Sayings of the Messenger

 

123Last ›

Chapter No: 1

باب وُجُوبِ الْحَجِّ وَفَضْلِهِ قَوْلِ اللَّهِ تَعَالَى

It is obligatory to perform Hajj (once in a lifetime) and its superiority and the Statement of Allah

باب : حج کی فر ضیت اور اس کی فضیلت

‏{‏وَلِلَّهِ عَلَى النَّاسِ حَجُّ الْبَيْتِ مَنِ اسْتَطَاعَ إِلَيْهِ سَبِيلاً وَمَنْ كَفَرَ فَإِنَّ اللَّهَ غَنِيٌّ عَنِ الْعَالَمِينَ‏}‏

"Hajj to the House (Kabah) is a duty that mankind owes to Allah, those who can afford the expenses. And whoever disbelieves (i.e., denies Hajj) then he is a disbeliever in Allah]. Then Allah stands not in need of any of the 'Alamin (mankin, jinn, and all that exists)." (V.3:97)

ا للہ تعا لیٰ نے ( سورت آ ل عمران میں) فر ما یا لو گو ں پر فر ض ہے اللہ کے لئے خا نہ کعبہ کا حج کر یں جس کو و ہا ں تک راہ مل سکے اور جو نہ ما نے ( اور با و جو د قدرت کے حج نہ کر ئے) تو اللہ تعا لیٰ سا رے جہا ن سے بے نیاز ہے۔

حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ يُوسُفَ، أَخْبَرَنَا مَالِكٌ، عَنِ ابْنِ شِهَابٍ، عَنْ سُلَيْمَانَ بْنِ يَسَارٍ، عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عَبَّاسٍ ـ رضى الله عنهما ـ قَالَ كَانَ الْفَضْلُ رَدِيفَ رَسُولِ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم فَجَاءَتِ امْرَأَةٌ مِنْ خَثْعَمَ، فَجَعَلَ الْفَضْلُ يَنْظُرُ إِلَيْهَا وَتَنْظُرُ إِلَيْهِ، وَجَعَلَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم يَصْرِفُ وَجْهَ الْفَضْلِ إِلَى الشِّقِّ الآخَرِ فَقَالَتْ يَا رَسُولَ اللَّهِ إِنَّ فَرِيضَةَ اللَّهِ عَلَى عِبَادِهِ فِي الْحَجِّ أَدْرَكَتْ أَبِي شَيْخًا كَبِيرًا، لاَ يَثْبُتُ عَلَى الرَّاحِلَةِ، أَفَأَحُجُّ عَنْهُ قَالَ ‏"‏ نَعَمْ ‏"‏‏.‏ وَذَلِكَ فِي حَجَّةِ الْوَدَاعِ‏

Narrated By 'Abdullah bin Abbas : Al-Fadl (his brother) was riding behind Allah's Apostle and a woman from the tribe of Khath'am came and Al-Fadl started looking at her and she started looking at him. The Prophet turned Al-Fadl's face to the other side. The woman said, "O Allah's Apostle! The obligation of Hajj enjoined by Allah on His devotees has become due on my father and he is old and weak, and he cannot sit firm on the Mount; may I perform Hajj on his behalf?" The Prophet replied, "Yes, you may." That happened during the Hajj-al-Wida (of the Prophet).

حضرت عبد اللہ بن عباس رضی اللہ عنہ سے روایت ہے انہوں نے کہا: حضرت فضل بن عباس (حجۃ الوداع میں) رسول اللہﷺ کے ساتھ اونٹ پر پیچھے سوار تھے اتنےمیں خثعم قبیلے کی ایک (خوبصورت) عورت آئی اور حضرت فضل رضی اللہ عنہ اس کی طرف دیکھنے لگے اور وہ عورت حضرت فضل رضی اللہ عنہ کو (جو گورے چٹے خوبصورت تھے ) دیکھنے لگی نبی ﷺ حضرت فضل رضی اللہ عنہ کا منہ (بار بار ) دوسری طرف پھیرنے لگے اس عورت نے کہا: یا رسول اللہﷺ! اللہ کا فریضۂ حج میری والد کےلیے ادا کرنا ضروری ہوگیا ہے،لیکن وہ بہت بوڑھے ہوچکے ہیں اور انٹنی پر بیٹھ نہیں سکتے، کیا میں ان کی طرف سے حج کرسکتی ہوں؟ آپﷺ نے فرمایا: ہاں۔ یہ حجۃ الوداع کا واقعہ ہے۔

Chapter No: 2

باب قَوْلِ اللَّهِ تَعَالَى

The Statement of Allah:

با ب : اللہ تعا لیٰ کا ( سورت حج میں)یہ فر ما نا لو گ پید ل چل کر تیر ے پا س آئیں اور دُبلے او نٹو ں پر دور دراز ر ستو ں سے اس لئے کہ د ین د نیا کے فا ئد ے حاصل کر یں۔

‏{‏يَأْتُوكَ رِجَالاً وَعَلَى كُلِّ ضَامِرٍ يَأْتِينَ مِنْ كُلِّ فَجٍّ عَمِيقٍ * لِيَشْهَدُوا مَنَافِعَ لَهُمْ‏}‏‏.‏ ‏{‏فِجَاجًا‏}‏ الطُّرُقُ الْوَاسِعَةُ

"And proclaim to mankind the Hajj. They will come to you on foot and on every lean camel, they will come from every deep and distant (wide) mountain highway. That they may witness things that are of benefit to them …" (V.22:27-28) And the meaning of the word Fijaj (V.71:20) is a wide way.

اما م بخا ریؒ نے کہا سورت نو ح میں جو فجا جاً کا لفظ ہے اس کے معٰنی کھلے اور کشا دہ ر ستے۔

حَدَّثَنَا أَحْمَدُ بْنُ عِيسَى، حَدَّثَنَا ابْنُ وَهْبٍ، عَنْ يُونُسَ، عَنِ ابْنِ شِهَابٍ، أَنَّ سَالِمَ بْنَ عَبْدِ اللَّهِ، أَخْبَرَهُ أَنَّ ابْنَ عُمَرَ ـ رضى الله عنهما ـ قَالَ رَأَيْتُ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم يَرْكَبُ رَاحِلَتَهُ بِذِي الْحُلَيْفَةِ ثُمَّ يُهِلُّ حَتَّى تَسْتَوِيَ بِهِ قَائِمَةً

Narrated By Ibn 'Umar : I saw that Allah's Apostle used to ride on his Mount at Dhul Hulaifa and used to start saying, "Labbaik" when the Mount stood upright.

حضرت عبد اللہ بن عمر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ میں نے رسول اللہ ﷺ کو دیکھا، آپﷺ اپنی اونٹنی پر ذو الحلیفہ میں سوار ہوتے، جب وہ سیدھی کھڑی ہوتی تو آپﷺ لبیک پکارتے۔


حَدَّثَنَا إِبْرَاهِيمُ، أَخْبَرَنَا الْوَلِيدُ، حَدَّثَنَا الأَوْزَاعِيُّ، سَمِعَ عَطَاءً، يُحَدِّثُ عَنْ جَابِرِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ ـ رضى الله عنهما ـ أَنَّ إِهْلاَلَ رَسُولِ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم مِنْ ذِي الْحُلَيْفَةِ حِينَ اسْتَوَتْ بِهِ رَاحِلَتُهُ‏.‏ رَوَاهُ أَنَسٌ وَابْنُ عَبَّاسٍ رضى الله عنهم‏

Narrated By Jabir bin 'Abdullah : That Allah's Apostle started saying, "Labbaik" from Dhul-Hulaifa when his Mount stood upright carrying him.

حضرت جابر بن عبد اللہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺنے ذو الحلیفہ سے احرام باندھا جب آپﷺ کی سواری آپﷺکو لے کر سیدھی کھڑی ہوئی۔

Chapter No: 3

باب الْحَجِّ عَلَى الرَّحْلِ

To go for Hajj on a pack-saddle (of a camel).

با ب : پا لا ن پر سوار ہو کر حج کر نا

وَقَالَ أَبَانُ حَدَّثَنَا مَالِكُ بْنُ دِينَارٍ، عَنِ الْقَاسِمِ بْنِ مُحَمَّدٍ، عَنْ عَائِشَةَ، رضى الله عنها أَنَّ النَّبِيَّ صلى الله عليه وسلم بَعَثَ مَعَهَا أَخَاهَا عَبْدَ الرَّحْمَنِ، فَأَعْمَرَهَا مِنَ التَّنْعِيمِ، وَحَمَلَهَا عَلَى قَتَبٍ‏.‏ وَقَالَ عُمَرُ ـ رضى الله عنه ـ شُدُّوا الرِّحَالَ فِي الْحَجِّ، فَإِنَّهُ أَحَدُ الْجِهَادَيْنِ‏

Narrated Aisha (R.A.): The Prophet(s.a.w.)sent my brother,'Abdur Rahman with me to Tan'im for the Umra and he mde me ride on the packsaddle(of a camel).Umar said,"Be ready to travel for Hajj as it(Hajj) is one of the two kinds of jihad."

حضر ت عائشہ رضی اللہ عنہا سے روایت ہےکہ نبیﷺنے ان کے بھا ئی عبد الرحمٰن کو ان کے ساتھ بھیجا انہوں نے تنعیم سے ان کو عمرہ کرایا اور پالان کی پچھلی لکڑی پر ان کو بٹھالیا اور حضر ت عمر رضی اللہ عنہ نے کہا: حج کےلیے پلانیں باندھو کیونکہ یہ بھی ایک جہاد ہے۔


وَحَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ أَبِي بَكْرٍ، حَدَّثَنَا يَزِيدُ بْنُ زُرَيْعٍ، حَدَّثَنَا عَزْرَةُ بْنُ ثَابِتٍ، عَنْ ثُمَامَةَ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ أَنَسٍ، قَالَ حَجَّ أَنَسٌ عَلَى رَحْلٍ، وَلَمْ يَكُنْ شَحِيحًا، وَحَدَّثَ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم حَجَّ عَلَى رَحْلٍ وَكَانَتْ زَامِلَتَهُ‏

Narrated By Thumama bin 'Abdullah bin Anas : Anas performed the Hajj on a pack-saddle and he was not a miser. Anas said, "Allah's Apostle performed Hajj on a pack-saddle and the same Mount was carrying his baggage too."

حضرت ثمامہ بن عبد اللہ بن انس سے روایت ہے انہوں نے کہا: حضرت انس رضی اللہ عنہ نے ایک پالان پر حج کےلیے تشریف لے گئے، اور وہ بخیل نہیں تھےاور بیان کیا کہ رسول اللہﷺ نے بھی ایک پالان پرسوار ہوکر حج کیا اسی پرآپﷺ کا اسباب بھی لدا تھا۔


حَدَّثَنَا عَمْرُو بْنُ عَلِيٍّ، حَدَّثَنَا أَبُو عَاصِمٍ، حَدَّثَنَا أَيْمَنُ بْنُ نَابِلٍ، حَدَّثَنَا الْقَاسِمُ بْنُ مُحَمَّدٍ، عَنْ عَائِشَةَ ـ رضى الله عنها ـ أَنَّهَا قَالَتْ يَا رَسُولَ اللَّهِ، اعْتَمَرْتُمْ وَلَمْ أَعْتَمِرْ‏.‏ فَقَالَ ‏"‏ يَا عَبْدَ الرَّحْمَنِ اذْهَبْ بِأُخْتِكَ فَأَعْمِرْهَا مِنَ التَّنْعِيمِ ‏"‏‏.‏ فَأَحْقَبَهَا عَلَى نَاقَةٍ فَاعْتَمَرَتْ‏

Narrated By Al-Qasim bin Muhammad : 'Aisha said, "O Allah's Apostle! You performed 'Umra but I did not." He said, "O 'Abdur-Rahman! Go along with your sister and let her perform 'Umra from Tan'im." 'Abdur-Rahman made her ride over the pack-saddle of a she-camel and she performed 'Umra.

حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا سے روایت ہے انہوں نے کہا: یا رسول اللہﷺ! آپ لوگوں نے تو عمرہ بھی کیا اور میں نے عمرہ نہیں کیا ،آپﷺ نے فرمایا: عبد الر حمٰن اپنی بہن کو لے کر جا ؤ اور تنعیم سے عمرہ کرا کے لاؤ ،حضرت عبد الرحمن نے اونٹی پر ان کو پیچھے بٹھا لیا، انہوں نے عمرہ کیا۔

Chapter No: 4

باب فَضْلِ الْحَجِّ الْمَبْرُورِ

The superiority of Al-Hajj-ul-Mabrur (The Hajj that is performed with the intention of seeking Allah's pleasure only and is in accordance with the Sunnah, without committing the sins and is acceptable to Allah).

باب : مقبول حج کی فضیلت

حَدَّثَنَا عَبْدُ الْعَزِيزِ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ، حَدَّثَنَا إِبْرَاهِيمُ بْنُ سَعْدٍ، عَنِ الزُّهْرِيِّ، عَنْ سَعِيدِ بْنِ الْمُسَيَّبِ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ ـ رضى الله عنه ـ قَالَ سُئِلَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم أَىُّ الأَعْمَالِ أَفْضَلُ قَالَ ‏"‏ إِيمَانٌ بِاللَّهِ وَرَسُولِهِ ‏"‏‏.‏ قِيلَ ثُمَّ مَاذَا قَالَ ‏"‏ جِهَادٌ فِي سَبِيلِ اللَّهِ ‏"‏‏.‏ قِيلَ ثُمَّ مَاذَا قَالَ ‏"‏ حَجٌّ مَبْرُورٌ ‏"‏‏

Narrated By Abu Huraira : The Prophet was asked, "Which is the best deed?" He said, "To believe in Allah and His Apostle." He was then asked, "Which is the next (in goodness)?" He said, "To participate in Jihad in Allah's Cause." He was then asked, "Which is the next?" He said, "To perform Hajj-Mabrur."

حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے انہوں نے کہا :نبی ﷺ سے پوچھا گیا کون سا عمل افضل ہے ؟ آ پ ﷺنے فرمایا: اللہ اور رسول پر ایمان لانا، پوچھا پھر کون سا ؟ فر مایا: اللہ کی راہ میں جہاد کرنا ،پو چھا پھر کون سا ؟ فرمایا :مبرور (مقبول ) حج ۔


حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّحْمَنِ بْنُ الْمُبَارَكِ، حَدَّثَنَا خَالِدٌ، أَخْبَرَنَا حَبِيبُ بْنُ أَبِي عَمْرَةَ، عَنْ عَائِشَةَ بِنْتِ طَلْحَةَ، عَنْ عَائِشَةَ أُمِّ الْمُؤْمِنِينَ ـ رضى الله عنها ـ أَنَّهَا قَالَتْ يَا رَسُولَ اللَّهِ، نَرَى الْجِهَادَ أَفْضَلَ الْعَمَلِ، أَفَلاَ نُجَاهِدُ قَالَ ‏"‏ لاَ، لَكِنَّ أَفْضَلَ الْجِهَادِ حَجٌّ مَبْرُورٌ ‏"‏‏

Narrated By 'Aisha : (The mother of the faithful believers) I said, "O Allah's Apostle! We consider Jihad as the best deed." The Prophet said, "The best Jihad (for women) is Hajj Mabrur. "

حضرت عائشہ ام المومنین رضی اللہ عنہا سے روایت ہے کہ انہوں نے عرض کیا: یا رسولﷺ! ہم جانتے ہیں کہ جہاد سب نیک عملوں سے بڑ ھ کر ہے تو ہم جہاد کریں؟ آپ ﷺنے فرمایا: نہیں، عمدہ جہادحج مبرور ہے۔


حَدَّثَنَا آدَمُ، حَدَّثَنَا شُعْبَةُ، حَدَّثَنَا سَيَّارٌ أَبُو الْحَكَمِ، قَالَ سَمِعْتُ أَبَا حَازِمٍ، قَالَ سَمِعْتُ أَبَا هُرَيْرَةَ ـ رضى الله عنه ـ قَالَ سَمِعْتُ النَّبِيَّ صلى الله عليه وسلم يَقُولُ ‏"‏ مَنْ حَجَّ لِلَّهِ فَلَمْ يَرْفُثْ وَلَمْ يَفْسُقْ رَجَعَ كَيَوْمِ وَلَدَتْهُ أُمُّهُ ‏"‏‏

Narrated By Abu Huraira : The Prophet (p.b.u.h) said, "Whoever performs Hajj for Allah's pleasure and does not have sexual relations with his wife, and does not do evil or sins then he will return (after Hajj free from all sins) as if he were born anew."

حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ میں نے نبیﷺسے سنا آپﷺ فرماتے تھے جو کوئی اللہ کےلیے حج کرے، اور (اس میں) کوئی فحش بات نہیں ہوئی اور نہ کوئی گناہ تو وہ ایسا پاک ہوکر لوٹے گا جیسےاس دن پاک تھا جس دن اس کو اس کی ماں جنا تھا ۔

Chapter No: 5

باب فَرْضِ مَوَاقِيتِ الْحَجِّ وَالْعُمْرَةِ

The demarcation of Mawaqit for Hajj.

باب : حج اور عمرہ کی میقاتوں کا بیان

Mawaqit - places at which one should assume the state of Ihram for the purpose of Hajj or Umra.

حَدَّثَنَا مَالِكُ بْنُ إِسْمَاعِيلَ، حَدَّثَنَا زُهَيْرٌ، قَالَ حَدَّثَنِي زَيْدُ بْنُ جُبَيْرٍ، أَنَّهُ أَتَى عَبْدَ اللَّهِ بْنَ عُمَرَ ـ رضى الله عنهما ـ فِي مَنْزِلِهِ وَلَهُ فُسْطَاطٌ وَسُرَادِقٌ، فَسَأَلْتُهُ مِنْ أَيْنَ يَجُوزُ أَنْ أَعْتَمِرَ قَالَ فَرَضَهَا رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم لأَهْلِ نَجْدٍ قَرْنًا، وَلأَهْلِ الْمَدِينَةِ ذَا الْحُلَيْفَةِ، وَلأَهْلِ الشَّأْمِ الْجُحْفَةَ‏

Narrated By Zaid bin Jubair : I went to visit 'Abdullah bin 'Umar at his house which contained many tents made of cotton cloth and these were encircled with Suradik (part of the tent). I asked him from where, should one assume Ihram for Umra. He said, "Allah's Apostle had fixed as Miqat (singular of Mawaqit) Qarn for the people of Najd, Dhul-Hulaifa for the people of Medina, and Al-Juhfa for the people of Sham."

حضرت زید بن جبیر رضی اللہ عنہ، حضرت عبد اللہ بن عمر رضی اللہ عنہ کے گھر تشریف لائے ، تو دیکھا وہاں قنات کے ساتھ شامیانہ لگا ہوا ہے ،(زید بن جبیر نے کہا) میں نے پوچھا: کہ عمرے کا احرام کہا ں سے با ندھنا چاہیے ، انہو ں نے کہا :رسول اللہ ﷺ نے نجد والوں کےلیے قرن اور مدینہ والوں کے لئے ذوالحلیفہ اور شام والوں کےلیے جحفہ مقررکیا ہے۔

Chapter No: 6

باب قَوْلِ اللَّهِ تَعَالَى

The Statement Of Allah,

باب: اللہ تعا لیٰ نے (سورت بقرہ میں) فرمایا توشہ لو ، اچھا توشہ سوال سے بچنا ہے۔

‏{‏وَتَزَوَّدُوا فَإِنَّ خَيْرَ الزَّادِ التَّقْوَى‏}‏

"And take provisions for the journey, but the best provision is At-Taqwa ..." (V.2:197)

حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ بِشْرٍ، حَدَّثَنَا شَبَابَةُ، عَنْ وَرْقَاءَ، عَنْ عَمْرِو بْنِ دِينَارٍ، عَنْ عِكْرِمَةَ، عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ ـ رضى الله عنهما ـ قَالَ كَانَ أَهْلُ الْيَمَنِ يَحُجُّونَ وَلاَ يَتَزَوَّدُونَ وَيَقُولُونَ نَحْنُ الْمُتَوَكِّلُونَ، فَإِذَا قَدِمُوا مَكَّةَ سَأَلُوا النَّاسَ، فَأَنْزَلَ اللَّهُ تَعَالَى ‏{‏وَتَزَوَّدُوا فَإِنَّ خَيْرَ الزَّادِ التَّقْوَى‏}‏‏.‏ رَوَاهُ ابْنُ عُيَيْنَةَ عَنْ عَمْرٍو عَنْ عِكْرِمَةَ مُرْسَلاً‏

Narrated By Ibn Abbas : The people of Yemen used to come for Hajj and used not to bring enough provisions with them and used to say that they depend on Allah. On their arrival in Medina they used to beg the people, and so Allah revealed, "And take a provision (with you) for the journey, but the best provision is the fear of Allah." (2.197).

حضرت عبد اللہ بن عباس رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ انہوں نے کہا: یمن کے لوگ زاد راہ لائے بغیر حج کیا کرتے تھےاور کہتے تھے کہ ہم توکل کرنے والے ہیں، جب مکہ میں پہنچتے تو لوگوں سے بھیک مانگتے۔اس وقت اللہ تعالیٰ نے یہ آیت اتاری، توشہ لیا کرو اچھا توشہ یہ ہے کہ آدمی سوال سے بچے۔

Chapter No: 7

باب مُهَلِّ أَهْلِ مَكَّةَ لِلْحَجِّ وَالْعُمْرَةِ

Miqat of Hajj and Umra for the people of Makkah.

باب : مکہ والے حج اور عمرے کا احرام کہاں سے باند ھیں۔

حَدَّثَنَا مُوسَى بْنُ إِسْمَاعِيلَ، حَدَّثَنَا وُهَيْبٌ، حَدَّثَنَا ابْنُ طَاوُسٍ، عَنْ أَبِيهِ، عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ، قَالَ إِنَّ النَّبِيَّ صلى الله عليه وسلم وَقَّتَ لأَهْلِ الْمَدِينَةِ ذَا الْحُلَيْفَةِ، وَلأَهْلِ الشَّأْمِ الْجُحْفَةَ، وَلأَهْلِ نَجْدٍ قَرْنَ الْمَنَازِلِ، وَلأَهْلِ الْيَمَنِ يَلَمْلَمَ، هُنَّ لَهُنَّ وَلِمَنْ أَتَى عَلَيْهِنَّ مِنْ غَيْرِهِنَّ، مِمَّنْ أَرَادَ الْحَجَّ وَالْعُمْرَةَ، وَمَنْ كَانَ دُونَ ذَلِكَ فَمِنْ حَيْثُ أَنْشَأَ، حَتَّى أَهْلُ مَكَّةَ مِنْ مَكَّةَ‏.

Narrated By Ibn Abbas : Allah's Apostle (p.b.u.h) made Dhul-Huiaifa as the Miqat for the people of Medina; Al-Juhfa for the people of Sham; Qarn-al-Manazil for the people of Najd; and Yalamlam for the people of Yemen; and these Mawaqit are for the people at those very places, and besides them for those who come thorough those places with the intention of performing Hajj and 'Umra; and whoever is living within these boundaries can assume Ihram from the place he starts, and the people of Mecca can assume Ihram from Mecca.

حضرت ابن عباس رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ انہوں نے کہا: رسول اللہﷺنے مد ینہ والوں کےلیے (احرام با ندھنے کا مقام) ذوالحلیفہ اور شام والوں کے لیے جحفہ اور نجد والوں کےلیے قرن المنازل، اور یمن والوں کےلیے یلملم مقررکیا، یہ مقام ان ملک والوں کےلیے بھی ہیں اور جو دوسرے ملک والے ان پر سے گزریں ان کےلیے بھی۔ جو حج اور عمرے کے ارادے سے آئیں اور جو ان مقاموں کے اس طرف ( مکہ کی جانب) رہتا ہو جہاں سے چلے وہیں سے احرام باندھے مکہ والے مکہ سے احرام باندھیں۔

Chapter No: 8

باب مِيقَاتِ أَهْلِ الْمَدِينَةِ وَلاَ يُهِلُّوا قَبْلَ ذِي الْحُلَيْفَةِ

The Miqat for the people of Medina (is Dhul-Hulaifa) and they should not assume Ihram before Dhul-Hulaifa.

باب: مد ینہ والوں کی میقات ،وہ لوگ ذوالحلیفہ پہنچنے سے پہلے احرام باندھیں۔

حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ يُوسُفَ، أَخْبَرَنَا مَالِكٌ، عَنْ نَافِعٍ، عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عُمَرَ ـ رضى الله عنهما ـ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم قَالَ ‏"‏ يُهِلُّ أَهْلُ الْمَدِينَةِ مِنْ ذِي الْحُلَيْفَةِ، وَأَهْلُ الشَّأْمِ مِنَ الْجُحْفَةِ، وَأَهْلُ نَجْدٍ مِنْ قَرْنٍ ‏"‏‏.‏ قَالَ عَبْدُ اللَّهِ وَبَلَغَنِي أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم قَالَ ‏"‏ وَيُهِلُّ أَهْلُ الْيَمَنِ مِنْ يَلَمْلَمَ ‏"‏‏

Narrated By Nafi' : 'Abdullah bin 'Umar said, "Allah's Apostle said, 'The people of Medina should assume Ihram from Dhul-Hulaifa; the people of Sham from Al-Juhfa; and the people of Najd from Qarn." And 'Abdullah added, "I was informed that Allah's Apostle had said, 'The people of Yemen should assume Ihram from Yalamlam.'"

حضرت عبد اللہ بن عمر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺنے فرمایا: مدینہ والے ذوالحلیفہ سے احرام باندھیں، اور شام والے جحفہ سے، اور نجد والے قرن سے۔حضرت عبد اللہ بن عمر رضی اللہ عنہ نے کہا: مجھ کو خبر پہنچی کہ رسول اللہﷺنے فرمایا: یمن والے یلملم سے احرام باندھیں۔

Chapter No: 9

باب مُهَلِّ أَهْلِ الشَّأْمِ

The Miqat for the people of Sham.

باب: شام والے احرام کہا ں سے باندھیں

حَدَّثَنَا مُسَدَّدٌ، حَدَّثَنَا حَمَّادٌ، عَنْ عَمْرِو بْنِ دِينَارٍ، عَنْ طَاوُسٍ، عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ ـ رضى الله عنهما ـ قَالَ وَقَّتَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم لأَهْلِ الْمَدِينَةِ ذَا الْحُلَيْفَةِ، وَلأَهْلِ الشَّأْمِ الْجُحْفَةَ، وَلأَهْلِ نَجْدٍ قَرْنَ الْمَنَازِلِ، وَلأَهْلِ الْيَمَنِ يَلَمْلَمَ، فَهُنَّ لَهُنَّ وَلِمَنْ أَتَى عَلَيْهِنَّ مِنْ غَيْرِ أَهْلِهِنَّ، لِمَنْ كَانَ يُرِيدُ الْحَجَّ وَالْعُمْرَةَ، فَمَنْ كَانَ دُونَهُنَّ فَمُهَلُّهُ مِنْ أَهْلِهِ، وَكَذَاكَ حَتَّى أَهْلُ مَكَّةَ يُهِلُّونَ مِنْهَا‏

Narrated By Ibn Abbas : Allah's Apostle had fixed Dhul Hulaifa as the Mlqat for the people of Medina; Al-Juhfa for the people of Sham; and Qarn Ul-Manazil for the people of Najd; and Yalamlam for the people of Yemen. So, these (above mentioned) are the Mawaqit for all those living at those places, and besides them for those who come through those places with the intention of performing Hajj and 'Umra and whoever lives within these places should assume Ihram from his dwelling place, and similarly the people of Mecca can assume Ihram from Mecca.

حضرت ابن عباس رضی اللہ عنہ سے ہے کہ انہوں نے کہا رسول اللہﷺنے مدینہ والوں کےلیے ذوالحلیفہ(میقات) ٹھہرایا اور شام والوں کےلیے جحفہ اور نجد والوں کےلیے قرنِ المنازل اور یمن والوں کےلیے یلملم، یہ مقام ان ملکوں کےلیے ہیں، اور ان کےلیے بھی، جو دوسرے ملکوں سے ان پر ہوکر آئیں جو حج یا عمرے کی نیت رکھتے ہوں جو لوگ ان کے ادھر رہتے ہوں وہ اپنے گھر سے احرام باندھیں۔اسی طرح مکّہ والے مکہ سے احرام باندھیں۔

Chapter No: 10

باب مُهَلِّ أَهْلِ نَجْدٍ

The Miqat for the people of Najd.

باب : نجد والے کہاں سے احرام باند ھیں

حَدَّثَنَا عَلِيٌّ، حَدَّثَنَا سُفْيَانُ، حَفِظْنَاهُ مِنَ الزُّهْرِيِّ عَنْ سَالِمٍ، عَنْ أَبِيهِ، وَقَّتَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم. ح:

Narrated By Salim : From his father who said: The Prophet had fixed the Mawaqit as follows: (No. 1528)

یہ حدیث حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ سے حسب سابق مروی ہے۔


حَدَّثَنَا أَحْمَدُ، حَدَّثَنَا ابْنُ وَهْبٍ، قَالَ أَخْبَرَنِي يُونُسُ، عَنِ ابْنِ شِهَابٍ، عَنْ سَالِمِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ، عَنْ أَبِيهِ ـ رضى الله عنه ـ سَمِعْتُ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم يَقُولُ ‏"‏ مُهَلُّ أَهْلِ الْمَدِينَةِ ذُو الْحُلَيْفَةِ، وَمُهَلُّ أَهْلِ الشَّأْمِ مَهْيَعَةُ وَهِيَ الْجُحْفَةُ، وَأَهْلِ نَجْدٍ قَرْنٌ ‏"‏‏.‏ قَالَ ابْنُ عُمَرَ ـ رضى الله عنهما ـ زَعَمُوا أَنَّ النَّبِيَّ صلى الله عليه وسلم قَالَ وَلَمْ أَسْمَعْهُ ‏"‏ وَمُهَلُّ أَهْلِ الْيَمَنِ يَلَمْلَمُ ‏"

Narrated By Salim bin 'Abdullah : From his father: I heard Allah's Apostle saying, "The Miqat for the people of Medina is Dhul-Hulaifa; for the people of Sham is Mahita; (i.e. Al-Juhfa); and for the people of Najd is Qarn. And said Ibn 'Umar, "They claim, but I did not hear personally, that the Prophet said, "The Miqat for the people of Yemen is Yalamlam."

حضرت عبد اللہ بن عمر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے ،انہوں نے کہا: میں نے رسول اللہ ﷺ سے سنُا آپﷺ فر ماتے تھے، مدینہ والے ذوالحلیفہ سے احرام باندھیں اور شام والے مہیعہ یعنی جحفہ سے اور نجد والے قرن سے۔ حضرت ابن عمررضی اللہ عنہ نے کہا: لوگ کہتے تھے میں نے خود نہیں سُنا کہ نبیﷺنے یہ بھی فرمایا: اور یمن والے یلملم سے احرام با ند ھیں۔

123Last ›