Change Display Options

 
 
 
 
 
 

Signin to Ahadith

 
 
 
  Forgot Password?
 

Forgot Password?

 
 
 
 

Register an account

 
   
 
  Can you solve this question?
  =      

Edit your Profile

 
 
 
   
 
 
 

Change Password

 
 
 
 

Bookmark Hadith

 
Give a title to your bookmarked hadith:


Sayings of the Messenger احادیثِ رسول اللہ ﷺ

  1. Revelation
    كِتابُ بَدءِ الوَحي
  2. Belief
    كتاب الإيمان
  3. Knowledge
    كتاب العِلم
  4. Ablutions
    كِتاب الوضوء
  5. Bathing
    كتاب الغسل
  6. Menstrual Periods
    كتاب الحيض
  7. Tayammum
    كِتاب التيمُّم
  8. Prayers
    كتاب الصلاة
  9. Times of the Prayer
    كتاب مواقيت الصلاة
  10. Call for Prayers
    كتاب الأذان
  11. Friday Prayer
    كتاب الجمعة
  12. Fear Prayer
    أبواب صلاة الخوف
  13. The Two Festivals
    كتاب العيدين
  14. Witr Prayer
    أبواب الوِتر
  15. Invoking Allah for Rain
    أبواب الاستسقاء
  16. Eclipses
    أبواب الكُسُوف
  17. Prostration During Recital of Quran
    أبواب سجود القرآن وسنتها
  18. Shortening the Prayers
    أبواب تقصير
  19. Night Prayer
    كتاب التهجد
  20. Salat in the Holy Masajid
    فضل الصلاة في مسجد مكَّة والمدينة
  21. Actions while Praying
    أبواب العمل في الصلاة
  22. Prostration in Forgetting
    كتاب السهو
  23. Funerals
    كتاب الجنائز
  24. Zakat
    كتاب الزكاة
  25. Pilgrimmage (Hajj)
    كتاب الحج
  26. Umra
    أبواب العمرة
  27. Book of Al-Muhsar
    كتاب المحُصَر
  28. Penalty of Hunting While on Pilgrimmage
    كتاب جزاء الصيد
  29. Virtues of Medina
    كتاب فضائل المدينة
  30. Fasting
    كتاب الصوم
  31. Salat Al-Tarawih
    كتاب صلاة التراويح
  32. Superiority of the Night of Qadr
    كتاب فضل ليلة القدر
  33. Chapters on Itikaf
    أبواب الاعتكاف
  34. Sales (Bargains)
    كتاب البيوع
  35. Book of As-Salam
    كتاب السَّلَم
  36. Pre-Emption
    كتاب الشُّفعةِ
  37. Hiring (Renting)
    كتاب الإجارة
  38. Book of Al-Hawalat
    كتاب الحوالاتِ
  39. Book of Al-Kafala
    كتاب الكفالة
  40. Representation
    كتاب الوكالة
  41. Agriculture
    كتاب المُزارعة
  42. Distribution of water
    كتاب المُساقاة
  43. Loans
    كتاب الاستقراض
  44. Quarrels
    كتاب الخصومات
  45. Al-Luqata
    كتاب اللقطة
  46. Oppressions
    كتاب المظالم
  47. Partnership
    كتاب الشركة
  48. Mortgaging in Occupied Places
    كتاب في الرَّهْنِ في الحضر
  49. Manumission of Slaves
    كتاب العتق
  50. Book of Al-Mukatab
    كتاب المكاتب
  51. Gifts
    كتاب الهبة
  52. Witnesses
    كتاب الشهادات
  53. Peacemaking
    كتاب الصلح
  54. Conditions
    كتاب الشروط
  55. Wills and Testaments
    كتاب الوصايا
  56. Jihad
    كتاب الجهاد والسير
  57. Obligation of Khumus
    كتاب فرض الخُمُس
  58. Al-Jizya
    كتاب الجزية والموادعة
  59. Beginning of Creation
    كتاب بدء الخلق
  60. The Prophets
    كتاب أحاديث الأنبياء
  61. Virtues of the Prophet
    كتاب المناقب
  62. Virtues of the Companions
    كتاب فضائل الصحابة
  63. The Merits of Ansar
    كتاب مناقب الأنصار
  64. Al-Maghazi (Military Expeditions)
    كتاب المغازي
  65. Commentary on the Quran
    كتاب التفسير
    1. Surah Al-Fatiha
    2. Surah Al-Baqarah
    3. Surah Al-Imran
    4. Surah An-Nisa
    5. Surah Al-Maidah
    6. Surah Al-Anam
    7. Surah Al-Araf
    8. Surah Al-Anfal
    9. Barat (Taubah)
    10. Surah Yunus
    11. Surah Hud
    12. Surah Yusuf
    13. Surah Ar-Rad
    14. Surah Ibrahim
    15. Surah Al-Hijr
    16. Surah An-Nahl
    17. Bani Israil (Isra)
    18. Surah Al-Kahf
    19. Surah Maryam
    20. Surah Ta-Ha
    21. Surah Al-Anbiya
    22. Surah Al-Hajj
    23. Surah Al-Muminun
    24. Surah An-Nur
    25. Surah Al-Furqan
    26. Surah Ash-Shuara
    27. Surah An-Naml
    28. Surah Al-Qasas
    29. Surah Al-Ankabut
    30. Surah Ar-Rum
    31. Surah Luqman
    32. Surah As-Sajdah
    33. Surah Al-Ahzab
    34. Surah Saba
    35. Al-Malaikah (Fatir)
    36. Surah Ya-Sin
    37. Surah As-Saffat
    38. Surah Sad
    39. Surah Az-Zumar
    40. Al-Mumin (Ghafir)
    41. Ha-Mim As-Sajdah (Fussilat)
    42. Surah Ash-Shura
    43. Surah Az-Zukhruf
    44. Surah Ad-Dukhan
    45. Surah Al-Jathiyah
    46. Surah Al-Ahqaf
    47. Muhammad (Al-Qital)
    48. Surah Al-Fath
    49. Surah Al-Hujurat
    50. Surah Qaf
    51. Surah Ad-Dhariyat
    52. Surah At-Tur
    53. Surah An-Najm
    54. Surah Al-Qamar
    55. Surah Ar-Rahman
    56. Surah Al-Waqiah
    57. Surah Al-Hadid
    58. Surah Al-Mujadilah
    59. Surah Al-Hashr
    60. Surah Al-Mumtahanah
    61. Surah As-Saff
    62. Surah Al-Jumuah
    63. Surah Al-Munafiqin
    64. Surah Al-Taghabun
    65. Surah At-Talaq
    66. Surah At-Tahrim
    67. Surah Al-Mulk
    68. Surah Nun (Al-Qalam)
    69. Surah Al-Haqqah
    70. Surah Al-Maarij
    71. Surah Nuh
    72. Surah Jinn
    73. Surah Muzzammil
    74. Surah Muddaththir
    75. Surah Qiyamah
    76. Ad-Dahr (Insan)
    77. Surah Al-Mursalat
    78. Surah Naba
    79. Surah An-Naziat
    80. Surah Abasa
    81. Surah At-Takwir
    82. Surah Al-Infitar
    83. Surah Al-Mutaffifin
    84. Surah Al-Inshiqaq
    85. Surah Al-Buruj
    86. Surah At-Tariq
    87. Surah Al-Ala
    88. Surah Al-Ghashiyah
    89. Surah Al-Fajr
    90. Surah Al-Balad
    91. Surah Ash-Shams
    92. Surah Al-Lail
    93. Surah Ad-Duha
    94. Surah Ash-Sharh
    95. Surah At-Tin
    96. Surah Al-Alaq
    97. Surah Al-Qadr
    98. Surah Al-Baiyyinah
    99. Surah Az-Zalzalah
    100. Surah Al-Adiyat
    101. Surah Al-Qariah
    102. Surah At-Takathur
    103. Surah Al-Asr
    104. Surah Al-Humazah
    105. Surah Al-Fil
    106. Surah Quraish
    107. Surah Al-Maun
    108. Surah Al-Kauthar
    109. Surah Al-Kafirun
    110. Surah An-Nasr
    111. Surah Al-Masad
    112. Surah Al-Ikhlas
    113. Surah Al-Falaq
    114. Surah An-Nas
  66. Virtues of the Quran
    كتاب فضائل القرآن
  67. Book of Nikkah
    كتاب النكاح
  68. Book of Divorce
    كتاب الطلاق
  69. Book of Provision
    كتاب النفقات
  70. Food (Meals)
    كتاب الأطعمة
  71. Aqiqa (On Occasion Of Birth)
    كتاب العقيقة
  72. Slaughtering and Hunting
    كتاب الذبائح
  73. Al-Adahi (Sacrifices)
    كتاب الأضاحي
  74. Drinks
    كتاب الأشربة
  75. Patients
    كتاب المرضى
  76. Medicine
    كتاب الطب
  77. Dress
    كتاب اللباس
  78. Good manners
    كتاب الأدب
  79. Asking Permission to Enter
    كتاب الاستئذان
  80. Invocations
    كتاب الدعوات
  81. Ar-Raqaq (Tendering of Heart)
    كتاب الرقاق
  82. Divine Will
    كتاب القدر
  83. Oaths and Vows
    كتاب الأيمان والنذور
  84. Expiation of unfulfilled Oaths
    كتاب كفارات الأيمان
  85. The laws of Inheritance
    كتاب الفرائض
  86. Limits and Punishments Set By Allah
    كتاب الحدود
  87. Blood Money
    كتاب الديات
  88. Dealing With Apostates
    كتاب استتابة المرتدين والمعاندين وقتالهم
  89. Saying Something Under Compulsion
    كتاب الإكراه
  90. Book of Tricks
    كتاب الحيل
  91. Interpretation of Dreams
    كتاب التعبير
  92. Trials and Afflictions
    كتاب الفتن
  93. Judgments
    كتاب الأحكام
  94. Book of Wishes
    كتاب التَّمَنِّي
  95. Accepting News given by a Truthful person
    كتاب أخبار الآحاد
  96. Holding the Quran and Sunnah
    كتاب الاعتصام بالكتاب والسنة
  97. Monotheism
    كتاب التوحيد

 < 1 2 3 4 5 >  Last ›

20. Al-Mann heals eye diseases.



حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ الْمُثَنَّى، حَدَّثَنَا غُنْدَرٌ، حَدَّثَنَا شُعْبَةُ، عَنْ عَبْدِ الْمَلِكِ، سَمِعْتُ عَمْرَو بْنَ حُرَيْثٍ، قَالَ سَمِعْتُ سَعِيدَ بْنَ زَيْدٍ، قَالَ سَمِعْتُ النَّبِيَّ صلى الله عليه وسلم يَقُولُ ‏"‏ الْكَمْأَةُ مِنَ الْمَنِّ، وَمَاؤُهَا شِفَاءٌ لِلْعَيْنِ ‏"‏‏.‏ قَالَ شُعْبَةُ وَأَخْبَرَنِي الْحَكَمُ بْنُ عُتَيْبَةَ عَنِ الْحَسَنِ الْعُرَنِيِّ عَنْ عَمْرِو بْنِ حُرَيْثٍ عَنْ سَعِيدِ بْنِ زَيْدٍ عَنِ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم‏.‏ قَالَ شُعْبَةُ لَمَّا حَدَّثَنِي بِهِ الْحَكَمُ لَمْ أُنْكِرْهُ مِنْ حَدِيثِ عَبْدِ الْمَلِكِ‏

Narrated By Said bin Zaid : I heard the Prophet saying, "Truffles are like Manna (i.e. they grow naturally without man's care) and their water heals eye diseases."

ہم سے محمد بن مثنی نے بیان کیا کہا ہم سے غندر نے کہا ہم سے شعبہ نے انہوں نے عبدالملک بن عمیر سے کہا میں نے عمرو بن حریث سے سنا کہا میں نے سعید بن زید سے کہا میں نے نبیﷺسے آپؐ فرماتے تھے کھنبی من میں داخل ہے اسکا پانی آنکھ کی دوا ہے (اسی سند سے)شعبہؓ نے کہا مجھ سے حکم بن عتیبہ نے خبر دی انہوں نے حسن بن عبداللہ عرنی سے انہوں نے عمروبن حریث سے انہوں نے سعید بن زید سے انہوں نے نبیﷺ سے یہی حدیث شعبہ نے کہا جب یہ حدیث مجھ سے حکم نے بیان کی تو مجھ کو عبدالملک کی روایت کا اعتبار ہو گیا (کیوں کہ عبدالملک کا حافظہ اخیر میں بگڑ گیا تھا شعبہ کو صرف اس کی روایت پر بھروسہ نہ ہوا)

21. Al-Ladud (the medicine which is poured or inserted into one side of the mouth).



حَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ، حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ سَعِيدٍ، حَدَّثَنَا سُفْيَانُ، قَالَ حَدَّثَنِي مُوسَى بْنُ أَبِي عَائِشَةَ، عَنْ عُبَيْدِ اللَّهِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ، عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ، وَعَائِشَةَ، أَنَّ أَبَا بَكْرٍ ـ رضى الله عنه ـ قَبَّلَ النَّبِيَّ صلى الله عليه وسلم وَهْوَ مَيِّتٌ‏

Narrated By Ibn 'Abbas and 'Aisha : Abu Bakr kissed (the forehead of) the Prophet when he was dead.

ہم سے علی بن عبداللہ مدینی نے بیان کیا کہا ہم سے یحییٰ بن سعید قطان نے کہا ہم سے سفیان ثوری نے کہا مجھ سے موسیٰ بن ابی عائشہؓ نے انہوں نے عبیداللہ بن عبداللہ بن عتبہ سے انہوں نے ابن عباسؓ اور عائشہؓ سے کہاابو بکر صدیقؓ نے وفات کے بعد نبیﷺ کو بوسہ دیا (آپؐ کی نعش کو )۔





حَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ، حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ سَعِيدٍ، حَدَّثَنَا سُفْيَانُ، قَالَ حَدَّثَنِي مُوسَى بْنُ أَبِي عَائِشَةَ، عَنْ عُبَيْدِ اللَّهِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ، عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ، وَعَائِشَةَ، أَنَّ أَبَا بَكْرٍ ـ رضى الله عنه ـ قَبَّلَ النَّبِيَّ صلى الله عليه وسلم وَهْوَ مَيِّتٌ‏

Narrated By Ibn 'Abbas and 'Aisha : Abu Bakr kissed (the forehead of) the Prophet when he was dead.

ہم سے علی بن عبداللہ مدینی نے بیان کیا کہا ہم سے یحییٰ بن سعید قطان نے کہا ہم سے سفیان ثوری نے کہا مجھ سے موسیٰ بن ابی عائشہؓ نے انہوں نے عبیداللہ بن عبداللہ بن عتبہ سے انہوں نے ابن عباسؓ اور عائشہؓ سے کہابو بکر صدیق ؓ نے وفات کے بعد نبیﷺ کو بوسہ دیا (آپؐ کی نعش کو )۔





حَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ، حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ سَعِيدٍ، حَدَّثَنَا سُفْيَانُ، قَالَ حَدَّثَنِي مُوسَى بْنُ أَبِي عَائِشَةَ، عَنْ عُبَيْدِ اللَّهِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ، عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ، وَعَائِشَةَ، أَنَّ أَبَا بَكْرٍ ـ رضى الله عنه ـ قَبَّلَ النَّبِيَّ صلى الله عليه وسلم وَهْوَ مَيِّتٌ‏

Narrated By Ibn 'Abbas and 'Aisha : Abu Bakr kissed (the forehead of) the Prophet when he was dead.

ہم سے علی بن عبداللہ مدینی نے بیان کیا کہا ہم سے یحییٰ بن سعید قطان نے کہا ہم سے سفیان ثوری نے کہا مجھ سے موسیٰ بن ابی عائشہؓ نے انہوں نے عبیداللہ بن عبداللہ بن عتبہ سے انہوں نے ابن عباسؓ اور عائشہؓ سے کہاابو بکر صدیقؓ نے وفات کے بعد نبیﷺ کو بوسہ دیا (آپؐ کی نعش کو )۔





قَالَ وَقَالَتْ عَائِشَةُ لَدَدْنَاهُ فِي مَرَضِهِ، فَجَعَلَ يُشِيرُ إِلَيْنَا، أَنْ لاَ تَلُدُّونِي‏.‏ فَقُلْنَا كَرَاهِيَةُ الْمَرِيضِ لِلدَّوَاءِ‏.‏ فَلَمَّا أَفَاقَ قَالَ ‏"‏ أَلَمْ أَنْهَكُمْ أَنْ تَلُدُّونِي ‏"‏‏.‏ قُلْنَا كَرَاهِيَةَ الْمَرِيضِ لِلدَّوَاءِ‏.‏ فَقَالَ ‏"‏ لاَ يَبْقَى فِي الْبَيْتِ أَحَدٌ إِلاَّ لُدَّ ـ وَأَنَا أَنْظُرُ ـ إِلاَّ الْعَبَّاسَ فَإِنَّهُ لَمْ يَشْهَدْكُمْ ‏"

'Aisha added: We put medicine in one side of his mouth but he started waving us not to insert the medicine into his mouth. We said, "He dislikes the medicine as a patient usually does." But when he came to his senses he said, "Did I not forbid you to put medicine (by force) in the side of my mouth?" We said, "We thought it was just because a patient usually dislikes medicine." He said, "None of those who are in the house but will be forced to take medicine in the side of his mouth while I am watching, except Al-'Abbas, for he had not witnessed your deed."

حضرت عائشہؐ کہتی تھیں ہم نے بیماری میں آپؐ کے منہ میں دوا ڈالی آپ اشارے سے فرماتے رہے میرے حلق میں دوا نہ ڈالو ہم سمجھے کہ ایسا ہی ہے جیسے ہر ایک بیمار دوا سے نفرت کرتا ہے جب آپ کو ہوش آیا (بولنے کی طاقت ہوئی)تو آپ نے فرمایا میں نے تم لوگوں کو حلق میں دوا ڈالنے سے منع کیا تھا نا گھر میں جتنے آدمی ہیں ان کے حلق میں دوا ڈالی جائے میں دیکھتا رہو ں گا ایک عباس کو چھوڑدو وہ میرے حلق میں دوا ڈالتے وقت موجود نہ تھے (بعد میں آئے)۔





حَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ، حَدَّثَنَا سُفْيَانُ، عَنِ الزُّهْرِيِّ، أَخْبَرَنِي عُبَيْدُ اللَّهِ، عَنْ أُمِّ قَيْسٍ، قَالَتْ دَخَلْتُ بِابْنٍ لِي عَلَى رَسُولِ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم وَقَدْ أَعْلَقْتُ عَلَيْهِ مِنَ الْعُذْرَةِ فَقَالَ ‏"‏ عَلَى مَا تَدْغَرْنَ أَوْلاَدَكُنَّ بِهَذَا الْعِلاَقِ عَلَيْكُنَّ بِهَذَا الْعُودِ الْهِنْدِيِّ، فَإِنَّ فِيهِ سَبْعَةَ أَشْفِيَةٍ، مِنْهَا ذَاتُ الْجَنْبِ يُسْعَطُ مِنَ الْعُذْرَةِ، وَيُلَدُّ مِنْ ذَاتِ الْجَنْبِ ‏"‏‏.‏ فَسَمِعْتُ الزُّهْرِيَّ يَقُولُ بَيَّنَ لَنَا اثْنَيْنِ وَلَمْ يُبَيِّنْ لَنَا خَمْسَةً‏.‏ قُلْتُ لِسُفْيَانَ فَإِنَّ مَعْمَرًا يَقُولُ أَعْلَقْتُ عَلَيْهِ‏.‏ قَالَ لَمْ يَحْفَظْ أَعْلَقْتُ عَنْهُ، حَفِظْتُهُ مِنْ فِي الزُّهْرِيِّ‏.‏ وَوَصَفَ سُفْيَانُ الْغُلاَمَ يُحَنَّكُ بِالإِصْبَعِ وَأَدْخَلَ سُفْيَانُ فِي حَنَكِهِ، إِنَّمَا يَعْنِي رَفْعَ حَنَكِهِ بِإِصْبَعِهِ، وَلَمْ يَقُلْ أَعْلِقُوا عَنْهُ شَيْئًا‏

Narrated By Um Qais : I went to Allah's Apostle along with a a son of mine whose palate and tonsils I had pressed with my finger as a treatment for a (throat and tonsil) disease. The Prophet said, "Why do you pain your children by pressing their throats! Use Ud Al-Hindi (certain Indian incense) for it cures seven diseases, one of which is pleurisy. It is used as a snuff for treating throat and tonsil disease and it is inserted into one side of the mouth of one suffering from pleurisy."


ہم سے علی بن عبد اللہ مدینی نے بیان کیا کہا ہم سے سفیان بن عیینہ نے انہوں نے زہری سے کہا مجھ کو عبیداللہ بن عبد اللہ بن عتبہ نے خبر دی انہوں نے ام قیس بنت محصن سے انہوں نے کہا میں اپنا ایک بچہ لے کر رسول اللہﷺ کے پاس گئی( اس کا نام معلوم نہیں ہوا) میں نے اس کے ناک میں بتی ڈالی تھی اس کا حلق دبایا تھا چونکہ اس کے گلے میں بیماری ہو گئی تھی آپ نے فرمایا تم اپنے بچوں کو انگلی سے حلق دبا کر کیوں تکلیف دیتے ہو یہ عود ہندی لو۔ ( کوٹ ) اس میں ایک ذات الجنب بھی ہے ( پسلی کا ورم) اگر حلق کی بیماری ہو تو اس کو ناک میں ڈالو اگر ذات الجنب ہو تو حلق میں ڈالو ۔ (لدود کرو ) سفیان کہتے ہیں میں نے زہری سے سنا وہ کہ رہے تھے آپﷺ نے دو بیماریوں کو تو بیان کیا باقی پانچ بیماریاں بیان نہیں فرمائیں علی بن مدینی نے کہا میں نے سفیان سے کہا معمر تو زہری سے یوں مقل کرتا ہے اغلقت علیہ انہوں نے معمر نے یاد نہیں رکھا مجھے یاد ہے زہری نے یوں کہا تھا اعلقت عنہ اور سفیان نے اس تحنیک کو بیان کیا جو بچہ کی پیدائش کے وقت کی جاتی ہے سفیان نے انگلی حلق میں ڈال کر اپنے کوے کو انگلی سے اٹھایا انہوں نے یہ نہیں کہا اَعلِقُوا عَنہُ شَیاً۔

22. Chapter



حَدَّثَنَا بِشْرُ بْنُ مُحَمَّدٍ، أَخْبَرَنَا عَبْدُ اللَّهِ، أَخْبَرَنَا مَعْمَرٌ، وَيُونُسُ، قَالَ الزُّهْرِيُّ أَخْبَرَنِي عُبَيْدُ اللَّهِ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عُتْبَةَ، أَنَّ عَائِشَةَ ـ رضى الله عنها ـ زَوْجَ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم قَالَتْ لَمَّا ثَقُلَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم وَاشْتَدَّ وَجَعُهُ، اسْتَأْذَنَ أَزْوَاجَهُ فِي أَنْ يُمَرَّضَ فِي بَيْتِي، فَأَذِنَّ، فَخَرَجَ بَيْنَ رَجُلَيْنِ، تَخُطُّ رِجْلاَهُ فِي الأَرْضِ بَيْنَ عَبَّاسٍ وَآخَرَ‏.‏ فَأَخْبَرْتُ ابْنَ عَبَّاسٍ قَالَ هَلْ تَدْرِي مَنِ الرَّجُلُ الآخَرُ الَّذِي لَمْ تُسَمِّ عَائِشَةُ قُلْتُ لاَ‏.‏ قَالَ هُوَ عَلِيٌّ‏.‏ قَالَتْ عَائِشَةُ فَقَالَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم بَعْدَ مَا دَخَلَ بَيْتَهَا وَاشْتَدَّ بِهِ وَجَعُهُ ‏"‏ هَرِيقُوا عَلَىَّ مِنْ سَبْعِ قِرَبٍ لَمْ تُحْلَلْ أَوْكِيَتُهُنَّ، لَعَلِّي أَعْهَدُ إِلَى النَّاسِ ‏"‏‏.‏ قَالَتْ فَأَجْلَسْنَاهُ فِي مِخْضَبٍ لِحَفْصَةَ زَوْجِ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم ثُمَّ طَفِقْنَا نَصُبُّ عَلَيْهِ مِنْ تِلْكَ الْقِرَبِ، حَتَّى جَعَلَ يُشِيرُ إِلَيْنَا أَنْ قَدْ فَعَلْتُنَّ‏.‏ قَالَتْ وَخَرَجَ إِلَى النَّاسِ فَصَلَّى لَهُمْ وَخَطَبَهُمْ‏.‏

Narrated By 'Aisha : (The wife of the Prophet) When the health of Allah's Apostle deteriorated and his condition became serious, he asked the permission of all his wives to allow him to be treated In my house, and they allowed him. He came out, supported by two men and his legs were dragging on the ground between Abbas and another man. (The sub-narrator told Ibn 'Abbas who said: Do you know who was the other man whom 'Aisha did not mention? The sub-narrator said: No. Ibn Abbas said: It was 'Ali.) 'Aisha added: When the Prophet entered my house and his disease became aggravated, he said, "Pour on me seven water skins full of water (the tying ribbons of which had not been untied) so that I may give some advice to the people." So we made him sit in a tub belonging to Hafsa, the wife of the Prophet and started pouring water on him from those water skins till he waved us to stop. Then he went out to the people and led them in prayer and delivered a speech before them.

ہم سے بشر بن محمد نے بیان کیا کہا ہم کو عبداللہ بن مبارک نے خبر دی کہا ہم کو معمر اور یونس نے کہا زہری نے کہا مجھ کو عبداللہ بن عبیداللہ بن عتبہ نے خبر دی حضرت عائشہؓ کہتی ہیں جب نبیﷺ کو اٹھنا چلنا دشوار ہوا اور بیماری سخت ہو گئی تو آپ نے اپنی دوسری بیبیوں سے یہ اجازت چاہی کہ بیماری کے دن میرے گھر گزاریں انہوں نے اجازت دیدی آپﷺ اس حال سے برآمد ہوئے کہ آپ کے (ضعف سے) دونوں پاؤں زمین پر لیکر بناتے جاتے تھے ایک طرف عباسؓ آپ کو تھامے تھے ایک طرف اور ایک شخص عبیداللہ کہتے ہیں میں نے یہ حدیث ابن عباسؓ سے بیان کی انہوں نے کہا تجھ کو معلوم ہے وہ دوسرے شخص کون تھے جن کا نام حضرت عائشہؓ نے نہیں لیا ،میں نے کہا نہیں تو انہوں نے کہا وہ حضرت علیؓ تھے خیر حضرت عائشہؓ کہتی ہیں جب آپ میرے گھر میں آچکے تو اور بیماری کی شدت ہو گی ( آپ کو بڑے زور کا بخار تھا) آپ نے فرمایا ایسا کرو سات مشکیں پانی کی لاؤ جن کے منہ نہ کھولے گئے ہوں وہ سب مجھ پر بہاؤ شاید ( میرا بخار کم ہو ) میں لوگوں کو کچھ وصیت کر سکوں حضرت عائشہؓ کہتی ہیں ہم نے آپ کو حفصہؓ کے گنگال میں بٹھلایا اور اوپر سے آپ پر یہ مشکیں ڈالنا شروع کر دیں یہاں تک کہ آپ اشارے سے فرمانے لگے بس کرو بس پھر آپ باہر نکلے اور نماز پڑھائی لوگوں کو خطبہ سنایا۔

23. Al-Udhra (throat or tonsil diseases).



حَدَّثَنَا أَبُو الْيَمَانِ، أَخْبَرَنَا شُعَيْبٌ، عَنِ الزُّهْرِيِّ، قَالَ أَخْبَرَنِي عُبَيْدُ اللَّهِ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ، أَنَّ أُمَّ قَيْسٍ بِنْتَ مِحْصَنٍ الأَسَدِيَّةَ ـ أَسَدَ خُزَيْمَةَ، وَكَانَتْ مِنَ الْمُهَاجِرَاتِ الأُوَلِ اللاَّتِي بَايَعْنَ النَّبِيَّ صلى الله عليه وسلم وَهْىَ أُخْتُ عُكَّاشَةَ ـ أَخْبَرَتْهُ أَنَّهَا أَتَتْ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم بِابْنٍ لَهَا، قَدْ أَعْلَقَتْ عَلَيْهِ مِنَ الْعُذْرَةِ فَقَالَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ عَلَى مَا تَدْغَرْنَ أَوْلاَدَكُنَّ بِهَذَا الْعِلاَقِ عَلَيْكُمْ بِهَذَا الْعُودِ الْهِنْدِيِّ، فَإِنَّ فِيهِ سَبْعَةَ أَشْفِيَةٍ مِنْهَا ذَاتُ الْجَنْبِ ‏"‏‏.‏ يُرِيدُ الْكُسْتَ، وَهْوَ الْعُودُ الْهِنْدِيُّ‏.‏ وَقَالَ يُونُسُ وَإِسْحَاقُ بْنُ رَاشِدٍ عَنِ الزُّهْرِيِّ عَلَّقَتْ عَلَيْهِ‏

Narrated By Um Qais : That she took to Allah's Apostle one of her sons whose palate and tonsils she had pressed because he had throat trouble. The Prophet said, "Why do you pain your children by getting the palate pressed like that? Use the Ud Al-Hindi (certain Indian incense) for it cures seven diseases one of which is pleurisy."

ہم سے ابو الیمان نے بیان کیا کہا ہم کو شعیب نے خبر دی انہوں نے زہری سے کہا مجھ کو عبیداللہ بن عبداللہ بن عتبہ نے کہ ام قیس بنت محصن اسد یہ یعنی اسد قبیلہ کی جو خزیمہ قبیلے کی شاخ ہے (یہ اس لیے کہہ دیا کہ اسد دوسرے قبیلے بھی ہیں) جو اگلی مہاجرات میں سے تھی جنہوں نے نبیﷺ سے بیعت کی تھی اور عکاشہ بن محصن کی بہن تھی رسول اللہﷺ کے پاس اپنا ایک بچہ لے کر آئی (نام نا معلوم) اس نے عزرہ کی بیماری کی وجہ سے اس بچہ کا گلا دبا دیا تھا ۔آپ نے فرمایا تم اپنی اولاد کا اس طرح علاج کرکے کیوں گلہ دباتی ہو انگلی سے کو اٹھاتی ہو عود ہندی (کوٹ) کیوں نہیں لیتیں وہ سات بیماری کی دوا ہے ذات الجنب کی بھی عود ہندی سے کست مراد تھا (یعنی ہندوستان کا عود) اور یونس اور اسحاق بن راشد نے زہری سے اس روایت میں بجائے اَعلَقَت علیہ کے علَّقَت نقل کیا ہے

24. The treatment for a person suffering from diarrhea.



حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ بَشَّارٍ، حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ جَعْفَرٍ، حَدَّثَنَا شُعْبَةُ، عَنْ قَتَادَةَ، عَنْ أَبِي الْمُتَوَكِّلِ، عَنْ أَبِي سَعِيدٍ، قَالَ جَاءَ رَجُلٌ إِلَى النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم فَقَالَ إِنَّ أَخِي اسْتَطْلَقَ بَطْنُهُ‏.‏ فَقَالَ ‏"‏ اسْقِهِ عَسَلاً ‏"‏‏.‏ فَسَقَاهُ‏.‏ فَقَالَ إِنِّي سَقَيْتُهُ فَلَمْ يَزِدْهُ إِلاَّ اسْتِطْلاَقًا‏.‏ فَقَالَ ‏"‏ صَدَقَ اللَّهُ وَكَذَبَ بَطْنُ أَخِيكَ ‏"‏‏.‏ تَابَعَهُ النَّضْرُ عَنْ شُعْبَةَ‏.

Narrated By Abu Said : A man came to the prophet and said, 'My brother has got loose motions. The Prophet said, Let him drink honey." The man again (came) and said, 'I made him drink (honey) but that made him worse.' The Prophet said, 'Allah has said the Truth, and the abdomen of your brother has told a lie."

ہم سے محمد بن بشار نے بیان کیا کہا ہم سے محمد بن جعفر نے کہا ہم سے شعبہ نے انہوں نے قتادہ سے انہوں نے کہا ابو المتوکل سے انہوں نے ابو سعید خدری سے انہوں نے کہا ایک شخص ( نام نا معلوم) نبیﷺ کے پاس آیا کہنے لگا میرے بھائی کا پیٹ ۔چل نکلا ہے ( دست آرہے ہیں بند نہیں ہوتے ) آپ نے فرمایا اس کو شہید پلادے اس نے پلادیا پھر آیا اور کہنے لگا یا رسول اللہ ﷺ شہد تو میں نے پلادیا اس کو اور دست بڑھ گئے ہیں آپ نے فرمایا اللہ سچا ہے اور تیرے بھائی کا پیٹ جھوٹا ہے محمد بن جعفر کے ساتھ اس حدیث کو نضر بن شمیل نے بھی شعبہ سے روایت کیا ۔

25. There is no Safar (i.e. it is not a contagious disease). Safar is a disease that afflicts the abdomen.



حَدَّثَنَا عَبْدُ الْعَزِيزِ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ، حَدَّثَنَا إِبْرَاهِيمُ بْنُ سَعْدٍ، عَنْ صَالِحٍ، عَنِ ابْنِ شِهَابٍ، قَالَ أَخْبَرَنِي أَبُو سَلَمَةَ بْنُ عَبْدِ الرَّحْمَنِ، وَغَيْرُهُ، أَنَّ أَبَا هُرَيْرَةَ ـ رضى الله عنه ـ قَالَ إِنَّ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم قَالَ ‏"‏ لاَ عَدْوَى وَلاَ صَفَرَ وَلاَ هَامَةَ ‏"‏‏.‏ فَقَالَ أَعْرَابِيٌّ يَا رَسُولَ اللَّهِ فَمَا بَالُ إِبِلِي تَكُونُ فِي الرَّمْلِ كَأَنَّهَا الظِّبَاءُ فَيَأْتِي الْبَعِيرُ الأَجْرَبُ فَيَدْخُلُ بَيْنَهَا فَيُجْرِبُهَا‏.‏ فَقَالَ ‏"‏ فَمَنْ أَعْدَى الأَوَّلَ ‏"‏‏.‏ رَوَاهُ الزُّهْرِيُّ عَنْ أَبِي سَلَمَةَ وَسِنَانِ بْنِ أَبِي سِنَانٍ‏

Narrated By Abu Huraira : Allah's Apostle said, 'There is no 'Adha (no disease is conveyed from the sick to the healthy without Allah's permission), nor Safar, nor Hama." A bedouin stood up and said, "Then what about my camels? They are like deer on the sand, but when a mangy camel comes and mixes with them, they all get infected with mangy." The Prophet said, "Then who conveyed the (mange) disease to the first one?"

ہم سے عبدالعزیز بن عبداللہ اویسی نے بیان کیا کہا ہم سے ابراہیم بن سعد نے انہوں نے صالح بن کیسان سے انہوں نے ابن شہاب سے کہا مجھ کو ابو سلمہ بن عبدالرحمٰن بن عوف نے خبر دی کہ ابو ہریرہؓ نے کہا رسول اللہﷺ نے فرمایا چھوت لگنا اور صفر کا شعدی ہونا ( ایک دوسرے کو لگنا) اور الو کا منحوس ہونا یہ سب باتیں کچھ نہیں ( محض لغو خیالات ہیں ) اس پر ایک گنوار ( نام نامعلوم ) بولا یا رسول اللہ میرے اونٹوں کا کیا حال ہے ریگیستا ن میں ایسے صاف چکنے ہرنوں کی طرح ہوتے ہیں پھر ایک خارشی اونٹ ان میں سے مل جاتا ہے تو سب کوخارشی کر دیتا ہے آپ نے فرمایا یہ تو کہو اس پہلے اونٹ کو کس نے خارشی کیا اس کو زہری نے ابو سلمہ اور سنان بن ابی سنان (دونوں سے روایت کیا ہے یہ روایت آگے آئے گی۔

26. Pleurisy.



حَدَّثَنِي مُحَمَّدٌ، أَخْبَرَنَا عَتَّابُ بْنُ بَشِيرٍ، عَنْ إِسْحَاقَ، عَنِ الزُّهْرِيِّ، قَالَ أَخْبَرَنِي عُبَيْدُ اللَّهِ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ، أَنَّ أُمَّ قَيْسٍ بِنْتَ مِحْصَنٍ،، وَكَانَتْ، مِنَ الْمُهَاجِرَاتِ الأُوَلِ اللاَّتِي بَايَعْنَ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم وَهْىَ أُخْتُ عُكَّاشَةَ بْنِ مِحْصَنٍ أَخْبَرَتْهُ أَنَّهَا أَتَتْ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم بِابْنٍ لَهَا قَدْ عَلَّقَتْ عَلَيْهِ مِنَ الْعُذْرَةِ فَقَالَ ‏"‏ اتَّقُوا اللَّهَ، عَلَى مَا تَدْغَرُونَ أَوْلاَدَكُمْ بِهَذِهِ الأَعْلاَقِ عَلَيْكُمْ بِهَذَا الْعُودِ الْهِنْدِيِّ، فَإِنَّ فِيهِ سَبْعَةَ أَشْفِيَةٍ، مِنْهَا ذَاتُ الْجَنْبِ ‏"‏‏.‏ يُرِيدُ الْكُسْتَ يَعْنِي الْقُسْطَ، قَالَ وَهْىَ لُغَةٌ‏.‏

Narrated By Um Qais : That she took to Allah's Apostle one of her sons whose palate and tonsils she had pressed to treat a throat trouble. The Prophet said, "Be afraid of Allah! Why do you pain your children by having their tonsils pressed like that? Use the Ud Al-Hindi (a certain Indian incense) for it cures seven diseases, one of which is pleurisy."

ہم نے محمد بن یحیٰی بن عبداللہ بن خالد بن فارس نے بیان کیا کہا ہم کو عتاب بن بشیر نے خبر دی انھوں نے اسحاق بن راشد سے انھوں نے زہری سے کہا مجھ کو عبید اللہ بن عبد اللہ بن عتبہ نے کہ ام قیس بنت محصن جو اگلی مہاجر عورتوں میں سے تھی جنھوں نےرسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے بیعت کی تھی اور عکاشہ بن محصن کی بہن تھی وہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس اپنا (چھوٹا) بچہ لے کر آئی عذرہ کی بیماری کی وجہ سے اس کا گلہ دبا دیا تھا آپ نے فرمایا اللہ سے ڈرو(معصوم بچوں کو ایسی تکلیف نہ دو تم یہ گلا کیوں دباتی ہو عود ہندی لو وہ سات بیماریوں کی دوا ہے ان میں ایک ذات الجنب بھی ہے عود سے مراد آپ کی کست بحری تھا یعنی قسط قسط اور کست دونوں کہتے ہیں۔





حَدَّثَنَا عَارِمٌ، حَدَّثَنَا حَمَّادٌ، قَالَ قُرِئَ عَلَى أَيُّوبَ مِنْ كُتُبِ أَبِي قِلاَبَةَ، مِنْهُ مَا حَدَّثَ بِهِ وَمِنْهُ مَا قُرِئَ عَلَيْهِ، وَكَانَ هَذَا فِي الْكِتَابِ عَنْ أَنَسٍ أَنَّ أَبَا طَلْحَةَ وَأَنَسَ بْنَ النَّضْرِ كَوَيَاهُ، وَكَوَاهُ أَبُو طَلْحَةَ بِيَدِهِ‏. وَقَالَ عَبَّادُ بْنُ مَنْصُورٍ عَنْ أَيُّوبَ، عَنْ أَبِي قِلاَبَةَ، عَنْ أَنَسِ بْنِ مَالِكٍ، قَالَ أَذِنَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم لأَهْلِ بَيْتٍ مِنَ الأَنْصَارِ أَنْ يَرْقُوا مِنَ الْحُمَةِ وَالأُذُنِ‏.‏ قَالَ أَنَسٌ كُوِيتُ مِنْ ذَاتِ الْجَنْبِ وَرَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم حَىٌّ، وَشَهِدَنِي أَبُو طَلْحَةَ وَأَنَسُ بْنُ النَّضْرِ وَزَيْدُ بْنُ ثَابِتٍ، وَأَبُو طَلْحَةَ كَوَانِي‏.

Narrated By Anas bin Malik : Allah's Apostle allowed one of the Ansar families to treat persons who have taken poison and also who are suffering from ear ailment with Ruqya. Anas added: I got myself branded cauterised) for pleurisy, when Allah's Apostle was still alive. Abu Talha, Anas bin An-Nadr and Zaid bin Thabit witnessed that, and it was Abu Talha who branded (cauterised) me.

ہم سے عارم ابو النعمان نے بیان کیا کہا ہم سے حماد بن زید نے انہوں نے کہا ایوب سختیانی پرابو قلابہ کی کتابیں پڑھیں گئیں ان میں بعضے حدیثیں تو وہ تھیں جن کو ایو ب نے خودابو قلابہ سے روایت کیا ہے یہ حدیث ان کی کتاب میں تھی ابو قلابہ نے انسؓ سے روایت کی کہ ابو طلحہ اور انسؓ بن نضر(جو انس بن مالکؓ کے والد تھے) دونوں نے مل کر ذات الجنب کی بیماری میں انسؓ کو داغ دیا ابو طلحہؓ نے خود اپنے ہاتھ سے داغا اور عباد بن منصور نے ایوب سختیانی سے روایت کیا انہوں نے ابو قلابہ سے انہوں نے انس بن مالکؓ سے انہوں نے کہا رسول اللہﷺ نے ایک انصاری کے گھر والوں (عمر بن حزم کے خاندان مسلم) کو سانپ بچھو کے زہر میں منتر کرنے کی اجازت دی اسی طرح کان کے درد میں انس نے کہا میں نے ذات الجنب کی بیماری میں داغ لگوایا اس وقت رسول اللہﷺ زندہ تھے (آپﷺ نے انکار نہیں فرمایا) داغ دینے کے وقت ابو طلحہؓ اورانسؓ بن نضر اور زید بن ثابت موجود تھے ابو طلحہؓ نے (اپنے ہاتھ سے) مجھ کو داغا۔





حَدَّثَنَا عَارِمٌ، حَدَّثَنَا حَمَّادٌ، قَالَ قُرِئَ عَلَى أَيُّوبَ مِنْ كُتُبِ أَبِي قِلاَبَةَ، مِنْهُ مَا حَدَّثَ بِهِ وَمِنْهُ مَا قُرِئَ عَلَيْهِ، وَكَانَ هَذَا فِي الْكِتَابِ عَنْ أَنَسٍ أَنَّ أَبَا طَلْحَةَ وَأَنَسَ بْنَ النَّضْرِ كَوَيَاهُ، وَكَوَاهُ أَبُو طَلْحَةَ بِيَدِهِ‏. وَقَالَ عَبَّادُ بْنُ مَنْصُورٍ عَنْ أَيُّوبَ، عَنْ أَبِي قِلاَبَةَ، عَنْ أَنَسِ بْنِ مَالِكٍ، قَالَ أَذِنَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم لأَهْلِ بَيْتٍ مِنَ الأَنْصَارِ أَنْ يَرْقُوا مِنَ الْحُمَةِ وَالأُذُنِ‏.‏ قَالَ أَنَسٌ كُوِيتُ مِنْ ذَاتِ الْجَنْبِ وَرَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم حَىٌّ، وَشَهِدَنِي أَبُو طَلْحَةَ وَأَنَسُ بْنُ النَّضْرِ وَزَيْدُ بْنُ ثَابِتٍ، وَأَبُو طَلْحَةَ كَوَانِي‏.

Narrated By Anas bin Malik : Allah's Apostle allowed one of the Ansar families to treat persons who have taken poison and also who are suffering from ear ailment with Ruqya. Anas added: I got myself branded cauterised) for pleurisy, when Allah's Apostle was still alive. Abu Talha, Anas bin An-Nadr and Zaid bin Thabit witnessed that, and it was Abu Talha who branded (cauterised) me.

ہم سے عارم ابو النعمان نے بیان کیا کہا ہم سے حماد بن زید نے انہوں نے کہا ایوب سختیانی پرابو قلابہ کی کتابیں پڑھیں گئیں ان میں بعضے حدیثیں تو وہ تھیں جن کو ایو ب نے خودابو قلابہ سے روایت کیا ہے یہ حدیث ان کی کتاب میں تھی ابو قلابہ نے انسؓ سے روایت کی کہ ابو طلحہ اور انسؓ بن نضر(جو انس بن مالکؓ کے والد تھے) دونوں نے مل کر ذات الجنب کی بیماری میں انسؓ کو داغ دیا ابو طلحہؓ نے خود اپنے ہاتھ سے داغا اور عباد بن منصور نے ایوب سختیانی سے روایت کیا انہوں نے ابو قلابہ سے انہوں نے انس بن مالکؓ سے انہوں نے کہا رسول اللہﷺ نے ایک انصاری کے گھر والوں (عمر بن حزم کے خاندان مسلم ) کو سانپ بچھو کے زہر میں منتر کرنے کی اجازت دی اسی طرح کان کے درد میں انس نے کہا میں نے ذات الجنب کی بیماری میں داغ لگوایا اس وقت رسول اللہﷺ زندہ تھے (آپﷺ نے انکار نہیں فرمایا) داغ دینے کے وقت ابو طلحہؓ اورانسؓ بن نضر اور زید بن ثابت موجود تھے ابو طلحہؓ نے (اپنے ہاتھ سے) مجھ کو داغا۔





حَدَّثَنَا عَارِمٌ، حَدَّثَنَا حَمَّادٌ، قَالَ قُرِئَ عَلَى أَيُّوبَ مِنْ كُتُبِ أَبِي قِلاَبَةَ، مِنْهُ مَا حَدَّثَ بِهِ وَمِنْهُ مَا قُرِئَ عَلَيْهِ، وَكَانَ هَذَا فِي الْكِتَابِ عَنْ أَنَسٍ أَنَّ أَبَا طَلْحَةَ وَأَنَسَ بْنَ النَّضْرِ كَوَيَاهُ، وَكَوَاهُ أَبُو طَلْحَةَ بِيَدِهِ‏. وَقَالَ عَبَّادُ بْنُ مَنْصُورٍ عَنْ أَيُّوبَ، عَنْ أَبِي قِلاَبَةَ، عَنْ أَنَسِ بْنِ مَالِكٍ، قَالَ أَذِنَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم لأَهْلِ بَيْتٍ مِنَ الأَنْصَارِ أَنْ يَرْقُوا مِنَ الْحُمَةِ وَالأُذُنِ‏.‏ قَالَ أَنَسٌ كُوِيتُ مِنْ ذَاتِ الْجَنْبِ وَرَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم حَىٌّ، وَشَهِدَنِي أَبُو طَلْحَةَ وَأَنَسُ بْنُ النَّضْرِ وَزَيْدُ بْنُ ثَابِتٍ، وَأَبُو طَلْحَةَ كَوَانِي‏.

Narrated By Anas bin Malik : Allah's Apostle allowed one of the Ansar families to treat persons who have taken poison and also who are suffering from ear ailment with Ruqya. Anas added: I got myself branded cauterised) for pleurisy, when Allah's Apostle was still alive. Abu Talha, Anas bin An-Nadr and Zaid bin Thabit witnessed that, and it was Abu Talha who branded (cauterised) me.

ہم سے عارم ابو النعمان نے بیان کیا کہا ہم سے حماد بن زید نے انہوں نے کہا ایوب سختیانی پرابو قلابہ کی کتابیں پڑھیں گئیں ان میں بعضے حدیثیں تو وہ تھیں جن کو ایو ب نے خودابو قلابہ سے روایت کیا ہے یہ حدیث ان کی کتاب میں تھی ابو قلابہ نے انسؓ سے روایت کی کہ ابو طلحہ اور انسؓ بن نضر(جو انس بن مالکؓ کے والد تھے) دونوں نے مل کر ذات الجنب کی بیماری میں انسؓ کو داغ دیا ابو طلحہؓ نے خود اپنے ہاتھ سے داغا اور عباد بن منصور نے ایوب سختیانی سے روایت کیا انہوں نے ابو قلابہ سے انہوں نے انس بن مالکؓ سے انہوں نے کہا رسول اللہﷺ نے ایک انصاری کے گھر والوں (عمر بن حزم کے خاندان مسلم) کو سانپ بچھو کے زہر میں منتر کرنے کی اجازت دی اسی طرح کان کے درد میں انس نے کہا میں نے ذات الجنب کی بیماری میں داغ لگوایا اس وقت رسول اللہﷺ زندہ تھے (آپﷺ نے انکار نہیں فرمایا) داغ دینے کے وقت ابو طلحہؓ اورانسؓ بن نضر اور زید بن ثابت موجود تھے ابو طلحہؓ نے (اپنے ہاتھ سے) مجھ کو داغا۔

27. To burn a mat made of palm-tree leaves (and put its ashes on a wound) to stop bleeding.



حَدَّثَنا سَعِيدُ بْنُ عُفَيْرٍ، حَدَّثَنَا يَعْقُوبُ بْنُ عَبْدِ الرَّحْمَنِ الْقَارِيُّ، عَنْ أَبِي حَازِمٍ، عَنْ سَهْلِ بْنِ سَعْدٍ السَّاعِدِيِّ، قَالَ لَمَّا كُسِرَتْ عَلَى رَأْسِ رَسُولِ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم الْبَيْضَةُ، وَأُدْمِيَ وَجْهُهُ، وَكُسِرَتْ رَبَاعِيَتُهُ، وَكَانَ عَلِيٌّ يَخْتَلِفُ بِالْمَاءِ فِي الْمِجَنِّ، وَجَاءَتْ فَاطِمَةُ تَغْسِلُ عَنْ وَجْهِهِ الدَّمَ، فَلَمَّا رَأَتْ فَاطِمَةُ ـ عَلَيْهَا السَّلاَمُ ـ الدَّمَ يَزِيدُ عَلَى الْمَاءِ كَثْرَةً عَمَدَتْ إِلَى حَصِيرٍ فَأَحْرَقَتْهَا وَأَلْصَقَتْهَا عَلَى جُرْحِ رَسُولِ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم فَرَقَأَ الدَّمُ‏

Narrated By Sahl bin Saud As-Sa'idi : When the helmet broke on the head of the Prophet and his face became covered with blood and his incisor tooth broke (i.e. during the battle of Uhud), 'Ali used to bring water in his shield while Fatima was washing the blood off his face. When Fatima saw that the bleeding increased because of the water, she took a mat (of palm leaves), burnt it, and stuck it (the burnt ashes) on the wound of Allah's Apostle, whereupon the bleeding stopped.

ہم سے سعید بن عفیر نے بیان کیا کہا ہم سے یعقوب بن عبد الرحمٰن قاری نے انہوں نے ابو حازم سے انہوں نے سہل بن سعدساعدی سے انہوں نے کہا جب نبیﷺ کے سر مبارک پر (پتھر مارکر) خود توڑا گیا (مردودابن قمیہ نے پتھر مارے تھے) اور آپﷺ کا چہرہ مبارک زخمی ہو گیا اور سامنے کے چار دانتوں میں سے ایک دانت توڑا گیا ( خون آپ کے زخم میں سے بہ رہا تھا) تو حجرت علیؓ ڈھال میں پانی لاتے تھے اور جناب فاطمہ زہراؓ(آپ ﷺ کی صاحبزادی) منہ پر سے خون دھو رہی تھیں جب جناب فاطمہ زہراؓ نے دیکھا کہ پانی سے خون بڑھتا جاتا ہے ۔زیادہ نکلتا آتا ہے تو انہوں نے جھٹ ایک بورئیے کا ٹکڑا لیا اس کو جلاکر رسول اللہﷺ کے زخم پر چپکا دیا اسی وقت خون بند ہو گیا۔

28. Fever is from the heat of hell.



حَدَّثَنا يَحْيَى بْنُ سُلَيْمَانَ، حَدَّثَنِي ابْنُ وَهْبٍ، قَالَ حَدَّثَنِي مَالِكٌ، عَنْ نَافِعٍ، عَنِ ابْنِ عُمَرَ ـ رضى الله عنهما ـ عَنِ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم قَالَ ‏"‏ الْحُمَّى مِنْ فَيْحِ جَهَنَّمَ فَأَطْفِئُوهَا بِالْمَاءِ ‏"‏‏.‏ قَالَ نَافِعٌ وَكَانَ عَبْدُ اللَّهِ يَقُولُ اكْشِفْ عَنَّا الرِّجْزَ‏

Narrated By Nafi' : Abdullah bin 'Umar said, "The Prophet said, 'Fever is from the heat of Hell, so put it out (cool it) with water.'"
Nafi' added: 'Abdullah used to say, "O Allah! Relieve us from the punishment," (when he suffered from fever).

ہم سے یحییٰ بن سلیمان نے بیان کیا کہا مجھ سے عبداللہ بن وہب نے کہا مجھ سے امام مالک نے انہوں نے نافع سے انہوں نے ابن عمرؓ سے انہوں نے نبیﷺ سے آپﷺ نے فرمایا بحار دوزخ کی بھاپ ہے تو اس کو پانی سے بجھاؤ نافع نے کہا (اسی اسناد سے) وبداللہ بن عمرؓ کو بخار آیا تو کہتے یا اللہ ہم پر سے آپنا عذاب دفع کرو۔





حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ مَسْلَمَةَ، عَنْ مَالِكٍ، عَنْ هِشَامٍ، عَنْ فَاطِمَةَ بِنْتِ الْمُنْذِرِ، أَنَّ أَسْمَاءَ بِنْتَ أَبِي بَكْرٍ ـ رضى الله عنهما ـ كَانَتْ إِذَا أُتِيَتْ بِالْمَرْأَةِ قَدْ حُمَّتْ تَدْعُو لَهَا، أَخَذَتِ الْمَاءَ فَصَبَّتْهُ بَيْنَهَا وَبَيْنَ جَيْبِهَا قَالَتْ وَكَانَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم يَأْمُرُنَا أَنْ نَبْرُدَهَا بِالْمَاءِ‏

Narrated By Fatima bint Al-Mundhir : Whenever a lady suffering from fever was brought to Asma' bint Abu Bakr, she used to invoke Allah for her and then sprinkle some water on her body, at the chest and say, "Allah's Apostle used to order us to abate fever with water."

ہم سے عبداللہ بن مسلمہ قعنبی نے بیان کیا انہوں نے امام مالک سے انہوں نے ہشام بن عروہ سے انہوں اپنی (بی بی) فاطمہ بنت منذر سے کہ اسماء بنت ابی بکر (ان کی دادی) کے پاس جب کوئی بخار والی عورت لائی جاتی تو پانی منگوا کر اس کے گریبان میں ڈالتیں اور کہتیں رسول اللہﷺ نے ہم کو حکم دیا ہے کہ بخارکی حرارت کو پانی سے ٹھنڈا کریں ۔





حَدَّثَنا مُحَمَّدُ بْنُ الْمُثَنَّى، حَدَّثَنَا يَحْيَى، حَدَّثَنَا هِشَامٌ، أَخْبَرَنِي أَبِي، عَنْ عَائِشَةَ، عَنِ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم قَالَ ‏"‏ الْحُمَّى مِنْ فَيْحِ جَهَنَّمَ فَابْرُدُوهَا بِالْمَاءِ ‏"‏‏

Narrated By 'Aisha : The Prophet said, "Fever is from the heat of Hell, so abate fever with water."

ہم سے محمد بن مثنیٰ نے بیان کیا کہا ہم سے یحییٰ بن سعید قطان نے کہا ہم سے ہشام نے کہا مجھ کو میرے والد(عروہ) نے انہوں نے حضرت عائشہؓ سے انہوں نے نبیﷺسے آپ نے فرمایا بخار دوزخ کی بھاپ ہے اس کو پانی سے ٹھنڈا کرو۔





حَدَّثَنَا مُسَدَّدٌ، حَدَّثَنَا أَبُو الأَحْوَصِ، حَدَّثَنَا سَعِيدُ بْنُ مَسْرُوقٍ، عَنْ عَبَايَةَ بْنِ رِفَاعَةَ، عَنْ جَدِّهِ، رَافِعِ بْنِ خَدِيجٍ قَالَ سَمِعْتُ النَّبِيَّ صلى الله عليه وسلم يَقُولُ ‏"‏ الْحُمَّى مِنْ فَوْحِ جَهَنَّمَ، فَابْرُدُوهَا بِالْمَاءِ ‏"‏‏.

Narrated By Rafi bin Khadij : I heard Allah's Apostle saying, "Fever is from the heat of Hell, so abate fever with water."


ہم سے مسدد بن مسرہد نے بیان کیا کہا ہم سے ابو الاحوص نے کہا ہم سے سعید بن مسروق نے انہوں نے عبایہ بن رفاعہ سے انہوں نے اپنے دادا رافع بن خدیج سے انہو ں نے کہا کہ میں نے رسول اللہﷺ سے سنا آپ فرماتے تھے کہ بخار دوزخ کی بھاپ ہے اس کو پانی سے ٹھنڈا کرو۔

29. Whoever went out of a land because its climate and water did not suit him.



حَدَّثَنَا عَبْدُ الأَعْلَى بْنُ حَمَّادٍ، حَدَّثَنَا يَزِيدُ بْنُ زُرَيْعٍ، حَدَّثَنَا سَعِيدٌ، حَدَّثَنَا قَتَادَةُ، أَنَّ أَنَسَ بْنَ مَالِكٍ، حَدَّثَهُمْ أَنَّ نَاسًا أَوْ رِجَالاً مِنْ عُكْلٍ وَعُرَيْنَةَ قَدِمُوا عَلَى رَسُولِ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم وَتَكَلَّمُوا بِالإِسْلاَمِ وَقَالُوا يَا نَبِيَّ اللَّهِ إِنَّا كُنَّا أَهْلَ ضَرْعٍ، وَلَمْ نَكُنْ أَهْلَ رِيفٍ، وَاسْتَوْخَمُوا الْمَدِينَةَ فَأَمَرَ لَهُمْ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم بِذَوْدٍ وَبِرَاعٍ وَأَمَرَهُمْ، أَنْ يَخْرُجُوا فِيهِ فَيَشْرَبُوا مِنْ أَلْبَانِهَا وَأَبْوَالِهَا، فَانْطَلَقُوا حَتَّى كَانُوا نَاحِيَةَ الْحَرَّةِ، كَفَرُوا بَعْدَ إِسْلاَمِهِمْ، وَقَتَلُوا رَاعِيَ رَسُولِ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم وَاسْتَاقُوا الذَّوْدَ فَبَلَغَ النَّبِيَّ صلى الله عليه وسلم فَبَعَثَ الطَّلَبَ فِي آثَارِهِمْ، وَأَمَرَ بِهِمْ فَسَمَرُوا أَعْيُنَهُمْ وَقَطَعُوا أَيْدِيَهُمْ وَتُرِكُوا فِي نَاحِيَةِ الْحَرَّةِ حَتَّى مَاتُوا عَلَى حَالِهِمْ‏.‏

Narrated By Anas bin Malik : Some people from the tribes of 'Ukl and 'Uraina came to Allah's Apostle and embraced Islam and said, "O Allah's Apostle! We are owners of livestock and have never been farmers," and they found the climate of Medina unsuitable for them. So Allah's Apostle ordered that they be given some camels and a shepherd, and ordered them to go out with those camels and drink their milk and urine. So they set out, but when they reached a place called Al-Harra, they reverted to disbelief after their conversion to Islam, killed the shepherd and drove away the camels. When this news reached the Prophet he sent in their pursuit (and they were caught and brought). The Prophet ordered that their eyes be branded with heated iron bars and their hands be cut off, and they were left at Al-Harra till they died in that state.

ہم سے عبدالاعلیٰ بن حماد نے بیان کیا کہا ہم سے یزید بن زریع نے کہا ہم سے سعید بن ابی عروہ نے کہا ہم سے قتادہ نے ان سے انسؓ بن مالکؓ نے بیان کیا عکل یا عرینہ قبیلہ کے کچھ لوگ رسول اللہﷺ کے پاس آئے اور کہنے لگے ہم لوگ مسلمان ہو چکے ہیں ۔ انہوں نے عرض کیا یا رسول اللہ ہم اپنے ملک میں جانور والے تھے ( ان کے دودھ وغیرہ پر بسر کرتے ہیں) ہم لوگ کسان نہیں ہیں ان کو مدنیہ کی ہوا موافق آئی تو رسول اللہﷺ نے چند اونٹ ایک چرواہا ساتھ کر کے ان کو دیے کہ ان کو لے کر ( باہر جنگل میں) جائیں اور وہاں ان کا دودھ موت پیتے رہیں (چونکہ بیمار ہو گئے تھے) خیٰر وہ گئے جب حرہ کے کنارے پر پہنچے تو(دل میں بے ایمانی آئی ) پھر کافر ہو گئے اور رسول اللہﷺ کے چروا ہے کو جان سے مار کر اونٹوں کو ہا نک کر لے گئے یہ خبر نبیﷺکو پہنچی آپ نے ان کے تعاقب میں لوگوں کو ( سواروں) روزانہ کیا (وہ گرفتار ہو کر آئے) آپ نے حکم دیا ۔ ان کی آنکھوں میں گرم سلائی پھیری گی ہاتھ کاٹ دیے گئے ۔اور وہیں حرّہ ( پتھر یلے میدان) میں ڈال دیے گئےاسی حالت میں تڑپ تڑپ کر مر گئے۔

 < 1 2 3 4 5 >  Last ›