Sayings of the Messenger

 

123

Chapter No: 11

باب الإِجَارَةِ مِنَ الْعَصْرِ إِلَى اللَّيْلِ

Employment from Asr till night.

باب: عصر سے لے کر رات تک مزدور لگانا۔

حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ الْعَلاَءِ، حَدَّثَنَا أَبُو أُسَامَةَ، عَنْ بُرَيْدٍ، عَنْ أَبِي بُرْدَةَ، عَنْ أَبِي مُوسَى ـ رضى الله عنه ـ عَنِ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم قَالَ ‏"‏ مَثَلُ الْمُسْلِمِينَ وَالْيَهُودِ وَالنَّصَارَى كَمَثَلِ رَجُلٍ اسْتَأْجَرَ قَوْمًا يَعْمَلُونَ لَهُ عَمَلاً يَوْمًا إِلَى اللَّيْلِ عَلَى أَجْرٍ مَعْلُومٍ، فَعَمِلُوا لَهُ إِلَى نِصْفِ النَّهَارِ فَقَالُوا لاَ حَاجَةَ لَنَا إِلَى أَجْرِكَ الَّذِي شَرَطْتَ لَنَا، وَمَا عَمِلْنَا بَاطِلٌ، فَقَالَ لَهُمْ لاَ تَفْعَلُوا أَكْمِلُوا بَقِيَّةَ عَمَلِكُمْ، وَخُذُوا أَجْرَكُمْ كَامِلاً، فَأَبَوْا وَتَرَكُوا، وَاسْتَأْجَرَ أَجِيرَيْنِ بَعْدَهُمْ فَقَالَ لَهُمَا أَكْمِلاَ بَقِيَّةَ يَوْمِكُمَا هَذَا، وَلَكُمَا الَّذِي شَرَطْتُ لَهُمْ مِنَ الأَجْرِ‏.‏ فَعَمِلُوا حَتَّى إِذَا كَانَ حِينُ صَلاَةِ الْعَصْرِ قَالاَ لَكَ مَا عَمِلْنَا بَاطِلٌ، وَلَكَ الأَجْرُ الَّذِي جَعَلْتَ لَنَا فِيهِ‏.‏ فَقَالَ لَهُمَا أَكْمِلاَ بَقِيَّةَ عَمَلِكُمَا، فَإِنَّ مَا بَقِيَ مِنَ النَّهَارِ شَىْءٌ يَسِيرٌ‏.‏ فَأَبَيَا، وَاسْتَأْجَرَ قَوْمًا أَنْ يَعْمَلُوا لَهُ بَقِيَّةَ يَوْمِهِمْ، فَعَمِلُوا بَقِيَّةَ يَوْمِهِمْ حَتَّى غَابَتِ الشَّمْسُ، وَاسْتَكْمَلُوا أَجْرَ الْفَرِيقَيْنِ كِلَيْهِمَا، فَذَلِكَ مَثَلُهُمْ وَمَثَلُ مَا قَبِلُوا مِنْ هَذَا النُّورِ ‏"

Narrated By Abu Musa : The Prophet said, "The example of Muslims, Jews and Christians is like the example of a man who employed labourers to work for him from morning till night for specific wages. They worked till midday and then said, 'We do not need your money which you have fixed for us and let whatever we have done be annulled.' The man said to them, 'Don't quit the work, but complete the rest of it and take your full wages.' But they refused and went away. The man employed another batch after them and said to them, 'Complete the rest of the day and yours will be the wages I had fixed for the first batch.' So, they worked till the time of 'Asr prayer. Then they said, "Let what we have done be annulled and keep the wages you have promised us for yourself.' The man said to them, 'Complete the rest of the work, as only a little of the day remains,' but they refused. Thereafter he employed another batch to work for the rest of the day and they worked for the rest of the day till the sunset, and they received the wages of the two former batches. So, that was the example of those people (Muslims) and the example of this light (guidance) which they have accepted willingly.

حضرت ابو موسیٰ اشعری رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ نبیﷺنے فرمایا: مسلمانوں کی اور یہود و نصاریٰ کی مثال ایسی ہے کہ ایک آدمی نے چند آدمیوں کو مزدوری پر رکھا کہ یہ سب اس کا ایک کام صبح سے رات تک مقررہ اجرت پر کریں گے۔ چنانچہ کچھ لوگوں نے یہ کام دوپہر تک کیا ۔پھر کہنے لگے کہ ہمیں تمہاری اس مزدوری کی ضرورت نہیں ہے جو تم نے ہم سے طے کی ہے ۔بلکہ جو کام ہم نے کردیا وہ بھی غلط رہا ، اس پر اس شخص نے کہا: کہ ایسا نہ کرو، اپنا کام پورا کرلو، اور اپنی پوری مزدوری لے جاؤ ۔ لیکن انہوں نے انکار کردیا اور کام چھوڑ کر چلے گئے ۔ آخر اس نے دوسرے مزدور لگائے اور ان سے کہا کہ باقی دن پورا کرلو تو میں تمہیں وہی مزدوری دوں گا جو پہلے مزدوروں سے طے کی تھی۔ چنانچہ انہوں نے کام شروع کیا ، لیکن عصر کی نماز کا وقت آیا تو انہوں نے بھی یہی کہا :کہ ہم نے جو تمہارا کام کردیا ہے وہ بالکل بے کار رہا۔ وہ مزدوری بھی تم اپنے پاس ہی رکھو جو تم نے ہم سے طے کی تھی۔ اس شخص نے ان کو سمجھا یا کہ اپنا باقی کام پورا کرلو۔ دن بھی اب تھوڑا ہی باقی رہ گیا ہے ۔ لیکن وہ نہ مانے۔آخر اس شخص نے دوسرے مزدور لگائے کہ یہ دن کا جو حصہ باقی رہ گیا ہے اس میں یہ کام کردیں۔ چنانچہ ان لوگوں نے سورج غروب ہونے تک دن کے بقیہ حصہ میں کام پورا کیا ، اور پہلے اور دوسرے مزدوروں کی مزدوری بھی سب ان ہی کو ملی ۔تو مسلمانوں کی اور اس نور کی جس کو انہوں نے قبول کیا ، یہی مثال ہے۔

Chapter No: 12

باب مَنِ اسْتَأْجَرَ أَجِيرًا فَتَرَكَ أَجْرَهُ، فَعَمِلَ فِيهِ الْمُسْتَأْجِرُ فَزَادَ، أَوْ مَنْ عَمِلَ فِي مَالِ غَيْرِهِ فَاسْتَفْضَلَ

Whoever employed a labourer (and after completing the work) the labourer left the wages and went away. The employer invested the money in some way and increased it thereby, or whoever invested somebody else's money in business and increased it thereby.

باب: ایک مزدور اپنی مزدوری کا پیسہ چھوڑ کر چل دے اور جس نے مزدور لگایا تھا وہ اس کے پیسے میں محنت کر کے اس کو بڑھائے یا غیر کے مال میں محنت کر کے اس کو بڑھائے تو کیا حکم ہے۔

حَدَّثَنَا أَبُو الْيَمَانِ، أَخْبَرَنَا شُعَيْبٌ، عَنِ الزُّهْرِيِّ، حَدَّثَنِي سَالِمُ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ، أَنَّ عَبْدَ اللَّهِ بْنَ عُمَرَ ـ رضى الله عنهما ـ قَالَ سَمِعْتُ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم يَقُولُ ‏"‏ انْطَلَقَ ثَلاَثَةُ رَهْطٍ مِمَّنْ كَانَ قَبْلَكُمْ حَتَّى أَوَوُا الْمَبِيتَ إِلَى غَارٍ فَدَخَلُوهُ، فَانْحَدَرَتْ صَخْرَةٌ مِنَ الْجَبَلِ فَسَدَّتْ عَلَيْهِمُ الْغَارَ فَقَالُوا إِنَّهُ لاَ يُنْجِيكُمْ مِنْ هَذِهِ الصَّخْرَةِ إِلاَّ أَنْ تَدْعُوا اللَّهَ بِصَالِحِ أَعْمَالِكُمْ‏.‏ فَقَالَ رَجُلٌ مِنْهُمُ اللَّهُمَّ كَانَ لِي أَبَوَانِ شَيْخَانِ كَبِيرَانِ، وَكُنْتُ لاَ أَغْبِقُ قَبْلَهُمَا أَهْلاً وَلاَ مَالاً، فَنَأَى بِي فِي طَلَبِ شَىْءٍ يَوْمًا، فَلَمْ أُرِحْ عَلَيْهِمَا حَتَّى نَامَا، فَحَلَبْتُ لَهُمَا غَبُوقَهُمَا فَوَجَدْتُهُمَا نَائِمَيْنِ وَكَرِهْتُ أَنْ أَغْبِقَ قَبْلَهُمَا أَهْلاً أَوْ مَالاً، فَلَبِثْتُ وَالْقَدَحُ عَلَى يَدَىَّ أَنْتَظِرُ اسْتِيقَاظَهُمَا حَتَّى بَرَقَ الْفَجْرُ، فَاسْتَيْقَظَا فَشَرِبَا غَبُوقَهُمَا، اللَّهُمَّ إِنْ كُنْتُ فَعَلْتُ ذَلِكَ ابْتِغَاءَ وَجْهِكَ فَفَرِّجْ عَنَّا مَا نَحْنُ فِيهِ مِنْ هَذِهِ الصَّخْرَةِ، فَانْفَرَجَتْ شَيْئًا لاَ يَسْتَطِيعُونَ الْخُرُوجَ ‏"‏‏.‏ قَالَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ وَقَالَ الآخَرُ اللَّهُمَّ كَانَتْ لِي بِنْتُ عَمٍّ كَانَتْ أَحَبَّ النَّاسِ إِلَىَّ، فَأَرَدْتُهَا عَنْ نَفْسِهَا، فَامْتَنَعَتْ مِنِّي حَتَّى أَلَمَّتْ بِهَا سَنَةٌ مِنَ السِّنِينَ، فَجَاءَتْنِي فَأَعْطَيْتُهَا عِشْرِينَ وَمِائَةَ دِينَارٍ عَلَى أَنْ تُخَلِّيَ بَيْنِي وَبَيْنَ نَفْسِهَا، فَفَعَلَتْ حَتَّى إِذَا قَدَرْتُ عَلَيْهَا قَالَتْ لاَ أُحِلُّ لَكَ أَنْ تَفُضَّ الْخَاتَمَ إِلاَّ بِحَقِّهِ‏.‏ فَتَحَرَّجْتُ مِنَ الْوُقُوعِ عَلَيْهَا، فَانْصَرَفْتُ عَنْهَا وَهْىَ أَحَبُّ النَّاسِ إِلَىَّ وَتَرَكْتُ الذَّهَبَ الَّذِي أَعْطَيْتُهَا، اللَّهُمَّ إِنْ كُنْتُ فَعَلْتُ ذَلِكَ ابْتِغَاءَ وَجْهِكَ فَافْرُجْ عَنَّا مَا نَحْنُ فِيهِ‏.‏ فَانْفَرَجَتِ الصَّخْرَةُ، غَيْرَ أَنَّهُمْ لاَ يَسْتَطِيعُونَ الْخُرُوجَ مِنْهَا‏.‏ قَالَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم وَقَالَ الثَّالِثُ اللَّهُمَّ إِنِّي اسْتَأْجَرْتُ أُجَرَاءَ فَأَعْطَيْتُهُمْ أَجْرَهُمْ، غَيْرَ رَجُلٍ وَاحِدٍ تَرَكَ الَّذِي لَهُ وَذَهَبَ فَثَمَّرْتُ أَجْرَهُ حَتَّى كَثُرَتْ مِنْهُ الأَمْوَالُ، فَجَاءَنِي بَعْدَ حِينٍ فَقَالَ يَا عَبْدَ اللَّهِ أَدِّ إِلَىَّ أَجْرِي‏.‏ فَقُلْتُ لَهُ كُلُّ مَا تَرَى مِنْ أَجْرِكَ مِنَ الإِبِلِ وَالْبَقَرِ وَالْغَنَمِ وَالرَّقِيقِ‏.‏ فَقَالَ يَا عَبْدَ اللَّهِ لاَ تَسْتَهْزِئْ بِي‏.‏ فَقُلْتُ إِنِّي لاَ أَسْتَهْزِئُ بِكَ‏.‏ فَأَخَذَهُ كُلَّهُ فَاسْتَاقَهُ فَلَمْ يَتْرُكْ مِنْهُ شَيْئًا، اللَّهُمَّ فَإِنْ كُنْتُ فَعَلْتُ ذَلِكَ ابْتِغَاءَ وَجْهِكَ فَافْرُجْ عَنَّا مَا نَحْنُ فِيهِ‏.‏ فَانْفَرَجَتِ الصَّخْرَةُ فَخَرَجُوا يَمْشُونَ ‏"

Narrated By 'Abdullah bin 'Umar : I heard Allah's Apostle saying, "Three men from among those who were before you, set out together till they reached a cave at night and entered it. A big rock rolled down the mountain and closed the mouth of the cave. They said (to each other), Nothing could save you Tom this rock but to invoke Allah by giving referenda to the righteous deed which you have done (for Allah's sake only).' So, one of them said, 'O Allah! I had old parents and I never provided my family (wife, children etc.) with milk before them. One day, by chance I was delayed, and I came late (at night) while they had slept. I milked the sheep for them and took the milk to them, but I found them sleeping. I disliked to provide my family with the milk before them. I waited for them and the bowl of milk was in my hand and I kept on waiting for them to get up till the day dawned. Then they got up and drank the milk. O Allah! If I did that for Your Sake only, please relieve us from our critical situation caused by this rock.' So, the rock shifted a little but they could not get out." The Prophet added, "The second man said, 'O Allah! I had a cousin who was the dearest of all people to me and I wanted to have sexual relations with her but she refused. Later she had a hard time in a famine year and she came to me and I gave her one-hundred-and-twenty Dinars on the condition that she would not resist my desire, and she agreed. When I was about to fulfil my desire, she said: It is illegal for you to outrage my chastity except by legitimate marriage. So, I thought it a sin to have sexual intercourse with her and left her though she was the dearest of all the people to me, and also I left the gold I had given her. O Allah! If I did that for Your Sake only, please relieve us from the present calamity.' So, the rock shifted a little more but still they could not get out from there." The Prophet added, "Then the third man said, 'O Allah! I employed few labourers and I paid them their wages with the exception of one man who did not take his wages and went away. I invested his wages and I got much property thereby. (Then after some time) he came and said to me: O Allah's slave! Pay me my wages. I said to him: All the camels, cows, sheep and slaves you see, are yours. He said: O Allah's slave! Don't mock at me. I said: I am not mocking at you. So, he took all the herd and drove them away and left nothing. O Allah! If I did that for Your Sake only, please relieve us from the present suffering.' So, that rock shifted completely and they got out walking.

حضرت عبد اللہ بن عمر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ نبیﷺنے فرمایا: پہلی امت کے تین آدمی کہیں سفر میں جارہے تھے ، رات ہونے پر رات گذارنےکےلیے انہوں نے ایک پہاڑ کے غار میں پناہ لی ، اور اس میں اندر داخل ہوگئے ، اتنے میں پہاڑ سے ایک چٹان لڑھکی اور اس نے غار کا منہ بند کردیا ۔ سب نے کہا: اب اس غار سے تمہیں کوئی چیز نکالنے والی نہیں ، سوائے اس کے کہ تم سب اپنے سب سے زیادہ اچھے عمل کو یاد کرکے اللہ تعالیٰ سے دعا کرو۔ اس پر ان میں سے ایک شخص نے اپنی دعا شروع کی کہ اے اللہ ! میرے ماں باپ بہت بوڑھے تھے اور میں روزانہ ان سے پہلے گھر میں کسی کو بھی دودھ نہیں پلاتا تھا۔ نہ اپنے بال بچوں کو ، اور نہ اپنے غلام وغیرہ کو ، ایک دن مجھے ایک چیز کی تلاش میں رات ہوگئی، اور جب میں گھر واپس ہوا تو وہ (میرے ماں باپ) سوچکے تھے ۔ پھر میں نے ان کےلیے شام کا دودھ نکالا ۔ جب ان کے پاس لایا تو وہ سوئے ہوئے تھے ۔ مجھے یہ بات ہرگز اچھی معلوم نہیں ہوئی کہ ان سے پہلے اپنے بال بچوں یا اپنے کسی غلام کو دودھ پلاؤں ، اس لیے میں ان کے سرہانے کھڑا رہا ۔ دودھ کا پیالہ میرے ہاتھ میں تھا ، اور میں ان کے جاگنے کا انتظار کررہا تھا ۔ یہاں تک کہ صبح ہوگئی ۔ اب میرے ماں باپ جاگے اور انہوں نے اپنا شام کا دودھ اس وقت پیا ، اے اللہ ! اگر میں نے یہ کام محض تیری رضا حاصل کرنے کےلیے کیا تھا تو اس چٹان کی آفت کو ہم سے ہٹادے۔ اس دعا کے نتیجہ میں وہ غار تھوڑا سا کھل گیا ۔ مگر نکلنا اب بھی ممکن نہ تھا ۔ رسول اللہﷺنے فرمایا: پھر دوسرے نے دعا کی ، اے اللہ !میرے چچا کی ایک لڑکی تھی ، جو سب سے زیادہ مجھے محبوب تھی۔ میں نے اس کے ساتھ برا کام کرنا چاہا ، لیکن اس نے نہ مانا ۔ اسی زمانہ میں ایک سال قحط پڑا۔ تو وہ میرے پاس آئی ، میں نے اسے ایک سو بیس دینار اس شرط پر دئیے کہ وہ خلوت میں مجھ سے برا کام کرائے۔چنانچہ وہ راضی ہوگئی ، اب میں اس پر قابو پاچکا تھا۔لیکن اس نے کہا کہ تمہارے لیے میں جائز نہیں کرتی کہ اس مہر کو تم حق کے بغیر توڑو۔ یہ سن کر میں اپنے برے ارادے سے باز آگیا۔ اور وہاں سے چلا آیا ۔ حالانکہ وہ مجھے سب سے بڑھ کر محبوب تھی ۔ اور میں نے اپنا دیا ہوا سونا بھی واپس نہیں لیا۔اے اللہ! اگر یہ کام میں نے صرف تیری رضا کےلیے کیا تھا، تو ہماری اس مصیبت کو دور کردے ۔ چنانچہ چٹان ذرا سی اور کھسکی ۔ لیکن اب بھی اس سے باہر نہیں نکلا جاسکتا تھا۔نبیﷺنے فرمایا: تیسرے شخص نے دعا کی اے اللہ ! میں نے چند مزدور کئے تھے پھر سب کو ان کی مزدوری پوری دے دی۔ مگر ایک مزدور ایسا نکلا کہ وہ اپنی مزدوری ہی چھوڑ گیا ۔ میں نے اس کی مزدوری کو کاروبار میں لگا دیا اور بہت کچھ نفع حاصل ہوگیا ۔ پھر کچھ دنوں کے بعد وہی مزدور میرے پاس آیا اور کہنے لگا :اللہ کے بندے !مجھے میری مزدوری دے دے ۔ میں نے کہا: یہ جو کچھ تو دیکھ رہا ہے ۔ اونٹ ، گائے ، بکری ، اور غلام یہ سب تمہاری مزدوری ہی ہے وہ کہنے لگا: اللہ کے بندے ! مجھ سے مذاق نہ کر۔ میں نے کہا: مذاق نہیں کرتا۔ چنانچہ اس شخص نے سب کچھ لیا اور اپنے ساتھ لے گیا ۔ ایک چیز بھی اس میں سے باقی نہیں چھوڑی ۔ تو اے اللہ ! اگر میں نے یہ سب کچھ تیری رضا مندی حاصل کرنے کےلیے کیا تھا تو ہماری اس مصیبت کو دور کردے۔ چنانچہ وہ چٹان ہٹ گئی اور وہ سب باہر نکل کر چلے گئے۔

Chapter No: 13

باب مَنْ آجَرَ نَفْسَهُ لِيَحْمِلَ عَلَى ظَهْرِهِ ثُمَّ تَصَدَّقَ بِهِ وَأُجْرَةِ الْحَمَّالِ‏

One who employs himself to carry loads on his back and then gives in charity from his wages, and (what is said about) the wages of porters.

باب: کوئی شخص حمال بن کو مزدوری کرے پھر اس کو خیرات کرے اور حمال کی اجرت کابیان ۔

حَدَّثَنَا سَعِيدُ بْنُ يَحْيَى بْنِ سَعِيدٍ، حَدَّثَنَا أَبِي، حَدَّثَنَا الأَعْمَشُ، عَنْ شَقِيقٍ، عَنْ أَبِي مَسْعُودٍ الأَنْصَارِيِّ ـ رضى الله عنه ـ قَالَ كَانَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم إِذَا أَمَرَ بِالصَّدَقَةِ انْطَلَقَ أَحَدُنَا إِلَى السُّوقِ فَيُحَامِلُ فَيُصِيبُ الْمُدَّ، وَإِنَّ لِبَعْضِهِمْ لَمِائَةَ أَلْفٍ، قَالَ مَا نُرَاهُ إِلاَّ نَفْسَهُ

Narrated By Abu Mas'ud Al-Ansari : Whenever Allah's Apostle ordered us to give in charity we would go to the market and work as porters to earn a Mudd (two hand-full) (of foodstuff) but now some of us have one-hundred thousand Dirhams or Diners. (The sub-narrator) Shaqiq said, "I think Abu Mas'ud meant himself by saying (some of us).

حضرت ابو مسعود انصاری رضی اللہ عنہ سےروایت ہے کہ انہوں نے کہا:رسول اللہﷺ جب ہمیں صدقہ کرنے کا حکم دیا ، تو بعض لوگ بازاروں میں جاکر بوجھ اٹھاتے جن سے ایک مدمزدوری ملتی (وہ اس میں سے بھی صدقہ کرتے) آج ان میں سے کسی کے پاس لاکھ لاکھ (درہم یا دینار ) موجود ہیں ۔ شقیق نے کہا: ہمارا خیال ہے کہ ابو مسعود رضی اللہ عنہ نے کسی سے اپنے ہی تئیں مراد لیا تھا۔

Chapter No: 14

باب أَجْرِ السَّمْسَرَةِ

Wages of a broker.

باب: دلالی کی اجرت لینا

وَلَمْ يَرَ ابْنُ سِيرِينَ وَعَطَاءٌ وَإِبْرَاهِيمُ وَالْحَسَنُ بِأَجْرِ السِّمْسَارِ بَأْسًا‏.‏ وَقَالَ ابْنُ عَبَّاسٍ لاَ بَأْسَ أَنْ يَقُولَ بِعْ هَذَا الثَّوْبَ فَمَا زَادَ عَلَى كَذَا وَكَذَا فَهُوَ لَكَ‏.‏ وَقَالَ ابْنُ سِيرِينَ إِذَا قَالَ بِعْهُ بِكَذَا فَمَا كَانَ مِنْ رِبْحٍ فَهْوَ لَكَ، أَوْ بَيْنِي وَبَيْنَكَ، فَلاَ بَأْسَ بِهِ‏.‏ وَقَالَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ الْمُسْلِمُونَ عِنْدَ شُرُوطِهِمْ ‏"‏‏

Ibn Sirin, Ata, Ibrahim and Al-Hasan did not see any harm in them. Ibn Abbas said, "There is no harm if one says (to a broker), sell the garment for such a price and whatever more you get is for you." Ibn Sirin said, "If one says to a broker, sell it for such a price and if you get more, the profit will be for you or divided between us, there is no harm in it." The Prophet (s.a.w) said, "Muslims should abide by their conditions."

اور ابن سیرین اور عطااور ابراہیم اور حسن بصری نے دلالی کی اجرت بری نہیں سمجھی اور ابن عباسؓ نے کہا اس میں کوئی برائی نہیں کہ ایک شخص دوسرے سے کہے یہ کپڑا اتنے داموں کو بیچ اگر زیادہ کو بکے تو وہ تو لے لے اور ابن سیرین نے کہا اگر کسی سے یوں کہے یہ چیز اتنے کو بیچ اور جو فائدہ ہو وہ میرا تیرا دونوں کا ہے تو اس میں کوئی برائی نہیں ہے اور نبی ﷺ نے فرمایا ہے کہ مسلمان اپنی شرطوں پر قائم رہیں گے۔

حَدَّثَنَا مُسَدَّدٌ، حَدَّثَنَا عَبْدُ الْوَاحِدِ، حَدَّثَنَا مَعْمَرٌ، عَنِ ابْنِ طَاوُسٍ، عَنْ أَبِيهِ، عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ ـ رضى الله عنهما ـ نَهَى رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم أَنْ يُتَلَقَّى الرُّكْبَانُ، وَلاَ يَبِيعَ حَاضِرٌ لِبَادٍ‏.‏ قُلْتُ يَا ابْنَ عَبَّاسٍ مَا قَوْلُهُ لاَ يَبِيعُ حَاضِرٌ لِبَادٍ قَالَ لاَ يَكُونُ لَهُ سِمْسَارًا‏

Narrated By Tawus : Ibn 'Abbas said, "The Prophet forbade the meeting of caravans (on the way) and ordained that no townsman is permitted to sell things on behalf of a bedouin." I asked Ibn 'Abbas, "What is the meaning of his saying, 'No townsman is permitted to sell things on behalf of a bedouin.' " He replied, "He should not work as a broker for him."

حضرت ابن عباس رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ نبیﷺنے (تجارتی ) قافلوں سے (منڈی سے آگے جاکر) ملاقات کرنے سے منع فرمایا تھا۔ اور یہ کہ شہری دیہاتی کا مال نہ بیچیں ، میں نے پوچھا ، اے ابن عباس رضی اللہ عنہ ! "شہری دیہاتی کا مال نہ بیچیں" کا کیا مطلب ہے ؟ انہوں نے فرمایا: مراد یہ ہے کہ ان کے دلال نہ بنیں۔

Chapter No: 15

باب هَلْ يُؤَاجِرُ الرَّجُلُ نَفْسَهُ مِنْ مُشْرِكٍ فِي أَرْضِ الْحَرْبِ

Is it permissible for a Muslim to work as an employee for the Pagans in a land of infidelity?

باب: کیا کوئی شخص کسی مشرک کی دارالحرب میں مزدوری کر سکتا ہے۔

حَدَّثَنَا عُمَرُ بْنُ حَفْصٍ، حَدَّثَنَا أَبِي، حَدَّثَنَا الأَعْمَشُ، عَنْ مُسْلِمٍ، عَنْ مَسْرُوقٍ، حَدَّثَنَا خَبَّابٌ، قَالَ كُنْتُ رَجُلاً قَيْنًا فَعَمِلْتُ لِلْعَاصِ بْنِ وَائِلٍ فَاجْتَمَعَ لِي عِنْدَهُ فَأَتَيْتُهُ أَتَقَاضَاهُ فَقَالَ لاَ وَاللَّهِ لاَ أَقْضِيكَ حَتَّى تَكْفُرَ بِمُحَمَّدٍ‏.‏ فَقُلْتُ أَمَا وَاللَّهِ حَتَّى تَمُوتَ ثُمَّ تُبْعَثَ فَلاَ‏.‏ قَالَ وَإِنِّي لَمَيِّتٌ ثُمَّ مَبْعُوثٌ قُلْتُ نَعَمْ‏.‏ قَالَ فَإِنَّهُ سَيَكُونُ لِي ثَمَّ مَالٌ وَوَلَدٌ فَأَقْضِيكَ‏.‏ فَأَنْزَلَ اللَّهُ تَعَالَى ‏{‏أَفَرَأَيْتَ الَّذِي كَفَرَ بِآيَاتِنَا وَقَالَ لأُوتَيَنَّ مَالاً وَوَلَدًا‏}‏

Narrated By Khabbab : I was a blacksmith and did some work for Al-'As bin Wail. When he owed me some money for my work, I went to him to ask for that amount. He said, "I will not pay you unless you disbelieve in Muhammad." I said, "By Allah! I will never do that till you die and be resurrected." He said, "Will I be dead and then resurrected after my death?" I said, "Yes." He said, "There I will have property and offspring and then I will pay you your due." Then Allah revealed. 'Have you seen him who disbelieved in Our signs, and yet says: I will be given property and offspring?' (19.77)

حضرت خباب بن ارت رضی اللہ عنہ نے بیان کیا کہ میں لوہار تھا ، میں نے عاص بن وائل کا کام کیا ۔ جب میری بہت سی مزدوری اس کے سر چڑھ گئی ، تو میں اس کے پاس تقاضا کرنے آیا ، وہ کہنے لگا کہ اللہ کی قسم! میں تمہاری مزدوری اس وقت تک نہیں دوں گا جب تک تم محمد ﷺسے نہ پھر جاؤ۔ میں نے کہا: اللہ کی قسم! یہ تو اس وقت تک بھی نہ ہوگا جب تو مرکے دوبارہ زندہ ہوگا۔اس نے کہا: کیا میں مرنے کے بعد پھر دوبارہ زندہ کیا جاؤں گا ؟ میں نے کہا: ہاں! اس پر وہ بولا پھر کیا ہے ۔ وہیں میرے پاس مال اور اولاد ہوگی ، اور وہیں میں تمہارا قرض ادا کردوں گا۔ اس پر قرآن مجید کی یہ آیت نازل ہوئی " اے پیغمبر! کیا تو نے اس شخص کو دیکھا، جس نے ہماری آیتوں کا انکار کیا ۔ اور کہا: مجھے ضرور وہاں مال و اولاد دی جائے گی۔

Chapter No: 16

باب مَا يُعْطَى فِي الرُّقْيَةِ عَلَى أَحْيَاءِ الْعَرَبِ بِفَاتِحَةِ الْكِتَابِ

What is paid for Ruqya (i.e., Divine Speech recited as a means of curing diseases) with Surat Al-Fatiha, when practised over an Arab tribe.

باب: سورت فاتحہ پڑھ کر عربوں پر پھونکنا اور اس کی اجرت لینا۔

وَقَالَ ابْنُ عَبَّاسٍ عَنِ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ أَحَقُّ مَا أَخَذْتُمْ عَلَيْهِ أَجْرًا كِتَابُ اللَّهِ ‏"‏‏.‏ وَقَالَ الشَّعْبِيُّ لاَ يَشْتَرِطُ الْمُعَلِّمُ إِلاَّ أَنْ يُعْطَى شَيْئًا فَلْيَقْبَلْهُ وَقَالَ الْحَكَمُ لَمْ أَسْمَعْ أَحَدًا كَرِهَ أَجْرَ الْمُعَلِّمِ‏.‏ وَأَعْطَى الْحَسَنُ دَرَاهِمَ عَشَرَةً‏.‏ وَلَمْ يَرَ ابْنُ سِيرِينَ بِأَجْرِ الْقَسَّامِ بَأْسًا‏.‏ وَقَالَ كَانَ يُقَالُ السُّحْتُ الرِّشْوَةُ فِي الْحُكْمِ‏.‏ وَكَانُوا يُعْطَوْنَ عَلَى الْخَرْصِ‏.‏

And Ibn Abbas (r.a) narrated from the Prophet (s.a.w), "Of all the jobs, teaching the Book of Allah against getting paid is the best." And Ash-Shabi said, "The teacher of the Quran should not place a condition. If he is given something without asking for it, he should accept it." And Hakam said, "I have never heard from anyone that the wage for a teacher is disliked." And Al-Hasan gave 10 dirhams to the teacher and Ibn Sirin did not consider the wage of Kassam (a person appointed on the treasury) as disliked. And he said Suhut is only considered bribery when given to the one who is a Judge. And the people used to give wages to the person who did the estimation.

اور ابن عباسؓ نےنبیﷺ سے نقل کیا کہ سب کاموں سے زیادہ اجرت لینے کے لائق اللہ کی کتاب ہے۔ اور شعبی نے کہا قرآن سکھانے والا اجرت کی شرط نہ کرے اگر اس کو (بن مانگے) کچھ دیں تو قبول کر لے اور حکم نے کہا میں نے کسی سے نہیں سنا جس نے معلم کی اجرت مکر وہ رکھی ہو اور حسن نے معلم کودس درم اجرت کے دیے اور ابن سیرین نے تقسیم کی اجرت کو برا نہیں سمجھا اور کہا سحت اس کو کہتے ہیں کہ حاکم فیصلہ کرنے میں رشوت لےاور انچنا(انداز)کرنے کی اجرت دی جاتی تھی۔

حَدَّثَنَا أَبُو النُّعْمَانِ، حَدَّثَنَا أَبُو عَوَانَةَ، عَنْ أَبِي بِشْرٍ، عَنْ أَبِي الْمُتَوَكِّلِ، عَنْ أَبِي سَعِيدٍ ـ رضى الله عنه ـ قَالَ انْطَلَقَ نَفَرٌ مِنْ أَصْحَابِ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم فِي سَفْرَةٍ سَافَرُوهَا حَتَّى نَزَلُوا عَلَى حَىٍّ مِنْ أَحْيَاءِ الْعَرَبِ فَاسْتَضَافُوهُمْ، فَأَبَوْا أَنْ يُضَيِّفُوهُمْ، فَلُدِغَ سَيِّدُ ذَلِكَ الْحَىِّ، فَسَعَوْا لَهُ بِكُلِّ شَىْءٍ لاَ يَنْفَعُهُ شَىْءٌ، فَقَالَ بَعْضُهُمْ لَوْ أَتَيْتُمْ هَؤُلاَءِ الرَّهْطَ الَّذِينَ نَزَلُوا لَعَلَّهُ أَنْ يَكُونَ عِنْدَ بَعْضِهِمْ شَىْءٌ، فَأَتَوْهُمْ، فَقَالُوا يَا أَيُّهَا الرَّهْطُ، إِنَّ سَيِّدَنَا لُدِغَ، وَسَعَيْنَا لَهُ بِكُلِّ شَىْءٍ لاَ يَنْفَعُهُ، فَهَلْ عِنْدَ أَحَدٍ مِنْكُمْ مِنْ شَىْءٍ فَقَالَ بَعْضُهُمْ نَعَمْ وَاللَّهِ إِنِّي لأَرْقِي، وَلَكِنْ وَاللَّهِ لَقَدِ اسْتَضَفْنَاكُمْ فَلَمْ تُضِيِّفُونَا، فَمَا أَنَا بِرَاقٍ لَكُمْ حَتَّى تَجْعَلُوا لَنَا جُعْلاً‏.‏ فَصَالَحُوهُمْ عَلَى قَطِيعٍ مِنَ الْغَنَمِ، فَانْطَلَقَ يَتْفِلُ عَلَيْهِ وَيَقْرَأُ ‏{‏الْحَمْدُ لِلَّهِ رَبِّ الْعَالَمِينَ‏}‏ فَكَأَنَّمَا نُشِطَ مِنْ عِقَالٍ، فَانْطَلَقَ يَمْشِي وَمَا بِهِ قَلَبَةٌ، قَالَ فَأَوْفَوْهُمْ جُعْلَهُمُ الَّذِي صَالَحُوهُمْ عَلَيْهِ، فَقَالَ بَعْضُهُمُ اقْسِمُوا‏.‏ فَقَالَ الَّذِي رَقَى لاَ تَفْعَلُوا، حَتَّى نَأْتِيَ النَّبِيَّ صلى الله عليه وسلم فَنَذْكُرَ لَهُ الَّذِي كَانَ، فَنَنْظُرَ مَا يَأْمُرُنَا‏.‏ فَقَدِمُوا عَلَى رَسُولِ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم فَذَكَرُوا لَهُ، فَقَالَ ‏"‏ وَمَا يُدْرِيكَ أَنَّهَا رُقْيَةٌ ـ ثُمَّ قَالَ ـ قَدْ أَصَبْتُمُ اقْسِمُوا وَاضْرِبُوا لِي مَعَكُمْ سَهْمًا ‏"‏‏.‏ فَضَحِكَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم‏.‏ وَقَالَ شُعْبَةُ حَدَّثَنَا أَبُو بِشْرٍ سَمِعْتُ أَبَا الْمُتَوَكِّلِ بِهَذَا‏

Narrated By Abu Said : Some of the companions of the Prophet went on a journey till they reached some of the 'Arab tribes (at night). They asked the latter to treat them as their guests but they refused. The chief of that tribe was then bitten by a snake (or stung by a scorpion) and they tried their best to cure him but in vain. Some of them said (to the others), "Nothing has benefited him, will you go to the people who resided here at night, it may be that some of them might possess something (as treatment)," They went to the group of the companions (of the Prophet) and said, "Our chief has been bitten by a snake (or stung by a scorpion) and we have tried everything but he has not benefited. Have you got anything (useful)?" One of them replied, "Yes, by Allah! I can recite a Ruqya, but as you have refused to accept us as your guests, I will not recite the Ruqya for you unless you fix for us some wages for it." They agrees to pay them a flock of sheep. One of them then went and recited (Surat-ul-Fatiha): 'All the praises are for the Lord of the Worlds' and puffed over the chief who became all right as if he was released from a chain, and got up and started walking, showing no signs of sickness. They paid them what they agreed to pay. Some of them (i.e. the companions) then suggested to divide their earnings among themselves, but the one who performed the recitation said, "Do not divide them till we go to the Prophet and narrate the whole story to him, and wait for his order." So, they went to Allah's Apostle and narrated the story. Allah's Apostle asked, "How did you come to know that Surat-ul-Fatiha was recited as Ruqya?" Then he added, "You have done the right thing. Divide (what you have earned) and assign a share for me as well." The Prophet smiled thereupon.

حضرت ابو سعید خدری رضی اللہ عنہ نے بیان کیا کہ آپﷺکے کچھ صحابہ رضی اللہ عنہم سفر میں تھے ۔ دوران سفر میں وہ عرب کے ایک قبیلہ پر اترے، صحابہ نے چاہا کہ قبیلہ والے انہیں اپنا مہمان بنالیں۔لیکن انہوں نے مہمانی نہیں کی، بلکہ صاف انکار کردیا۔ اتفاق سے اسی قبیلہ کے سردار کو سانپ نے ڈس لیا، قبیلہ والوں نے ہر طرح کی کوشش کر ڈالی، لیکن ان کا سردار اچھا نہ ہوا ۔ ان کے کسی آدمی نے کہا: چلو ان لوگوں سے بھی پوچھیں جو یہاں آکر اترے ہیں ۔ ممکن ہے کوئی دم جھاڑے کی چیز ان کے پاس ہو ۔ چنانچہ قبیلہ والے ان کے پاس آئے اور کہا: بھائیو! ہمارے سردار کو سانپ نے ڈس لیا ہے ۔ اس کےلیے ہم نے ہر قسم کی کوشش کرڈالی لیکن کچھ فائدہ نہ ہوا ۔ کیا تمہارے پاس کوئی چیز دم کرنے کی ہے ؟ ایک صحابی نے کہا: قسم اللہ کی میں اسے جھاڑ دوں گا ۔ لیکن ہم نے تم سے میزبانی کےلیے کہا تھا اور تم نے اس سے انکار کردیا ۔ اس لیے اب میں بھی اجرت کے بغیر نہیں جھاڑ سکتا ، آخر بکریوں کے ایک گلے پر ان کا معاملہ طے ہوا۔ وہ صحابی وہاں گئے اور الحمد للہ رب العالمین پڑھ پڑھ کر دم کیا۔ ایسا معلوم ہوا جیسے کسی کی رسی کھول دی گئی ہو ۔ وہ سردار اٹھ کر چلنے لگا ، تکلیف و درد کا نام و نشان بھی باقی نہیں تھا۔ بیان کیا کہ پھر انہوں نے طے شدہ اجرت صحابہ کو ادا کردی۔ کسی نے کہا: اسے تقسیم کرلو۔ لیکن جنہوں نے جھاڑا تھا، وہ بولے کہ نبیﷺکی خدمت میں حاضر ہوکر پہلے ہم آپ اس کا ذکر کرلیں ۔ اس کے بعد دیکھیں گے کہ آپﷺکیا حکم دیتے ہیں ۔ چنانچہ سب حضرات رسول اللہﷺکی خدمت میں حاضر ہوئے اور آپ سے اس کا ذکر کیا۔ آپﷺنے فرمایا: یہ تم کو کیسے معلوم ہوا کہ سورۂ فاتحہ بھی ایک رقیہ ہے ؟ اس کے بعد آپﷺنے فرمایا: تم نے ٹھیک کیا ۔ اسے تقسیم کرلو اور ایک میرا حصہ بھی لگاؤ ۔ یہ فرماکر رسول اللہﷺہنس پڑے۔

Chapter No: 17

باب ضَرِيبَةِ الْعَبْدِ، وَتَعَاهُدِ ضَرَائِبِ الإِمَاءِ

The taxes imposed on the slaves by their masters and the leniency in imposing taxes on female slaves.

باب : لونڈی پر ہر روز ایک رقم مقرر کرنا۔

حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ يُوسُفَ، حَدَّثَنَا سُفْيَانُ، عَنْ حُمَيْدٍ الطَّوِيلِ، عَنْ أَنَسِ بْنِ مَالِكٍ ـ رضى الله عنه ـ قَالَ حَجَمَ أَبُو طَيْبَةَ النَّبِيَّ صلى الله عليه وسلم، فَأَمَرَ لَهُ بِصَاعٍ أَوْ صَاعَيْنِ مِنْ طَعَامٍ، وَكَلَّمَ مَوَالِيَهُ فَخَفَّفَ عَنْ غَلَّتِهِ أَوْ ضَرِيبَتِهِ‏

Narrated By Anas bin Malik : When Abu Taiba cupped the Prophet and the Prophet ordered that he be paid one or two Sas of foodstuff and he interceded with his masters to reduce his taxes.

حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ سےہے کہ انہوں نے کہا: ابو طیبہ نے نبیﷺکو پچھنا لگایا آپﷺ نے اس کو (اجرت میں) ایک صاع یا دو صاع اناج دینے کا حکم دیا ، اور اس کے مالکوں سے سفارش کی کہ جو محصول اس پر مقرر ہے اس میں تخفیف کر دیں۔

Chapter No: 18

باب خَرَاجِ الْحَجَّامِ

The wages of one who has the profession of cupping.

باب : حجام کی اجرت کابیان ۔

حَدَّثَنَا مُوسَى بْنُ إِسْمَاعِيلَ، حَدَّثَنَا وُهَيْبٌ، حَدَّثَنَا ابْنُ طَاوُسٍ، عَنْ أَبِيهِ، عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ ـ رضى الله عنهما ـ قَالَ احْتَجَمَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم، وَأَعْطَى الْحَجَّامَ أَجْرَهُ‏

Narrated By Ibn 'Abbas : When the Prophet was cupped, he paid the man who cupped him his wages.

حضرت ابن عباس رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ نبیﷺنے پچھنا لگایا اور حجام کو اس کی اجرت دی۔


حَدَّثَنَا مُسَدَّدٌ، حَدَّثَنَا يَزِيدُ بْنُ زُرَيْعٍ، عَنْ خَالِدٍ، عَنْ عِكْرِمَةَ، عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ ـ رضى الله عنهما ـ قَالَ احْتَجَمَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم وَأَعْطَى الْحَجَّامَ أَجْرَهُ، وَلَوْ عَلِمَ كَرَاهِيَةً لَمْ يُعْطِهِ‏

Narrated By Ibn 'Abbas : When the Prophet was cupped, he paid the man who cupped him his wages. If it had been undesirable he would not have paid him.

حضرت ابن عباس رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ نبیﷺنے پچھنا لگایا اور حجام کو اس کی اجرت دی۔ اگر یہ مکروہ ہوتاتو آپﷺاس کو اجرت نہ دیتے۔


حَدَّثَنَا أَبُو نُعَيْمٍ، حَدَّثَنَا مِسْعَرٌ، عَنْ عَمْرِو بْنِ عَامِرٍ، قَالَ سَمِعْتُ أَنَسًا ـ رضى الله عنه ـ يَقُولُ كَانَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم يَحْتَجِمُ، وَلَمْ يَكُنْ يَظْلِمُ أَحَدًا أَجْرَهُ‏

Narrated By Anas : The Prophet used to get cupped and would never withhold the wages of any person.

عمرو بن عامر سے روایت ہے انہوں نے کہا: میں نے حضرت انس رضی اللہ عنہ سے سنا ، انہوں نے کہا: نبیﷺ پچھنا لگاتے تھے اور کسی کی اجرت آپﷺ نہیں دبا رکھتے تھے۔

Chapter No: 19

باب مَنْ كَلَّمَ مَوَالِيَ الْعَبْدِ أَنْ يُخَفِّفُوا عَنْهُ مِنْ خَرَاجِهِ

Whoever appealed to the masters of a slave to reduce his taxes.

باب: کسی غلام کے مالک سے اس پر کا محصول کم کرنے کے لیے سفارش کرنا۔

حَدَّثَنَا آدَمُ، حَدَّثَنَا شُعْبَةُ، عَنْ حُمَيْدٍ الطَّوِيلِ، عَنْ أَنَسِ بْنِ مَالِكٍ ـ رضى الله عنه ـ قَالَ دَعَا النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم غُلاَمًا حَجَّامًا فَحَجَمَهُ، وَأَمَرَ لَهُ بِصَاعٍ أَوْ صَاعَيْنِ، أَوْ مُدٍّ أَوْ مُدَّيْنِ، وَكَلَّمَ فِيهِ فَخُفِّفَ مِنْ ضَرِيبَتِهِ‏

Narrated By Anas bin Malik : The Prophet sent for a slave who had the profession of cupping, and he cupped him. The Prophet ordered that he be paid one or two Sas, or one or two Mudds of foodstuff, and appealed to his masters to reduce his taxes.

حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ سے انہوں نے کہا نبیﷺ نے ایک حجام غلام ابو طیبہ سے پچھنا لگوایا اور ایک صاع یا دو صاع یا ایک مد یا دو مد اناج اس کو دلوایا اور اس کے لیے سفارش کی تو اس کا محصول کم کر دیا گیا۔

Chapter No: 20

باب كَسْبِ الْبَغِيِّ وَالإِمَاءِ

The earning of prostitutes and female slaves.

باب: رنڈی اور فاحشہ لونڈی کی خرچی کابیان

وَكَرِهَ إِبْرَاهِيمُ أَجْرَ النَّائِحَةِ وَالْمُغَنِّيَةِ‏.‏ وَقَوْلُ اللَّهِ تَعَالَى ‏{‏وَلاَ تُكْرِهُوا فَتَيَاتِكُمْ عَلَى الْبِغَاءِ إِنْ أَرَدْنَ تَحَصُّنًا لِتَبْتَغُوا عَرَضَ الْحَيَاةِ الدُّنْيَا وَمَنْ يُكْرِهْهُنَّ فَإِنَّ اللَّهَ مِنْ بَعْدِ إِكْرَاهِهِنَّ غَفُورٌ رَحِيمٌ‏}‏‏.‏ ‏{‏وَقَالَ مُجَاهِدٌ‏}‏ ‏{‏فَتَيَاتِكُمْ‏}‏ إِمَاؤُكُمْ‏

Ibrahim hated the earnings of female wailers and female singers. The Statement of Allah, "... And force not your maids to prostitution, if they desire chastity, in order that you may make a gain in the goods of this worldly life. But if anyone compels them (to prostitution) then after such compulsion, Allah is Oft-forgiving, Most Merciful (to those women)" (V.24:33). Mujahid said that this Ayat was for the female-slaves.

اور ابراہیم نخعی نے نوحہ کرنے والی اور گانے والی کی اجرت مکروہ سمجھی ہے اور اللہ تعالٰی نے (سورت نور میں ) فرمایا اپنی باندیوں پر حرام کرانے کے لیے زبردستی نہ کرو دنیا کا مال متاع کھانے کو اگر وہ حرام سے بچنا چاہیں اور جو کوئی ان پر زبردستی کرے تو اس کے بعد خداوند کریم بخشنے والا مہربان ہےمجاہد نے کہا فتیات سے قرآن میں لونڈیاں مراد ہیں۔

حَدَّثَنَا قُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ، عَنْ مَالِكٍ، عَنِ ابْنِ شِهَابٍ، عَنْ أَبِي بَكْرِ بْنِ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ الْحَارِثِ بْنِ هِشَامٍ، عَنْ أَبِي مَسْعُودٍ الأَنْصَارِيِّ ـ رضى الله عنه ـ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم نَهَى عَنْ ثَمَنِ الْكَلْبِ وَمَهْرِ الْبَغِيِّ وَحُلْوَانِ الْكَاهِنِ‏

Narrated By Abu Masud Al-Ansari : Allah's Apostle regarded illegal the price of a dog, the earnings of a prostitute, and the charges taken by a soothsayer.

حضرت ابو مسعود انصاری رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ انہوں نے کہا: رسول اللہ ﷺ نے کتے کی قیمت اور زانیہ کی کمائی اور نجومی کی اجرت سے منع فرمایا۔


حَدَّثَنَا مُسْلِمُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ، حَدَّثَنَا شُعْبَةُ، عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ جُحَادَةَ، عَنْ أَبِي حَازِمٍ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ ـ رضى الله عنه ـ قَالَ نَهَى النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم عَنْ كَسْبِ الإِمَاءِ‏

Narrated By Abu Huraira : The Prophet prohibited the earnings of slave girls (through prostitution).

حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ نبیﷺ نے لو نڈیوں کی (زنا کی ) کمائی سے منع فرمایا۔

123