Sayings of the Messenger

 

123Last ›

Chapter No: 1

باب تَحْرِيمِ استعمال أَوَانِي الذَّهَبِ وَالْفِضَّةِ فِي الشُّرْبِ وَغَيْرِهِ عَلَى الرِّجَالِ وَالنِّسَاءِ

The forbiddance of using gold and silver vessels for drinking etc, for (both) men and women

سونے اور چاندی کے برتنوں کے استعمال کا مردوں اور عورتوں پر حرام ہونا

حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ يَحْيَى ، قَالَ : قَرَأْتُ عَلَى مَالِكٍ ، عَنْ نَافِعٍ ، عَنْ زَيْدِ بْنِ عَبْدِ اللهِ ، عَنْ عَبْدِ اللهِ بْنِ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ أَبِي بَكْرٍ الصِّدِّيقِ ، عَنْ أُمِّ سَلَمَةَ ، زَوْجِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، أَنَّ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ: الَّذِي يَشْرَبُ فِي آنِيَةِ الْفِضَّةِ ، إِنَّمَا يُجَرْجِرُ فِي بَطْنِهِ نَارَ جَهَنَّمَ.

It was narrated from Umm Salamah, the wife of the Prophet (s.a.w), that the Messenger of Allah (s.a.w) said: "The one who drinks from a vessel of silver is gulping the fire of Hell into his belly."

نبی ﷺکی زوجہ محترمہ حضرت ام سلمہ رضی اللہ عنہا سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺنے فرمایا: جو آدمی چاندی کے برتن میں پیتا ہے وہ اپنے پیٹ میں غٹ غٹ جہنم کی آگ بھرتا ہے ۔


وَحَدَّثَنَاهُ قُتَيْبَةُ ، وَمُحَمَّدُ بْنُ رُمْحٍ ، عَنِ اللَّيْثِ بْنِ سَعْدٍ (ح) وحَدَّثَنِيهِ عَلِيُّ بْنُ حُجْرٍ السَّعْدِيُّ ، حَدَّثَنَا إِسْمَاعِيلُ ، يَعْنِي ابْنَ عُلَيَّةَ ، عَنْ أَيُّوبَ (ح) وحَدَّثَنَا ابْنُ نُمَيْرٍ ، حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ بِشْرٍ (ح) وحَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ الْمُثَنَّى ، حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ سَعِيدٍ (ح) وحَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ ، وَالْوَلِيدُ بْنُ شُجَاعٍ ، قَالاَ: حَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ مُسْهِرٍ ، عَنْ عُبَيْدِ اللهِ (ح) وحَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ أَبِي بَكْرٍ الْمُقَدَّمِيُّ ، حَدَّثَنَا الْفُضَيْلُ بْنُ سُلَيْمَانَ ، حَدَّثَنَا مُوسَى بْنُ عُقْبَةَ (ح) وحَدَّثَنَا شَيْبَانُ بْنُ فَرُّوخَ ، حَدَّثَنَا جَرِيرٌ ، يَعْنِي ابْنَ حَازِمٍ ، عَنْ عَبْدِ الرَّحْمَنِ السَّرَّاجِ ، كُلُّ هَؤُلاَءِ عَنْ نَافِعٍ ، بِمِثْلِ حَدِيثِ مَالِكِ بْنِ أَنَسٍ ، بِإِسْنَادِهِ عَنْ نَافِعٍ. وَزَادَ فِي حَدِيثِ عَلِيِّ بْنِ مُسْهِرٍ ، عَنْ عُبَيْدِ اللهِ ، أَنَّ الَّذِي يَأْكُلُ ، أَوْ يَشْرَبُ فِي آنِيَةِ الْفِضَّةِ وَالذَّهَبِ. وَلَيْسَ فِي حَدِيثِ أَحَدٍ مِنْهُمْ ذِكْرُ الأَكْلِ ، وَالذَّهَبِ إِلاَّ فِي حَدِيثِ ابْنِ مُسْهِرٍ.

A Hadith like that of Malik bin Anas (no. 5385) was narrated from Nafi', with this chain of narrators, and in the Hadith of 'Ali bin Mus-hir from 'Ubaidullah it adds: "The one who eats or drinks from a vessel of silver or gold." It does not mention eating and gold in the Hadith of any of them, except the Hadith of Ibn Mus-hir.

یہ حدیث سات سندوں سے مروی ہے اور ساتویں سند میں یہ اضافہ ہے کہ جو آدمی چاندی یا سونے کے برتن میں کھاتا ہے یا پیتا ہے ، اور ابن مسہر کی روایت کے علاوہ اور کسی حدیث میں کھانے اور سونے کا ذکر نہیں ہے۔


وحَدَّثَنِي زَيْدُ بْنُ يَزِيدَ أَبُو مَعْنٍ الرَّقَّاشِيُّ ، حَدَّثَنَا أَبُو عَاصِمٍ ، عَنْ عُثْمَانَ ، يَعْنِي ابْنَ مُرَّةَ ، حَدَّثَنَا عَبْدُ اللهِ بْنُ عَبْدِ الرَّحْمَنِ ، عَنْ خَالَتِهِ أُمِّ سَلَمَةَ ، قَالَتْ: قَالَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ: مَنْ شَرِبَ فِي إِنَاءٍ مِنْ ذَهَبٍ ، أَوْ فِضَّةٍ ، فَإِنَّمَا يُجَرْجِرُ فِي بَطْنِهِ نَارًا مِنْ جَهَنَّمَ.

It was narrated that Umm Salamah said: "The Messenger of Allah (s.a.w) said: 'Whoever drinks from a vessel of gold or silver is only gulping fire from Hell into his belly."'

حضرت ام سلمہ رضی اللہ عنہا سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺنے فرمایا: جو آدمی سونے یا چاندی کے برتن میں پیتا ہے ، اور وہ اپنے پیٹ میں غٹاغٹ جہنم کی آگ بھرتا ہے ۔

Chapter No: 2

باب تَحْرِيمِ اسْتِعْمَالِ إِنَاءِ الذَّهَبِ وَالْفِضَّةِ عَلَى الرِّجَالِ وَالنِّسَاءِ وَخَاتَمِ الذَّهَبِ وَالْحَرِيرِ عَلَى الرَّجُلِ وَإِبَاحَتِهِ لِلنِّسَاءِ وَإِبَاحَةِ الْعَلَمِ وَنَحْوِهِ لِلرَّجُلِ مَا لَمْ يَزِدْ عَلَى أَرْبَعِ أَصَابِعَ

Concerning; the forbiddance of using the vessels of gold and silver for men and women, the forbiddance of gold ring and silk for men and its permissibility for women, and the permissibility of silken borders and the like on garments for men if it does not exceed the width of four fingers

مردوں اور عورتوں پر سونے اور چاندی کے برتنوں کا حرام ہونا ، مردوں پر سونے کی انگوٹھی اور ریشم کا حرام ہونا اور عورتوں کے لیے اس کی اباحت ۔۔۔

حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ يَحْيَى التَّمِيمِيُّ ، أَخْبَرَنَا أَبُو خَيْثَمَةَ ، عَنْ أَشْعَثَ بْنِ أَبِي الشَّعْثَاءِ (ح) وحَدَّثَنَا أَحْمَدُ بْنُ عَبْدِ اللهِ بْنِ يُونُسَ ، حَدَّثَنَا زُهَيْرٌ ، حَدَّثَنَا أَشْعَثُ ، حَدَّثَنِي مُعَاوِيَةُ بْنُ سُوَيْدِ بْنِ مُقَرِّنٍ ، قَالَ : دَخَلْتُ عَلَى الْبَرَاءِ بْنِ عَازِبٍ ، فَسَمِعْتُهُ يَقُولُ: أَمَرَنَا رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ بِسَبْعٍ ، وَنَهَانَا عَنْ سَبْعٍ: أَمَرَنَا بِعِيَادَةِ الْمَرِيضِ ، وَاتِّبَاعِ الْجَنَازَةِ ، وَتَشْمِيتِ الْعَاطِسِ ، وَإِبْرَارِ الْقَسَمِ ، أَوِ الْمُقْسِمِ ، وَنَصْرِ الْمَظْلُومِ ، وَإِجَابَةِ الدَّاعِي ، وَإِفْشَاءِ السَّلاَمِ ، وَنَهَانَا عَنْ خَوَاتِيمَ ، أَوْ عَنْ تَخَتُّمٍ ، بِالذَّهَبِ ، وَعَنْ شُرْبٍ بِالْفِضَّةِ ، وَعَنِ الْمَيَاثِرِ ، وَعَنِ الْقَسِّيِّ ، وَعَنْ لُبْسِ الْحَرِيرِ وَالإِسْتَبْرَقِ وَالدِّيبَاجِ.

Mu'awiyah bin Suwaid bin Muqarrin said: "I entered upon Al-Bara' bin 'Azib and I heard him say: 'The Messenger of Allah (s.a.w) enjoined seven things upon us and he forbade seven things for us. He commanded us to visit the sick, to attend funerals, to reply (to say: Yarhamuk Allah; (may Allah have mercy on you) to one who sneezes, to fulfill oaths or help fulfill an oath made by another, to help the one who has been wronged, to accept invitations and to spread the greeting of Salam. And he forbade us from wearing rings of gold, to drink from silver vessels, to use Mayathir, to wear Qasi, to wear silk, Istabraq and Dibaj."'

سوید بن مقرن بیان کرتے ہیں کہ میں حضرت براء بن عازب رضی اللہ عنہ کے پاس گیا تو ان کو یہ کہتے ہوئے سنا کہ رسول اللہﷺنے ہمیں سات چیزوں کا حکم دیا ہے، اور سات چیزوں سے روکا ہے ، مریض کی عیادت کرنے، جنازہ کے ساتھ جانے ، چھینک کا جواب دینے ، قسم پوری کرنے ، مظلوم کی مدد کرنے ، دعوت قبول کرنے اور بکثرت سلام کرنے کا حکم دیا ہے ۔انگوٹھی پہننے یا سونے کی انگوٹھی پہننے ، چاندی کے برتنوں میں پینے ، ریشمی گدوں پر بیٹھنے ، قسی (ریشم کی ایک قسم) پہننے ، ریشمی کپڑا پہننے ، استبرق (ریشم کی ایک قسم) اور دیباج (ریشم کی قسم) پہننے سے منع فرمایا ہے۔


حَدَّثَنَا أَبُو الرَّبِيعِ الْعَتَكِىُّ حَدَّثَنَا أَبُو عَوَانَةَ عَنْ أَشْعَثَ بْنِ سُلَيْمٍ بِهَذَا الإِسْنَادِ مِثْلَهُ إِلاَّ قَوْلَهُ وَإِبْرَارِ الْقَسَمِ أَوِ الْمُقْسِمِ. فَإِنَّهُ لَمْ يَذْكُرْ هَذَا الْحَرْفَ فِى الْحَدِيثِ وَجَعَلَ مَكَانَهُ وَإِنْشَادِ الضَّالِّ.

This hadith is reported by a different chain of narrators. There is no mention of fulfilling an oath rather he said, "To give a description of a lost item."

یہ حدیث ایک اور سند سے مروی ہے ، اس میں قسم پوری کرنے کا ذکر نہیں ہے ، اس کی بجائے گم شدہ چیز کو تلاش کرانے کا ذکر ہے۔


وحَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ ، حَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ مُسْهِرٍ (ح) وحَدَّثَنَا عُثْمَانُ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ ، حَدَّثَنَا جَرِيرٌ ، كِلاَهُمَا عَنِ الشَّيْبَانِيِّ ، عَنْ أَشْعَثَ بْنِ أَبِي الشَّعْثَاءِ ، بِهَذَا الإِسْنَادِ , مِثْلَ حَدِيثِ زُهَيْرٍ ، وَقَالَ : إِبْرَارِ الْقَسَمِ مِنْ غَيْرِ شَكٍّ. وَزَادَ فِي الْحَدِيثِ ، وَعَنِ الشُّرْبِ فِي الْفِضَّةِ ، فَإِنَّهُ مَنْ شَرِبَ فِيهَا فِي الدُّنْيَا لَمْ يَشْرَبْ فِيهَا فِي الآخِرَةِ.

A Hadith like that of Zuhair (no. 5388) was narrated from Ash'ath bin Abi Ash-Sha'tba' with this chain of narrators, but he said to help fulfill the oath of another, and he was not uncertain. And he added in this Hadith: "Drinking from vessels of silver, for whoever drinks from them in this world will not drink from them in the Hereafter."

یہ حدیث دو سندوں سے مروی ہے اس میں قسم کو پورا کرنے کا ذکر ہے ، اور چاندی کے برتن میں پینے کا بارے میں یہ ہے کہ جس نے دنیا میں چاندی کے برتن میں پیا وہ آخرت میں چاندی کے برتن میں نہیں پئیے گا۔


وَحَدَّثَنَاهُ أَبُو كُرَيْبٍ ، حَدَّثَنَا ابْنُ إِدْرِيسَ ، أَخْبَرَنَا أَبُو إِسْحَاقَ الشَّيْبَانِيُّ ، وَلَيْثُ بْنُ أَبِي سُلَيْمٍ ، عَنْ أَشْعَثَ بْنِ أَبِي الشَّعْثَاءِ ، بِإِسْنَادِهِمْ وَلَمْ يَذْكُرْ زِيَادَةَ جَرِيرٍ ، وَابْنِ مُسْهِرٍ.

It was narrated from Ash'ath bin Abi Ash-Sha'tha' with this chain of narrators, but he did not mention the additional material mentioned by Jarir and Ibn Mus-hir (no. 5390).

یہ حدیث ایک اور سند سے بھی مروی ہے اس میں مذکورہ بالا اضافے کا ذکر نہیں ہے جو حدیث جریر اور ابن مسہر( حدیث نمبر 5390) میں ہے۔


وحَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ الْمُثَنَّى ، وَابْنُ بَشَّارٍ ، قَالاَ: حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ جَعْفَرٍ (ح) وحَدَّثَنَا عُبَيْدُ اللهِ بْنُ مُعَاذٍ ، حَدَّثَنَا أَبِي (ح) وحَدَّثَنَا إِسْحَاقُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ ، أَخْبَرَنَا أَبُو عَامِرٍ الْعَقَدِيُّ (ح) وحَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّحْمَنِ بْنُ بِشْرٍ ، حَدَّثَنِي بَهْزٌ ، قَالُوا جَمِيعًا : حَدَّثَنَا شُعْبَةُ ، عَنْ أَشْعَثَ بْنِ سُلَيْمٍ، بِإِسْنَادِهِمْ وَمَعْنَى حَدِيثِهِمْ ، إِلاَّ قَوْلَهُ: وَإِفْشَاءِ السَّلاَمِ ، فَإِنَّهُ قَالَ: بَدَلَهَا وَرَدِّ السَّلاَمِ ، وَقَالَ: نَهَانَا عَنْ خَاتَمِ الذَّهَبِ ، أَوْ حَلْقَةِ الذَّهَبِ.

It was narrated from Ash'ath bin Sulaim with their chain of narrators, except the words spreading the greeting of Salam, instead of which he said: "Returning the greeting of Salam." And he said: "He (s.a.w) forbade us to wear gold rings."

اس حدیث کی تین اور اسناد بھی ہیں ان میں سلام کی اشاعت کی جگہ سلام کے جواب دینے کا ذکر ہے اور کہا کہ آپ نے ہمیں سونے کی انگوٹھی یا سونے کے چھلے سے منع فرمایاہے۔


وحَدَّثَنَا إِسْحَاقُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ ، حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ آدَمَ ، وَعَمْرُو بْنُ مُحَمَّدٍ ، قَالاَ: حَدَّثَنَا سُفْيَانُ ، عَنْ أَشْعَثَ بْنِ أَبِي الشَّعْثَاءِ ، بِإِسْنَادِهِمْ ، وَقَالَ: وَإِفْشَاءِ السَّلاَمِ ، وَخَاتَمِ الذَّهَبِ مِنْ غَيْرِ شَكٍّ.

It was narrated from Ash'ath bin Abi Ash-Sha'tha' with their chain narrators, and he said: "Spreading the greeting of Salam" and "gold rings."

یہ حدیث ایک اور سند سے بھی مروی ہے اس میں " افشاء السلام" اور " خاتم الذھب" بغیر کسی شک کے الفاظ کے ذکر ہیں۔


حَدَّثَنَا سَعِيدُ بْنُ عَمْرِو بْنِ سَهْلِ بْنِ إِسْحَاقَ بْنِ مُحَمَّدِ بْنِ الأَشْعَثِ بْنِ قَيْسٍ ، قَالَ: حَدَّثَنَا سُفْيَانُ بْنُ عُيَيْنَةَ ، سَمِعْتُهُ يَذْكُرُهُ ، عَنْ أَبِي فَرْوَةَ ، أَنَّهُ سَمِعَ عَبْدَ اللهِ بْنَ عُكَيْمٍ ، قَالَ: كُنَّا مَعَ حُذَيْفَةَ بِالْمَدَائِنِ ، فَاسْتَسْقَى حُذَيْفَةُ ، فَجَاءَهُ دِهْقَانٌ بِشَرَابٍ فِي إِنَاءٍ مِنْ فِضَّةٍ فَرَمَاهُ بِهِ ، وَقَالَ: إِنِّي أُخْبِرُكُمْ أَنِّي قَدْ أَمَرْتُهُ أَنْ لاَ يَسْقِيَنِي فِيهِ ، فَإِنَّ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، قَالَ: لاَ تَشْرَبُوا فِي إِنَاءِ الذَّهَبِ وَالْفِضَّةِ ، وَلاَ تَلْبَسُوا الدِّيبَاجَ وَالْحَرِيرَ ، فَإِنَّهُ لَهُمْ فِي الدُّنْيَا وَهُوَ لَكُمْ فِي الآخِرَةِ يَوْمَ الْقِيَامَةِ.

'Abdullah bin 'Ukaim said: "We were with Hudhaifah in Al-Mada'in when Hudhaifah asked for water, and a chieftain brought him a drink in a vessel of silver. He threw it aside and said: 'I am telling you that I already told him not to bring me a drink in this vessel, for the Messenger of Allah (s.a.w) said: "Do not drink from vessels of gold and silver, and do not wear Dibaj and silk. They are for them in this world and for you in the Hereafter, on the Day of Resurrection."

عبد اللہ بن عکیم بیان کرتے ہیں کہ ہم مدائن میں حضرت حذیفہ رضی اللہ عنہ کے ساتھ تھے ، حضرت حذیفہ نے پانی مانگا ، ایک کسان چاندی کے برتن میں پانی لیکر آیا ، حضرت حذیفہ رضی اللہ عنہ نے اس برتن کو پھینک دیا اور فرمایا: میں تم کو بتارہا ہوں کہ میں پہلے اس سے کہہ چکا تھا کہ مجھے چاندی کے برتن میں نہ پلائے ، کیونکہ رسو ل اللہﷺنے فرمایا: چاندی اور سونے کے برتن میں نہ پیئو اور دیباج اور حریر (ریشم کی اقسام) نہ پہنو، کیونکہ یہ چیزیں دنیا میں کافروں کے لیے ہیں اور تمہارے لیے قیامت کے دن یہ چیزیں آخرت میں ہوں گی۔


وَحَدَّثَنَاهُ ابْنُ أَبِي عُمَرَ ، حَدَّثَنَا سُفْيَانُ ، عَنْ أَبِي فَرْوَةَ الْجُهَنِيِّ ، قَالَ: سَمِعْتُ عَبْدَ اللهِ بْنَ عُكَيْمٍ ، يَقُولُ: كُنَّا عِنْدَ حُذَيْفَةَ بِالْمَدَائِنِ ، فَذَكَرَ نَحْوَهُ ، وَلَمْ يَذْكُرْ فِي الْحَدِيثِ يَوْمَ الْقِيَامَةِ.

It was narrated that Abu Farwah Al-Juhani said: "I heard 'Abdullah bin 'Ukaim say: 'We were with Hudhaifah in Al-Mada'in..."' and he mentioned something similar (to no. 5394) but he did not mention in his Hadith "...the Day of Resurrection."

عبد اللہ بن عکیم بیان کرتے ہیں کہ ہم مدائن میں حضرت حذیفہ رضی اللہ عنہ کے پاس تھے ، اس کے بعد مذکورہ بالا حدیث کی طرح بیان کیا ہے ، اور اس حدیث میں قیامت کے دن کا ذکر نہیں ہے۔


وحَدَّثَنِي عَبْدُ الْجَبَّارِ بْنُ الْعَلاَءِ ، حَدَّثَنَا سُفْيَانُ ، حَدَّثَنَا ابْنُ أَبِي نَجِيحٍ ، أَوَّلاً عَنْ مُجَاهِدٍ ، عَنِ ابْنِ أَبِي لَيْلَى ، عَنْ حُذَيْفَةَ ، ثُمَّ حَدَّثَنَا يَزِيدُ ، سَمِعَهُ مِنِ ابْنِ أَبِي لَيْلَى ، عَنْ حُذَيْفَةَ ، ثُمَّ حَدَّثَنَا أَبُو فَرْوَةَ ، قَالَ : سَمِعْتُ ابْنَ عُكَيْمٍ ، فَظَنَنْتُ أَنَّ ابْنَ أَبِي لَيْلَى ، إِنَّمَا سَمِعَهُ مِنِ ابْنِ عُكَيْمٍ ، قَالَ : كُنَّا مَعَ حُذَيْفَةَ بِالْمَدَائِنِ فَذَكَرَ نَحْوَهُ ، وَلَمْ يَقُلْ : يَوْمَ الْقِيَامَةِ.

It was narrated from Hudhaifah, that Abu Farwah said 'I heard Ibn 'Ukaim say, - and I thought that Ibn Abi Laila heard it from Ibn 'Ukaim: 'We were with Hudhaifah in Al-Mada'in,"' and he mentioned something similar (to no. 5394), but he did not say "the Day of Resurrection."

عبد اللہ بن عکیم بیان کرتے ہیں کہ ہم مدائن میں حضرت حذیفہ رضی اللہ عنہ کے پاس تھے ، اس کے بعد مذکورہ بالا حدیث کی طرح بیان کیا ہے ، اور اس حدیث میں قیامت کے دن کا ذکر نہیں ہے۔


وحَدَّثَنَا عُبَيْدُ اللهِ بْنُ مُعَاذٍ الْعَنْبَرِيُّ ، حَدَّثَنَا أَبِي ، حَدَّثَنَا شُعْبَةُ ، عَنِ الْحَكَمِ ، أَنَّهُ سَمِعَ عَبْدَ الرَّحْمَنِ ، يَعْنِي ابْنَ أَبِي لَيْلَى ، قَالَ: شَهِدْتُ حُذَيْفَةَ اسْتَسْقَى بِالْمَدَائِنِ ، فَأَتَاهُ إِنْسَانٌ بِإِنَاءٍ مِنْ فِضَّةٍ ، فَذَكَرَهُ بِمَعْنَى حَدِيثِ ابْنِ عُكَيْمٍ ، عَنْ حُذَيْفَةَ.

It was narrated from Al-Hakam that he heard 'Abdur-Rahman, meaning Ibn Abi Laila, say: "I saw Hudhaifah ask for a drink in Al-Mada'in, and someone brought it to him in a vessel of silver." And he mentioned a Hadith like that of Ibn 'Ukaim from Hudhaifah.

عبد الرحمن بن ابی لیلی کہتے ہیں کہ میں مدائن میں حضرت حذیفہ کے پاس گیا ، ان کے پاس ایک آدمی چاندی کا برتن لیکر آیا ، اس کے بعد ابن عکیم کی روایت کی طرح ہے ۔


وَحَدَّثَنَاهُ أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ ، حَدَّثَنَا وَكِيعٌ (ح) وحَدَّثَنَا ابْنُ الْمُثَنَّى ، وَابْنُ بَشَّارٍ ، قَالاَ : حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ جَعْفَرٍ (ح) وحَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ الْمُثَنَّى ، حَدَّثَنَا ابْنُ أَبِي عَدِيٍّ (ح) وحَدَّثَنِي عَبْدُ الرَّحْمَنِ بْنُ بِشْرٍ ، حَدَّثَنَا بَهْزٌ ، كُلُّهُمْ عَنْ شُعْبَةَ ، بِمِثْلِ حَدِيثِ مُعَاذٍ وَإِسْنَادِهِ. وَلَمْ يَذْكُرْ أَحَدٌ مِنْهُمْ فِي الْحَدِيثِ ، شَهِدْتُ حُذَيْفَةَ غَيْرُ مُعَاذٍ وَحْدَهُ ، إِنَّمَا قَالُوا: إِنَّ حُذَيْفَةَ اسْتَسْقَى.

A Hadith like that of Mu'adh was narrated from Shu'bah, with the same chain narrators, but none of them mentioned the words: "I saw Hudhaifah," except Mu'adh only. Rather they said: "Hudhaifah asked for a drink."

یہ حدیث تین سندوں سے مروی ہے ان میں معاذ کے علاوہ کسی اور کی روایت میں یہ نہیں ہے کہ میں حضرت حذیفہ رضی اللہ عنہ کی خدمت میں حاضر ہوا ، ان میں صرف اتنا ذکر ہے کہ حضرت حذیفہ نے پانی مانگا۔


وحَدَّثَنَا إِسْحَاقُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ ، أَخْبَرَنَا جَرِيرٌ ، عَنْ مَنْصُورٍ (ح) وحَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ الْمُثَنَّى ، حَدَّثَنَا ابْنُ أَبِي عَدِيٍّ ، عَنِ ابْنِ عَوْنٍ ، كِلاَهُمَا عَنْ مُجَاهِدٍ ، عَنْ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ أَبِي لَيْلَى ، عَنْ حُذَيْفَةَ ، عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ بِمَعْنَى حَدِيثِ مَنْ ذَكَرْنَا.

A Hadith like that of those whom we have mentioned (Mu'adh, Abi Laila, Ibn Ukaim) was narrated from Hudhaifah, from the Prophet (s.a.w).

حضرت حذیفہ رضی اللہ عنہ نے نبی ﷺسے مذکورہ بالا حدیث کی طرح روایت کی ہے۔


حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ عَبْدِ اللهِ بْنِ نُمَيْرٍ ، حَدَّثَنَا أَبِي ، حَدَّثَنَا سَيْفٌ ، قَالَ: سَمِعْتُ مُجَاهِدًا ، يَقُولُ: سَمِعْتُ عَبْدَ الرَّحْمَنِ بْنَ أَبِي لَيْلَى ، قَالَ: اسْتَسْقَى حُذَيْفَةُ ، فَسَقَاهُ مَجُوسِيٌّ فِي إِنَاءٍ مِنْ فِضَّةٍ ، فَقَالَ: إِنِّي سَمِعْتُ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، يَقُولُ: لاَ تَلْبَسُوا الْحَرِيرَ وَلاَ الدِّيبَاجَ ، وَلاَ تَشْرَبُوا فِي آنِيَةِ الذَّهَبِ وَالْفِضَّةِ ، وَلاَ تَأْكُلُوا فِي صِحَافِهَا ، فَإِنَّهَا لَهُمْ فِي الدُّنْيَا.

'Abdur-Rahman bin Abi Laila said: "Hudhaifah asked for a drink and a Magian gave it to him in a vessel of silver. He said: 'I heard the Messenger of Allah (s.a.w) say: "Do not wear silk or Dibaj, and do not drink from vessels of gold and silver, or eat from plates of the same. They are for them in this world."

حضرت عبد الرحمن بن ابی لیلیٰ سے روایت ہے کہ حضرت حذیفہ رضی اللہ عنہ نے پانی مانگا تو ایک مجوسی نے انہیں چاندی کے ایک برتن میں پانی پلایا ، حضرت حذیفہ نے کہا: میں نے رسول اللہ ﷺسے یہ سنا ہے کہ ریشم مت پہنو اور نہ ہی دیباج (ریشم کی ایک قسم)، اور سونے اور چاندی کے برتنوں میں مت پیواو ر نہ ہی ان کے پلیٹوں میں کھاؤ کیونکہ یہ دنیا میں کفار لیے لیے ہیں۔


حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ يَحْيَى ، قَالَ: قَرَأْتُ عَلَى مَالِكٍ ، عَنْ نَافِعٍ ، عَنِ ابْنِ عُمَرَ ، أَنَّ عُمَرَ بْنَ الْخَطَّابِ ، رَأَى حُلَّةً سِيَرَاءَ عِنْدَ بَابِ الْمَسْجِدِ ، فَقَالَ: يَا رَسُولَ اللهِ ، لَوِ اشْتَرَيْتَ هَذِهِ فَلَبِسْتَهَا لِلنَّاسِ يَوْمَ الْجُمُعَةِ وَلِلْوَفْدِ إِذَا قَدِمُوا عَلَيْكَ ، فَقَالَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ: إِنَّمَا يَلْبَسُ هَذِهِ مَنْ لاَ خَلاَقَ لَهُ فِي الآخِرَةِ ، ثُمَّ جَاءَتْ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ مِنْهَا حُلَلٌ ، فَأَعْطَى عُمَرَ مِنْهَا حُلَّةً ، فَقَالَ عُمَرُ: يَا رَسُولَ اللهِ ، كَسَوْتَنِيهَا ، وَقَدْ قُلْتَ فِي حُلَّةِ عُطَارِدٍ مَا قُلْتَ ، فَقَالَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ: إِنِّي لَمْ أَكْسُكَهَا لِتَلْبَسَهَا ، فَكَسَاهَا عُمَرُ أَخًا لَهُ مُشْرِكًا بِمَكَّةَ.

It was narrated from Ibn 'Umar that 'Umar bin Al-Khattab saw a striped silk Hullah being sold at the door of the Masjid, and he said: "O Messenger of Allah, why don't you buy this and wear it for the people on Fridays, and for the delegations when they come to you?" The Messenger of Allah (s.a.w) said: "This is only worn by one who has no share in the Hereafter." Then some Hullahs like it were brought to the Messenger of Allah (s.a.w) and he gave one of them to 'Umar. 'Umar said: "O Messenger of Allah, are you giving me this to wear when you said what you said about the Hullah of 'Utarid?" The Messenger of Allah (s.a.w) said: "I did not give it to you to wear it." So 'Umar gave it to an idolater brother of his in Makkah.

حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ حضرت عمر بن الخطاب رضی اللہ عنہ نے دیکھا کہ مسجد کے دروازے پر ایک ریشمی چادر بک رہا تھا، انہوں نے کہا: اے اللہ کے رسول ﷺ!کاش کہ آپ اس کو خرید لیتے اور جمعہ کے دن عام لوگوں کے لیے اس کو پہنتے، اور اس وقت پہنتے جب کوئی وفد ملاقات کے لیے آتا ۔رسول اللہﷺنے فرمایا: اس کو صرف وہی لوگ پہنتے ہیں جن کا آخرت میں کوئی حصہ نہیں ہے ۔پھر رسول اللہﷺکے پاس کچھ ریشمی حلے آئے ، آپ نے حضرت عمر کو بھی ایک حلہ دے دیا ، حضرت عمر رضی اللہ عنہ نے کہا: اے اللہ کے رسول ﷺ! آپﷺنے مجھے یہ حلہ پہننے کے لیے دیا ہے حالانکہ آپ نے عطارد کے حلہ میں یہ یہ فرمایا تھا ، رسول اللہﷺنے فرمایا: میں نے یہ حلہ تم کو پہننے کے لیے نہیں دیا ہے ۔ پھر حضرت عمر رضی اللہ عنہ نے وہ حلہ مکہ میں اپنے مشرک بھائی کو دے دیا۔


وحَدَّثَنَا ابْنُ نُمَيْرٍ ، حَدَّثَنَا أَبِي (ح) وحَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ، حَدَّثَنَا أَبُو أُسَامَةَ (ح) وحَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ أَبِي بَكْرٍ الْمُقَدَّمِيُّ ، حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ سَعِيدٍ ، كُلُّهُمْ عَنْ عُبَيْدِ اللهِ (ح) وحَدَّثَنِي سُوَيْدُ بْنُ سَعِيدٍ ، حَدَّثَنَا حَفْصُ بْنُ مَيْسَرَةَ ، عَنْ مُوسَى بْنِ عُقْبَةَ ، كِلاَهُمَا عَنْ نَافِعٍ ، عَنِ ابْنِ عُمَرَ ، عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ بِنَحْوِ حَدِيثِ مَالِكٍ.

A Hadith like that of Malik (no. 5401) was narrated from Ibn 'Umar, from the Messenger of Allah (s.a.w).

یہ حدیث دو سندوں سے مروی ہے ، حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ نے نبی ﷺسے مثل سابق روایت کی ہے


وحَدَّثَنَا شَيْبَانُ بْنُ فَرُّوخَ ، حَدَّثَنَا جَرِيرُ بْنُ حَازِمٍ ، حَدَّثَنَا نَافِعٌ ، عَنِ ابْنِ عُمَرَ ، قَالَ : رَأَى عُمَرُ عُطَارِدًا التَّمِيمِيَّ يُقِيمُ بِالسُّوقِ حُلَّةً سِيَرَاءَ ، وَكَانَ رَجُلاً يَغْشَى الْمُلُوكَ وَيُصِيبُ مِنْهُمْ ، فَقَالَ عُمَرُ : يَا رَسُولَ اللهِ ، إِنِّي رَأَيْتُ عُطَارِدًا يُقِيمُ فِي السُّوقِ حُلَّةً سِيَرَاءَ ، فَلَوِ اشْتَرَيْتَهَا فَلَبِسْتَهَا لِوُفُودِ الْعَرَبِ إِذَا قَدِمُوا عَلَيْكَ ، وَأَظُنُّهُ قَالَ ، وَلَبِسْتَهَا يَوْمَ الْجُمُعَةِ ، فَقَالَ لَهُ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ : إِنَّمَا يَلْبَسُ الْحَرِيرَ فِي الدُّنْيَا مَنْ لاَ خَلاَقَ لَهُ فِي الآخِرَةِ ، فَلَمَّا كَانَ بَعْدَ ذَلِكَ أُتِيَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ بِحُلَلٍ سِيَرَاءَ ، فَبَعَثَ إِلَى عُمَرَ بِحُلَّةٍ ، وَبَعَثَ إِلَى أُسَامَةَ بْنِ زَيْدٍ بِحُلَّةٍ ، وَأَعْطَى عَلِيَّ بْنَ أَبِي طَالِبٍ حُلَّةً ، وَقَالَ : شَقِّقْهَا خُمُرًا بَيْنَ نِسَائِكَ ، قَالَ : فَجَاءَ عُمَرُ بِحُلَّتِهِ يَحْمِلُهَا ، فَقَالَ : يَا رَسُولَ اللهِ ، بَعَثْتَ إِلَيَّ بِهَذِهِ ، وَقَدْ قُلْتَ بِالأَمْسِ فِي حُلَّةِ عُطَارِدٍ مَا قُلْتَ ، فَقَالَ : إِنِّي لَمْ أَبْعَثْ بِهَا إِلَيْكَ لِتَلْبَسَهَا ، وَلَكِنِّي بَعَثْتُ بِهَا إِلَيْكَ لِتُصِيبَ بِهَا ، وَأَمَّا أُسَامَةُ فَرَاحَ فِي حُلَّتِهِ ، فَنَظَرَ إِلَيْهِ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ نَظَرًا عَرَفَ أَنَّ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَدْ أَنْكَرَ مَا صَنَعَ ، فَقَالَ : يَا رَسُولَ اللهِ ، مَا تَنْظُرُ إِلَيَّ ، فَأَنْتَ بَعَثْتَ إِلَيَّ بِهَا ، فَقَالَ : إِنِّي لَمْ أَبْعَثْ إِلَيْكَ لِتَلْبَسَهَا ، وَلَكِنِّي بَعَثْتُ بِهَا إِلَيْكَ لِتُشَقِّقَهَا خُمُرًا بَيْنَ نِسَائِكَ.

0

حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ حضرت عمر رضی اللہ عنہ نے دیکھا کہ عطارد تمیمی بازار میں ایک ریشمی حلہ لیے بیٹھا ہے ، یہ آدمی بادشاہ کے پاس جاتا تھا اور ان سے انعام وصول کرتا تھا ، حضرت عمر رضی اللہ عنہ نے کہا: اے اللہ کے رسولﷺ!میں نے دیکھا بازار میں عطارد ریشمی حلہ بیچ رہا ہے کاش! آپ اس سے حلہ خرید لیتے اور جب عرب کے وفود آپ سے ملنے کے لیے آتے تو آپ اس کو زیب تن کرلیتے ، حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ میرا خیال ہے کہ حضرت عمر رضی اللہ عنہ نے کہا تھا: اور آپ اس کو جمعہ کے دن پہنتے ، رسول اللہ ﷺنے فرمایا: دنیا میں ریشم کو صرف وہ آدمی پہنتا ہے جس کا آخرت میں کوئی حصہ نہیں ہوتا ، اس واقعہ کے بعد رسول اللہﷺکےپاس کئی ریشمی حلے آئے ، آپﷺنے ایک حلہ حضرت عمررضی اللہ عنہ کے پاس بھیجا ، ایک حضرت اسامہ بن زید کے پاس بھیجا اور ایک حلہ حضرت علی بن ابی طالب کے پاس بھیجا اور فرمایا: اس کو پھاڑ کر اپنی عورتوں کے دوپٹے بنادو، حضرت عمر رضی اللہ عنہ اپنے حلے کو اٹھاکر لائے اور کہا: اے اللہ کے رسول ﷺ! آپ نے یہ حلہ میرے پاس بھیجا ہے ، حالانکہ آپ نے کل عطارد کے حلہ کے متعلق یہ فرمایا تھا ۔ آپﷺنے فرمایا: میں نے تمہارے پاس یہ حلہ اس لیے نہیں بھیجا کہ تم اس کو خود پہنو ، بلکہ میں نے تمہارے پاس اس لیے بھیجا ہے کہ تم اس سے فائدہ حاصل کرو، رہے حضر ت اسامہ تو وہ حلہ پہن کر حاضر ہوئے ، رسول اللہﷺنے ان کو اس طرح دیکھا جس سے انہوں نے یہ جان لیا کہ آپ کو یہ پہننا ناپسند ہے ، انہوں نے کہا : اے اللہ کے رسولﷺ! آپ مجھے کیوں اس طرح دیکھ رہے ہیں حالانکہ آپ نے خود اس حلہ کو میرے پاس بھیجا تھا ، آپ نے فرمایا: میں نے اس لیے نہیں بھیجا تھا کہ تم خود اس کو پہنو، لیکن میں نے تمہارے پاس اس حلہ کو اس لیے بھیجا تھا کہ تم اس کو پھاڑ کر اپنی عورتوں کے دوپٹے بنالو۔


وحَدَّثَنِي أَبُو الطَّاهِرِ ، وَحَرْمَلَةُ بْنُ يَحْيَى ، وَاللَّفْظُ لِحَرْمَلَةَ ، قَالاَ : أَخْبَرَنَا ابْنُ وَهْبٍ ، أَخْبَرَنِي يُونُسُ ، عَنِ ابْنِ شِهَابٍ ، حَدَّثَنِي سَالِمُ بْنُ عَبْدِ اللهِ ، أَنَّ عَبْدَ اللهِ بْنَ عُمَرَ ، قَالَ : وَجَدَ عُمَرُ بْنُ الْخَطَّابِ حُلَّةً مِنْ إِسْتَبْرَقٍ تُبَاعُ بِالسُّوقِ ، فَأَخَذَهَا ، فَأَتَى بِهَا رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، فَقَالَ : يَا رَسُولَ اللهِ ، ابْتَعْ هَذِهِ فَتَجَمَّلْ بِهَا لِلْعِيدِ ، وَلِلْوَفْدِ ، فَقَالَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ : إِنَّمَا هَذِهِ لِبَاسُ مَنْ لاَ خَلاَقَ لَهُ ، قَالَ : فَلَبِثَ عُمَرُ مَا شَاءَ اللَّهُ ثُمَّ أَرْسَلَ إِلَيْهِ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ بِجُبَّةِ دِيبَاجٍ ، فَأَقْبَلَ بِهَا عُمَرُ حَتَّى أَتَى بِهَا رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، فَقَالَ : يَا رَسُولَ اللهِ ، قُلْتَ : إِنَّمَا هَذِهِ لِبَاسُ مَنْ لاَ خَلاَقَ لَهُ ، أَوْ إِنَّمَا يَلْبَسُ هَذِهِ مَنْ لاَ خَلاَقَ لَهُ ، ثُمَّ أَرْسَلْتَ إِلَيَّ بِهَذِهِ ، فَقَالَ لَهُ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ : تَبِيعُهَا وَتُصِيبُ بِهَا حَاجَتَكَ.

'Abdullah bin 'Umar said: "Umar bin Al-Khattab found a Hullah of Istabraq being offered for sale in the market, so he took it and brought it to the Messenger of Allah (s.a.w) and said: 'O Messenger of Allah, buy this and adorn yourself with it for 'Eid and for the delegations.' The Messenger of Allah (s.a.w) said: 'This is only a garment for the one who has no share in the Hereafter.' As much time passed as Allah willed, then the Messenger of Allah (s.a.w) sent to 'Umar a garment made of Dibaj. 'Umar brought it to the Messenger of Allah (s.a.w) and said: 'O Messenger of Allah, you said: "This is only a garment for the one who has no share in the Hereafter," then you sent this to me?' The Messenger of Allah (s.a.w) said to him: 'Sell it and meet your needs with it.'"

حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ حضرت عمر رضی اللہ عنہ نے بازار میں دیکھا کہ استبرق (موٹا ریشم) کا ایک حلہ فروخت کیا جارہا ہے وہ اس حلہ کو لیکر رسول اللہﷺکی خدمت میں حاضر ہوئے اور کہا: اے اللہ کے رسول ﷺ!اس کو خرید لیجئے ، اور عید کے موقعہ پر اور وفد کے لیےپہن لیجئے ۔ رسول اللہ ﷺنے فرمایا: یہ صرف ان لوگوں کا لباس ہے جن کا آخرت میں کوئی حصہ نہیں ہے۔پھر جب تک اللہ کو منظور تھا حضرت عمررضی اللہ عنہ ٹھہرے رہے ، پھر رسول اللہ ﷺنے ان کی طرف ایک موٹے ریشم کا جبہ بھیجا ، تو حضرت عمر رضی اللہ عنہ وہ لیکر رسول اللہ ﷺکی خدمت میں حاضر ہوئے اور کہنے لگے: اے اللہ کے رسولﷺ! آپﷺنے یہ کہاتھا: کہ یہ ان لوگوں کا لباس ہے جن کا آخرت میں کوئی حصہ نہیں ہے ، پھر آپ ﷺنے اسی کو میرے پاس بھیج دیا۔ رسول اللہﷺنے فرمایا: اس کو بیچ دو اور پھر اس (قیمت) کو اپنے کام میں لے آؤ۔


وحَدَّثَنَا هَارُونُ بْنُ مَعْرُوفٍ ، حَدَّثَنَا ابْنُ وَهْبٍ ، أَخْبَرَنِي عَمْرُو بْنُ الْحَارِثِ ، عَنِ ابْنِ شِهَابٍ ، بِهَذَا الإِسْنَادِ مِثْلَهُ.

A similar report (as no. 5404) was narrated from Ibn Shihab, with this chain of narrators.

یہ حدیث ایک اور سند سے بھی مروی ہے۔


حَدَّثَنِي زُهَيْرُ بْنُ حَرْبٍ ، حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ سَعِيدٍ ، عَنْ شُعْبَةَ ، أَخْبَرَنِي أَبُو بَكْرِ بْنُ حَفْصٍ ، عَنْ سَالِمٍ ، عَنِ ابْنِ عُمَرَ ، أَنَّ عُمَرَ ، رَأَى عَلَى رَجُلٍ مِنْ آلِ عُطَارِدٍ قَبَاءً مِنْ دِيبَاجٍ ، أَوْ حَرِيرٍ ، فَقَالَ لِرَسُولِ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ: لَوِ اشْتَرَيْتَهُ فَقَالَ: إِنَّمَا يَلْبَسُ هَذَا مَنْ لاَ خَلاَقَ لَهُ ، فَأُهْدِيَ إِلَى رَسُولِ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ حُلَّةٌ سِيَرَاءُ ، فَأَرْسَلَ بِهَا إِلَيَّ ، قَالَ: قُلْتُ: أَرْسَلْتَ بِهَا إِلَيَّ وَقَدْ سَمِعْتُكَ قُلْتَ فِيهَا مَا قُلْتَ ، قَالَ: إِنَّمَا بَعَثْتُ بِهَا إِلَيْكَ لِتَسْتَمْتِعَ بِهَا.

It was narrated from Ibn 'Umar that 'Umar saw a man from the family of 'Utarid wearing a cloak of Dibaj or silk, and he said to the Messenger of Allah (s.a.w): 'Why don't you buy it?' He said: 'This is only worn by one who has no share in the Hereafter.' Then the Messenger of Allah (s.a.w) was given a Hullah of striped silk, and he sent it to me. I said: 'Have you sent it to me when I heard you say what you said about it?' He said: 'I only sent it to you so that you profit from it.'"

حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ حضرت عمر رضی اللہ عنہ نے آل عطارد کے ایک آدمی کے پاس دیباج یا ریشم کی قبا دیکھی ، تو انہوں نے رسول اللہ ﷺسے عرض کیا : اگر آپ اس کو خرید لیتے ، آپﷺنے فرمایا: اس کو تووہی لوگ پہنتے ہیں جن کا آخرت میں کوئی حصہ نہیں ہے ، پھر آپﷺکو ایک ریشمی حلہ ہدیہ دیا گیا ، تو آپﷺنے وہ حلہ میرے پاس بھیج دیا ، میں نے کہا: آپ ﷺنے وہ حلہ میرے پاس بھیج دیا ، حالانکہ میں آپ سے اس کے بارے میں سن چکا ہوں جو آپﷺنے فرمایا تھا ، آپﷺنے فرمایا: میں نے اس کو تمہارے پاس صرف اس لیے بھیجا ہے کہ تم اس سے فائدہ اٹھاؤ۔


وحَدَّثَنِي ابْنُ نُمَيْرٍ ، حَدَّثَنَا رَوْحٌ ، حَدَّثَنَا شُعْبَةُ ، حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ حَفْصٍ ، عَنْ سَالِمِ بْنِ عَبْدِ اللهِ بْنِ عُمَرَ ، عَنْ أَبِيهِ ، أَنَّ عُمَرَ بْنَ الْخَطَّابِ ، رَأَى عَلَى رَجُلٍ مِنْ آلِ عُطَارِدٍ ... بِمِثْلِ حَدِيثِ يَحْيَى بْنِ سَعِيدٍ. غَيْرَ أَنَّهُ قَالَ: إِنَّمَا بَعَثْتُ بِهَا إِلَيْكَ لِتَنْتَفِعَ بِهَا ، وَلَمْ أَبْعَثْ بِهَا إِلَيْكَ لِتَلْبَسَهَا.

It was narrated from Salim bin 'Abdullah bin 'Umar, from his father, that 'Umar bin Al-Khattab saw a man from the family of 'Utarid wearing... a Hadith like that of Yahya bin Sa'eed (no. 5406), except that he said: "I only sent it to you so that you could benefit from it, I did not send it to you so that you could wear it."

حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ حضرت عمر بن الخطاب رضی اللہ عنہ نے آل عطارد کے ایک آدمی کے پاس حلہ دیکھا ۔ اس کے بعد یحییٰ بن سعید کی حدیث کی طرح ہے ، صرف اس میں یہ ہے کہ میں نے تمہارے پاس یہ اس لیے بھیجا ہے کہ تم اس سے فائدہ اٹھاؤ اور تمہارے پاس اس کو پہننے کے لیے نہیں بھیجا ہے۔


حَدَّثَنِي مُحَمَّدُ بْنُ الْمُثَنَّى، حَدَّثَنَا عَبْدُ الصَّمَدِ، قَالَ: سَمِعْتُ أَبِي ، يُحَدِّثُ، قَالَ: حَدَّثَنِي يَحْيَى بْنُ أَبِي إِسْحَاقَ ، قَالَ: قَالَ لِي سَالِمُ بْنُ عَبْدِ اللهِ فِي الإِسْتَبْرَقِ، قَالَ: قُلْتُ: مَا غَلُظَ مِنَ الدِّيبَاجِ وَخَشُنَ مِنْهُ ، فَقَالَ: سَمِعْتُ عَبْدَ اللهِ بْنَ عُمَرَ ، يَقُولُ: رَأَى عُمَرُ عَلَى رَجُلٍ حُلَّةً مِنْ إِسْتَبْرَقٍ ، فَأَتَى بِهَا النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَذَكَرَ نَحْوَ حَدِيثِهِمْ. غَيْرَ أَنَّهُ ، قَالَ: فَقَالَ: إِنَّمَا بَعَثْتُ بِهَا إِلَيْكَ لِتُصِيبَ بِهَا مَالاً.

Yahya bin Abi Ishaq said: "Salim bin 'Abdullah asked me about Istabraq. I said: 'It is the coarse type of D'ibaj .' He said: 'But I heard 'Abdullah bin 'Umar say: "Umar saw a man wearing a Hullah of Istabraq, and he brought it to the Messenger of Allah (s.a.w)...'' and he mentioned a similar Hadith (as no. 5407), except that he said: "I only sent it to you so that you could get money by selling it.''

یحییٰ بن ابی اسحاق سے روایت ہے کہ سالم بن عبد اللہ نے مجھ سے موٹے ریشم کے بارے میں دریافت کیا ، میں نے کہا: وہ موٹا اور سخت ریشم ہے ، تو فرمایا: میں نے عبد اللہ عمر رضی اللہ عنہ سے سنا وہ فرما رہے تھے کہ حضرت عمر رضی اللہ عنہ نے ایک آدمی کے پاس استبرق (موٹے ریشم ) کا حلہ دیکھا ، وہ اس کو نبی ﷺ کے پاس لیکر آئے ، اس کے بعد مذکورہ بالا حدیث کی طرح ہے ، لیکن اس میں یہ ہے کہ آپﷺنے فرمایا: میں نے یہ حلہ آپ کے پاس اس لیے بھیجا ہے تاکہ تم اس سے کچھ مال حاصل کرسکو۔


حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ يَحْيَى ، أَخْبَرَنَا خَالِدُ بْنُ عَبْدِ اللهِ ، عَنْ عَبْدِ الْمَلِكِ ، عَنْ عَبْدِ اللهِ ، مَوْلَى أَسْمَاءَ بِنْتِ أَبِي بَكْرٍ ، وَكَانَ خَالَ وَلَدِ عَطَاءٍ، قَالَ: أَرْسَلَتْنِي أَسْمَاءُ إِلَى عَبْدِ اللهِ بْنِ عُمَرَ ، فَقَالَتْ: بَلَغَنِي أَنَّكَ تُحَرِّمُ أَشْيَاءَ ثَلاَثَةً: الْعَلَمَ فِي الثَّوْبِ ، وَمِيثَرَةَ الأُرْجُوَانِ ، وَصَوْمَ رَجَبٍ كُلِّهِ ، فَقَالَ لِي عَبْدُ اللهِ: أَمَّا مَا ذَكَرْتَ مِنْ رَجَبٍ فَكَيْفَ بِمَنْ يَصُومُ الأَبَدَ ؟ وَأَمَّا مَا ذَكَرْتَ مِنَ الْعَلَمِ فِي الثَّوْبِ ، فَإِنِّي سَمِعْتُ عُمَرَ بْنَ الْخَطَّابِ ، يَقُولُ: سَمِعْتُ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، يَقُولُ: إِنَّمَا يَلْبَسُ الْحَرِيرَ مَنْ لاَ خَلاَقَ لَهُ ، فَخِفْتُ أَنْ يَكُونَ الْعَلَمُ مِنْهُ ، وَأَمَّا مِيثَرَةُ الأُرْجُوَانِ ، فَهَذِهِ مِيثَرَةُ عَبْدِ اللهِ ، فَإِذَا هِيَ أُرْجُوَانٌ. فَرَجَعْتُ إِلَى أَسْمَاءَ فَخَبَّرْتُهَا ، فَقَالَتْ: هَذِهِ جُبَّةُ رَسُولِ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، فَأَخْرَجَتْ إِلَيَّ جُبَّةَ طَيَالِسَةٍ كِسْرَوَانِيَّةٍ لَهَا لِبْنَةُ دِيبَاجٍ ، وَفَرْجَيْهَا مَكْفُوفَيْنِ بِالدِّيبَاجِ ، فَقَالَتْ: هَذِهِ كَانَتْ عِنْدَ عَائِشَةَ حَتَّى قُبِضَتْ ، فَلَمَّا قُبِضَتْ قَبَضْتُهَا ، وَكَانَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يَلْبَسُهَا ، فَنَحْنُ نَغْسِلُهَا لِلْمَرْضَى يُسْتَشْفَى بِهَا.

It was narrated that 'Abdullah, the freed slave of Asma' bint Abi Bakr, who was the maternal uncle of the son of 'Ata', said: "Asma' sent me to 'Abdullah bin 'Umar, and saying: 'I have heard that you regard three things as Haram: Borders on garments, Mitharat Al-Arjuwan, and fasting the whole (month) of Rajah.' 'Abdullah said to me: 'As for what you have mentioned about Rajah, what about one who fasts continually? As for what you said about borders on garments, I heard 'Umar bin Al-Khattab say: "I heard the Messenger of Allah (s.a.w) say: 'Silk is only worn by one who has no share in the Hereafter,"' and I was afraid that borders were included in that. As for Mitharat Al-Arjuwan, this is the Mitharah of 'Abdullah, and it is Arjuwan.' I went back to Asma' and told her, and she said: 'This is the Jubbah (a type of cloak) of the Messenger of Allah (s.a.w),' and she brought out to me a Tayalisah cloak which had pockets lined with Dibaj and its sleeves were edged with Dibaj. She said: 'This was in 'Aishah's possession until she died, and when she died, I took it. The Prophet (s.a.w) used to wear it, and now we wash it for the sick and seek healing thereby.'"

حضرت اسماء بن ابی بکر رضی اللہ عنہا کے غلام عبد اللہ جو عطاء کے لڑکے کے ماموں تھے ، وہ کہتے ہیں کہ حضرت اسماء نے مجھے عبد اللہ بن عمر رضی اللہ عنہ کے پاس بھیجا اور یہ کہا مجھے پتا چلا کہ آپ تین چیزوں کو حرام کہتے ہیں ۔کپڑوں کے نقش نگار کو ، سرخ گدوں کو ، اور رجب کے مہینے کے تمام روزے رکھنے کو ، حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ نے کہا: آپ نے جو رجب کے بارے ذکر کیا ہے تو جو آدمی ہمیشہ روزہ رکھتا ہو، باقی رہا کپڑوں کے نقش و نگار کا مسئلہ تو بات یہ ہے کہ میں نے حضرت عمر رضی اللہ عنہ سے سنا ہے کہ رسو ل اللہﷺنے فرمایا: ریشم کو وہی لوگ پہنتے ہیں جن کا آخرت میں کوئی حصہ نہیں ہے۔ اور مجھے یہ خدشہ تھا کہ نقش و نگار بھی شاید ریشم سے بنائے جاتے ہیں ، رہا سرخ گدا تو عبد اللہ بن عمر رضی اللہ عنہ کا گدا بھی سرخ تھا ، راوی کہتا ہے کہ یہ جوابات لیکر میں حضرت اسماء رضی اللہ عنہا کے پاس گیا او ران کو وہ جوابات بتلائے ، حضرت اسماء نے کہا: یہ رسول اللہﷺکا جبہ ہے ، انہوں نے ایک طیالسی کسروانی جبہ نکالا ، جس کی آستینوں اور گریبان پر ریشم کے نقش و نگار بنے ہوئے تھے ، حضرت اسماء نے کہا: یہ جبہ حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا کی وفات تک ان کے پاس تھا ، اور جب ان کی وفات ہوئی تو پھر میں نے ا س پر قبضہ کرلیا ، نبی ﷺاس جبہ کو پہنتے تھے ہم اس جبہ کو دھوکر اس کا پانی بیماروں کو پلاتے ہیں اور اس جبہ سے ان کے لیے شفا طلب کرتے ہیں۔


حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ ، حَدَّثَنَا عُبَيْدُ بْنُ سَعِيدٍ ، عَنْ شُعْبَةَ ، عَنْ خَلِيفَةَ بْنِ كَعْبٍ أَبِي ذِبْيَانَ ، قَالَ: سَمِعْتُ عَبْدَ اللهِ بْنَ الزُّبَيْرِ ، يَخْطُبُ ، يَقُولُ: أَلاَ لاَ تُلْبِسُوا نِسَاءَكُمُ الْحَرِيرَ ، فَإِنِّي سَمِعْتُ عُمَرَ بْنَ الْخَطَّابِ يَقُولُ: قَالَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ: لاَ تَلْبَسُوا الْحَرِيرَ ، فَإِنَّهُ مَنْ لَبِسَهُ فِي الدُّنْيَا لَمْ يَلْبَسْهُ فِي الآخِرَةِ.

It was narrated that Khalifah bin Ka'b, Abu Dhubyan, said: "Do not dress your women in silk, for I heard 'Umar bin Al-Khattab say: 'The Messenger of Allah (s.a.w) said: "Do not wear silk, for whoever wears it in this world will not wear it in the Hereafter."

خلیفہ بن کعب ابی ذبیان کہتے ہیں کہ میں نے حضرت عبد اللہ بن زبیر رضی اللہ عنہ سے سنا وہ خطبہ دے رہے تھے کہ سنو! اپنی عورتوں کو ریشم مت پہناؤ ، کیونکہ میں نے حضرت عمر بن خطاب رضی اللہ عنہ سے سنا وہ کہتے تھے کہ رسول اللہﷺنے فرمایا: ریشم مت پہنو ، کیونکہ جس نے دنیا میں ریشم پہنا وہ آخرت میں ریشم نہیں پہنے گا۔


حَدَّثَنَا أَحْمَدُ بْنُ عَبْدِ اللهِ بْنِ يُونُسَ ، حَدَّثَنَا زُهَيْرٌ ، حَدَّثَنَا عَاصِمٌ الأَحْوَلُ ، عَنْ أَبِي عُثْمَانَ ، قَالَ: كَتَبَ إِلَيْنَا عُمَرُ وَنَحْنُ بِأَذْرَبِيجَانَ: يَا عُتْبَةُ بْنَ فَرْقَدٍ ، إِنَّهُ لَيْسَ مِنْ كَدِّكَ ، وَلاَ مِنْ كَدِّ أَبِيكَ ، وَلاَ مِنْ كَدِّ أُمِّكَ ، فَأَشْبِعِ الْمُسْلِمِينَ فِي رِحَالِهِمْ مِمَّا تَشْبَعُ مِنْهُ فِي رَحْلِكَ ، وَإِيَّاكُمْ وَالتَّنَعُّمَ ، وَزِيَّ أَهْلِ الشِّرْكِ ، وَلَبُوسَ الْحَرِيرَ ، فَإِنَّ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ نَهَى عَنْ لَبُوسِ الْحَرِيرِ ، قَالَ: إِلاَّ هَكَذَا ، وَرَفَعَ لَنَا رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ إِصْبَعَيْهِ الْوُسْطَى وَالسَّبَّابَةَ وَضَمَّهُمَا. قَالَ زُهَيْرٌ: قَالَ عَاصِمٌ : هَذَا فِي الْكِتَابِ ، قَالَ: وَرَفَعَ زُهَيْرٌ إِصْبَعَيْهِ.

It was narrated that Abu 'Uthman said: "Umar wrote to us when we were in Azerbaijan, (saying): 'O 'Utbah bin Farqad, it is not by your efforts or by the efforts of your father or the efforts of your mother. Feed the Muslims in their places from that which you feed yourself in your place. Beware of luxury and the garments of the people of Shirk and garments of silk, for the Messenger of Allah (s.a.w) forbade garments of silk and said except this much, and the Messenger of Allah (s.a.w) held up his forefinger and middle finger, holding them together.'" Zuhair said: "Asim said: 'It is in the book,"' and Zuhair held up his two fingers.

ابو عثمان بیان کرتے ہیں کہ جس وقت ہم آذربائیجان میں تھے ، حضرت عمر نے ہمیں لکھا : اے عتبہ بن فرقد ! (تمہارے پاس جو مال ہے) اس میں نہ تمہاری کوشش کا دخل ہے نہ تمہارے باپ کی کوشش کا دخل ہے نہ تمہار ماں کی کوشش کا دخل ہے ، تو مسلمانوں کو ان کے گھروں پر ان چیزوں سے پیٹ بھر کر کھلاؤ جن سے تم اپنے گھر پر پیٹ بھر کر کھاتےہو او رتم عیش و عشرت مشرکیں کے لباس اور ریشم پہننے سے بچتے رہنا ، کیونکہ رسو ل اللہ ﷺنے ریشم پہننے سے منع فرمایا ہے ، مگر ریشم کی اتنی مقدار جائز ہے ، یہ فرمایا کر رسول اللہﷺنے اپنی دو انگلیاں درمیانی انگلی اورانگشت شہادت ملاکر بلند فرمائیں ، زہیر نے بھی اپنی دو انگلیاں بلند کیں۔


حَدَّثَنِي زُهَيْرُ بْنُ حَرْبٍ ، حَدَّثَنَا جَرِيرُ بْنُ عَبْدِ الْحَمِيدِ (ح) وحَدَّثَنَا ابْنُ نُمَيْرٍ ، حَدَّثَنَا حَفْصُ بْنُ غِيَاثٍ كِلاَهُمَا عَنْ عَاصِمٍ ، بِهَذَا الإِسْنَادِ ، عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فِي الْحَرِيرِ ، بِمِثْلِهِ.

A similar report (as no. 5412) was narrated from 'Asim with this chain of narrators, from the Prophet (s.a.w), concerning silk.

یہ حدیث ایک اور سند سے بھی حسب سابق مروی ہے ۔


وحَدَّثَنَا ابْنُ أَبِي شَيْبَةَ وَهُوَ عُثْمَانُ ، وَإِسْحَاقُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ الْحَنْظَلِيُّ ، كِلاَهُمَا عَنْ جَرِيرٍ ، وَاللَّفْظُ لإِسْحَاقَ ، أَخْبَرَنَا جَرِيرٌ ، عَنْ سُلَيْمَانَ التَّيْمِيِّ ، عَنْ أَبِي عُثْمَانَ ، قَالَ:كُنَّا مَعَ عُتْبَةَ بْنِ فَرْقَدٍ ، فَجَاءَنَا كِتَابُ عُمَرَ أَنَّ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ: لاَ يَلْبَسُ الْحَرِيرَ إِلاَّ مَنْ لَيْسَ لَهُ مِنْهُ شَيْءٌ فِي الآخِرَةِ ، إِلاَّ هَكَذَا. وَقَالَ أَبُو عُثْمَانَ:بِإِصْبَعَيْهِ اللَّتَيْنِ تَلِيَانِ الإِبْهَامَ فَرُئِيتُهُمَا أَزْرَارَ الطَّيَالِسَةِ حِينَ رَأَيْتُ الطَّيَالِسَةَ.

It was narrated that Abu 'Uthman said: "We were with 'Utbah bin Farqad when the letter of 'Umar came to us, saying that the Messenger of Allah (s.a.w) said: 'No one wears silk but one who will have no share of it in the Hereafter, except this much."' Abu 'Uthman gestured with the two fingers that are next to the thumb. I thought it meant the patterns on the Tayalisah until I was shown the Tayalisah.

ابو عثمان بیان کرتے ہیں کہ ہم عتبہ بن فرقد کے ساتھ تھے ، ہمارے پاس حضرت عمر رضی اللہ عنہ مکتوب آیا کہ رسو ل اللہﷺنے فرمایا : ریشم کو وہی پہنے گا جس کا آخرت میں کوئی حصہ نہیں ہے ، صرف اتنی مقدار جائز ہے ، ابو عثمان نے اپنے انگوٹھے کے ساتھ ملی ہوئی دو انگلیوں کے ساتھ اشارہ کیا ، پھر جب میں نے طیالسہ کی چادر کو دیکھا تو ان انگلیوں کو طیالسہ کی چادر میں دیکھا۔


حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ عَبْدِ الأَعْلَى ، حَدَّثَنَا الْمُعْتَمِرُ ، عَنْ أَبِيهِ ، حَدَّثَنَا أَبُو عُثْمَانَ ، قَالَ: كُنَّا مَعَ عُتْبَةَ بْنِ فَرْقَدٍ ... بِمِثْلِ حَدِيثِ جَرِيرٍ.

Abu 'Uthman said: "We were with 'Utbah bin Farqad" - a Hadith like that of Jarir (no. 5413).

یہ حدیث بھی ایک اور سند سے حسب سابق مروی ہے۔ یعنی حدیث نمبر 5413 کی طرح ہے۔


حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ الْمُثَنَّى ، وَابْنُ بَشَّارٍ ، وَاللَّفْظُ لاِبْنِ الْمُثَنَّى ، قَالاَ: حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ جَعْفَرٍ ، حَدَّثَنَا شُعْبَةُ ، عَنْ قَتَادَةَ ، قَالَ: سَمِعْتُ أَبَا عُثْمَانَ النَّهْدِيَّ ، قَالَ: جَاءَنَا كِتَابُ عُمَرَ وَنَحْنُ بِأَذْرَبِيجَانَ مَعَ عُتْبَةَ بْنِ فَرْقَدٍ ، أَوْ بِالشَّامِ: أَمَّا بَعْدُ ، فَإِنَّ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ نَهَى عَنِ الْحَرِيرِ إِلاَّ هَكَذَا إِصْبَعَيْنِ. قَالَ أَبُو عُثْمَانَ: فَمَا عَتَّمْنَا أَنَّهُ يَعْنِي الأَعْلاَمَ.

It was narrated that Qatadah said: "I heard Abu 'Uthman An-Nahdi say: 'The letter of 'Umar came to us when we were in Azerbaijan with 'Utbah bin Farqad, or in Ash-Sham, (saying): 'The Messenger of Allah (s.a.w) forbade silk except so much"' - two fingers. Abu 'Uthman said: "We had no doubt that he meant silk borders."

ابو عثمان نہدی کہتے ہیں کہ ہمارے پاس حضرت عمر رضی اللہ عنہ کا مکتوب آیا اس حال میں کہ اس وقت ہم آذربائیجان میں عتبہ بن فرقد کے پاس تھے ، یا شام میں تھے ، اس میں یہ لکھا تھا : کہ رسول اللہ ﷺنے ریشم کو منع کیا صرف دو انگلیوں کی مقدار ، ہم نے اس سے نقش و نگار سمجھا۔


وحَدَّثَنَا أَبُو غَسَّانَ الْمِسْمَعِيُّ ، وَمُحَمَّدُ بْنُ الْمُثَنَّى ، قَالاَ : حَدَّثَنَا مُعَاذٌ ، وَهُوَ ابْنُ هِشَامٍ ، حَدَّثَنِي أَبِي ، عَنْ قَتَادَةَ ، بِهَذَا الإِسْنَادِ مِثْلَهُ ، وَلَمْ يَذْكُرْ قَوْلَ أَبِي عُثْمَانَ.

A similar report (as no. 5415) was narrated from Qatadah with this chain of narrators, but he did not mention the words of Abu 'Uthman.

یہ حدیث بھی ایک اور سند سے حسب سابق مروی ہے لیکن اس میں ابو عثمان کے قول کا ذکر نہیں ہے۔


حَدَّثَنَا عُبَيْدُ اللهِ بْنُ عُمَرَ الْقَوَارِيرِيُّ ، وَأَبُو غَسَّانَ الْمِسْمَعِيُّ ، وَزُهَيْرُ بْنُ حَرْبٍ ، وَإِسْحَاقُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ ، وَمُحَمَّدُ بْنُ الْمُثَنَّى ، وَابْنُ بَشَّارٍ ، قَالَ إِسْحَاقُ: أَخْبَرَنَا ، وَقَالَ الآخَرُونَ: حَدَّثَنَا مُعَاذُ بْنُ هِشَامٍ ، حَدَّثَنِي أَبِي ، عَنْ قَتَادَةَ ، عَنْ عَامِرٍ الشَّعْبِيِّ ، عَنْ سُوَيْدِ بْنِ غَفَلَةَ ، أَنَّ عُمَرَ بْنَ الْخَطَّابِ ، خَطَبَ بِالْجَابِيَةِ ، فَقَالَ: نَهَى نَبِيُّ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنْ لُبْسِ الْحَرِيرِ إِلاَّ مَوْضِعَ إِصْبَعَيْنِ ، أَوْ ثَلاَثٍ ، أَوْ أَرْبَعٍ.

It was narrated from Suwaid bin Ghafalah that 'Umar bin Al-Khattab gave a speech in Al-Jabiyah and said: "The Prophet of Allah (s.a.w) forbade wearing silk, except a space the width of two fingers, or three, or four."

حضرت سوید بن غفلہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ حضرت عمربن الخطاب رضی اللہ عنہ نے جابیہ میں خطبہ دیا تو فرمایا: نبی ﷺنے ریشم پہننے سے منع فرمایا ہے سوائے دو ، یا تین ، یا چار انگلیوں کے ۔


وحَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ عَبْدِ اللهِ الرُّزِّيُّ ، أَخْبَرَنَا عَبْدُ الْوَهَّابِ بْنُ عَطَاءٍ ، عَنْ سَعِيدٍ ، عَنْ قَتَادَةَ ، بِهَذَا الإِسْنَادِ مِثْلَهُ.

A similar report (as no. 5417) was narrated from Sa'eed, from Qatadah, with this chain of narrators.

یہ حدیث ایک اور سند سے بھی حسب سابق مروی ہے۔


حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ عَبْدِ اللهِ بْنِ نُمَيْرٍ ، وَإِسْحَاقُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ الْحَنْظَلِيُّ ، وَيَحْيَى بْنُ حَبِيبٍ ، وَحَجَّاجُ بْنُ الشَّاعِرِ ، وَاللَّفْظُ لاِبْنِ حَبِيبٍ ، قَالَ إِسْحَاقُ : أَخْبَرَنَا ، وقَالَ الآخَرُونَ : حَدَّثَنَا رَوْحُ بْنُ عُبَادَةَ ، حَدَّثَنَا ابْنُ جُرَيْجٍ ، أَخْبَرَنِي أَبُو الزُّبَيْرِ ، أَنَّهُ سَمِعَ جَابِرَ بْنَ عَبْدِ اللهِ ، يَقُولُ : لَبِسَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يَوْمًا قَبَاءً مِنْ دِيبَاجٍ أُهْدِيَ لَهُ ، ثُمَّ أَوْشَكَ أَنْ نَزَعَهُ ، فَأَرْسَلَ بِهِ إِلَى عُمَرَ بْنِ الْخَطَّابِ ، فَقِيلَ لَهُ : قَدْ أَوْشَكَ مَا نَزَعْتَهُ يَا رَسُولَ اللهِ ، فَقَالَ : نَهَانِي عَنْهُ جِبْرِيلُ ، فَجَاءَهُ عُمَرُ يَبْكِي ، فَقَالَ : يَا رَسُولَ اللهِ ، كَرِهْتَ أَمْرًا ، وَأَعْطَيْتَنِيهِ فَمَا لِي ؟ قَالَ : إِنِّي لَمْ أُعْطِكَهُ لِتَلْبَسَهُ ، إِنَّمَا أَعْطَيْتُكَهُ تَبِيعُهُ ، فَبَاعَهُ بِأَلْفَيْ دِرْهَمٍ.

Jabir bin 'Abdullah said: "One day the Prophet (s.a.w) wore a Qaba' (a type of cloak) of Dibaj silk that had been given to him, but soon he took . it off and sent it to 'Umar bin Al-Khattab. It was said to him: 'How quickly you took it off, O Messenger of Allah.' He said: 'Jibril told me not to wear it.' 'Umar came weeping and said: O Messenger of Allah, you disliked something but you gave it to me. What is the matter with me?' He said: 'I did not give it to you for you to wear it, rather I gave it to you for you to sell it.' So he sold it for two thousand Dirham."

حضرت جابر بن عبد اللہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ نبی ﷺنے ایک دن دیباج(ایک قسم کی ریشم) کی قباء پہنی جو آپ کو ہدیہ کی گئی تھی ، پھر آپﷺ نے اس کو اتار دیا اور اس کو حضرت عمر رضی اللہ عنہ کے پاس بھیج دیا ، آپﷺسے کہا گیا : اے اللہ کے رسولﷺ!آپ نے اس کو بہت جلد اتار دیا ، آپﷺنے فرمایا: مجھے جبریل نے اس سے منع کیا ، پھر حضرت عمر رضی اللہ عنہ روتے ہوئے آئے اور کہا: اے اللہ کے رسولﷺ! آپ نے ایک چیز کو ناپسند کیا پھر وہی چیز مجھے دی ،اب میں کیا کروں ؟ آپﷺنے فرمایا: میں نے تم کو پہننے کے لیے نہیں دی ، میں نے تم کو یہ بیچنے کے لیے دی تھی ، پھر حضرت عمر رضی اللہ عنہ نے اس کو دو ہزار درہم میں فروخت کردیا۔


حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ الْمُثَنَّى ، حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّحْمَنِ ، يَعْنِي ابْنَ مَهْدِيٍّ ، حَدَّثَنَا شُعْبَةُ ، عَنْ أَبِي عَوْنٍ ، قَالَ: سَمِعْتُ أَبَا صَالِحٍ ، يُحَدِّثُ عَنْ عَلِيٍّ ، قَالَ: أُهْدِيَتْ لِرَسُولِ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ حُلَّةُ سِيَرَاءَ ، فَبَعَثَ بِهَا إِلَيَّ فَلَبِسْتُهَا ، فَعَرَفْتُ الْغَضَبَ فِي وَجْهِهِ ، فَقَالَ: إِنِّي لَمْ أَبْعَثْ بِهَا إِلَيْكَ لِتَلْبَسَهَا ، إِنَّمَا بَعَثْتُ بِهَا إِلَيْكَ لِتُشَقِّقَهَا خُمُرًا بَيْنَ النِّسَاءِ.

It was narrated that 'Ali said: "The Messenger of Allah (s.a.w) was given a Hullah of striped silk, and he sent it to me and I put it on. Then I could see anger on his face, and he said: "I did not send it to you for you to wear it, rather I sent it to you so that you could cut it up and make head covers for your womenfolk."'

حضرت علی رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺکو ایک ریشمی حلہ ہدیہ کیا گیا ، آپﷺنے وہ میری طرف بھیج دیا ، میں نے اس کو پہن لیا ، پھر میں نے آپ ﷺکے چہرے پر غضب کے آثار دیکھے ، آپﷺنے فرمایا: میں نے اس کو تمہاری طرف اس لیے نہیں بھیجا کہ تم اس کو پہن لو، بلکہ میں نے اس کو تمہاری طرف اس لیے بھیجا تاکہ تم اس کو پھاڑ کر عورتوں کے دوپٹے بنادو۔


حَدَّثَنَاهُ عُبَيْدُ اللهِ بْنُ مُعَاذٍ ، حَدَّثَنَا أَبِي (ح) وحَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ بَشَّارٍ ، حَدَّثَنَا مُحَمَّدٌ ، يَعْنِي ابْنَ جَعْفَرٍ ، قَالاَ: حَدَّثَنَا شُعْبَةُ ، عَنْ أَبِي عَوْنٍ، بِهَذَا الإِسْنَادِ.فِي حَدِيثِ مُعَاذٍ ، فَأَمَرَنِي فَأَطَرْتُهَا بَيْنَ نِسَائِي. وَفِي حَدِيثِ مُحَمَّدِ بْنِ جَعْفَرٍ: فَأَطَرْتُهَا بَيْنَ نِسَائِي وَلَمْ يَذْكُرْ فَأَمَرَنِي.

It was narrated from Abu 'Awn with this chain of narrators. In the Hadith of Mu'adh it says: "He told me to divide it among my womenfolk." In the Hadith of Muhammad bin Ja'far it says: "So I divided it among my womenfolk," but he did not mention: "He told me to."

یہ حدیث ایک اور سند سے مروی ہے اس میں اس کا ذکر ہے کہ آپﷺنے مجھے حکم دیا تو میں نے اس کو اپنی عورتوں میں تقسیم کردیا ، اور ایک سند میں یہ ہے کہ میں نے اس کو اپنی عورتوں میں تقسیم کردیا لیکن اس میں یہ نہیں ہے کہ آپﷺنے مجھے حکم دیا ۔


وحَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ ، وَأَبُو كُرَيْبٍ ، وَزُهَيْرُ بْنُ حَرْبٍ ، وَاللَّفْظُ لِزُهَيْرٍ ، قَالَ أَبُو كُرَيْبٍ: أَخْبَرَنَا ، وقَالَ الآخَرَانِ : حَدَّثَنَا وَكِيعٌ ، عَنْ مِسْعَرٍ ، عَنْ أَبِي عَوْنٍ الثَّقَفِيِّ ، عَنْ أَبِي صَالِحٍ الْحَنَفِيِّ ، عَنْ عَلِيٍّ ، أَنَّ أُكَيْدِرَ دُومَةَ أَهْدَى إِلَى النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ثَوْبَ حَرِيرٍ ، فَأَعْطَاهُ عَلِيًّا ، فَقَالَ: شَقِّقْهُ خُمُرًا بَيْنَ الْفَوَاطِمِ. وقَالَ أَبُو بَكْرٍ ، وَأَبُو كُرَيْبٍ: بَيْنَ النِّسْوَةِ.

It was narrated from 'Ali that Ukaidir of Dumah gave the Prophet (s.a.w) a silken garment, and he gave it to 'Ali and said: "Cut it up to make head covers for the Fatimahs (i.e., for your family)." Abu Bakr and Abu Kuraib said: "Among the womenfolk.'

حضرت علی رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ اکیدر دومہ نے نبیﷺکی خدمت میں ریشم کا ایک کپڑا ہدیہ بھیجا ، آپﷺنے وہ کپڑا حضرت علی رضی اللہ عنہ کو دیا اور فرمایا: اس کو پھاڑ کر فاطمہ بنت رسول اللہﷺ، فاطمہ بنت اسد (حضرت علی رضی اللہ عنہ کی والدہ) اور فاطمہ بنت حمزہ کی اوڑھنیاں بنادو، دوسری روایت میں عورتوں کا لفظ ہے ۔


حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ ، حَدَّثَنَا غُنْدَرٌ ، عَنْ شُعْبَةَ ، عَنْ عَبْدِ الْمَلِكِ بْنِ مَيْسَرَةَ ، عَنْ زَيْدِ بْنِ وَهْبٍ ، عَنْ عَلِيِّ بْنِ أَبِي طَالِبٍ ، قَالَ: كَسَانِي رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ حُلَّةَ سِيَرَاءَ ، فَخَرَجْتُ فِيهَا فَرَأَيْتُ الْغَضَبَ فِي وَجْهِهِ ، قَالَ: فَشَقَقْتُهَا بَيْنَ نِسَائِي.

It was narrated that 'Ali bin Abi Talib said: "The Messenger of Allah (s.a.w) gave me a Hullah of striped silk, and I went out in it, but I saw anger on his face, so I cut it up and distributed it among my womenfolk."

حضرت علی رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺنے مجھے ایک ریشمی حلہ دیا ، میں وہ پہن کر نکلا تو میں نے دیکھا رسول اللہﷺکے چہرے پر غضب کے آثار ہیں ، پھر میں نے اس کو پھاڑ کر اپنی عورتوں میں تقسیم کردیا۔


وحَدَّثَنَا شَيْبَانُ بْنُ فَرُّوخَ ، وَأَبُو كَامِلٍ ، وَاللَّفْظُ لأَبِي كَامِلٍ ، قَالاَ: حَدَّثَنَا أَبُو عَوَانَةَ ، عَنْ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ الأَصَمِّ ، عَنْ أَنَسِ بْنِ مَالِكٍ ، قَالَ: بَعَثَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ إِلَى عُمَرَ بِجُبَّةِ سُنْدُسٍ ، فَقَالَ عُمَرُ: بَعَثْتَ بِهَا إِلَيَّ وَقَدْ قُلْتَ فِيهَا مَا قُلْتَ ، قَالَ: إِنِّي لَمْ أَبْعَثْ بِهَا إِلَيْكَ لِتَلْبَسَهَا ، وَإِنَّمَا بَعَثْتُ بِهَا إِلَيْكَ لِتَنْتَفِعَ بِثَمَنِهَا.

It was narrated that Anas bin Malik said: "The Messenger of Allah (s.a.w) sent 'Umar a Hullah of Sundus silk, and 'Umar said: 'Have you sent it to me when you said what you said about it?' He said: 'I did not send it to you for you to wear it; rather I sent it to you for you to benefit from its price."'

حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسو ل اللہ ﷺنے حضرت عمر رضی اللہ عنہ کی طرف ایک سندس کا جبہ بھیجا حضرت عمر رضی اللہ عنہ نے کہا: آپﷺنے میرے پاس یہ جبہ بھیجا ہے حالانکہ آپ نے اس کے بارے میں ایسا ایسا فرمایا ہے ، آپﷺنے فرمایا: میں نے یہ تمہارے پاس اس لیے نہیں بھیجا کہ تم اس کو پہنو، بلکہ میں نے تمہارے پاس یہ اس لیے بھیجا ہے کہ تم اس کی قیمت سے فائدہ اٹھاؤ۔


حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ ، وَزُهَيْرُ بْنُ حَرْبٍ ، قَالاَ : حَدَّثَنَا إِسْمَاعِيلُ ، وَهُوَ ابْنُ عُلَيَّةَ ، عَنْ عَبْدِ الْعَزِيزِ بْنِ صُهَيْبٍ ، عَنْ أَنَسٍ ، قَالَ: قَالَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ: مَنْ لَبِسَ الْحَرِيرَ فِي الدُّنْيَا لَمْ يَلْبَسْهُ فِي الآخِرَةِ.

It was narrated that Anas said: "The Messenger of Allah (s.a.w) said: 'Whoever wears silk in this world will not wear it in the Hereafter."'

حضرت انس رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسو ل اللہ ﷺنےفرمایا: جس آدمی نے دنیا میں ریشم پہنا ، وہ اس کو آخرت میں نہیں پہنے گا۔


وحَدَّثَنِي إِبْرَاهِيمُ بْنُ مُوسَى الرَّازِيُّ ، أَخْبَرَنَا شُعَيْبُ بْنُ إِسْحَاقَ الدِّمَشْقِيُّ ، عَنِ الأَوْزَاعِيِّ ، حَدَّثَنِي شَدَّادٌ أَبُو عَمَّارٍ ، حَدَّثَنِي أَبُو أُمَامَةَ ، أَنَّ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ: مَنْ لَبِسَ الْحَرِيرَ فِي الدُّنْيَا لَمْ يَلْبَسْهُ فِي الآخِرَةِ.

Abu Umamah narrated that the Messenger of Allah (s.a.w) said: "Whoever wears silk in this world will not wear it in the Hereafter."

حضرت امامہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسو ل اللہﷺنے فرمایا: جس آدمی نے دنیا میں ریشم پہنا وہ اس کو آخرت میں نہیں پہنے گا۔


حَدَّثَنَا قُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ ، حَدَّثَنَا لَيْثٌ ، عَنْ يَزِيدَ بْنِ أَبِي حَبِيبٍ ، عَنْ أَبِي الْخَيْرِ ، عَنْ عُقْبَةَ بْنِ عَامِرٍ ، أَنَّهُ قَالَ: أُهْدِيَ لِرَسُولِ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَرُّوجُ حَرِيرٍ فَلَبِسَهُ ، ثُمَّ صَلَّى فِيهِ ، ثُمَّ انْصَرَفَ ، فَنَزَعَهُ نَزْعًا شَدِيدًا كَالْكَارِهِ لَهُ ، ثُمَّ قَالَ: لاَ يَنْبَغِي هَذَا لِلْمُتَّقِينَ.

It was narrated from 'Uqbah bin 'Amir that he said: "A silk Farrukh (a type of cloak) was given to the Messenger of Allah (s.a.w) and he put it on and prayed in it, then he tore it off as if he disliked it. Then he said: 'This is not befitting for the pious."'

حضرت عقبہ بن عامر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسو ل اللہﷺکو ریشم کی ایک قباء ہدیہ میں دی گئی ، آپﷺنے اس کو پہن لیا ،پھر اس میں نماز پڑھ لی ، جب فارغ ہوئے تو کراہت کے ساتھ اس کو زور سے کھینچ کر اتار دیا،پھر فرمایا: یہ متقیوں کے لیے مناسب نہیں ہے۔


وَحَدَّثَنَاهُ مُحَمَّدُ بْنُ الْمُثَنَّى ، حَدَّثَنَا الضَّحَّاكُ يَعْنِي أَبَا عَاصِمٍ ، حَدَّثَنَا عَبْدُ الْحَمِيدِ بْنُ جَعْفَرٍ ، حَدَّثَنِي يَزِيدُ بْنُ أَبِي حَبِيبٍ ، بِهَذَا الإِسْنَادِ.

Yazid bin Abi Habib narrated it with this chain of narrators.

یہ حدیث ایک اور سند سے بھی مروی ہے۔

Chapter No: 3

باب إِبَاحَةِ لُبْسِ الْحَرِيرِ لِلرَّجُلِ إِذَا كَانَ بِهِ حِكَّةٌ أَوْ نَحْوُهَا

The permissibility of wearing silk for a man if he has any skin disease or similar problem

خارش یا کسی اور عذر کی بناء پر مرد کے لیے ریشم پہننے کا جواز

حَدَّثَنَا أَبُو كُرَيْبٍ مُحَمَّدُ بْنُ الْعَلاَءِ ، حَدَّثَنَا أَبُو أُسَامَةَ ، عَنْ سَعِيدِ بْنِ أَبِي عَرُوبَةَ ، حَدَّثَنَا قَتَادَةُ ، أَنَّ أَنَسَ بْنَ مَالِكٍ ، أَنْبَأَهُمْ أَنَّ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ رَخَّصَ لِعَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ عَوْفٍ ، وَالزُّبَيْرِ بْنِ الْعَوَّامِ فِي الْقُمُصِ الْحَرِيرِ فِي السَّفَرِ مِنْ حِكَّةٍ كَانَتْ بِهِمَا ، أَوْ وَجَعٍ كَانَ بِهِمَا.

Anas bin Malik narrated that the Messenger of Allah (s.a.w) granted a concession to 'Abdur-Rahman bin 'Awf and Az-Zubair bin Al-'Awwam, allowing them to wear silk shirts during a journey, because of a skin disease that they had, or a pain that they had.

حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسو ل اللہﷺنے حضرت عبد الرحمن بن عوف اور حضرت زبیر بن عوام کو ایک سفر میں خارش یا کسی اور بیماری کی وجہ سے ریشم پہننے کی اجازت دی ۔


وَحَدَّثَنَاهُ أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ ، حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ بِشْرٍ ، حَدَّثَنَا سَعِيدٌ ، بِهَذَا الإِسْنَادِ وَلَمْ يَذْكُرْ فِي السَّفَرِ.

Sa'eed narrated it with this chain of narrators (a similar Hadith as no. 5429), but he did not mention (the words) "during a journey."

یہ حدیث ایک اور سند سے مروی ہے اس میں سفر کا ذکر نہیں ہے۔


وَحَدَّثَنَاهُ أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ ، حَدَّثَنَا وَكِيعٌ ، عَنْ شُعْبَةَ ، عَنْ قَتَادَةَ ، عَنْ أَنَسٍ ، قَالَ: رَخَّصَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، أَوْ رُخِّصَ ، لِلزُّبَيْرِ بْنِ الْعَوَّامِ ، وَعَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ عَوْفٍ فِي لُبْسِ الْحَرِيرِ لِحِكَّةٍ كَانَتْ بِهِمَا.

It was narrated that Anas said: "The Messenger of Allah (s.a.w) granted a concession, or a concession was granted, to Az-Zubair bin Al-'Awwam and 'Abdur-Rahman bin 'Awf, allowing them to wear silk, because of a skin condition that they had."

حضرت انس رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺنے حضرت زبیر بن عوام اور حضرت عبد الرحمن بن عوف کو خارش کی وجہ سے ریشم پہننے کی اجازت دی۔


وَحَدَّثَنَاهُ مُحَمَّدُ بْنُ الْمُثَنَّى ، وَابْنُ بَشَّارٍ ، قَالاَ: حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ جَعْفَرٍ ، حَدَّثَنَا شُعْبَةُ بِهَذَا الإِسْنَادِ مِثْلَهُ.

Shu'bah narrated a similar report (as no. 5431) with this chain of narrators.

یہ حدیث ایک اور سند سے مروی ہے۔


وحَدَّثَنِي زُهَيْرُ بْنُ حَرْبٍ ، حَدَّثَنَا عَفَّانُ ، حَدَّثَنَا هَمَّامٌ ، حَدَّثَنَا قَتَادَةُ ، أَنَّ أَنَسًا ، أَخْبَرَهُ ، أَنَّ عَبْدَ الرَّحْمَنِ بْنَ عَوْفٍ ، وَالزُّبَيْرَ بْنَ الْعَوَّامِ شَكَوَا إِلَى رَسُولِ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ الْقَمْلَ ، فَرَخَّصَ لَهُمَا فِي قُمُصِ الْحَرِيرِ فِي غَزَاةٍ لَهُمَا.

Anas narrated that 'Abdur-Rahman bin 'Awf and Az-Zubair bin Al-'Awwam complained to the Prophet (s.a.w) about lice, and he granted them a concession allowing them to wear silk shirts, during a campaign that they went on.

حضرت انس رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ حضرت عبد الرحمن بن عوف اور حضرت زبیر بن عوام رضی اللہ عنہما نے نبی ﷺسے جوؤں کی شکایت کی تو آپﷺنے ان کو جنگ کے دنوں میں ریشم پہننے کی اجازت دے دی۔

Chapter No: 4

باب النَّهْيِ عَنْ لُبْسِ الرَّجُلِ الثَّوْبَ الْمُعَصْفَرَ

The forbiddance of wearing clothes died with safflower for a man

زرد رنگ کے کپڑے پہننے کی مردوں کو ممانعت

حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ الْمُثَنَّى ، حَدَّثَنَا مُعَاذُ بْنُ هِشَامٍ ، حَدَّثَنِي أَبِي ، عَنْ يَحْيَى ، حَدَّثَنِي مُحَمَّدُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ بْنِ الْحَارِثِ ، أَنَّ ابْنَ مَعْدَانَ ، أَخْبَرَهُ ، أَنَّ جُبَيْرَ بْنَ نُفَيْرٍ ، أَخْبَرَهُ ، أَنَّ عَبْدَ اللهِ بْنَ عَمْرِو بْنِ الْعَاصِ ، أَخْبَرَهُ ، قَالَ: رَأَى رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَلَيَّ ثَوْبَيْنِ مُعَصْفَرَيْنِ ، فَقَالَ: إِنَّ هَذِهِ مِنْ ثِيَابِ الْكُفَّارِ فَلاَ تَلْبَسْهَا.

'Abdullah bin 'Amr bin AI-'As narrated that the Messenger of Allah (s.a.w) saw 'Ali wearing two garments that had been dyed with safflower and he said: "These are garments of the disbelievers; do not wear them."

حضرت عبد اللہ بن عمرو بن عاص رضی اللہ عنہما سے روایت ہے کہ رسو ل اللہﷺنے مجھے زرد رنگ کے دو کپڑے پہنے ہوئے دیکھا ، آپﷺنے فرمایا: یہ کفار کے کپڑے ہیں ان کو مت پہنو۔


وحَدَّثَنَا زُهَيْرُ بْنُ حَرْبٍ ، حَدَّثَنَا يَزِيدُ بْنُ هَارُونَ ، أَخْبَرَنَا هِشَامٌ (ح) وحَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ ، حَدَّثَنَا وَكِيعٌ ، عَنْ عَلِيِّ بْنِ الْمُبَارَكِ ، كِلاَهُمَا عَنْ يَحْيَى بْنِ أَبِي كَثِيرٍ ، بِهَذَا الإِسْنَادِ ، وَقَالاَ: عَنْ خَالِدِ بْنِ مَعْدَانَ.

It was narrated from Yahya bin Abi Kathir with this chain of narrators, and they said: From Khalid bin Ma'dan.

یہ حدیث دو اور سندوں سے اسی طرح مروی ہے۔


حَدَّثَنَا دَاوُدُ بْنُ رُشَيْدٍ ، حَدَّثَنَا عُمَرُ بْنُ أَيُّوبَ الْمُوصِلِيُّ ، حَدَّثَنَا إِبْرَاهِيمُ بْنُ نَافِعٍ ، عَنْ سُلَيْمَانَ الأَحْوَلِ ، عَنْ طَاوُوسٍ ، عَنْ عَبْدِ اللهِ بْنِ عَمْرٍو ، قَالَ: رَأَى النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَلَيَّ ثَوْبَيْنِ مُعَصْفَرَيْنِ ، فَقَالَ: أَأُمُّكَ أَمَرَتْكَ بِهَذَا ؟ قُلْتُ: أَغْسِلُهُمَا ، قَالَ: بَلْ أَحْرِقْهُمَا.

It was narrated that 'Abdullah bin 'Amr said: "The Prophet (s.a.w) saw me wearing two garments that had been dyed with safflower and he said: 'Did your mother tell you to do this?' I said: 'Should I wash them?' He said: 'No, burn them."'

حضرت عبد اللہ بن عمرو رضی اللہ عنہما سے روایت ہے کہ نبی ﷺنے مجھے زرد رنگ کے دو کپڑے پہنے ہوئے دیکھا ، آپﷺنے فرمایا: کیا آپ کی ماں نے تم کو یہ کپڑے پہننے کا حکم دیا ہے؟ میں نے عرض کیا : میں ان کودھو ڈالوں ؟ آپﷺنے فرمایا: بلکہ ان کو جلادو۔


حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ يَحْيَى ، قَالَ: قَرَأْتُ عَلَى مَالِكٍ ، عَنْ نَافِعٍ ، عَنْ إِبْرَاهِيمَ بْنِ عَبْدِ اللهِ بْنِ حُنَيْنٍ ، عَنْ أَبِيهِ ، عَنْ عَلِيِّ بْنِ أَبِي طَالِبٍ ، أَنَّ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ نَهَى عَنْ لُبْسِ الْقَسِّيِّ ، وَالْمُعَصْفَرِ ، وَعَنْ تَخَتُّمِ الذَّهَبِ ، وَعَنْ قِرَاءَةِ الْقُرْآنِ فِي الرُّكُوعِ.

It was narrated from 'Ali bin Abi Talib that the Messenger of Allah (s.a.w) forbade wearing Qasi and garments dyed with safflower, and wearing gold rings, and reciting Qur'an while bowing.

حضرت علی بن ابی طالب رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسو ل اللہ ﷺنے ریشمی کپڑے ، اور زرد رنگ کے کپڑے پہننے سے ، اور سونے کی انگوٹھی پہننے سے ، اور رکوع میں قرآن پاک پڑھنے سے منع کیا ہے۔


وحَدَّثَنِي حَرْمَلَةُ بْنُ يَحْيَى ، أَخْبَرَنَا ابْنُ وَهْبٍ ، أَخْبَرَنِي يُونُسُ ، عَنِ ابْنِ شِهَابٍ ، حَدَّثَنِي إِبْرَاهِيمُ بْنُ عَبْدِ اللهِ بْنِ حُنَيْنٍ ، أَنَّ أَبَاهُ ، حَدَّثَهُ، أَنَّهُ سَمِعَ عَلِيَّ بْنَ أَبِي طَالِبٍ ، يَقُولُ: نَهَانِي النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنِ الْقِرَاءَةِ وَأَنَا رَاكِعٌ ، وَعَنْ لُبْسِ الذَّهَبِ وَالْمُعَصْفَرِ.

'Ali bin Abi Talib said: "The Prophet (s.a.w) forbade reciting (the Qur'an) whilst bowing, wearing gold and wearing garments dyed with safflower."

حضرت علی بن ابی طالب رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسو ل اللہ ﷺنے مجھے رکوع کی حالت میں قرآن پڑھنے سے ، اور سونا پہننے سے ، اور زرد رنگ کا لباس پہننے سے منع فرمایا ہے۔


حَدَّثَنَا عَبْدُ بْنُ حُمَيْدٍ ، حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّزَّاقِ ، أَخْبَرَنَا مَعْمَرٌ ، عَنِ الزُّهْرِيِّ ، عَنْ إِبْرَاهِيمَ بْنِ عَبْدِ اللهِ بْنِ حُنَيْنٍ ، عَنْ أَبِيهِ ، عَنْ عَلِيِّ بْنِ أَبِي طَالِبٍ ، قَالَ: نَهَانِي رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنِ التَّخَتُّمِ بِالذَّهَبِ ، وَعَنْ لِبَاسِ الْقَسِّيِّ ، وَعَنِ الْقِرَاءَةِ فِي الرُّكُوعِ وَالسُّجُودِ ، وَعَنْ لِبَاسِ الْمُعَصْفَرِ.

It was narrated that 'Ali bin Abi Talib said: "The Messenger of Allah (s.a.w) forbade me to wear gold rings, to wear Qasi, to recite Qur'an while bowing and prostrating, and to wear garments dyed with safflower."

حضرت علی بن ابی طالب رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسو ل اللہ ﷺنے مجھے سونے کی انگوٹھی پہننے سے ، ریشم کے کپڑے پہننے سے ، رکوع اور سجود میں قرآن پاک پڑھنے سے ، اور زرد رنگ کے کپڑے پہننے سے منع فرمایا ہے۔

Chapter No: 5

باب فَضْلِ لِبَاسِ ثِيَابِ الْحِبَرَةِ

The merit of wearing the Hibarah

دھاری دار یمنی چادروں کی فضیلت

حَدَّثَنَا هَدّابُ بْنُ خَالِدٍ ، حَدَّثَنَا هَمَّامٌ ، حَدَّثَنَا قَتَادَةُ ، قَالَ: قُلْنَا لأَنَسِ بْنِ مَالِكٍ : أَيُّ اللِّبَاسِ كَانَ أَحَبَّ إِلَى رَسُولِ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، أَوْ أَعْجَبَ إِلَى رَسُولِ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ؟ قَالَ: الْحِبَرَةُ.

Qatadah said: We said to Anas bin Malik: "Which garments were most liked by the Messenger of Allah (s.a.w), or which did the Messenger of Allah (s.a.w) like best?" He said: "The Hibarah."

قتادہ بیان کرتے ہیں کہ ہم نے حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ سے پوچھا کہ رسو ل اللہﷺکو کس قسم کا لباس زیادہ محبوب یا پسندیدہ تھا؟ انہوں نے کہا: دھاری دار یمنی چادر۔


حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ الْمُثَنَّى ، حَدَّثَنَا مُعَاذُ بْنُ هِشَامٍ ، حَدَّثَنِي أَبِي ، عَنْ قَتَادَةَ ، عَنْ أَنَسٍ ، قَالَ: كَانَ أَحَبَّ الثِّيَابِ إِلَى رَسُولِ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ الْحِبَرَةُ.

It was narrated that Anas said: "The garment most liked by the Messenger of Allah (s.a.w) was the Hibarah."

حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہﷺکو کپڑوں میں سب سے زیادہ پسندیدہ دھاری دار یمنی چادر تھی۔

Chapter No: 6

باب التَّوَاضُعِ فِي اللِّبَاسِ وَالاِقْتِصَارِ عَلَى الْغَلِيظِ مِنْهُ وَالْيَسِيرِ فِي اللِّبَاسِ وَالْفِرَاشِ وَغَيْرِهِمَا وَجَوَازِ لُبْسِ الثَّوْبِ الشَّعَرِ وَمَا فِيهِ أَعْلاَمٌ

Concerning; the modesty in dress and to be confined to coarse and simple dress, furnishings and etc, and the permissibility of wearing clothes made of camel hair and clothes having markings

لباس میں انکسار ی اور موٹے کپڑے پہننے ، اور بالوں والے کپڑے اور نقش نگار والے کپڑے پہننے کا جواز

حَدَّثَنَا شَيْبَانُ بْنُ فَرُّوخَ ، حَدَّثَنَا سُلَيْمَانُ بْنُ الْمُغِيرَةِ ، حَدَّثَنَا حُمَيْدٌ ، عَنْ أَبِي بُرْدَةَ ، قَالَ : دَخَلْتُ عَلَى عَائِشَةَ ، فَأَخْرَجَتْ إِلَيْنَا إِزَارًا غَلِيظًا مِمَّا يُصْنَعُ بِالْيَمَنِ ، وَكِسَاءً مِنَ الَّتِي يُسَمُّونَهَا الْمُلَبَّدَةَ ، قَالَ: فَأَقْسَمَتْ بِاللَّهِ إِنَّ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قُبِضَ فِي هَذَيْنِ الثَّوْبَيْنِ.

It was narrated that Abu Al-Burdah said: "I entered upon 'Aishah and she brought out to us a coarse Izar of the type that is made in Yemen, and a cloak of the type that is called Mulabbadah and she swore by Allah that the Messenger of Allah (s.a.w) had died wearing these two garments."

حضرت ابو بردہ سے روایت ہےکہ میں حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا کے پاس گیا ، تو انہوں نے یمن کا بنا ہوا ایک موٹے کپڑے کا تہبند نکالا اور ایک چادر نکالی جس کو ملبدہ کہا جاتا ہے ، پھر انہوں نے اللہ کی قسم کھاکر کہا: رسول اللہﷺ انہی دو کپڑوں میں وفات پاگئے۔


حَدَّثَنِي عَلِيُّ بْنُ حُجْرٍ السَّعْدِيُّ ، وَمُحَمَّدُ بْنُ حَاتِمٍ ، وَيَعْقُوبُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ ، جَمِيعًا عَنِ ابْنِ عُلَيَّةَ ، قَالَ ابْنُ حُجْرٍ: حَدَّثَنَا إِسْمَاعِيلُ ، عَنْ أَيُّوبَ ، عَنْ حُمَيْدِ بْنِ هِلاَلٍ ، عَنْ أَبِي بُرْدَةَ ، قَالَ: أَخْرَجَتْ إِلَيْنَا عَائِشَةُ إِزَارًا وَكِسَاءً مُلَبَّدًا ، فَقَالَتْ : فِي هَذَا قُبِضَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ. قَالَ ابْنُ حَاتِمٍ فِي حَدِيثِهِ: إِزَارًا غَلِيظًا.

It was narrated that Abu Burdah said: "'Aishah brought out to us an Izar and a Mulabbad cloak, and said: In these the Messenger of Allah (s.a.w) died." Ibn Hatim said in his Hadith: "A coarse Izar."

حضرت ابو بردہ سے روایت ہےکہ حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا نے ایک تہبند اور ایک پیوند لگی ہوئی چادر نکالی اور فرمایا: رسول اللہﷺکی انہی کپڑوں میں وفات ہوئی تھی ، ابن حاتم کی روایت میں موٹے کپڑے کے تہبند کا ذکر ہے۔


وحَدَّثَنِي مُحَمَّدُ بْنُ رَافِعٍ ، حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّزَّاقِ ، أَخْبَرَنَا مَعْمَرٌ ، عَنْ أَيُّوبَ ، بِهَذَا الإِسْنَادِ مِثْلَهُ ، وَقَالَ: إِزَارًا غَلِيظًا.

A similar report (as no. 5443) was narrated from Ayyub with this chain of narrators, and he said: "A coarse Izar."

یہ حدیث ایک اور سند سے مروی ہے اس میں موٹے کپڑے کے تہبند کا ذکر ہے۔


وحَدَّثَنِي سُرَيْجُ بْنُ يُونُسَ ، حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ زَكَرِيَّا بْنِ أَبِي زَائِدَةَ ، عَنْ أَبِيهِ (ح) وحَدَّثَنِي إِبْرَاهِيمُ بْنُ مُوسَى ، حَدَّثَنَا ابْنُ أَبِي زَائِدَةَ (ح) وحَدَّثَنَا أَحْمَدُ بْنُ حَنْبَلٍ ، حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ زَكَرِيَّا ، أَخْبَرَنِي أَبِي ، عَنْ مُصْعَبِ بْنِ شَيْبَةَ ، عَنْ صَفِيَّةَ بِنْتِ شَيْبَةَ ، عَنْ عَائِشَةَ ، قَالَتْ : خَرَجَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ذَاتَ غَدَاةٍ وَعَلَيْهِ مِرْطٌ مُرَحَّلٌ مِنْ شَعَرٍ أَسْوَدَ.

It was narrated that 'Aishah said: "The Prophet (s.a.w) went out one morning, wearing a striped garment made of black hair."

حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا سے روایت ہے کہ ایک دن رسو ل اللہﷺکالے بالوں کا بنا ہوا کمبل اوڑھ کر باہر آئے جس پر پالان کے نقشے بنے ہوئے تھے۔


حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ ، حَدَّثَنَا عَبْدَةُ بْنُ سُلَيْمَانَ ، عَنْ هِشَامِ بْنِ عُرْوَةَ ، عَنْ أَبِيهِ ، عَنْ عَائِشَةَ ، قَالَتْ: كَانَ وِسَادَةُ رَسُولِ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ الَّتِي يَتَّكِئُ عَلَيْهَا مِنْ أَدَمٍ حَشْوُهَا لِيفٌ.

It was narrated that 'Aishah said: "The pillow of the Messenger of Allah (s.a.w) on which he reclined, was made of leather and stuffed with palm fibres."

حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺکا وہ تکیہ جس کے ساتھ آپﷺٹیک لگاتے تھے ، چمڑے کا تھا اس میں کھجور کی چھال بھری ہوئی تھی۔


وحَدَّثَنِي عَلِيُّ بْنُ حُجْرٍ السَّعْدِيُّ ، أَخْبَرَنَا عَلِيُّ بْنُ مُسْهِرٍ ، عَنْ هِشَامِ بْنِ عُرْوَةَ ، عَنْ أَبِيهِ ، عَنْ عَائِشَةَ ، قَالَتْ: إِنَّمَا كَانَ فِرَاشُ رَسُولِ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ الَّذِي يَنَامُ عَلَيْهِ أَدَمًا حَشْوُهُ لِيفٌ.

It was narrated that 'Aishah said: "The mattress of the Messenger of Allah (s.a.w), on which he slept, was of leather stuffed with palm fibres."

حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺکا وہ گدا جس پر آپ سوتے تھے ، چمڑے کا تھا اس میں کھجور کی چھال بھری ہوئی تھی۔


وَحَدَّثَنَاهُ أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ ، حَدَّثَنَا ابْنُ نُمَيْرٍ (ح) وحَدَّثَنَا إِسْحَاقُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ ، أَخْبَرَنَا أَبُو مُعَاوِيَةَ ، كِلاَهُمَا عَنْ هِشَامِ بْنِ عُرْوَةَ ، بِهَذَا الإِسْنَادِ ، وَقَالاَ : ضِجَاعُ رَسُولِ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ. وَ فِي حَدِيثِ أَبِي مُعَاوِيَةَ يَنَامُ عَلَيْهِ.

It was narrated from Hisham bin 'Urwah with this chain of narrators (a Hadith similar to no. 5447).

ایک اورسند سے یہ حدیث مروی ہے اس میں بستر کے لیے ضجاع کا لفظ استعمال ہوا ہے ۔اور ابو معاویہ کی حدیث میں یہ اضافہ ہے کہ آپ اس پر سوتے تھے۔

Chapter No: 7

بابُ جَوَازِ اتِّخَاذِ الأَنْمَاطِ

The permissibility of using blankets

غالیچہ یا قالین کے جواز کا بیان

حَدَّثَنَا قُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ ، وَعَمْرٌو النَّاقِدُ ، وَإِسْحَاقُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ ، وَاللَّفْظُ لِعَمْرٍو ، قَالَ عَمْرٌو ، وَقُتَيْبَةُ : حَدَّثَنَا ، وَقَالَ إِسْحَاقُ: أَخْبَرَنَا سُفْيَانُ ، عَنِ ابْنِ الْمُنْكَدِرِ ، عَنْ جَابِرٍ ، قَالَ: قَالَ لِي رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ لَمَّا تَزَوَّجْتُ: أَتَّخَذْتَ أَنْمَاطًا ؟ قُلْتُ : وَأَنَّى لَنَا أَنْمَاطٌ ؟ قَالَ: أَمَا إِنَّهَا سَتَكُونُ.

It was narrated that Jabir said: "The Messenger of Allah (s.a.w) said to me, when I got married: 'Have you acquired any blankets?' I said: 'Where would we get blankets from?' He said: 'It will come."'

حضرت جابر رض اللہ عنہ سے روایت ہے کہ جب میں نے شادی کی تو رسو ل اللہﷺنے مجھ سے فرمایا: کیا تم نے قالین بنائے ہیں ؟ میں نے عرض کیا : ہمارے پاس قالین کہاں؟ آپﷺنے فرمایا: اب عنقریب ہوں گے۔


حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ عَبْدِ اللهِ بْنِ نُمَيْرٍ ، حَدَّثَنَا وَكِيعٌ ، عَنْ سُفْيَانَ ، عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ الْمُنْكَدِرِ ، عَنْ جَابِرِ بْنِ عَبْدِ اللهِ ، قَالَ: لَمَّا تَزَوَّجْتُ ، قَالَ لِي رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ: أَتَّخَذْتَ أَنْمَاطًا ؟ قُلْتُ: وَأَنَّى لَنَا أَنْمَاطٌ ؟ قَالَ: أَمَا إِنَّهَا سَتَكُونُ. قَالَ جَابِرٌ: وَعِنْدَ امْرَأَتِي نَمَطٌ ، فَأَنَا أَقُولُ نَحِّيهِ عَنِّي ، وَتَقُولُ قَدْ قَالَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ: إِنَّهَا سَتَكُونُ.

It was narrated that Jabir bin 'Abdullah said: "When I got married, the Messenger of Allah (s.a.w) said to me: 'Have you acquired any blankets?' I said: 'Where would we get blankets from?' He said: 'It will come."' Jabir said: "My wife had a blanket, and I said: 'Keep it away from me.' But she said: 'The Messenger of Allah (s.a.w) said: "It will come."

حضرت جابر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ جب میں نے شادی کی تو رسو ل اللہﷺنے مجھ سے فرمایا: کیا تم نے غالیچے (قالین )بنائے ہیں ؟ میں نے عرض کیا : ہمارے پاس غالیچہ (قالین) کہاں ؟ آپﷺنے فرمایا: اب عنقریب ہوں گے۔ حضرت جابر رضی اللہ عنہ نے کہا: میری بیوی کے پاس ایک غالیچہ ہے میں نے اس سے کہا : اس کو مجھ سے دور رکھو ، اس نے کہا: رسول اللہﷺنے فرمایا تھا : عنقریب قالین ہوں گے۔


وحَدَّثَنِيهِ مُحَمَّدُ بْنُ الْمُثَنَّى ، حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّحْمَنِ ، حَدَّثَنَا سُفْيَانُ بِهَذَا الإِسْنَادِ وَزَادَ فَأَدَعُهَا.

Sufyan narrated it with this chain of narrators (a similar Hadith as no. 5450) and added: "And I let her (keep it)."

یہ حدیث ایک اور سند سے بھی مروی ہے ۔اس میں یہ اضافہ ہے کہ میں اس کو چھوڑ دوں ۔

Chapter No: 8

بابُ كَرَاهَةِ مَا زَادَ عَلَى الْحَاجَةِ مِنَ الْفِرَاشِ وَاللِّبَاسِ

The disapproval of having more bedding and clothes than needed

ضرورت سے زیادہ گدے اور لباس رکھنے کی کراہت

حَدَّثَنِي أَبُو الطَّاهِرِ أَحْمَدُ بْنُ عَمْرِو بْنِ سَرْحٍ ، أَخْبَرَنَا ابْنُ وَهْبٍ ، حَدَّثَنِي أَبُو هَانِئٍ ، أَنَّهُ سَمِعَ أَبَا عَبْدِ الرَّحْمَنِ ، يَقُولُ: عَنْ جَابِرِ بْنِ عَبْدِ اللهِ ، أَنَّ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ لَهُ: فِرَاشٌ لِلرَّجُلِ ، وَفِرَاشٌ لاِمْرَأَتِهِ ، وَالثَّالِثُ لِلضَّيْفِ ، وَالرَّابِعُ لِلشَّيْطَانِ.

It was narrated from Jabir bin 'Abdullah that the Messenger of Allah (s.a.w) said to him: "A bed for the man, a bed for his wife, a third for the guest, and the fourth is for the Shaitan."

حضرت جابر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسو ل اللہﷺنے فرمایا: ایک بستر مرد کے لیے ، ایک بستر اس کی بیوی کے لیے ، اور تیسرا بستر مہمان کے لیے ، اور چوتھا بستر شیطان کے لیے ہے۔

Chapter No: 9

باب تَحْرِيمِ جَرِّ الثَّوْبِ خُيَلاَءَ وَبَيَانِ حَدِّ مَا يَجُوزُ إِرْخَاؤُهُ إِلَيْهِ وَمَا يُسْتَحَبُّ

The forbiddance of dragging one’s cloth out of pride, and explanation about the limit to which one can let his clothes hang down, and what is recommended (in this regard)

تکبر سے کپڑا لٹکاکر چلنے کی ممانعت، اور کتنا کپڑا لٹکانا جائز اور مستحب ہے ؟

حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ يَحْيَى ، قَالَ: قَرَأْتُ عَلَى مَالِكٍ ، عَنْ نَافِعٍ ، وَعَبْدِ اللهِ بْنِ دِينَارٍ ، وَزَيْدِ بْنِ أَسْلَمَ ، كُلُّهُمْ يُخْبِرُهُ ، عَنِ ابْنِ عُمَرَ ، أَنَّ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ: لاَ يَنْظُرُ اللَّهُ إِلَى مَنْ جَرَّ ثَوْبَهُ خُيَلاَءَ.

It was narrated from Ibn 'Umar that the Messenger of Allah (s.a.w) said: "Allah, Exalted is He, will not look as the one who lets his garment drag out of pride."

حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺنے فرمایا: اللہ تعالیٰ اس آدمی کی طرف نہیں دیکھتا جو تکبر سے کپڑا گھسیٹ کر چلے ۔


حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ ، حَدَّثَنَا عَبْدُ اللهِ بْنُ نُمَيْرٍ ، وَأَبُو أُسَامَةَ (ح) وحَدَّثَنَا ابْنُ نُمَيْرٍ ، حَدَّثَنَا أَبِي (ح) وحَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ الْمُثَنَّى ، وَعُبَيْدُ اللهِ بْنُ سَعِيدٍ ، قَالاَ: حَدَّثَنَا يَحْيَى وَهُوَ الْقَطَّانُ ، كُلُّهُمْ عَنْ عُبَيْدِ اللهِ (ح) وحَدَّثَنَا أَبُو الرَّبِيعِ ، وَأَبُو كَامِلٍ ، قَالاَ: حَدَّثَنَا حَمَّادٌ (ح) وحَدَّثَنِي زُهَيْرُ بْنُ حَرْبٍ ، حَدَّثَنَا إِسْمَاعِيلُ ، كِلاَهُمَا عَنْ أَيُّوبَ (ح) وحَدَّثَنَا قُتَيْبَةُ ، وَابْنُ رُمْحٍ ، عَنِ اللَّيْثِ بْنِ سَعْدٍ (ح) وحَدَّثَنَا هَارُونُ الأَيْلِيُّ ، حَدَّثَنَا ابْنُ وَهْبٍ ، حَدَّثَنِي أُسَامَةُ ، كُلُّ هَؤُلاَءِ عَنْ نَافِعٍ ، عَنِ ابْنِ عُمَرَ ، عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ... بِمِثْلِ حَدِيثِ مَالِكٍ ، وَزَادُوا فِيهِ يَوْمَ الْقِيَامَةِ.

A Hadith like that of Malik (no. 5453) was narrated from Ibn 'Umar from the Prophet (s.a.w), and he added: "On the Day of Resurrection."

یہ حدیث سات سندوں سے مروی ہے ، اور ایک میں یہ اضافہ ہے کہ قیامت کے دن (اللہ تعالیٰ ) نظر رحمت سے نہیں دیکھے گا۔


وحَدَّثَنِي أَبُو الطَّاهِرِ ، أَخْبَرَنَا عَبْدُ اللهِ بْنُ وَهْبٍ ، أَخْبَرَنِي عُمَرُ بْنُ مُحَمَّدٍ ، عَنْ أَبِيهِ ، وَسَالِمِ بْنِ عَبْدِ اللهِ ، وَنَافِعٍ ، عَنْ عَبْدِ اللهِ بْنِ عُمَرَ ، أَنَّ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ: إِنَّ الَّذِي يَجُرُّ ثِيَابَةُ مِنَ الْخُيَلاَءِ لاَ يَنْظُرُ اللَّهُ إِلَيْهِ يَوْمَ الْقِيَامَةِ.

It was narrated from 'Abdullah bin 'Umar that the Messenger of Allah (s.a.w) said: "The one who lets his garment drag out of pride, Allah will not look at him on the Day of Resurrection."

حضرت عبد اللہ بن عمر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسو ل اللہ ﷺنے فرمایاک جو آدمی تکبر سے کپڑا لٹکا کر چلتا ہے ، قیامت کے دن اللہ تعالیٰ اس کی طرف نہیں دیکھے گا۔


وحَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ ، حَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ مُسْهِرٍ ، عَنِ الشَّيْبَانِيِّ (ح) وحَدَّثَنَا ابْنُ الْمُثَنَّى ، حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ جَعْفَرٍ ، حَدَّثَنَا شُعْبَةُ ، كِلاَهُمَا عَنْ مُحَارِبِ بْنِ دِثَارٍ ، وَجَبَلَةَ بْنِ سُحَيْمٍ ، عَنِ ابْنِ عُمَرَ ، عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ بِمِثْلِ حَدِيثِهِمْ.

A Hadith like theirs (no. 5455) was narrated from Ibn 'Umar from the Prophet (s.a.w)

یہ حدیث دو سندوں سے مذکورہ بالا حدیث کی طرح مروی ہے ۔


وحَدَّثَنَا ابْنُ نُمَيْرٍ ، حَدَّثَنَا أَبِي ، حَدَّثَنَا حَنْظَلَةُ ، قَالَ: سَمِعْتُ سَالِمًا ، عَنِ ابْنِ عُمَرَ ، قَالَ: قَالَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ: مَنْ جَرَّ ثَوْبَهُ مِنَ الْخُيَلاَءِ لَمْ يَنْظُرِ اللَّهُ إِلَيْهِ يَوْمَ الْقِيَامَةِ.

It was narrated that Ibn 'Umar said: The Messenger of Allah (s.a.w) said: "Whoever lets his garment drag out of pride, Allah will not look at him on the Day of Resurrection."

حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسو ل اللہﷺنے فرمایا: جس آدمی نے تکبر سے کپڑا لٹکایا ، اللہ تعالیٰ قیامت کے دن اس کی طرف نہیں دیکھے گا۔


وحَدَّثَنَا ابْنُ نُمَيْرٍ ، حَدَّثَنَا إِسْحَاقُ بْنُ سُلَيْمَانَ ، حَدَّثَنَا حَنْظَلَةُ بْنُ أَبِي سُفْيَانَ ، قَالَ: سَمِعْتُ سَالِمًا ، قَالَ: سَمِعْتُ ابْنَ عُمَرَ ، يَقُولُ: سَمِعْتُ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يَقُولُ , مِثْلَهُ ، غَيْرَ أَنَّهُ قَالَ: ثِيَابَهُ.

Ibn 'Umar said: "I heard the Messenger of Allah (s.a.w) say..." a similar report (as no. 5457).

حضرت ابن عمررضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ میں نے رسول اللہﷺسے سنا آپ فرمارہے تھے ، اس کے بعد مذکورہ بالا حدیث کی طرح ہے البتہ اس میں "ثیاب" کا لفظ ہے ۔


وحَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ الْمُثَنَّى ، حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ جَعْفَرٍ ، حَدَّثَنَا شُعْبَةُ ، قَالَ: سَمِعْتُ مُسْلِمَ بْنَ يَنَّاقَ ، يُحَدِّثُ عَنِ ابْنِ عُمَرَ ، أَنَّهُ رَأَى رَجُلاً يَجُرُّ إِزَارَهُ ، فَقَالَ: مِمَّنْ أَنْتَ ؟ فَانْتَسَبَ لَهُ ، فَإِذَا رَجُلٌ مِنْ بَنِي لَيْثٍ ، فَعَرَفَهُ ابْنُ عُمَرَ ، قَالَ: سَمِعْتُ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ بِأُذُنَيَّ هَاتَيْنِ ، يَقُولُ: مَنْ جَرَّ إِزَارَهُ لاَ يُرِيدُ بِذَلِكَ إِلاَّ الْمَخِيلَةَ ، فَإِنَّ اللَّهَ لاَ يَنْظُرُ إِلَيْهِ يَوْمَ الْقِيَامَةِ.

It was narrated from Ibn 'Umar that he saw a man letting his Izar drag, and he said: "Where are you from?" He told him which tribe he belonged to and he was from Banu Laith, and Ibn 'Umar recognized him. He said: "I heard with my own two ears the Messenger of Allah (s.a.w) say: 'Whoever lets his garment drag with no intention but pride, Allah will not look at him on the Day of Resurrection."'

مسلم بن یناق بیان کرتے ہیں کہ حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ نے ایک آدمی کو چادر گھسیٹ کر چلتے ہوئے دیکھا ، حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ نے اس سے پوچھا : تم کس قبیلہ سے ہو؟ اس نے اپنا نسب بیان کیا ، وہ آدمی بنو لیث سے تھا ، حضرت ابن عمررضی اللہ عنہ نے اس کو پہچان لیا ، اور کہا: میں نے اپنے دونوں کانوں سے رسو ل اللہﷺسے سنا ہے : جو آدمی صرف تکبر کے ارادہ سے چادر لٹکائے گا قیامت کے دن اللہ تعالیٰ اس کی طرف نہیں دیکھے گا۔


وحَدَّثَنَا ابْنُ نُمَيْرٍ ، حَدَّثَنَا أَبِي ، حَدَّثَنَا عَبْدُ الْمَلِكِ ، يَعْنِي ابْنَ أَبِي سُلَيْمَانَ (ح) وحَدَّثَنَا عُبَيْدُ اللهِ بْنُ مُعَاذٍ ، حَدَّثَنَا أَبِي ، حَدَّثَنَا أَبُو يُونُسَ (ح) وحَدَّثَنَا ابْنُ أَبِي خَلَفٍ ، حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ أَبِي بُكَيْرٍ ، حَدَّثَنِي إِبْرَاهِيمُ ، يَعْنِي ابْنَ نَافِعٍ ، كُلُّهُمْ عَنْ مُسْلِمِ بْنِ يَنَّاقَ ، عَنِ ابْنِ عُمَرَ ، عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، بِمِثْلِهِ. غَيْرَ أَنَّ فِي حَدِيثِ أَبِي يُونُسَ ، عَنْ مُسْلِمٍ أَبِي الْحَسَنِ. وَفِي رِوَايَتِهِمْ جَمِيعًا: مَنْ جَرَّ إِزَارَهُ وَلَمْ يَقُولُوا: ثَوْبَهُ.

A similar report (as no. 5459) was narrated from Ibn 'Umar from the Prophet (s.a.w0, but in the Hadith of Abu Yunus it says: "From Muslim Abul-Hasan," and in both their reports it says: 'Whoever lets his Izar drag,' and they did not say: 'His garment."'

حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ نے نبی ﷺسے مذکورہ بالا حدیث کی طرح بیان کیا ہے ، ایک روایت میں ہے جس نے اپنی چادر گھسیٹی اور کپڑے کا ذکر نہیں ہے ۔


وحَدَّثَنِي مُحَمَّدُ بْنُ حَاتِمٍ ، وَهَارُونُ بْنُ عَبْدِ اللهِ ، وَابْنُ أَبِي خَلَفٍ ، وَأَلْفَاظُهُمْ مُتَقَارِبَةٌ ، قَالُوا: حَدَّثَنَا رَوْحُ بْنُ عُبَادَةَ ، حَدَّثَنَا ابْنُ جُرَيْجٍ ، قَالَ: سَمِعْتُ مُحَمَّدَ بْنَ عَبَّادِ بْنِ جَعْفَرٍ ، يَقُولُ : أَمَرْتُ مُسْلِمَ بْنَ يَسَارٍ ، مَوْلَى نَافِعِ بْنِ عَبْدِ الْحَارِثِ ، أَنْ يَسْأَلَ ابْنَ عُمَرَ ، قَالَ: وَأَنَا جَالِسٌ بَيْنَهُمَا ، أَسَمِعْتَ مِنَ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فِي الَّذِي يَجُرُّ إِزَارَهُ مِنَ الْخُيَلاَءِ شَيْئًا ؟ قَالَ: سَمِعْتُهُ يَقُولُ: لاَ يَنْظُرُ اللَّهُ إِلَيْهِ يَوْمَ الْقِيَامَةِ.

Muhammad bin 'Abbad bin Ja'far said: "I told Muslim bin Yasar, the freed slave of Nafi' bin 'Abdul-Harith, to ask Ibn 'Umar, while I was sitting between them, did you hear anything from the Messenger of Allah (s.a.w) about the one who lets his Izar drag out of pride? He said: I heard him say: 'Allah will not look at him on the Day of Resurrection."'

محمد بن عباد بن جعفر کہتے ہیں کہ میں نے نافع بن عبد الحارث کے غلام مسلم بن یسار کو یہ حکم دیا کہ وہ حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہما سے یہ سوال کریں کیا انہوں نے نبی ﷺسے اسکے بارے میں کچھ سنا ہے ؟ کہ جو آدمی تکبر سے چادر لٹکاتا ہو ، انہوں نے کہا: میں نے نبی ﷺسے یہ سنا ہے کہ قیامت کے دن اللہ تعالیٰ اس کی طرف نہیں دیکھے گا۔


حَدَّثَنِي أَبُو الطَّاهِرِ ، حَدَّثَنَا ابْنُ وَهْبٍ ، أَخْبَرَنِي عُمَرُ بْنُ مُحَمَّدٍ ، عَنْ عَبْدِ اللهِ بْنِ وَاقِدٍ ، عَنِ ابْنِ عُمَرَ ، قَالَ: مَرَرْتُ عَلَى رَسُولِ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَفِي إِزَارِي اسْتِرْخَاءٌ ، فَقَالَ: يَا عَبْدَ اللهِ ، ارْفَعْ إِزَارَكَ ، فَرَفَعْتُهُ ، ثُمَّ قَالَ: زِدْ ، فَزِدْتُ ، فَمَا زِلْتُ أَتَحَرَّاهَا بَعْدُ. فَقَالَ بَعْضُ الْقَوْمِ: إِلَى أَيْنَ ؟ فَقَالَ: أَنْصَافِ السَّاقَيْنِ.

It was narrated that Ibn 'Umar said: "I passed by the Messenger of Allah (s.a.w) and my Izar was trailing. He said: 'O 'Abdullah, lift up your Izar.' So I lifted it up, then he said: 'More.' So I lifted it some more, and then more and more. One of the people said: 'Up to where?' He (s.a.w) said: 'Halfway up the calf."'

حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ میں رسول اللہﷺکے پاس سے گزرا اس حال میں کہ میری چادر لٹک رہی تھی ، آپﷺنے فرمایا: اے عبد اللہ ! اپنی چادر اوپر کرلو۔ میں نے اپنی چادر اوپر کرلی ، آپﷺنے فرمایا: اور زیادہ کرلو، میں نے اور زیادہ اوپر کی ، پھر میں اس کو اوپر کرتا رہا یہاں تک کہ بعض لوگوں نے کہا: کہاں تک اوپر کرے ، آپﷺنے فرمایا: نصف پنڈلیوں تک۔


حَدَّثَنَا عُبَيْدُ اللهِ بْنُ مُعَاذٍ ، حَدَّثَنَا أَبِي ، حَدَّثَنَا شُعْبَةُ ، عَنْ مُحَمَّدٍ ، وَهُوَ ابْنُ زِيَادٍ ، قَالَ: سَمِعْتُ أَبَا هُرَيْرَةَ ، وَرَأَى رَجُلاً يَجُرُّ إِزَارَهُ ، فَجَعَلَ يَضْرِبُ الأَرْضَ بِرِجْلِهِ وَهُوَ أَمِيرٌ عَلَى الْبَحْرَيْنِ ، وَهُوَ يَقُولُ: جَاءَ الأَمِيرُ جَاءَ الأَمِيرُ ، قَالَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ: إِنَّ اللَّهَ لاَ يَنْظُرُ إِلَى مَنْ يَجُرُّ إِزَارَهُ بَطَرًا.

Ibn Ziyad said, I saw Abu Hurairah - when he was the governor of Bahrain - when he saw a man letting his lzar drag and saying: "The Amir has come, the Amir has come," he started striking the ground with his feet and say: "The Messenger of Allah (s.a.w) said: 'Allah will not look at the one who lets his Izar drag out of pride."'

محمد بن زیاد کہتے ہیں کہ حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ نے ایک آدمی کو چادر گھسیٹ کر چلتے ہوئے دیکھا ، وہ آدمی بحرین کا امیر تھا ، وہ آدمی زمین پر پیر مار مار کر کہہ رہا تھا : امیر آگیا ، حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ نے فرمایا: رسو ل اللہ ﷺنے فرمایا: جو آدمی اتراتے ہوئے اپنی چادر لٹکائے گا اللہ تعالیٰ اس کی طرف نہیں دیکھے گا۔


حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ بَشَّارٍ ، حَدَّثَنَا مُحَمَّدٌ ، يَعْنِي ابْنَ جَعْفَرٍ (ح) وَحَدَّثَنَاهُ ابْنُ الْمُثَنَّى ، حَدَّثَنَا ابْنُ أَبِي عَدِيٍّ ، كِلاَهُمَا عَنْ شُعْبَةَ ، بِهَذَا الإِسْنَادِ. وَفِي حَدِيثِ ابْنِ جَعْفَرٍ: كَانَ مَرْوَانُ يَسْتَخْلِفُ أَبَا هُرَيْرَةَ. وَفِي حَدِيثِ ابْنِ الْمُثَنَّى:كَانَ أَبُو هُرَيْرَةَ يُسْتَخْلَفُ عَلَى الْمَدِينَةِ.

It was narrated Shu'bah with this chain of narrators (a Hadith similar to no. 5463). In the lfadfth of Ibn Ja'far it says: "Marwan used to appoint Abu Hurairah to govern in his absence." And in the Hadith of Ibn Al-Muthanna it says: "Abu Hurairah used to be appointed in charge of Al-Madinah."

ابن جعفر کی روایت میں ہے کہ مروان نے حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ کو مدینہ کا حکم بنایا تھا ، اور ابن مثنیٰ کی روایت میں ہے کہ حضرت ابو ہریرہ مدینہ کے حاکم تھے۔

Chapter No: 10

بابُ تَحْرِيمِ التَّبَخْتُرِ فِي الْمَشْيِ مَعَ إِعْجَابِهِ بِثِيَابِهِ

The forbiddance of swaggering, and being amazed with one’s clothes

کپڑوں پر اترانے یا اکڑکر چلنے کی ممانعت

حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّحْمَنِ بْنُ سَلاَّمٍ الْجُمَحِيُّ ، حَدَّثَنَا الرَّبِيعُ ، يَعْنِي ابْنَ مُسْلِمٍ ، عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ زِيَادٍ ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ ، عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ: بَيْنَمَا رَجُلٌ يَمْشِي قَدْ أَعْجَبَتْهُ جُمَّتُهُ وَبُرْدَاهُ ، إِذْ خُسِفَ بِهِ الأَرْضُ ، فَهُوَ يَتَجَلْجَلُ فِي الأَرْضِ حَتَّى تَقُومَ السَّاعَةُ.

It was narrated from Abu Hurairah that the Prophet (s.a.w) said: "While a man was walking, admiring his long hair and his fine Rida', the earth swallowed him up, and he will continue to sink down into the earth until the Day of Resurrection."

حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ نبیﷺنے فرمایا: ایک آدمی اپنے سر کے بالوں اور اپنی پہنی ہوئی چادروں پر اتراتا ہوا جارہا تھا ، اچانک ا س کو زمین میں دھنسادیا گیا اور وہ قیامت کے دن زمین میں دھنستا رہے گا۔


وحَدَّثَنَا عُبَيْدُ اللهِ بْنُ مُعَاذٍ ، حَدَّثَنَا أَبِي (ح) وحَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ بَشَّارٍ ، عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ جَعْفَرٍ (ح) وحَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ الْمُثَنَّى ، حَدَّثَنَا ابْنُ أَبِي عَدِيٍّ ، قَالُوا جَمِيعًا: حَدَّثَنَا شُعْبَةُ ، عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ زِيَادٍ ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ ، عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ بِنَحْوِ هَذَا.

A similar report (as no. 5465) was narrated from Abu Hurairah, from the Prophet (s.a.w).

یہ حدیث تین سندوں کے ساتھ حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ نے نبی ﷺسے مذکورہ بالا حدیث کی طرح روایت کی ہے ۔


حَدَّثَنَا قُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ ، حَدَّثَنَا الْمُغِيرَةُ يَعْنِي الْحِزَامِيَّ ، عَنْ أَبِي الزِّنَادِ ، عَنِ الأَعْرَجِ ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ ، أَنَّ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ: بَيْنَمَا رَجُلٌ يَتَبَخْتَرُ ، يَمْشِي فِي بُرْدَيْهِ قَدْ أَعْجَبَتْهُ نَفْسُهُ ، فَخَسَفَ اللَّهُ بِهِ الأَرْضَ ، فَهُوَ يَتَجَلْجَلُ فِيهَا إِلَى يَوْمِ الْقِيَامَةِ.

It was narrated from Abu Hurairah that the Messenger of Allah (s.a.w) said: "While a man was strutting proudly in his two Rida's, admiring himself, Allah caused the earth to swallow him up, and he will continue sinking into it until the Day of Resurrection."

حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺنے فرمایا: ایک آدمی اپنی دو چادریں پہن کر اتراتا ہوا جارہا تھا ، اللہ تعالیٰ نے اس کو زمین میں دھنسادیا اور وہ قیامت تک زمین دھنستا رہے گا۔


وحَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ رَافِعٍ ، حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّزَّاقِ ، أَخْبَرَنَا مَعْمَرٌ ، عَنْ هَمَّامِ بْنِ مُنَبِّهٍ ، قَالَ: هَذَا مَا حَدَّثَنَا أَبُو هُرَيْرَةَ ، عَنْ رَسُولِ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَذَكَرَ أَحَادِيثَ مِنْهَا ، وَقَالَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ: بَيْنَمَا رَجُلٌ يَتَبَخْتَرُ فِي بُرْدَيْنِ ... ، ثُمَّ ذَكَرَ ، بِمِثْلِهِ.

Ma'mar narrated that Hammam bin Munabbih said: "This is what Abu Hurairah narrated to us from the Messenger of Allah (s.a.w)," - and he mentioned a number of Ahadith, including the following: "The Messenger of Allah (s.a.w) said: 'While a man was strutting proudly in two Rida's," then he mentioned something similar (to Hadith no. 5467).

حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺنے فرمایا: ایک آدمی دو چادروں میں اتراتا ہوا جارہا تھا ، اس کے بعد مذکورہ بالا حدیث کی طرح ہے۔


حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ ، حَدَّثَنَا عَفَّانُ ، حَدَّثَنَا حَمَّادُ بْنُ سَلَمَةَ ، عَنْ ثَابِتٍ ، عَنْ أَبِي رَافِعٍ ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ ، قَالَ : سَمِعْتُ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، يَقُولُ: إِنَّ رَجُلاً مِمَّنْ كَانَ قَبْلَكُمْ يَتَبَخْتَرُ فِي حُلَّةٍ ... ، ثُمَّ ذَكَرَ مِثْلَ حَدِيثِهِمْ.

It was narrated that Abu Hurairah said: "I heard the Messenger of Allah (s.a.w) say: 'A man from among those who came before you was strutting proudly in a Hullah,"' then he (the sub narrator) mentioned a Hadith similar to theirs.

حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺنے فرمایا: تم سے پہلی امتوں میں ایک آدمی ایک حلہ میں اتراتا ہوا چل رہا تھا ، ا سکے بعد مذکورہ بالا حدیثوں کی طرح ہے۔

123Last ›