اس کو کھرچ ڈالے پھر پانی سےدھو ڈالے پھر اس میں نماز پڑھے۔


حَدَّثَنَا أَصْبَغُ، قَالَ أَخْبَرَنِي ابْنُ وَهْبٍ، قَالَ أَخْبَرَنِي عَمْرُو بْنُ الْحَارِثِ، عَنْ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ الْقَاسِمِ، حَدَّثَهُ عَنْ أَبِيهِ، عَنْ عَائِشَةَ، قَالَتْ كَانَتْ إِحْدَانَا تَحِيضُ، ثُمَّ تَقْتَرِصُ الدَّمَ مِنْ ثَوْبِهَا عِنْدَ طُهْرِهَا فَتَغْسِلُهُ، وَتَنْضَحُ عَلَى سَائِرِهِ، ثُمَّ تُصَلِّي فِيهِ

Narrated By 'Aisha : Whenever anyone of us got her menses, she, on becoming clean, used to take hold of the blood spot and rub the blood off her garment, and pour water over it and wash that portion thoroughly and sprinkle water over the rest of the garment. After that she would pray in (with) it.

حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا سے مروی ہے وہ فرماتی ہیں کہ ہم میں سے کسی کو حیض آتا پھر جب وہ پاک ہوتی تو خون اپنے کپڑے پر سے کھرچ ڈالتی پھر اس کو دھوتی اور سارے کپڑ ے پر پانی چھڑک دیتی پھر اس میں نماز پڑھتی۔

Chapter No: 10

باب الاِعْتِكَافِ لِلْمُسْتَحَاضَةِ

The Itikaf of a woman who is bleeding in between her periods.

باب: مستحا ضہ اعتکاف کر سکتی ہے۔

حَدَّثَنَا إِسْحَاقُ، قَالَ حَدَّثَنَا خَالِدُ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ، عَنْ خَالِدٍ، عَنْ عِكْرِمَةَ، عَنْ عَائِشَةَ، أَنَّ النَّبِيَّ صلى الله عليه وسلم اعْتَكَفَ مَعَهُ بَعْضُ نِسَائِهِ وَهْىَ مُسْتَحَاضَةٌ تَرَى الدَّمَ، فَرُبَّمَا وَضَعَتِ الطَّسْتَ تَحْتَهَا مِنَ الدَّمِ‏.‏ وَزَعَمَ أَنَّ عَائِشَةَ رَأَتْ مَاءَ الْعُصْفُرِ فَقَالَتْ كَأَنَّ هَذَا شَىْءٌ كَانَتْ فُلاَنَةُ تَجِدُهُ

Narrated By 'Aisha : Once one of the wives of the Prophet did Itikaf along with him and she was getting bleeding in between her periods. She used to see the blood (from her private parts) and she would perhaps put a dish under her for the blood. (The sub-narrator 'Ikrima added, 'Aisha once saw the liquid of safflower and said, "It looks like what so and so used to have.")

حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا سے روایت ہے کہ نبیﷺکے ساتھ آپ کی ایک بیوی (حضرت سودہ یا ام حبیبہ رضی اللہ عنہما ) نے اعتکاف کیا ان کو استحاضے کی بیماری تھی وہ اکثر خون دیکھتی رہتیں کبھی خون کی وجہ سے اپنے تلے طشت رکھ لیتیں۔عکر مہ نے کہا (ایک بار) حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا نےکسم(ایک بوٹی کا نام) کا پانی دیکھا تو کہنے لگیں یہ تو گویا وہی ہےجو فلانی بی بی (استحاضے کی حالت میں) دیکھتی۔


حَدَّثَنَا قُتَيْبَةُ، قَالَ حَدَّثَنَا يَزِيدُ بْنُ زُرَيْعٍ، عَنْ خَالِدٍ، عَنْ عِكْرِمَةَ،عَنْ عَائِشَةَ، قَالَتِ اعْتَكَفَتْ مَعَ رَسُولِ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم امْرَأَةٌ مِنْ أَزْوَاجِهِ، فَكَانَتْ تَرَى الدَّمَ وَالصُّفْرَةَ، وَالطَّسْتُ تَحْتَهَا وَهْىَ تُصَلِّي

Narrated By 'Aisha : "One of the wives of Allah's Apostle joined him in Itikaf and she noticed blood and yellowish discharge (from her private parts) and put a dish under her when she prayed."

حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا سے مروی ہے وہ فرماتی ہیں کہ رسول اللہ ﷺ کے ساتھ آپکی ازواج میں سےایک نے اعتکاف کیا وہ (سرخ ) خون اور زردی دیکھا کرتیں اور طشت ان کے نیچے ہوتا وہ نماز پڑھتی رہتیں۔


حَدَّثَنَا مُسَدَّدٌ، قَالَ حَدَّثَنَا مُعْتَمِرٌ، عَنْ خَالِدٍ، عَنْ عِكْرِمَةَ، عَنْ عَائِشَةَ، أَنَّ بَعْضَ، أُمَّهَاتِ الْمُؤْمِنِينَ اعْتَكَفَتْ وَهْىَ مُسْتَحَاضَةٌ

Narrated By 'Aisha : One of the mothers of the faithful believers (i.e. the wives of the Prophet) did Itikaf while she was having bleeding in between her periods.

حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا سے مروی ہے کہ آپ ﷺ کی بیویوں میں سے ایک بیوی نے استحا ضے کی حا لت میں اعتکا ف کیا۔

123