Sayings of the Messenger

 

123Last ›

لَيْسَ فِيمَا دُونَ خَمْسَةِ أَوْسُقٍ صَدَقَةٌ

There is no Zakat due on less than five Wasq (appx: 780 kg)

پانچ اوسق سے کم غلہ میں زکوة نہیں

وَحَدَّثَنِى عَمْرُو بْنُ مُحَمَّدِ بْنِ بُكَيْرٍ النَّاقِدُ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ بْنُ عُيَيْنَةَ قَالَ سَأَلْتُ عَمْرَو بْنَ يَحْيَى بْنِ عُمَارَةَ فَأَخْبَرَنِى عَنْ أَبِيهِ عَنْ أَبِى سَعِيدٍ الْخُدْرِىِّ عَنِ النَّبِىِّ -صلى الله عليه وسلم- قَالَ « لَيْسَ فِيمَا دُونَ خَمْسَةِ أَوْسُقٍ صَدَقَةٌ وَلاَ فِيمَا دُونَ خَمْسِ ذَوْدٍ صَدَقَةٌ وَلاَ فِيمَا دُونَ خَمْسِ أَوَاقٍ صَدَقَةٌ ».

It was narrated from Abu Sa'eed Al-Khudri that the Prophet (SAW) said: "There is no Sadaqah (Zakat) due on less than five Wasq, and there is no Sadaqah due on less than five camels, and there is no Sadaqah due on less than five Uqiyah."

حضرت ابوسعید خدری رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ نبی کریمﷺ نے ارشاد فرمایا: پانچ وسق (چھ سو دس کلو)سے کم غلہ میں زکوۃنہیں اور نہ ہی پانچ اونٹوں سے کم میں زکوۃے اور نہ ہی پانچ اوقیہ (دو سو درہم یا ساڑھے باون تولہ چاندی )سے کم میں زکوۃ ہے۔ نوٹ: پانچ وسق: تین سو صاع کے برابر ہے۔ ایک صاع: دو کلو پنتیس گرام کے برابر ہے۔ اس اعتبار سے یہ چھ سو دس کلو بن جاتے ہیں۔


وَحَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ رُمْحِ بْنِ الْمُهَاجِرِ أَخْبَرَنَا اللَّيْثُ ح وَحَدَّثَنِى عَمْرٌو النَّاقِدُ حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ إِدْرِيسَ كِلاَهُمَا عَنْ يَحْيَى بْنِ سَعِيدٍ عَنْ عَمْرِو بْنِ يَحْيَى بِهَذَا الإِسْنَادِ. مِثْلَهُ.

A similar report (as no.2263) was narrated from 'Ámr bin Yahya with his chain.

ایک اور سند سے بھی ایسی ہی روایت منقول ہے۔


وَحَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ رَافِعٍ حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّزَّاقِ أَخْبَرَنَا ابْنُ جُرَيْجٍ أَخْبَرَنِى عَمْرُو بْنُ يَحْيَى بْنِ عُمَارَةَ عَنْ أَبِيهِ يَحْيَى بْنِ عُمَارَةَ قَالَ سَمِعْتُ أَبَا سَعِيدٍ الْخُدْرِىَّ يَقُولُ سَمِعْتُ رَسُولَ اللَّهِ -صلى الله عليه وسلم- يَقُولُ. وَأَشَارَ النَّبِىُّ -صلى الله عليه وسلم- بِكَفِّهِ بِخَمْسِ أَصَابِعِهِ ثُمَّ ذَكَرَ بِمِثْلِ حَدِيثِ ابْنِ عُيَيْنَةَ.

It was narrated that Yahya bin 'Umarah said: “I heard Abu Sa'eed Al-Khudri say: I heard Messenger of Allah (SAW) say'- and the Prophet (SAW) gestured with his hand, holding up five fingers"- then he mentioned a Hadith similar to that of Ibn' Uyaynah (no. of 2263).

حضرت ابوسعید خدری رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺاپنے ہاتھ کی پانچ انگلیوں سے اشارہ کرکے فرمارہے تھے کہ اس کے بعد حسب سابق حدیث ہے۔


وَحَدَّثَنِى أَبُو كَامِلٍ فُضَيْلُ بْنُ حُسَيْنٍ الْجَحْدَرِىُّ حَدَّثَنَا بِشْرٌ - يَعْنِى ابْنَ مُفَضَّلٍ - حَدَّثَنَا عُمَارَةُ بْنُ غَزِيَّةَ عَنْ يَحْيَى بْنِ عُمَارَةَ قَالَ سَمِعْتُ أَبَا سَعِيدٍ الْخُدْرِىَّ يَقُولُ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ -صلى الله عليه وسلم- « لَيْسَ فِيمَا دُونَ خَمْسَةِ أَوْسُقٍ صَدَقَةٌ وَلَيْسَ فِيمَا دُونَ خَمْسِ ذَوْدٍ صَدَقَةٌ وَلَيْسَ فِيمَا دُونَ خَمْسِ أَوَاقٍ صَدَقَةٌ ».

It was narrated that Yahya bin Umarah said: "I heard Abu Sa'eed Al-Khudri say: The Messenger of Allah (SAW) said: ‘There is no Sadaqah due on less than five Wasq, there is no Sadaqah due on less than five camels, and there is no Sadaqah due on less than five Uqiyah."

حضرت ابوسعید خدری رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺنے ارشاد فرمایا پانچ اوسق میں زکوۃ نہیں ہے اور پانچ اونٹوں سے کم میں زکوۃنہیں ہے اور پانچ اوقیہ سے کم میں زکوۃ نہیں۔


وَحَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِى شَيْبَةَ وَعَمْرٌو النَّاقِدُ وَزُهَيْرُ بْنُ حَرْبٍ قَالُوا حَدَّثَنَا وَكِيعٌ عَنْ سُفْيَانَ عَنْ إِسْمَاعِيلَ بْنِ أُمَيَّةَ عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ يَحْيَى بْنِ حَبَّانَ عَنْ يَحْيَى بْنِ عُمَارَةَ عَنْ أَبِى سَعِيدٍ الْخُدْرِىِّ قَالَ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ -صلى الله عليه وسلم- « لَيْسَ فِيمَا دُونَ خَمْسَةِ أَوْسَاقٍ مِنْ تَمْرٍ وَلاَ حَبٍّ صَدَقَةٌ ».

It was narrated that Abu Saeed Al-Khudri said: “The Messenger of Allah (SAW) said: ‘There is no Sadaqah due on less than five Wasq of Dates or Grains.”’

حضرت ابوسعید خدری رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺنے فرمایا پانچ وسق کجھوروں سے کم میں زکاۃ (واجب) نہیں ہے اور نہ اس سے کم (مقدار ) غلہ میں زکاۃ(واجب ) ہے۔


وَحَدَّثَنَا إِسْحَاقُ بْنُ مَنْصُورٍ أَخْبَرَنَا عَبْدُ الرَّحْمَنِ - يَعْنِى ابْنَ مَهْدِىٍّ - حَدَّثَنَا سُفْيَانُ عَنْ إِسْمَاعِيلَ بْنِ أُمَيَّةَ عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ يَحْيَى بْنِ حَبَّانَ عَنْ يَحْيَى بْنِ عُمَارَةَ عَنْ أَبِى سَعِيدٍ الْخُدْرِىِّ أَنَّ النَّبِىَّ -صلى الله عليه وسلم- قَالَ « لَيْسَ فِى حَبٍّ وَلاَ تَمْرٍ صَدَقَةٌ حَتَّى يَبْلُغَ خَمْسَةَ أَوْسُقٍ وَلاَ فِيمَا دُونَ خَمْسِ ذَوْدٍ صَدَقَةٌ وَلاَ فِيمَا دُونَ خَمْسِ أَوَاقٍ صَدَقَةٌ ».

It was narrated from Abu Sa'eed Al-Khudri that the Prophet (SAW) said: “There is no Sadaqah due on grains or dates unless they reach five Wasq, and there is no Sadaqah on less than five camels and there is no Sadaqah on less than five Uqiyah.”

حضرت ابوسعید خدری رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ نبی ﷺنے فرمایا غلہ میں اور کھجور میں زکوۃاس وقت تک نہیں جب تک پانچ اوسق نہ ہو جائیں اور نہ پانچ اونٹوں سے کم میں زکوۃہے اور نہ پانچ اوقیہ سے کم میں زکوۃ ہے۔


وَحَدَّثَنِى عَبْدُ بْنُ حُمَيْدٍ حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ آدَمَ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ الثَّوْرِىُّ عَنْ إِسْمَاعِيلَ بْنِ أُمَيَّةَ بِهَذَا الإِسْنَادِ. مِثْلَ حَدِيثِ ابْنِ مَهْدِىٍّ.

A Hadith similar to that of Ibn Mahdi (no. of 2268) was narrated from Ismail bin Umayyah with his chain.

ایک اور سند سے بھی یہ روایت منقول ہے۔


وَحَدَّثَنِى مُحَمَّدُ بْنُ رَافِعٍ حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّزَّاقِ أَخْبَرَنَا الثَّوْرِىُّ وَمَعْمَرٌ عَنْ إِسْمَاعِيلَ بْنِ أُمَيَّةَ بِهَذَا الإِسْنَادِ. مِثْلَ حَدِيثِ ابْنِ مَهْدِىٍّ وَيَحْيَى بْنِ آدَمَ غَيْرَ أَنَّهُ قَالَ - بَدَلَ التَّمْرِ - ثَمَرٍ.

A Hadith similar to that of Ibn Mahdi Yahya bin Adam (no. of 2268) was narrated from Ismail bin Umayyah with this chain, except that instead of Dates (Tamr) he said produce (Tamr).

ایک اور سند سے بھی حسب سابق روایت ہے مگر اس میں کجھوروں کی بجائے پھلوں کا لفظ ہے۔


حَدَّثَنَا هَارُونُ بْنُ مَعْرُوفٍ وَهَارُونُ بْنُ سَعِيدٍ الأَيْلِىُّ قَالاَ حَدَّثَنَا ابْنُ وَهْبٍ أَخْبَرَنِى عِيَاضُ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ عَنْ أَبِى الزُّبَيْرِ عَنْ جَابِرِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ عَنْ رَسُولِ اللَّهِ -صلى الله عليه وسلم- أَنَّهُ قَالَ « لَيْسَ فِيمَا دُونَ خَمْسِ أَوَاقٍ مِنَ الْوَرِقِ صَدَقَةٌ وَلَيْسَ فِيمَا دُونَ خَمْسِ ذَوْدٍ مِنَ الإِبِلِ صَدَقَةٌ وَلَيْسَ فِيمَا دُونَ خَمْسَةِ أَوْسُقٍ مِنَ التَّمْرِ صَدَقَةٌ ».

It was narrated from Jabir Bin Abdullah that the Messenger of Allah (SAW) said: "There is no Sadaqah on less than five Uqiyah of silver; there is no Sadaqah on less than five head of camels; there is no Sadaqah on less than five Wasq of dates."

حضرت جابر بن عبداللہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺنے ارشاد فرمایا چاندی کے پانچ اوقیہ سے کم میں زکوۃنہیں اور اونٹوں میں پانچ اونٹوں سے کم پر زکوۃ نہیں اور کھجور کے پانچ اوسق سے کم میں زکوۃ نہیں۔

Chapter No: 1

بَاب مَا فِيهِ الْعُشْرُ أَوْ نِصْفُ الْعُشْرِ

Concerning that (land) on which one-tenth or half of one-tenth is due

کن چیزوں میں عشر اور کن میں نصف عشر ہے ؟

حَدَّثَنِى أَبُو الطَّاهِرِ أَحْمَدُ بْنُ عَمْرِو بْنِ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عَمْرِو بْنِ سَرْحٍ وَهَارُونُ بْنُ سَعِيدٍ الأَيْلِىُّ وَعَمْرُو بْنُ سَوَّادٍ وَالْوَلِيدُ بْنُ شُجَاعٍ كُلُّهُمْ عَنِ ابْنِ وَهْبٍ قَالَ أَبُو الطَّاهِرِ أَخْبَرَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ وَهْبٍ عَنْ عَمْرِو بْنِ الْحَارِثِ أَنَّ أَبَا الزُّبَيْرِ حَدَّثَهُ أَنَّهُ سَمِعَ جَابِرَ بْنَ عَبْدِ اللَّهِ يَذْكُرُ أَنَّهُ سَمِعَ النَّبِىَّ -صلى الله عليه وسلم- قَالَ « فِيمَا سَقَتِ الأَنْهَارُ وَالْغَيْمُ الْعُشُورُ وَفِيمَا سُقِىَ بِالسَّانِيَةِ نِصْفُ الْعُشْرِ ».

Jabir bin Abdullah narrated that he heard the Prophet (SAW) say: "On that which is irrigated by rivers and rain, one-tenth is due, and on that which is artificially irrigated half of one-tenth."

حضرت جابر بن عبداللہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺنے فرمایا جو زمین نہروں یا بارش سے سیراب ہوتی ہے اس میں عشر (دسواں حصہ) زکوۃے اور جو اونٹ لگا کر سینچی جائے اس میں نصف عشر (بیسواں حصہ) زکوۃواجب ہے۔

Chapter No: 2

بَاب لَا زَكَاةَ عَلَى الْمُسْلِمِ فِي عَبْدِهِ وَفَرَسِهِ

No Zakat is due for a Muslim on his slave or his horse

مسلمان پر اس کے غلام اور گھوڑے کی زکاۃ نہیں ہے۔

وَحَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ يَحْيَى التَّمِيمِىُّ قَالَ قَرَأْتُ عَلَى مَالِكٍ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ دِينَارٍ عَنْ سُلَيْمَانَ بْنِ يَسَارٍ عَنْ عِرَاكِ بْنِ مَالِكٍ عَنْ أَبِى هُرَيْرَةَ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ -صلى الله عليه وسلم- قَالَ « لَيْسَ عَلَى الْمُسْلِمِ فِى عَبْدِهِ وَلاَ فَرَسِهِ صَدَقَةٌ ».

It was narrated from Abu Hurairah that the Messenger of Allah (SAW) said: "The Muslim is not obliged to give Sadaqah on his slave nor his horse."

حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺنے فرمایا مسلمان کے غلام اور اس کے گھوڑے پر زکوۃنہیں ہے۔


وَحَدَّثَنِى عَمْرٌو النَّاقِدُ وَزُهَيْرُ بْنُ حَرْبٍ قَالاَ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ بْنُ عُيَيْنَةَ حَدَّثَنَا أَيُّوبُ بْنُ مُوسَى عَنْ مَكْحُولٍ عَنْ سُلَيْمَانَ بْنِ يَسَارٍ عَنْ عِرَاكِ بْنِ مَالِكٍ عَنْ أَبِى هُرَيْرَةَ - قَالَ عَمْرٌو - عَنِ النَّبِىِّ -صلى الله عليه وسلم- وَقَالَ زُهَيْرٌ يَبْلُغُ بِهِ « لَيْسَ عَلَى الْمُسْلِمِ فِى عَبْدِهِ وَلاَ فَرَسِهِ صَدَقَةٌ ».

It was narrated from Abu Hurairah from the Prophet (SAW):"The Muslims is not obliged to give Sadaqah on his slave nor his horse."

حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ نبی ﷺنے فرمایا مسلمان پر اس کے غلام اور گھوڑے کی زکوۃفرض نہیں ہے۔


حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ يَحْيَى أَخْبَرَنَا سُلَيْمَانُ بْنُ بِلاَلٍ ح وَحَدَّثَنَا قُتَيْبَةُ حَدَّثَنَا حَمَّادُ بْنُ زَيْدٍ ح وَحَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِى شَيْبَةَ حَدَّثَنَا حَاتِمُ بْنُ إِسْمَاعِيلَ كُلُّهُمْ عَنْ خُثَيْمِ بْنِ عِرَاكِ بْنِ مَالِكٍ عَنْ أَبِيهِ عَنْ أَبِى هُرَيْرَةَ عَنِ النَّبِىِّ -صلى الله عليه وسلم-. بِمِثْلِهِ.

A similar report (as no.2274) was narrated from Abu Hurairah, from the Prophet (SAW).

ایک اور سند کے ساتھ حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے ایسی ہی حدیث مروی ہے۔


وَحَدَّثَنِى أَبُو الطَّاهِرِ وَهَارُونُ بْنُ سَعِيدٍ الأَيْلِىُّ وَأَحْمَدُ بْنُ عِيسَى قَالُوا حَدَّثَنَا ابْنُ وَهْبٍ أَخْبَرَنِى مَخْرَمَةُ عَنْ أَبِيهِ عَنْ عِرَاكِ بْنِ مَالِكٍ قَالَ سَمِعْتُ أَبَا هُرَيْرَةَ يُحَدِّثُ عَنْ رَسُولِ اللَّهِ -صلى الله عليه وسلم- قَالَ « لَيْسَ فِى الْعَبْدِ صَدَقَةٌ إِلاَّ صَدَقَةُ الْفِطْرِ ».

It was narrated that Irak bin Malik said: “I heard Abu Hurairah narrate that the Messenger of Allah (SAW) said: "No Sadaqah is due for Slave except Sadaqat Al-Fitr." "

حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺ نے ارشاد فرمایا غلام کی زکوۃ نہیں ہے ہاں صدقہ فطر واجب ہے ۔

Chapter No: 3

بَاب فِي تَقْدِيمِ الزَّكَاةِ وَمَنْعِهَا

About paying or withholding Zakat

زکاۃ پہلے ادا کرنے اور اسے روکنےکا بیان

وَحَدَّثَنِى زُهَيْرُ بْنُ حَرْبٍ حَدَّثَنَا عَلِىُّ بْنُ حَفْصٍ حَدَّثَنَا وَرْقَاءُ عَنْ أَبِى الزِّنَادِ عَنِ الأَعْرَجِ عَنْ أَبِى هُرَيْرَةَ قَالَ بَعَثَ رَسُولُ اللَّهِ -صلى الله عليه وسلم- عُمَرَ عَلَى الصَّدَقَةِ فَقِيلَ مَنَعَ ابْنُ جَمِيلٍ وَخَالِدُ بْنُ الْوَلِيدِ وَالْعَبَّاسُ عَمُّ رَسُولِ اللَّهِ -صلى الله عليه وسلم- فَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ -صلى الله عليه وسلم- « مَا يَنْقِمُ ابْنُ جَمِيلٍ إِلاَّ أَنَّهُ كَانَ فَقِيرًا فَأَغْنَاهُ اللَّهُ وَأَمَّا خَالِدٌ فَإِنَّكُمْ تَظْلِمُونَ خَالِدًا قَدِ احْتَبَسَ أَدْرَاعَهُ وَأَعْتَادَهُ فِى سَبِيلِ اللَّهِ وَأَمَّا الْعَبَّاسُ فَهِىَ عَلَىَّ وَمِثْلُهَا مَعَهَا ». ثُمَّ قَالَ « يَا عُمَرُ أَمَا شَعَرْتَ أَنَّ عَمَّ الرَّجُلِ صِنْوُ أَبِيهِ ».

It was narrated that Abu Hurairah said: "The Messenger of Allah (SAW) sent 'Umar to collect the Sadaqah and it was said that Ibn Jamil, Khalid bin AL-Walid and Al-Abbas, the paternal uncle of Messenger of Allah (SAW), withheld it. The Messenger of Allah (SAW) said: The only reason for Ibn Jamil’s resentment is that he was poor then Allah made him rich. As for Khalid, you are being unfair to Khalid, for he is keeping his weapons and supplies (for Jihad) for the cause of Allah. As for Al-Abbas, I will pay (his Zakat) and the same again "'.Then he said 'O 'Umar, do you not realize that a man's paternal uncle is like his father?"".

حضرت ابوہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ حضرت عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہ کو رسول اللہ ﷺنے زکوۃوصول کرنے کے لئے بھیجا انہوں نے عرض کیا کہ ابن جمیل اور خالد بن ولید، عباس چچا رسول اللہ ﷺنے زکوۃ روک لی، تو رسول اللہ ﷺنے فرمایا کہ ابن جمیل تو اس کا بدلہ لے رہا ہے کہ وہ فقیر تھا اللہ نے اس کو غنی کردیا اور خالد پر تم ظلم کرتے ہو اس نے زرہیں اور ہتھیار تک اللہ کی راہ میں دے دیے ہیں رہے حضرت عباس رضی اللہ تعالیٰ عنہ ان کی زکوۃ اس کا دوگنا میرے ذمہ ہے پھر فرمایا اے عمر !کیا تم نہیں جانتے کہ چچا باپ کے برابر ہوتا ہے۔

Chapter No: 4

بَاب زَكَاةِ الْفِطْرِ عَلَى الْمُسْلِمِينَ مِنْ التَّمْرِ وَالشَّعِيرِ

Zakat Al-Fitr is obligatory upon all Muslims in the form of dates and barley

زکاۃ الفطر (صدقہ فطر) مسلمانوں پر کھجور اور جو سے ادا کرنے کا بیان

حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ مَسْلَمَةَ بْنِ قَعْنَبٍ وَقُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ قَالاَ حَدَّثَنَا مَالِكٌ ح وَحَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ يَحْيَى - وَاللَّفْظُ لَهُ - قَالَ قَرَأْتُ عَلَى مَالِكٍ عَنْ نَافِعٍ عَنِ ابْنِ عُمَرَ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ -صلى الله عليه وسلم- فَرَضَ زَكَاةَ الْفِطْرِ مِنْ رَمَضَانَ عَلَى النَّاسِ صَاعًا مِنْ تَمْرٍ أَوْ صَاعًا مِنْ شَعِيرٍ عَلَى كُلِّ حُرٍّ أَوْ عَبْدٍ ذَكَرٍ أَوْ أُنْثَى مِنَ الْمُسْلِمِينَ.

It was narrated from Ibn ‘Umar that the Messenger of Allah (SAW) enjoined Zakat Al-Fitr upon the people, a Sa of dates or a Sa of barley, upon everyone, free or slave, male or female, among the Muslims.

حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺنےرمضان کے سبب سے مسلمانوں پر ایک صاع کجھوریا ایک صاع جو صدقہ فطر مقرر کیا ، خواہ آزاد ہو یا غلام ، مرد ہو یا عورت۔


حَدَّثَنَا ابْنُ نُمَيْرٍ حَدَّثَنَا أَبِى ح وَحَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِى شَيْبَةَ - وَاللَّفْظُ لَهُ - قَالَ حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ نُمَيْرٍ وَأَبُو أُسَامَةَ عَنْ عُبَيْدِ اللَّهِ عَنْ نَافِعٍ عَنِ ابْنِ عُمَرَ قَالَ فَرَضَ رَسُولُ اللَّهِ -صلى الله عليه وسلم- زَكَاةَ الْفِطْرِ صَاعًا مِنْ تَمْرٍ أَوْ صَاعًا مِنْ شَعِيرٍ عَلَى كُلِّ عَبْدٍ أَوْ حُرٍّ صَغِيرٍ أَوْ كَبِيرٍ.

It was narrated that Ibn 'Umar said: “The Messenger of Allah (SAW) enjoined Zakat Al-Fitr upon the people, a Sa of dates or a Sa of barley, upon everyone, slave or free, young or old. "

حضرت ابن عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺنے صدقہ الفطر کھجور یا جو سے ایک صاع ہر غلام ،آزاد، چھوٹے، بڑے پر واجب کیا ہے۔


وَحَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ يَحْيَى أَخْبَرَنَا يَزِيدُ بْنُ زُرَيْعٍ عَنْ أَيُّوبَ عَنْ نَافِعٍ عَنِ ابْنِ عُمَرَ قَالَ فَرَضَ النَّبِىُّ -صلى الله عليه وسلم- صَدَقَةَ رَمَضَانَ عَلَى الْحُرِّ وَالْعَبْدِ وَالذَّكَرِ وَالأُنْثَى صَاعًا مِنْ تَمْرٍ أَوْ صَاعًا مِنْ شَعِيرٍ. قَالَ فَعَدَلَ النَّاسُ بِهِ نِصْفَ صَاعٍ مِنْ بُرٍّ.

It was narrated that Ibn 'Umar said: The Prophet (SAW) enjoined the Sadaqah of Ramadan upon free and slave, male and female, a Sa of dates or a Sa of barley. He said: “So the people considered that half a Sa of wheat was equal to it."

حضرت ابن عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ نبیﷺنے رمضان کا صدقہ آزاد، غلام، مرد عورت پر کھجور یا جو سے ایک صاع واجب کیا ہے لوگوں نے اس کی قیمت کے اعتبار سے نصف صاع گندم مقرر کرلی۔


حَدَّثَنَا قُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ حَدَّثَنَا لَيْثٌ ح وَحَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ رُمْحٍ أَخْبَرَنَا اللَّيْثُ عَنْ نَافِعٍ أَنَّ عَبْدَ اللَّهِ بْنَ عُمَرَ قَالَ إِنَّ رَسُولَ اللَّهِ -صلى الله عليه وسلم- أَمَرَ بِزَكَاةِ الْفِطْرِ صَاعٍ مِنْ تَمْرٍ أَوْ صَاعٍ مِنْ شَعِيرٍ. قَالَ ابْنُ عُمَرَ فَجَعَلَ النَّاسُ عِدْلَهُ مُدَّيْنِ مِنْ حِنْطَةٍ.

It was narrated from Nafi that Abdullah bin 'Umar said: “The Messenger of Allah (SAW) ordered that Zakat Al-Fitr be paid, a Sa of dates or a Sa of barley." Ibn Umar said: “Then the people made its equivalent two Mudd of Wheat."

حضرت ابن عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ نبیﷺنے صدقہ الفطر کھجور یا جو سے ایک صاع کا حکم دیا ابن عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے فرمایا لوگوں نے اس کی جگہ گندم کے دو مد مقرر کر لئے۔


وَحَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ رَافِعٍ حَدَّثَنَا ابْنُ أَبِى فُدَيْكٍ أَخْبَرَنَا الضَّحَّاكُ عَنْ نَافِعٍ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عُمَرَ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ -صلى الله عليه وسلم- فَرَضَ زَكَاةَ الْفِطْرِ مِنْ رَمَضَانَ عَلَى كُلِّ نَفْسٍ مِنَ الْمُسْلِمِينَ حُرٍّ أَوْ عَبْدٍ أَوْ رَجُلٍ أَوِ امْرَأَةٍ صَغِيرٍ أَوْ كَبِيرٍ صَاعًا مِنْ تَمْرٍ أَوْ صَاعًا مِنْ شَعِيرٍ.

It was narrated from Abdullah bin Umar that the Messenger of Allah (SAW) enjoined Zakat Al-Fitr after Ramadan upon every Muslim, free or slave, man or women, young or old, a Sa of dates or a Sa of Barley.

حضرت ابن عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺنے مسلمانوں میں سے ہر نفس پر آزاد ہو یا غلام ،مرد ہو یا عورت، چھوٹا ہو یا بڑا، کھجور یا جو سے ایک صاع صدقہ الفطر رمضان کے سبب واجب کیا ہے۔


حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ يَحْيَى قَالَ قَرَأْتُ عَلَى مَالِكٍ عَنْ زَيْدِ بْنِ أَسْلَمَ عَنْ عِيَاضِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ سَعْدِ بْنِ أَبِى سَرْحٍ أَنَّهُ سَمِعَ أَبَا سَعِيدٍ الْخُدْرِىَّ يَقُولُ كُنَّا نُخْرِجُ زَكَاةَ الْفِطْرِ صَاعًا مِنْ طَعَامٍ أَوْ صَاعًا مِنْ شَعِيرٍ أَوْ صَاعًا مِنْ تَمْرٍ أَوْ صَاعًا مِنْ أَقِطٍ أَوْ صَاعًا مِنْ زَبِيبٍ.

It was narrated from Iyad bin Abdullah bin Sad bin Abi Sarh that he heard Abu Sa’eed Al -Khudri say: “We used to pay Zakat Al-Fitr one Sa of Wheat or one Sa of Barley or one Sa of Dates or one Sa of Cottage cheese or one Sa of raisins."

حضرت ابوسعید خدری رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ ہم صدقہ الفطر ایک صاع کھانے یا ایک صاع جو یا ایک صاع کھجور یا ایک صاع پنیر یا ایک صاع کشمش نکالا کرتے تھے۔


حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ مَسْلَمَةَ بْنِ قَعْنَبٍ حَدَّثَنَا دَاوُدُ - يَعْنِى ابْنَ قَيْسٍ - عَنْ عِيَاضِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ عَنْ أَبِى سَعِيدٍ الْخُدْرِىِّ قَالَ كُنَّا نُخْرِجُ إِذْ كَانَ فِينَا رَسُولُ اللَّهِ -صلى الله عليه وسلم- زَكَاةَ الْفِطْرِ عَنْ كُلِّ صَغِيرٍ وَكَبِيرٍ حُرٍّ أَوْ مَمْلُوكٍ صَاعًا مِنْ طَعَامٍ أَوْ صَاعًا مِنْ أَقِطٍ أَوْ صَاعًا مِنْ شَعِيرٍ أَوْ صَاعًا مِنْ تَمْرٍ أَوْ صَاعًا مِنْ زَبِيبٍ فَلَمْ نَزَلْ نُخْرِجُهُ حَتَّى قَدِمَ عَلَيْنَا مُعَاوِيَةُ بْنُ أَبِى سُفْيَانَ حَاجًّا أَوْ مُعْتَمِرًا فَكَلَّمَ النَّاسَ عَلَى الْمِنْبَرِ فَكَانَ فِيمَا كَلَّمَ بِهِ النَّاسَ أَنْ قَالَ إِنِّى أُرَى أَنَّ مُدَّيْنِ مِنْ سَمْرَاءِ الشَّامِ تَعْدِلُ صَاعًا مِنْ تَمْرٍ فَأَخَذَ النَّاسُ بِذَلِكَ. قَالَ أَبُو سَعِيدٍ فَأَمَّا أَنَا فَلاَ أَزَالُ أُخْرِجُهُ كَمَا كُنْتُ أُخْرِجُهُ أَبَدًا مَا عِشْتُ.

It was narrated that Abu Sa’eed Al-Khudri said : "When the Messenger of Allah (SAW) was among us, we used to pay Zakat Al-Fitr on behalf of everyone young and old, free and slave, a Sa of wheat or a Sa of cottage cheese or a Sa of Barley or a Sa of Dates or a Sa of raisins. We contained to pay that until Muawiyah bin Abi Sufyan came to us for Hajj or Umrah, and addressed the people from the Minbar. Among the things that he said to people was: I think that two Mudd of wheat of Ash-Sham are equivalent to a Sa of Dates and the people adopted that." Abu Sa’eed said: "As for me, I will continue to pay it as I used to pay it as long as I live."

حضرت ابوسعید خدری رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ جب رسول اللہ ﷺہمارے درمیان تھے تو ہم صدقہ الفطر ہر چھوٹے اور بڑے آزاد یا غلام کی طرف سے ایک صاع کھانے سے یا ایک صاع پنیر سے یا ایک صاع جو سے یا ایک صاع کھجور سے یا ایک صاع کشمش سے نکالا کرتے تھے ہم ہمیشہ اسی طرح نکالتے رہے کہ ہمارے پاس حضرت معاویہ بن ابوسفیان حج یا عمرہ کرنے کے لئے آئے تو آپ نے منبر پر لوگوں سے گفتگو کی اور اس گفتگو میں یہ بھی کہا کہ میرے خیال میں ملک شام کے سرخ گیہوں کے دو مد ایک صاع کھجور کے برابر ہیں تو لوگوں نے اسی کو لے لیا یعنی اسی طرح عمل شروع کردیا ابوسعید فرماتے ہیں بہرحال میں ہمیشہ اسی طرح ادا کرتا رہا جس طرح ادا کرتا تھا جب تک میں زندہ رہا۔


حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ رَافِعٍ حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّزَّاقِ عَنْ مَعْمَرٍ عَنْ إِسْمَاعِيلَ بْنِ أُمَيَّةَ قَالَ أَخْبَرَنِى عِياضُ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ سَعْدِ بْنِ أَبِى سَرْحٍ أَنَّهُ سَمِعَ أَبَا سَعِيدٍ الْخُدْرِىَّ يَقُولُ كُنَّا نُخْرِجُ زَكَاةَ الْفِطْرِ وَرَسُولُ اللَّهِ -صلى الله عليه وسلم- فِينَا عَنْ كُلِّ صَغِيرٍ وَكَبِيرٍ حُرٍّ وَمَمْلُوكٍ مِنْ ثَلاَثَةِ أَصْنَافٍ صَاعًا مِنْ تَمْرٍ صَاعًا مِنْ أَقِطٍ صَاعًا مِنْ شَعِيرٍ فَلَمْ نَزَلْ نُخْرِجُهُ كَذَلِكَ حَتَّى كَانَ مُعَاوِيَةُ فَرَأَى أَنَّ مُدَّيْنِ مِنْ بُرٍّ تَعْدِلُ صَاعًا مِنْ تَمْرٍ. قَالَ أَبُو سَعِيدٍ فَأَمَّا أَنَا فَلاَ أَزَالُ أُخْرِجُهُ كَذَلِكَ.

Iyad bin Abdullah bin Sad bin Abu Sarh narrated that he heard Abu Sa’eed A-Khudri say: While the Messenger Of Allah (SAW) was among us, we would pay Zakat Al-Fitr , on behalf of everyone; young and old, free and slave of three types: A Sa of dates, a Sa of cottage cheese, or a Sa of barley. We continued o pay it like that until Muawiyah came, and he thought that two Mudd of wheat were equivalent to a Sa of dates. Abu Saeed said: "As for me, I will continue to pay it like that."

حضرت ابوسعید خدری رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ ہم رسول اللہ ﷺکی موجودگی میں ہر چھوٹے اور بڑے آزاد اور غلام کی طرف سے تین قسموں سے ایک صاع صدقہ الفطر ادا کرتے تھے کھجور سے ایک صاع پنیر سے ایک صاع اور جو سے ایک صاع ہم ہمیشہ اسی طرح ادا کرتے رہے ۔ یہاں تک کہ معاویہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے خیال کیا کہ گندم سے دو مد کھجور کے ایک صاع کے برابر ہیں بہر حال میں تو ہمیشہ اسی طرح ادا کرتا رہا۔


وَحَدَّثَنِى مُحَمَّدُ بْنُ رَافِعٍ حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّزَّاقِ أَخْبَرَنَا ابْنُ جُرَيْجٍ عَنِ الْحَارِثِ بْنِ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ أَبِى ذُبَابٍ عَنْ عِيَاضِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ أَبِى سَرْحٍ عَنْ أَبِى سَعِيدٍ الْخُدْرِىِّ قَالَ كُنَّا نُخْرِجُ زَكَاةَ الْفِطْرِ مِنْ ثَلاَثَةِ أَصْنَافٍ الأَقِطِ وَالتَّمْرِ وَالشَّعِيرِ.

It was narrated that Abu Sa’eed Al-Khudri that when Muawiyah made half a Sa of wheat equivalent to Sa of dates, Abu Sa’eed rejected that and said: "I will not pay it except in the form I used to pay it at the time of Messenger of Allah(SAW): A Sa of dates, or Sa of raisins , or a Sa of barley, or a Sa of cottage cheese."

حضرت ابوسعیدخدری رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ ہم صدقہ الفطر تین قسم کی چیزوں سے ادا کرتے تھے پنیر ،کھجور ،اور جو۔


وَحَدَّثَنِى عَمْرٌو النَّاقِدُ حَدَّثَنَا حَاتِمُ بْنُ إِسْمَاعِيلَ عَنِ ابْنِ عَجْلاَنَ عَنْ عِيَاضِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ أَبِى سَرْحٍ عَنْ أَبِى سَعِيدٍ الْخُدْرِىِّ أَنَّ مُعَاوِيَةَ لَمَّا جَعَلَ نِصْفَ الصَّاعِ مِنَ الْحِنْطَةِ عِدْلَ صَاعٍ مِنْ تَمْرٍ أَنْكَرَ ذَلِكَ أَبُو سَعِيدٍ وَقَالَ لاَ أُخْرِجُ فِيهَا إِلاَّ الَّذِى كُنْتُ أُخْرِجُ فِى عَهْدِ رَسُولِ اللَّهِ -صلى الله عليه وسلم- صَاعًا مِنْ تَمْرٍ أَوْ صَاعًا مِنْ زَبِيبٍ أَوْ صَاعًا مِنْ شَعِيرٍ أَوْ صَاعًا مِنْ أَقِطٍ.

It was narrated that Abu Sa’eed Al-Khudri that when Muawiyah made half a Sa of wheat equivalent to Sa of dates, Abu Sa’eed rejected that and said: "I will not pay it except in the form I used to pay it at the time of Messenger of Allah(SAW): A Sa of dates, or Sa of raisins , or a Sa of barley, or a Sa of cottage cheese."

حضرت ابوسعید خدری رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ جب معاویہ نے گندم کے نصف صاع کو کھجور کے ایک صاع کے برابر قرار دیا تو ابوسعید نے انکار کیا اور فرمایا میں تو اس میں نہیں نکالوں گا مگر میں تو جس سے رسول اللہ ﷺ کے دور میں نکالتا تھا اس میں نکالوں گا کھجور سے ایک صاع یا کشمش یا جو یا پنیر سے ایک صاع۔

Chapter No: 5

بَاب الْأَمْرِ بِإِخْرَاجِ زَكَاةِ الْفِطْرِ قَبْلَ الصَّلَاةِ

The command to pay the Zakat Al-Fitr before the (Eid) Prayer

زکاۃ الفطر (صدقہ فطر) عید کی نماز سے قبل ادا کرنے کا حکم

حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ يَحْيَى أَخْبَرَنَا أَبُو خَيْثَمَةَ عَنْ مُوسَى بْنِ عُقْبَةَ عَنْ نَافِعٍ عَنِ ابْنِ عُمَرَ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ -صلى الله عليه وسلم- أَمَرَ بِزَكَاةِ الْفِطْرِ أَنْ تُؤَدَّى قَبْلَ خُرُوجِ النَّاسِ إِلَى الصَّلاَةِ.

It was narrated from Ibn 'Umar that the Messenger of Allah (SAW) commanded Zakat Al-Fitr be paid before the people went out to the prayer

حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺ نے حکم دیا کہ صدقہ الفطر لوگوں کی نماز عید کی طرف نکلنے سے پہلے ادا کیا جائے۔


حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ رَافِعٍ حَدَّثَنَا ابْنُ أَبِى فُدَيْكٍ أَخْبَرَنَا الضَّحَّاكُ عَنْ نَافِعٍ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عُمَرَ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ -صلى الله عليه وسلم- أَمَرَ بِإِخْرَاجِ زَكَاةِ الْفِطْرِ أَنْ تُؤَدَّى قَبْلَ خُرُوجِ النَّاسِ إِلَى الصَّلاَةِ.

It was narrated From Abdullah bin Umar that the Messenger of Allah (SAW) commanded that Zakat Al-Fitr be paid before the people went out to the prayer.

حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺ نے صدقہ الفطر لوگوں کے نماز کی طرف نکلنے سے پہلے نکالنے کا حکم دیا۔

Chapter No: 6

بَاب إِثْمِ مَانِعِ الزَّكَاةِ

About the (severity of) sin of one who withholds Zakat

زکاۃ نہ دینے والے کا گناہ

وَحَدَّثَنِى سُوَيْدُ بْنُ سَعِيدٍ حَدَّثَنَا حَفْصٌ - يَعْنِى ابْنَ مَيْسَرَةَ الصَّنْعَانِىَّ - عَنْ زَيْدِ بْنِ أَسْلَمَ أَنَّ أَبَا صَالِحٍ ذَكْوَانَ أَخْبَرَهُ أَنَّهُ سَمِعَ أَبَا هُرَيْرَةَ يَقُولُ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ -صلى الله عليه وسلم- « مَا مِنْ صَاحِبِ ذَهَبٍ وَلاَ فِضَّةٍ لاَ يُؤَدِّى مِنْهَا حَقَّهَا إِلاَّ إِذَا كَانَ يَوْمُ الْقِيَامَةِ صُفِّحَتْ لَهُ صَفَائِحَ مِنْ نَارٍ فَأُحْمِىَ عَلَيْهَا فِى نَارِ جَهَنَّمَ فَيُكْوَى بِهَا جَنْبُهُ وَجَبِينُهُ وَظَهْرُهُ كُلَّمَا بَرَدَتْ أُعِيدَتْ لَهُ فِى يَوْمٍ كَانَ مِقْدَارُهُ خَمْسِينَ أَلْفَ سَنَةٍ حَتَّى يُقْضَى بَيْنَ الْعِبَادِ فَيُرَى سَبِيلُهُ إِمَّا إِلَى الْجَنَّةِ وَإِمَّا إِلَى النَّارِ ». قِيلَ يَا رَسُولَ اللَّهِ فَالإِبِلُ قَالَ « وَلاَ صَاحِبُ إِبِلٍ لاَ يُؤَدِّى مِنْهَا حَقَّهَا وَمِنْ حَقِّهَا حَلَبُهَا يَوْمَ وِرْدِهَا إِلاَّ إِذَا كَانَ يَوْمُ الْقِيَامَةِ بُطِحَ لَهَا بِقَاعٍ قَرْقَرٍ أَوْفَرَ مَا كَانَتْ لاَ يَفْقِدُ مِنَهَا فَصِيلاً وَاحِدًا تَطَؤُهُ بِأَخْفَافِهَا وَتَعَضُّهُ بِأَفْوَاهِهَا كُلَّمَا مَرَّ عَلَيْهِ أُولاَهَا رُدَّ عَلَيْهِ أُخْرَاهَا فِى يَوْمٍ كَانَ مِقْدَارُهُ خَمْسِينَ أَلْفَ سَنَةٍ حَتَّى يُقْضَى بَيْنَ الْعِبَادِ فَيُرَى سَبِيلُهُ إِمَّا إِلَى الْجَنَّةِ وَإِمَّا إِلَى النَّارِ ». قِيلَ يَا رَسُولَ اللَّهِ فَالْبَقَرُ وَالْغَنَمُ قَالَ « وَلاَ صَاحِبُ بَقَرٍ وَلاَ غَنَمٍ لاَ يُؤَدِّى مِنْهَا حَقَّهَا إِلاَّ إِذَا كَانَ يَوْمُ الْقِيَامَةِ بُطِحَ لَهَا بِقَاعٍ قَرْقَرٍ لاَ يَفْقِدُ مِنْهَا شَيْئًا لَيْسَ فِيهَا عَقْصَاءُ وَلاَ جَلْحَاءُ وَلاَ عَضْبَاءُ تَنْطِحُهُ بِقُرُونِهَا وَتَطَؤُهُ بِأَظْلاَفِهَا كُلَّمَا مَرَّ عَلَيْهِ أُولاَهَا رُدَّ عَلَيْهِ أُخْرَاهَا فِى يَوْمٍ كَانَ مِقْدَارُهُ خَمْسِينَ أَلْفَ سَنَةٍ حَتَّى يُقْضَى بَيْنَ الْعِبَادِ فَيُرَى سَبِيلُهُ إِمَّا إِلَى الْجَنَّةِ وَإِمَّا إِلَى النَّارِ ». قِيلَ يَا رَسُولَ اللَّهِ فَالْخَيْلُ قَالَ « الْخَيْلُ ثَلاَثَةٌ هِىَ لِرَجُلٍ وِزْرٌ وَهِىَ لِرَجُلٍ سِتْرٌ وَهِىَ لِرَجُلٍ أَجْرٌ فَأَمَّا الَّتِى هِىَ لَهُ وِزْرٌ فَرَجُلٌ رَبَطَهَا رِيَاءً وَفَخْرًا وَنِوَاءً عَلَى أَهْلِ الإِسْلاَمِ فَهِىَ لَهُ وِزْرٌ وَأَمَّا الَّتِى هِىَ لَهُ سِتْرٌ فَرَجُلٌ رَبَطَهَا فِى سَبِيلِ اللَّهِ ثُمَّ لَمْ يَنْسَ حَقَّ اللَّهِ فِى ظُهُورِهَا وَلاَ رِقَابِهَا فَهِىَ لَهُ سِتْرٌ وَأَمَّا الَّتِى هِىَ لَهُ أَجْرٌ فَرَجُلٌ رَبَطَهَا فِى سَبِيلِ اللَّهِ لأَهْلِ الإِسْلاَمِ فِى مَرْجٍ وَرَوْضَةٍ فَمَا أَكَلَتْ مِنْ ذَلِكَ الْمَرْجِ أَوِ الرَّوْضَةِ مِنْ شَىْءٍ إِلاَّ كُتِبَ لَهُ عَدَدَ مَا أَكَلَتْ حَسَنَاتٌ وَكُتِبَ لَهُ عَدَدَ أَرْوَاثِهَا وَأَبْوَالِهَا حَسَنَاتٌ وَلاَ تَقْطَعُ طِوَلَهَا فَاسْتَنَّتْ شَرَفًا أَوْ شَرَفَيْنِ إِلاَّ كَتَبَ اللَّهُ لَهُ عَدَدَ آثَارِهَا وَأَرْوَاثِهَا حَسَنَاتٍ وَلاَ مَرَّ بِهَا صَاحِبُهَا عَلَى نَهْرٍ فَشَرِبَتْ مِنْهُ وَلاَ يُرِيدُ أَنْ يَسْقِيَهَا إِلاَّ كَتَبَ اللَّهُ لَهُ عَدَدَ مَا شَرِبَتْ حَسَنَاتٍ ». قِيلَ يَا رَسُولَ اللَّهِ فَالْحُمُرُ قَالَ « مَا أُنْزِلَ عَلَىَّ فِى الْحُمُرِ شَىْءٌ إِلاَّ هَذِهِ الآيَةُ الْفَاذَّةُ الْجَامِعَةُ (فَمَنْ يَعْمَلْ مِثْقَالَ ذَرَّةٍ خَيْرًا يَرَهُ وَمَنْ يَعْمَلْ مِثْقَالَ ذَرَّةٍ شَرًّا يَرَهُ) ».

Abu Hurairah narrated that the Messenger of Allah(SAW) said:" There is no owner of gold or silver who does not pay what is due on them, but when the Day of Resurrection comes, there will be beaten out for him plates of fire which will be heated in the Fire of Hell, and his sides, forehead and back will be branded with them. Every time they cool down they will be reheated for him, on a day the length of which is as fifty thousand years, until judgment is passed among the people. Then he will be shown his path, either to Paradise or to Hell. "It was said: "O Messenger of Allah (SAW) what about camels?”He said "There is no owner of camels who does not pay what is due on them- which includes milking them on the day when they are brought to water-but when the Day of Resurrection comes, a vast plain will be spread out for them, and the whole herd will be gathered and not a single young camel will be missing. They will trample him with their hooves and bite him with their mouths, and every time first one of them has passed the last of them will return, on a day the length of which is as fifty thousand years, until judgment is passed among the people. Then he will be shown his path, either to Paradise or to Hell." It was said: "O Messenger of Allah! What about cattle and sheep? "There is no owner of cattle or sheep who does not pay what is due on them, but when the Day of Resurrection comes, a vast plain will be spread out for them, and the whole herd will be gathered and not one of them will be missing, and there will be none with twisted horns, missing horns or broken horns. They will gore them with their horns and trample him with their hooves. Every time the first one of them has passed the last of them will return, on a day the length of which is a as fifty thousand years, until judgment is passed among the people .Then he will be shown his path, either to Paradise or to Hell. "It was said: "O Messenger of Allah, what about horses?”He said: "Horses are of three types: Those which are a burden for a man, those which are a shield for him, and those which are a source of reward. As for those which are a burden, a man keeps them to showoff and to oppose the people of Islam. They are a burden (of sin) for him. As for those which are a shield for a man, he keeps them for (Jihad) for the cause of Allah and he does not forget the rights of Allah concerning their backs and their necks. They will be a shield for him .As for those which bring reward to a man, he keeps them for the people of Islam for the cause of Allah. In a meadow or field. They do not eat any thing from that meadow or field, but it will be recorded for him as Hasanat, however much they eat .And their dung and urine will be recorded for him as Hasanat. If they break their halters and run away over one or two hills Allah will record the number of their hoof marks and dung for them as Hasanat. If their owner takes them to a river and they drink from it, even though he did not intend to give them water, Allah will record the amount that they drank for him as Hasanat. It was said: "O Messenger of Allah, what about donkeys” he said: "Nothing has been revealed to me about donkeys except the comprehensive verse: “So whosoever does good equal to the weight of atom(or a small ant)shall see it .And whosoever does evil equal to the weight of atom(or small ant) shall see it. ""

حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺنے فرمایا : جوشخص سونا چاندی رکھتا ہو اور اس کاحق (زکاۃ)ادا نہ کرے قیامت کے دن اس کے لیے آگ کی چٹانیں بنائی جائیں گی، اور جہنم کی آگ سے اس کو تپایا جائے گا اور اس کے پہلو ، پیشانی اور پیٹھ کو اس کے ساتھ داغا جائے گا ، ایک بار یہ عمل کرنے کے بعد دوبارہ لوٹایا جائے گا ، جو دن پچاس ہزار سال کے برابر ہے اس دن یہ عمل مسلسل ہوتا رہے گا ، بالآخر جب تمام لوگوں کے فیصلے ہوجائیں گے تو اسے جنت یا جہنم کا راستہ دکھا دیا جائے گا ، عرض کیا گیا یا رسول اللہ ﷺ! اونٹ والوں کا کیا ہوگا ؟ فرمایا جو اونٹ والا اونٹوں کاحق ادا نہیں کرے گا اور اونٹوں کے حقوق میں سے یہ بھی ہے کہ پانی پلانے کے بعد اونٹیوں کا دودھ دوہ کر غریبوں کو پلایا جائے ، (ان کی زکاۃ ادا نہ کرنے والے کو ) قیامت کے دن ایک چٹیل زمین پر اوندھا لٹا دیا جائے گا اس وقت وہ اونٹ آئیں گے اس حال میں کہ وہ بہت موٹے ہوں گے اور ان میں سے کوئی بچہ تک باقی نہ رہے گاوہ اس شخص کو اپنے کھروں سے روندیں گے اور اپنے منہ سے کاٹیں گے ان کا ایک ریوڑ گزر جائے گا تو دوسرا آجائے گا پچاس ہزار سال کے برابر دن میں یہ سلسلہ جاری رہے گا حتی کہ جب لوگوں کے فیصلے ہوجائیں گے تو اسے جنت یا جہنم کا راستہ دکھادیا جائے گا ، عرض کیا گیا یا رسول اللہ ﷺ!گائے اور بکریوں والوں کا کیا حال ہوگا ؟ فرمایا جوگائے اور بکریوں والا ان کا حق (زکاۃ) ادا نہیں کرے گا قیامت کے دن چٹیل میدان میں اسے منہ کے بل گرایا جائے گا ۔ تمام گائے اور بکریاں اس کو اپنے کھروں سے روندیں گی اور اس کو سینگوں سے ماریں گی، اس روز ان میں کوئی الٹے سینگوں والی ہوگی نہ بغیر سینگوں والی نہ ٹوٹے ہوئے سینگوں والی ، ایک ریوڑ گزرنے کے بعد فورا دوسرا ریوڑ آجائے گا اور پچاس ہزار سال کے برابر دن میں یونہی ہوتا رہے گا، حتی کہ لوگوں کے درمیان فیصلہ کردیا جائے گا پھر اسے جنت یا دوزخ کا راستہ دکھادیا جائے گا ، عرض کیا گیا یارسول اللہ !گھوڑوں والوں کا کیا ہوگا ؟ آپﷺنے فرمایا : گھوڑوں کی تین قسمیں ہیں ، گھوڑے مالک کے لیے بوجھ ہوتے ہیں ، مالک کے لیے ستر(پردہ) ہوتے ہیں اور مالک کے لیے اجر ہوتے ہیں۔بوجھ وہ گھوڑے ہوتے ہیں جس کو مالک نے دکھلاوے ، فخر اور مسلمانوں کو ایذا پہنچانے کے لیے رکھا ہو، یہ گھوڑے مالک کے لیے بوجھ کا باعث ہیں۔ اور مالک کے لیے ستر وہ گھوڑے ہیں جنہیں مالک نے اللہ کی راہ میں باندھا ہو پھر وہ ان حقوق کو نہ بھولا ہو جو گھوڑوں کی پیٹھوں اور گردنوں سے وابستہ ہیں اور جو گھوڑے مالک کے لیے ستر کا باعث ہیں اور جو گھوڑے مالک کے لیے اجر ہیں یہ وہ ہیں جن کومالک نے اللہ کی راہ میں مسلمانوں کے لیے باندھا ہو، کسی چراہ گاہ یا باغ میں ، یہ گھوڑے چرا گاہ یا باغ سے جو کچھ کھائیں گے یا پیشاب اور لید کریں گے اس کے برابر مالک کی نیکیاں لکھ دی جائیں گی اور اگر گھوڑے رسی تڑاکر ایک یا دو ٹیلوں کا چکر لگائیں تو اللہ تعالیٰ ان کے قدموں کے نشانات اور لید کے برابر مالک کے لیے نیکیاں لکھ دے گا، اور اگر مالک گھوڑوں کو لیکر نہر پر سے گزرے اور بغیر ارادہ کے بھی گھوڑے پانی پی لیں تو اس پانی کے برابر اللہ تعالیٰ مالک کی نیکیاں لکھ دے گا۔ عرض کیا گی یا رسول اللہ !گدھوں کے بارے میں کیا حکم ہے ؟ فرمایا گدھوں کے بارے میں مجھ پر کوئی حکم نازل نہیں ہوا ۔البتہ یہ جامع آیت ہے (ترجمہ ) جس نے ذرہ برابر نیکی کی وہ اس کی جزا دیکھے گا اور جس نے ذرہ برابر برائی کی اس کی سزا پالے گا۔(سورہ زلزال 7)


وَحَدَّثَنِى يُونُسُ بْنُ عَبْدِ الأَعْلَى الصَّدَفِىُّ أَخْبَرَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ وَهْبٍ حَدَّثَنِى هِشَامُ بْنُ سَعْدٍ عَنْ زَيْدِ بْنِ أَسْلَمَ فِى هَذَا الإِسْنَادِ بِمَعْنَى حَدِيثِ حَفْصِ بْنِ مَيْسَرَةَ إِلَى آخِرِهِ غَيْرَ أَنَّهُ قَالَ « مَا مِنْ صَاحِبِ إِبِلٍ لاَ يُؤَدِّى حَقَّهَا ». وَلَمْ يَقُلْ « مِنْهَا حَقَّهَا ». وَذَكَرَ فِيهِ « لاَ يَفْقِدُ مِنْهَا فَصِيلاً وَاحِدًا ». وَقَالَ « يُكْوَى بِهَا جَنْبَاهُ وَجَبْهَتُهُ وَظَهْرُهُ ».

A Hadith similar to that of Hafs bin Maisarah(no 2290) was narrated from Zaid bin Aslam with this chain except that he did not say: “There is no owner of camels who does not pay what is due on them" and he mentioned "not a singled young camel will be missing." And he said "his sides, forehead and back will be branded with them"

حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے یہی حدیث دوسری سند سے مروی ہے لیکن کچھ الفاظ کا تغیر وتبدل ہے لیکن معنی و مفہوم وہی ہے۔


وَحَدَّثَنِى مُحَمَّدُ بْنُ عَبْدِ الْمَلِكِ الأُمَوِىُّ حَدَّثَنَا عَبْدُ الْعَزِيزِ بْنُ الْمُخْتَارِ حَدَّثَنَا سُهَيْلُ بْنُ أَبِى صَالِحٍ عَنْ أَبِيهِ عَنْ أَبِى هُرَيْرَةَ قَالَ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ -صلى الله عليه وسلم- « مَا مِنْ صَاحِبِ كَنْزٍ لاَ يُؤَدِّى زَكَاتَهُ إِلاَّ أُحْمِىَ عَلَيْهِ فِى نَارِ جَهَنَّمَ فَيُجْعَلُ صَفَائِحَ فَيُكْوَى بِهَا جَنْبَاهُ وَجَبِينُهُ حَتَّى يَحْكُمَ اللَّهُ بَيْنَ عِبَادِهِ فِى يَوْمٍ كَانَ مِقْدَارُهُ خَمْسِينَ أَلْفَ سَنَةٍ ثُمَّ يُرَى سَبِيلَهُ إِمَّا إِلَى الْجَنَّةِ وَإِمَّا إِلَى النَّارِ وَمَا مِنْ صَاحِبِ إِبِلٍ لاَ يُؤَدِّى زَكَاتَهَا إِلاَّ بُطِحَ لَهَا بِقَاعٍ قَرْقَرٍ كَأَوْفَرِ مَا كَانَتْ تَسْتَنُّ عَلَيْهِ كُلَّمَا مَضَى عَلَيْهِ أُخْرَاهَا رُدَّتْ عَلَيْهِ أُولاَهَا حَتَّى يَحْكُمَ اللَّهُ بَيْنَ عِبَادِهِ فِى يَوْمٍ كَانَ مِقْدَارُهُ خَمْسِينَ أَلْفَ سَنَةٍ ثُمَّ يُرَى سَبِيلَهُ إِمَّا إِلَى الْجَنَّةِ وَإِمَّا إِلَى النَّارِ وَمَا مِنْ صَاحِبِ غَنَمٍ لاَ يُؤَدِّى زَكَاتَهَا إِلاَّ بُطِحَ لَهَا بِقَاعٍ قَرْقَرٍ كَأَوْفَرِ مَا كَانَتْ فَتَطَؤُهُ بِأَظْلاَفِهَا وَتَنْطِحُهُ بِقُرُونِهَا لَيْسَ فِيهَا عَقْصَاءُ وَلاَ جَلْحَاءُ كُلَّمَا مَضَى عَلَيْهِ أُخْرَاهَا رُدَّتْ عَلَيْهِ أُولاَهَا حَتَّى يَحْكُمَ اللَّهُ بَيْنَ عِبَادِهِ فِى يَوْمٍ كَانَ مِقْدَارُهُ خَمْسِينَ أَلْفَ سَنَةٍ مِمَّا تَعُدُّونَ ثُمَّ يُرَى سَبِيلَهُ إِمَّا إِلَى الْجَنَّةِ وَإِمَّا إِلَى النَّارِ ». قَالَ سُهَيْلٌ فَلاَ أَدْرِى أَذَكَرَ الْبَقَرَ أَمْ لاَ. قَالُوا فَالْخَيْلُ يَا رَسُولَ اللَّهِ قَالَ « الْخَيْلُ فِى نَوَاصِيهَا - أَوْ قَالَ - الْخَيْلُ مَعْقُودٌ فِى نَوَاصِيهَا - قَالَ سُهَيْلٌ أَنَا أَشُكُّ - الْخَيْرُ إِلَى يَوْمِ الْقِيَامَةِ الْخَيْلُ ثَلاَثَةٌ فَهْىَ لِرَجُلٍ أَجْرٌ وَلِرَجُلٍ سِتْرٌ وَلِرَجُلٍ وِزْرٌ فَأَمَّا الَّتِى هِىَ لَهُ أَجْرٌ فَالرَّجُلُ يَتَّخِذُهَا فِى سَبِيلِ اللَّهِ وَيُعِدُّهَا لَهُ فَلاَ تُغَيِّبُ شَيْئًا فِى بُطُونِهَا إِلاَّ كَتَبَ اللَّهُ لَهُ أَجْرًا وَلَوْ رَعَاهَا فِى مَرْجٍ مَا أَكَلَتْ مِنْ شَىْءٍ إِلاَّ كَتَبَ اللَّهُ لَهُ بِهَا أَجْرًا وَلَوْ سَقَاهَا مِنْ نَهْرٍ كَانَ لَهُ بِكُلِّ قَطْرَةٍ تُغَيِّبُهَا فِى بُطُونِهَا أَجْرٌ - حَتَّى ذَكَرَ الأَجْرَ فِى أَبْوَالِهَا وَأَرْوَاثِهَا - وَلَوِ اسْتَنَّتْ شَرَفًا أَوْ شَرَفَيْنِ كُتِبَ لَهُ بِكُلِّ خَطْوَةٍ تَخْطُوهَا أَجْرٌ وَأَمَّا الَّذِى هِىَ لَهُ سِتْرٌ فَالرَّجُلُ يَتَّخِذُهَا تَكَرُّمًا وَتَجَمُّلاً وَلاَ يَنْسَى حَقَّ ظُهُورِهَا وَبُطُونِهَا فِى عُسْرِهَا وَيُسْرِهَا وَأَمَّا الَّذِى عَلَيْهِ وِزْرٌ فَالَّذِى يَتَّخِذُهَا أَشَرًا وَبَطَرًا وَبَذَخًا وَرِيَاءَ النَّاسِ فَذَاكَ الَّذِى هِىَ عَلَيْهِ وِزْرٌ ». قَالُوا فَالْحُمُرُ يَا رَسُولَ اللَّهِ قَالَ « مَا أَنْزَلَ اللَّهُ عَلَىَّ فِيهَا شَيْئًا إِلاَّ هَذِهِ الآيَةَ الْجَامِعَةَ الْفَاذَّةَ (فَمَنْ يَعْمَلْ مِثْقَالَ ذَرَّةٍ خَيْرًا يَرَهُ وَمَنْ يَعْمَلْ مِثْقَالَ ذَرَّةٍ شَرًّا يَرَهُ) ».

It was narrated that Abu Hurairah said: "The Messenger of Allah (SAW) said: "There is no owner of wealth who does not pay Zakat on it, but his wealth will be heated for him in the Fire of Hell and made into plates, with which his sides and forehead will be branded, until Allah passes judgment among His slaves, on a Day length of which will be fifty thousand years. Then he will be shown his path, either to paradise or to Hell. There is no owner of camels, who does not Pay Zakat on them, but a vast plain will be spread out for them and the whole herd will be gathered, and they will be made to walk over him. Every time the last of them has passed the first of them will return, until Allah passes judgment among His slaves, on the Day the length of which will be fifty thousand years. Then he will be shown his path, either to paradise or to Hell. There is no owner of sheep, who does not pay Zakat on them, but a vast plain will be spread out for them and the whole herd will be gathered. They will trample him with their hooves and gore him with their horns, and there will be none among them with twisted horns or missing horns. Every time the last of them has passed, the first of them will be return, until Allah passes judgment among His slaves, on the Day the length of which will be fifty thousand years by your reckoning. Then he will be shown his path, either to Paradise or to Hell." Suhail (one of the narrators) said: "I do not know whether the mentioned cattle or not". They said: "What about horses? O Messenger of Allah" He said: "There is goodness in the forelocks of horses- or goodness is tied to their forelocks" Suhail said: "I am not sure" "--until the Day of judgment- Horses are of three types: Those which are a burden for a man, those which are a shield for him, and those which are a source of reward. As for those which bring reward to him, he keeps them for the sake of Allah and prepares them (for Jihad); nothing goes into their stomach but Allah writes reward for him. If he grazes them in field they do not eat anything but Allah writes down reward for them. If he gives them water to drink from a river, for every drop that disappears into their stomach there is reward for him. Until he mentioned the reward for their urine and dung. If they run away over one or two hills, for every step they take, there is a reward. As for those which are shield for man, he keeps them as a source of dignity and honor, but he does not forget their rights with regard to their to their backs and stomach both at the time of hardship and at the time of ease. As for those which are a burden he keeps them for reason of pride and arrogance and to show off to people That is the one for whom they are a burden." They said: "What about donkeys, O Messenger of Allah?" He said: "Allah has not revealed to me anything concerning them except that verse "So whosoever does good equal to the weight of atom(or a small ant)shall see it .And whosoever does evil equal to the weight of atom(or small ant) shall see it. "

حضرت ابوہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺنے فرمایا خزانہ والا جو زکوۃ ادا نہیں کرتا اس پر وہ خزانہ جہنم کی آگ میں گرم کیا جائے گا اور اس کو چٹانوں کی طرح بنا کر اس سے اس کے پہلو اور پیشانی کو داغا جائے گا یہاں تک اللہ اپنے بندوں کا فیصلہ کر دے اس دن میں جس کی مقدار پچاس ہزارسال ہے پھر اس کو جنت یا جہنم کی طرف راستہ دکھایا جائے اور کوئی اونٹوں والا ایسا نہیں جو ان کی زکوۃ نہیں دیتا مگر یہ کہ اس کو ایک ہموار زمین پر لٹایا جائے گا اور انتہائی موٹے جسم میں اس کے اونٹ ظاہر ہوکراس کو روندیں گے اس پر جب ان کا آخری گزر جائے گا تو پہلے والا واپس آکر دوبارہ روندے گا یہاں تک کہ اللہ اپنے بندوں کے درمیان فیصلہ اس دن میں کرے جس کی مقدار پچاس ہزار سال ہوگی پھر اس کو جنت یا دوزخ کا راستہ دکھایا جائے گا اور کوئی بکریوں والا ایسا نہیں جو ان کی زکوۃ ادا نہ کرتا ہو مگر یہ کہ اس کو ہموار زمین پر لٹایا جائے گا اور وہ بہت موٹے ہو کر آئیں گے اور وہ سب اپنے کھروں کے ساتھ اس کو روندیں گی اور سینگوں سے ماریں گی اس وقت ان میں کوئی بغیر سینگوں یا الٹے سینگوں والی نہ ہوگی جب اس پر ان میں سے آخری گزرے گی تو پہلی کو اس پر لوٹایا جائے گا یہاں تک کہ اللہ اپنے بندوں کا فیصلہ پچاس ہزار سال والے دن میں کرلیں پھر اس کو جنت یا دوزخ کا راستہ دکھایا جائے گا۔راوی سہیل کہتے ہیں مجھے معلوم نہیں کہ آپ ﷺنے گائے کا ذکر کیا یا نہیں، صحابہ نے عرض کیا گھوڑوں کا کیا حکم ہے یا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم؟ فرمایا گھوڑے کی پیشانی میں خیر ہے راوی سہیل کہتے ہیں کہ یہ خیر قیامت کے دن تک ہے اس میں مجھے شک ہے۔ گھوڑے تین قسم کے ہیں اور یہ آدمی کے لئے ثواب ،پردہ اور بوجھ ہے پس وہ جو اس کے لئے ثواب ہے وہ اس شخص کے لئے ہے جس نے گھوڑے کو اللہ کے راستہ میں باندھا اور اللہ ہی کے لئے اسے تیار رکھا جو کچھ بھی ان گھوڑوں کے پیٹوں میں جاتا ہے اللہ تعالی اس کے لئے ثواب لکھتا ہے اور اگر اس کو کہیں چراگاہ میں چرایا اس نے اس میں جو کچھ بھی کھایا اللہ اس کے بدلہ اس کے لئے ثواب لکھتا ہے اور اگر کسی نہر سے اس کو پلایا تو اس کے مالک کے لئے ہر قطرہ کے بدلے ثواب ہے جو اس کے پیٹ میں جاتا ہے یہاں تک کہ آپ ﷺنے اس کے پیشاب اور لید کا بھی ذکر فرمایا اور اگر وہ ایک یا دو ٹیلوں پر چڑھا تو ہر قدم پر جو وہ رکھے گا اس کے لئے ثواب لکھا جاتا ہے ۔اور وہ گھوڑے جو سترہ ہیں وہ یہ ہیں جنہیں مالک اپنے ٹھاٹھ اور رعب دار کے لیے رکھتا ہے مگر وہ شخص تنگی اورفراخی میں ان حقوق کو نہیں بھولتا جو گھوڑوں کی پیٹھوں اور پیٹوں کے ساتھ وابستہ ہیں۔اور وہ گھوڑے جو بوجھ ہیں وہ یہ ہیں جن کو مالک نے غرور ، تکبر ، دکھلاوے اور اتراہٹ کے لیے رکھا ہو، یہ وہ گھوڑے ہیں جو مالک کے لیے سب وبال ہوتے ہیں ، صحابہ نے پوچھا یا رسول اللہ ﷺگدھوں کا کیا حکم ہے؟ تو آپ ﷺنے فرمایا اس کے بارے میں مجھ پر کوئی حکم نازل نہیں ہوا مگر یہ آیت جامع اور بے مثل ہے (ترجمہ) جس نے ذرہ برابر نیکی کی وہ اس کی جزا دیکھے گا اور جس نے ذرہ برابر برائی کی اس کی سزا پالے گا۔(سورہ زلزال 7)


وَحَدَّثَنَاهُ قُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ حَدَّثَنَا عَبْدُ الْعَزِيزِ - يَعْنِى الدَّرَاوَرْدِىَّ - عَنْ سُهَيْلٍ بِهَذَا الإِسْنَادِ. وَسَاقَ الْحَدِيثَ.

It was narrated from Suhail with this chain (a similar Hadith).

ایک اور سند سے بھی ایسی ہی روایت منقول ہے۔


وَحَدَّثَنِيهِ مُحَمَّدُ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ بَزِيعٍ حَدَّثَنَا يَزِيدُ بْنُ زُرَيْعٍ حَدَّثَنَا رَوْحُ بْنُ الْقَاسِمِ حَدَّثَنَا سُهَيْلُ بْنُ أَبِى صَالِحٍ بِهَذَا الإِسْنَادِ وَقَالَ بَدَلَ عَقْصَاءُ عَضْبَاءُ وَقَالَ « فَيُكْوَى بِهَا جَنْبُهُ وَظَهْرُهُ ». وَلَمْ يَذْكُرْ جَبِينُهُ.

Rawah bin Al-Qasim narrated to us: "Suhail bin Abi Salih narrated to us with this chain (a similar Hadith 2292) and said:- instead of twisted horns-:'broken horns'. And he said 'His sides and backs will be branded with them he did not mention his forehead

ایک اور سند سے بھی یہ روایت منقول ہے لیکن اس میں خمیدہ سینگوں کے بجائے شکستہ سینگوں والی بکری کا ذکر ہے اور پیشانی کا ذکر نہیں ہے ۔ اور یہ پہلو اور پشت کے داغے جانے کا ذکر ہے۔


وَحَدَّثَنِى هَارُونُ بْنُ سَعِيدٍ الأَيْلِىُّ حَدَّثَنَا ابْنُ وَهْبٍ أَخْبَرَنِى عَمْرُو بْنُ الْحَارِثِ أَنَّ بُكَيْرًا حَدَّثَهُ عَنْ ذَكْوَانَ عَنْ أَبِى هُرَيْرَةَ عَنْ رَسُولِ اللَّهِ -صلى الله عليه وسلم- أَنَّهُ قَالَ « إِذَا لَمْ يُؤَدِّ الْمَرْءُ حَقَّ اللَّهِ أَوِ الصَّدَقَةَ فِى إِبِلِهِ ». وَسَاقَ الْحَدِيثَ بِنَحْوِ حَدِيثِ سُهَيْلٍ عَنْ أَبِيهِ.

It was narrated from Abu Hurairah that the Messenger of Allah (SAW) said: "If a man does not fulfill the rights of Allah or pay Zakat on his camels” and he quoted a Hadith similar to that of Suhail from his father (Hadith no.2294)

ایک اور سند سے بھی یہ روایت منقول ہے اس میں حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ اگر آدمی اللہ تعالیٰ کے اس حق کو ادا نہ کرے جو اونٹوں میں واجب ہے یا اونٹوں کا صدقہ نہ دے ۔ باقی روایت حسب سابق ہے۔


حَدَّثَنَا إِسْحَاقُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ أَخْبَرَنَا عَبْدُ الرَّزَّاقِ ح وَحَدَّثَنِى مُحَمَّدُ بْنُ رَافِعٍ - وَاللَّفْظُ لَهُ - حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّزَّاقِ أَخْبَرَنَا ابْنُ جُرَيْجٍ أَخْبَرَنِى أَبُو الزُّبَيْرِ أَنَّهُ سَمِعَ جَابِرَ بْنَ عَبْدِ اللَّهِ الأَنْصَارِىَّ يَقُولُ سَمِعْتُ رَسُولَ اللَّهِ -صلى الله عليه وسلم- يَقُولُ « مَا مِنْ صَاحِبِ إِبِلٍ لاَ يَفْعَلُ فِيهَا حَقَّهَا إِلاَّ جَاءَتْ يَوْمَ الْقِيَامَةِ أَكْثَرَ مَا كَانَتْ قَطُّ وَقَعَدَ لَهَا بِقَاعٍ قَرْقَرٍ تَسْتَنُّ عَلَيْهِ بِقَوَائِمِهَا وَأَخْفَافِهَا وَلاَ صَاحِبِ بَقَرٍ لاَ يَفْعَلُ فِيهَا حَقَّهَا إِلاَّ جَاءَتْ يَوْمَ الْقِيَامَةِ أَكْثَرَ مَا كَانَتْ وَقَعَدَ لَهَا بِقَاعٍ قَرْقَرٍ تَنْطِحُهُ بِقُرُونِهَا وَتَطَؤُهُ بِقَوَائِمِهَا وَلاَ صَاحِبِ غَنَمٍ لاَ يَفْعَلُ فِيهَا حَقَّهَا إِلاَّ جَاءَتْ يَوْمَ الْقِيَامَةِ أَكْثَرَ مَا كَانَتْ وَقَعَدَ لَهَا بِقَاعٍ قَرْقَرٍ تَنْطِحُهُ بِقُرُونِهَا وَتَطَؤُهُ بِأَظْلاَفِهَا لَيْسَ فِيهَا جَمَّاءُ وَلاَ مُنْكَسِرٌ قَرْنُهَا وَلاَ صَاحِبِ كَنْزٍ لاَ يَفْعَلُ فِيهِ حَقَّهُ إِلاَّ جَاءَ كَنْزُهُ يَوْمَ الْقِيَامَةِ شُجَاعًا أَقْرَعَ يَتْبَعُهُ فَاتِحًا فَاهُ فَإِذَا أَتَاهُ فَرَّ مِنْهُ فَيُنَادِيهِ خُذْ كَنْزَكَ الَّذِى خَبَأْتَهُ فَأَنَا عَنْهُ غَنِىٌّ فَإِذَا رَأَى أَنْ لاَ بُدَّ مِنْهُ سَلَكَ يَدَهُ فِى فِيهِ فَيَقْضَمُهَا قَضْمَ الْفَحْلِ ». قَالَ أَبُو الزُّبَيْرِ سَمِعْتُ عُبَيْدَ بْنَ عُمَيْرٍ يَقُولُ هَذَا الْقَوْلَ ثُمَّ سَأَلْنَا جَابِرَ بْنَ عَبْدِ اللَّهِ عَنْ ذَلِكَ فَقَالَ مِثْلَ قَوْلِ عُبَيْدِ بْنِ عُمَيْرٍ. وَقَالَ أَبُو الزُّبَيْرِ سَمِعْتُ عُبَيْدَ بْنَ عُمَيْرٍ يَقُولُ قَالَ رَجُلٌ يَا رَسُولَ اللَّهِ مَا حَقُّ الإِبِلِ قَالَ « حَلَبُهَا عَلَى الْمَاءِ وَإِعَارَةُ دَلْوِهَا وَإِعَارَةُ فَحْلِهَا وَمَنِيحَتُهَا وَحَمْلٌ عَلَيْهَا فِى سَبِيلِ اللَّهِ ».

Jabir bin' Abdullah Al-Ansari said: "I heard the Messenger of Allah (SAW) say:" there is no owner of camels who does not do what he is obliged to concerning them but they will come on Day of Resurrection, as great in number as they ever were, and he will sit for them on a vast plain, and they will trample him with their feet and hooves. There is no owner of cattle who does not do what he is obliged to concerning them, but they will come on the Day of Resurrection , as great in number as they ever were, and he will sit for them on a vast plain , and they will gore him with their horns and trample him with their feet, There is no owner of sheep who does not do what he is obliged to concerning them, but they will come on the Day of Resurrection, as great in number as they ever were, and he will sit for them on a vast plain, and they will gore him with their horns and trample him with their feet and there will not be among them any that is hornless or that has broken horns. There is no owner of treasure who does not do what he is obliged to concerning it, but his Treasure will come on Day of Resurrection like a bald-headed Shujaa, pursuing him with its open mouth. When it approaches him he will flee from it, and it will be called out to him, 'Take your wealth that you used to hide, for I have no need of it.' When he realizes that there is no escape from it, he will put his hand in its mouth and it will bite it like a male camel." Abu Az-Zubair (one of the narrators) said: I heard 'Ubaid bin Umair says this, the we asked Jabir bin Abdullah about that and he said the same as Ubaid bin Umair had said." And Abu Az-Zubair said: I heard 'Ubaid Bin Umair say: “A man said: 'O Messenger of Allah (SAW) what are duties regarding camels?” He said: “Milking them when they are brought to water, lending their buckets, lending the stallion for mating, lending them to other (to benefit from their milk and hair) and providing them as mounts (for Jihad) for the cause of Allah.""

حضرت جابر بن عبداللہ انصاری رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺنے فرمایا جو اونٹ والا اس کا حق ادا نہ کرے تو وہ قیامت کے دن زیادہ ہو کر آئیں گے اور ان کے مالک کو ہموار زمین پر بٹھایا جائے گا اور وہ اس کو اپنے پیروں اور کھروں سے روندیں گے اور جو گائے والا اس کا حق ادا نہ کرے گا تو قیامت کے دن پہلے سے بہت زیادہ ہو کر آئیں گی اور ان کے مالک کو ہموار زمین پر بٹھایا جائے گا اور اس کو اپنے سینگوں سے زخمی اور اپنے کھروں سے روندیں گی اور جو بکریوں والا ان کا حق ادا نہیں کرتا تو وہ قیامت کے دن پہلے سے زیادہ ہو کر آئیں گی اور ان کے مالک کو ہموار زمین پر بٹھایا جائے گا اور وہ اس کو اپنے سینگوں سے زخمی اور کھروں سے روندیں گی ان میں کوئی بے سینگ یا ٹوٹے ہوئے سینگ والی نہ ہوگی اور جو خزانے والا اس کا حق ادا نہیں کرتا تو اس کا خزانہ قیامت کے دن لایا جائے گا گنجے اژدھے کی صورت میں منہ کھول کر اس کا پیچھے کرے گا جب وہ اس کے پاس آئے گا تو وہ اس سے بھاگے گا تو وہ خزانہ اس کو پکارے گا اپنا خزانہ لے جو تو نے چھپا رکھا تھا تو وہ کہے گا مجھے اس کی ضرورت نہیں جب وہ دیکھے گا کہ اس سے بچنے کی کوئی صورت نہیں تو وہ اس کے منہ میں اپنا ہاتھ ڈال دے گا وہ اسے اونٹ کے چبانے کی طرح چبا جائے گا۔ ابوالزبیر نے کہا کہ میں نے عبید بن عمیر رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے سنا وہ کہتے تھے ایک آدمی نے کہا یا رسول اللہ ﷺاونٹوں کا کیا حق ہے؟ فرمایا :پانی پلانے کے موقع پر اس کا دودھ دوہ لینا (تاکہ لوگ پئیں) ، اور ڈول (کے ذریعے پانی نکالنے کے واسطے اونٹ ) کو دینا ، اور نر اونٹ کو جفتی کے لیے عاریۃً دینا ، اور اونٹنی کو دودھ پینے کے لیے دینا اور اللہ کی راہ میں اس پر لوگوں کا مال لادنا۔


حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ نُمَيْرٍ حَدَّثَنَا أَبِى حَدَّثَنَا عَبْدُ الْمَلِكِ عَنْ أَبِى الزُّبَيْرِ عَنْ جَابِرِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ عَنِ النَّبِىِّ -صلى الله عليه وسلم- قَالَ « مَا مِنْ صَاحِبِ إِبِلٍ وَلاَ بَقَرٍ وَلاَ غَنَمٍ لاَ يُؤَدِّى حَقَّهَا إِلاَّ أُقْعِدَ لَهَا يَوْمَ الْقِيَامَةِ بِقَاعٍ قَرْقَرٍ تَطَؤُهُ ذَاتُ الظِّلْفِ بِظِلْفِهَا وَتَنْطِحُهُ ذَاتُ الْقَرْنِ بِقَرْنِهَا لَيْسَ فِيهَا يَوْمَئِذٍ جَمَّاءُ وَلاَ مَكْسُورَةُ الْقَرْنِ ». قُلْنَا يَا رَسُولَ اللَّهِ وَمَا حَقُّهَا قَالَ « إِطْرَاقُ فَحْلِهَا وَإِعَارَةُ دَلْوِهَا وَمَنِيحَتُهَا وَحَلَبُهَا عَلَى الْمَاءِ وَحَمْلٌ عَلَيْهَا فِى سَبِيلِ اللَّهِ وَلاَ مِنْ صَاحِبِ مَالٍ لاَ يُؤَدِّى زَكَاتَهُ إِلاَّ تَحَوَّلَ يَوْمَ الْقِيَامَةِ شُجَاعًا أَقْرَعَ يَتْبَعُ صَاحِبَهُ حَيْثُمَا ذَهَبَ وَهُوَ يَفِرُّ مِنْهُ وَيُقَالُ هَذَا مَالُكَ الَّذِى كُنْتَ تَبْخَلُ بِهِ فَإِذَا رَأَى أَنَّهُ لاَ بُدَّ مِنْهُ أَدْخَلَ يَدَهُ فِى فِيهِ فَجَعَلَ يَقْضَمُهَا كَمَا يَقْضَمُ الْفَحْلُ ».

It was narrated from Jabir bin Abdullah that the Prophet (SAW) said: "There is no owner of camels, cattle or sheep who does not pay what he is obliged to with regard to them but he will made to sit for them on Day of Resurrection in a vast plain, and those that have hooves will trample him with their hooves and those that have horns will gore them with their horns, and there will not be any among that Day that are hornless or that have broken horns.”We said "O Messenger of Allah, what is obliged to do with regard to them?" He said: "Lending the stallion for mating, lending their buckets, lending them to other (to benefit from their milk and hair), milking them when they are brought to water, and providing them as mounts (for Jihad) for the cause of Allah. And there is no owner of wealth who does not pay Zakat on it but it will be turned into a bald-headed Shujaa on the Day of Resurrection, which will pursue its owners wherever he goes. He will be fleeing from it and it will said: "This is your wealth with which you were stingy”. When he sees that there is no escape from it, he will put his hand in its mouth and it will start biting it like a male camel."

حضرت جابر بن عبداللہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ نبی کریم ﷺنے فرمایا جو اونٹوں اور گائیوں بکریوں والا ان کا حق ادا نہ کرے تو قیامت کے دن ایک ہموار زمین پر بٹھایا جائے گا اور کھروں والا جانور اس کو اپنے کھروں سے روندے گا اور سینگوں والا اس کو اپنے سینگوں سے زخمی کرے گا اس دن کوئی جانور بغیر سینگ اور ٹوٹے ہوئے سینگ والا نہ ہوگا ہم نے عرض کیا یا رسول اللہ ﷺاس کا حق کیا ہے ؟فرمایا : نروں کو عاریۃً دینا اور ڈول (سے پانی نکالنے کے لیے ان کو) دینا اور پانی پلاتے وقت ان کا دودھ دوہنا (تاکہ کچھ دودھ غرباء کو مل جائے)اور اللہ کی راہ میں ان پر کسی کو سوار کرنا۔اور کوئی مال والا جو اس کی زکوۃ ادا نہیں کرتا قیامت کے دن اس کا مال گنجے سانپ کی صورت میں تبدیل کیا جائے گا جو اپنے مالک کا پیچھا کرے گا جہاں وہ جائے گا وہ اس کے پیچھے بھاگے گا کہا جائے گا یہ تیرا وہ مال ہے جس پر تو بخل کیا کرتا تھا جب وہ دیکھے گا کہ اس سے بچنے کی کوئی صورت نہیں تو اپنا ہاتھ اس کے منہ میں ڈال دے گا تو وہ اس کے ہاتھ کو چبا ڈالے گا جیسا کہ نر اونٹ چبا لیتا ہے۔

Chapter No: 7

بَاب إِرْضَاءِ السُّعَاةِ

About pleasing the Zakat collector

زکاۃ وصول کرنے والوں کو راضی کرنے کا بیان

حَدَّثَنَا أَبُو كَامِلٍ فُضَيْلُ بْنُ حُسَيْنٍ الْجَحْدَرِىُّ حَدَّثَنَا عَبْدُ الْوَاحِدِ بْنُ زِيَادٍ حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ أَبِى إِسْمَاعِيلَ حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّحْمَنِ بْنُ هِلاَلٍ الْعَبْسِىُّ عَنْ جَرِيرِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ قَالَ جَاءَ نَاسٌ مِنَ الأَعْرَابِ إِلَى رَسُولِ اللَّهِ -صلى الله عليه وسلم- فَقَالُوا إِنَّ نَاسًا مِنَ الْمُصَدِّقِينَ يَأْتُونَنَا فَيَظْلِمُونَنَا. قَالَ فَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ -صلى الله عليه وسلم- « ارْضُوا مُصَدِّقِيكُمْ ». قَالَ جَرِيرٌ مَا صَدَرَ عَنِّى مُصَدِّقٌ مُنْذُ سَمِعْتُ هَذَا مِنْ رَسُولِ اللَّهِ -صلى الله عليه وسلم- إِلاَّ وَهُوَ عَنِّى رَاضٍ.

It was narrated that Jarir bin Abdullah said: “Some Bedouin people came to Messenger of Allah (SAW) and said:"Some of Zakat collectors come to us and they are unfair to us." The Messenger of Allah said: "Please your Zakat collectors." Jarir said: "No Zakat collector ever left me, after I heard this form the Messenger of Allah (SAW), but he was pleased with me."

حضرت جریر بن عبداللہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ دیہات کے کچھ لوگوں نے رسول اللہ ﷺکی خدمت میں حاضر ہو کر عرض کیا ہم پر زکوۃ وصول کرنے والے زیادتی کرتے ہیں، رسول اللہ ﷺنے فرمایا زکوۃوصول کرنے والوں کو خوش کر دیا کرو۔ جریر کہتے ہیں کہ جب سے میں نے رسول اللہ ﷺکا یہ ارشاد گرامی سنا ہے تو ہر زکوۃوصول کرنے والا مجھ سے راضی ہو کر ہی گیا ہے۔


وَحَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِى شَيْبَةَ حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّحِيمِ بْنُ سُلَيْمَانَ ح وَحَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ بَشَّارٍ حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ سَعِيدٍ ح وَحَدَّثَنَا إِسْحَاقُ أَخْبَرَنَا أَبُو أُسَامَةَ كُلُّهُمْ عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ أَبِى إِسْمَاعِيلَ بِهَذَا الإِسْنَادِ نَحْوَهُ.

A similar report (As no.2298) was narrated from Muhammad bin Abi Ismail, with this chain.

ایک اور سند سے بھی ایسی ہی روایت منقول ہے۔

Chapter No: 8

بَاب تَغْلِيظِ عُقُوبَةِ مَنْ لَا يُؤَدِّي الزَّكَاةَ

Concerning the severity of punishment for one who does not pay Zakat

زکاۃ نہ دینے والےکو سخت سزا دیئے جانے کا بیان

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِى شَيْبَةَ حَدَّثَنَا وَكِيعٌ حَدَّثَنَا الأَعْمَشُ عَنِ الْمَعْرُورِ بْنِ سُوَيْدٍ عَنْ أَبِى ذَرٍّ قَالَ انْتَهَيْتُ إِلَى النَّبِىِّ -صلى الله عليه وسلم- وَهُوَ جَالِسٌ فِى ظِلِّ الْكَعْبَةِ. فَلَمَّا رَآنِى قَالَ « هُمُ الأَخْسَرُونَ وَرَبِّ الْكَعْبَةِ ». قَالَ فَجِئْتُ حَتَّى جَلَسْتُ فَلَمْ أَتَقَارَّ أَنْ قُمْتُ فَقُلْتُ يَا رَسُولَ اللَّهِ فِدَاكَ أَبِى وَأُمِّى مَنْ هُمْ قَالَ « هُمُ الأَكْثَرُونَ أَمْوَالاً إِلاَّ مَنْ قَالَ هَكَذَا وَهَكَذَا وَهَكَذَا - مِنْ بَيْنِ يَدَيْهِ وَمِنْ خَلْفِهِ وَعَنْ يَمِينِهِ وَعَنْ شِمَالِهِ - وَقَلِيلٌ مَا هُمْ مَا مِنْ صَاحِبِ إِبِلٍ وَلاَ بَقَرٍ وَلاَ غَنَمٍ لاَ يُؤَدِّى زَكَاتَهَا إِلاَّ جَاءَتْ يَوْمَ الْقِيَامَةِ أَعْظَمَ مَا كَانَتْ وَأَسْمَنَهُ تَنْطِحُهُ بِقُرُونِهَا وَتَطَؤُهُ بِأَظْلاَفِهَا كُلَّمَا نَفِدَتْ أُخْرَاهَا عَادَتْ عَلَيْهِ أُولاَهَا حَتَّى يُقْضَى بَيْنَ النَّاسِ ».

It was narrated that Abu Dharr said: “I came to Prophet (SAW) while he was sitting in the shade of Ka’bah, and when He saw me He said: ‘They are the loser, by the lord of Ka’bah!’ I came and sat down, but it was not long before I got up and said: “I Messenger of Allah (SAW) may my mother and father be ransomed for you!’ Who are they? He said: ‘They are the ones who have the most wealth, except for those who do like this and like this and like this’ (and he gestured) in front of him and behind him and to his right and to his left ‘and how few they are. And there is no owner of camels, cattle or sheep who does not pay the Zakat due for them, But this will come on the Day of Resurrection as big and as fat as they ever were, they will gore him with their horns and trample him with their hooves, and every time the last of them moves away the first of them will come back to him, until judgment is passed among the people.’ ”

حضرت ابوذر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ میں نبی ﷺکے پاس پہنچا اور آپ ﷺکعبہ کے سایہ میں تشریف فرما تھے جب آپ ﷺنے مجھے دیکھا تو فرمایا رب کعبہ کی قسم وہی لوگ نقصان اٹھانے والے ہیں، میں آکر آپ ﷺکے پاس بیٹھ گیا تو نہ ٹھہر سکا اور کھڑا ہوگیا میں نے عرض کیا یا رسول اللہ ﷺمیرے ماں باپ آپ ﷺپر قربان ہوں وہ کون ہیں؟ فرمایاوہ لوگ بڑے بڑے سرمایہ دار ہیں ماسوا ان کے جو ادھر ادھر آگے پیچھے ، دائیں بائیں خرچ کرتے ہیں اور ایسے سرمایہ دار بہت کم ہیں ۔ اور جو شخص اونٹ یا گائے یا بکریاں رکھتا ہو اور ان کی زکاۃ نہ دیتا ہو قیامت کے دن وہ جانور پچھلے تمام دنوں سے زیادہ فربہ اور چربیلے ہوکر آئیں گے اور اپنے سینگوں سے اس کو ماریں گے ، اور کھروں سے روندیں گے جب آخری روند کر گزر جائے گا تو پھر پہلا روندنے کے لیے آجائے گا اور لوگوں کے درمیان فیصلہ ہونے تک یونہی عذاب ہوتا رہے گا۔


وَحَدَّثَنَاهُ أَبُو كُرَيْبٍ مُحَمَّدُ بْنُ الْعَلاَءِ حَدَّثَنَا أَبُو مُعَاوِيَةَ عَنِ الأَعْمَشِ عَنِ الْمَعْرُورِ عَنْ أَبِى ذَرٍّ قَالَ انْتَهَيْتُ إِلَى النَّبِىِّ -صلى الله عليه وسلم- وَهُوَ جَالِسٌ فِى ظِلِّ الْكَعْبَةِ. فَذَكَرَ نَحْوَ حَدِيثِ وَكِيعٍ غَيْرَ أَنَّهُ قَالَ « وَالَّذِى نَفْسِى بِيَدِهِ مَا عَلَى الأَرْضِ رَجُلٌ يَمُوتُ فَيَدَعُ إِبِلاً أَوْ بَقَرًا أَوْ غَنَمًا لَمْ يُؤَدِّ زَكَاتَهَا ».

It was narrated that Abu Dharr said: “I came to Prophet (SAW) when he was sitting in the shade of Ka’bah ,” and he mentioned a Hadith similar to that of Waki(no.2300) , except that he said “ By the One in Whose Hand is my soul, There is no man on the earth who dies, leaving behind camels or cattle or sheep on which he did not pay the Zakat….. ”

حضرت ابوذر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ میں نبیﷺکے پاس پہنچا اور آپ ﷺکعبہ کے سایہ میں بیٹھنے والے تھے باقی حدیث گزر چکی ہے اس میں ہے کہ آپ ﷺنے فرمایا قسم اس ذات کی جس کے ہاتھ میں میری جان ہے جو آدمی زمین پر مرتا ہے اور اونٹ یا گائے یا بکری چھوڑتا ہے جن کی زکوۃ ادا نہ کرتا تھا۔


حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّحْمَنِ بْنُ سَلاَّمٍ الْجُمَحِىُّ حَدَّثَنَا الرَّبِيعُ - يَعْنِى ابْنَ مُسْلِمٍ - عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ زِيَادٍ عَنْ أَبِى هُرَيْرَةَ أَنَّ النَّبِىَّ -صلى الله عليه وسلم- قَالَ « مَا يَسُرُّنِى أَنَّ لِى أُحُدًا ذَهَبًا تَأْتِى عَلَىَّ ثَالِثَةٌ وَعِنْدِى مِنْهُ دِينَارٌ إِلاَّ دِينَارٌ أُرْصِدُهُ لِدَيْنٍ عَلَىَّ ».

It was narrated from Abu Hurairah that the Prophet(SAW) said: “I would not like to have gold the likes of Uhud (mountain), and a third day comes and I have a Dinar of it left, apart from a Dinar that I have put aside to pay a debt that I owe.”

حضرت ابوہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ نبی ﷺنے فرمایا میرے لئے یہ بات خوشی کا باعث نہیں کہ احد پہاڑ میرے لیے سونے کا بن جائے اور تیسرے دن میرے پاس ان میں سے کوئی دینار باقی ہو۔مگر اس دینار کے جس کو میں ادائیگی قرض کے لیے باقی رکھ لوں۔


وَحَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ بَشَّارٍ حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ جَعْفَرٍ حَدَّثَنَا شُعْبَةُ عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ زِيَادٍ قَالَ سَمِعْتُ أَبَا هُرَيْرَةَ عَنِ النَّبِىِّ -صلى الله عليه وسلم- بِمِثْلِهِ.

Abu Hurairah narrated similar report (as no 2302) from the Prophet (SAW).

ایک اور سند سے بھی ایسی ہی روایت منقول ہے۔

Chapter No: 9

بَاب التَّرْغِيبِ فِي الصَّدَقَةِ

Regarding the urge to give the charity

صدقہ کی ترغیب دینا۔

حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ يَحْيَى وَأَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِى شَيْبَةَ وَابْنُ نُمَيْرٍ وَأَبُو كُرَيْبٍ كُلُّهُمْ عَنْ أَبِى مُعَاوِيَةَ - قَالَ يَحْيَى أَخْبَرَنَا أَبُو مُعَاوِيَةَ - عَنِ الأَعْمَشِ عَنْ زَيْدِ بْنِ وَهْبٍ عَنْ أَبِى ذَرٍّ قَالَ كُنْتُ أَمْشِى مَعَ النَّبِىِّ -صلى الله عليه وسلم- فِى حَرَّةِ الْمَدِينَةِ عِشَاءً وَنَحْنُ نَنْظُرُ إِلَى أُحُدٍ فَقَالَ لِى رَسُولُ اللَّهِ -صلى الله عليه وسلم- « يَا أَبَا ذَرٍّ ». قَالَ قُلْتُ لَبَّيْكَ يَا رَسُولَ اللَّهِ. قَالَ « مَا أُحِبُّ أَنَّ أُحُدًا ذَاكَ عِنْدِى ذَهَبٌ أَمْسَى ثَالِثَةً عِنْدِى مِنْهُ دِينَارٌ إِلاَّ دِينَارًا أُرْصِدُهُ لِدَيْنٍ إِلاَّ أَنْ أَقُولَ بِهِ فِى عِبَادِ اللَّهِ هَكَذَا - حَثَا بَيْنَ يَدَيْهِ - وَهَكَذَا - عَنْ يَمِينِهِ - وَهَكَذَا - عَنْ شِمَالِهِ ». قَالَ ثُمَّ مَشَيْنَا فَقَالَ « يَا أَبَا ذَرٍّ ». قَالَ قُلْتُ لَبَّيْكَ يَا رَسُولَ اللَّهِ. قَالَ « إِنَّ الأَكْثَرِينَ هُمُ الأَقَلُّونَ يَوْمَ الْقِيَامَةِ إِلاَّ مَنْ قَالَ هَكَذَا وَهَكَذَا وَهَكَذَا ». مِثْلَ مَا صَنَعَ فِى الْمَرَّةِ الأُولَى قَالَ ثُمَّ مَشَيْنَا قَالَ « يَا أَبَا ذَرٍّ كَمَا أَنْتَ حَتَّى آتِيَكَ ». قَالَ فَانْطَلَقَ حَتَّى تَوَارَى عَنِّى - قَالَ - سَمِعْتُ لَغَطًا وَسَمِعْتُ صَوْتًا - قَالَ - فَقُلْتُ لَعَلَّ رَسُولَ اللَّهِ -صلى الله عليه وسلم- عُرِضَ لَهُ - قَالَ - فَهَمَمْتُ أَنْ أَتَّبِعَهُ قَالَ ثُمَّ ذَكَرْتُ قَوْلَهُ « لاَ تَبْرَحْ حَتَّى آتِيَكَ ». قَالَ فَانْتَظَرْتُهُ فَلَمَّا جَاءَ ذَكَرْتُ لَهُ الَّذِى سَمِعْتُ - قَالَ - فَقَالَ « ذَاكَ جِبْرِيلُ أَتَانِى فَقَالَ مَنْ مَاتَ مِنْ أُمَّتِكَ لاَ يُشْرِكُ بِاللَّهِ شَيْئًا دَخَلَ الْجَنَّةَ ». قَالَ قُلْتُ وَإِنْ زَنَى وَإِنْ سَرَقَ قَالَ « وَإِنْ زَنَى وَإِنْ سَرَقَ ».

It was narrated that Abu Dharr said: “I was walking with Prophet (SAW) in the Harrah of Al-Madina one afternoon, and we were Looking at Uhud (mountain) .The Messenger of Allah (SAW) said to me : “O Abu Dharr !” I said ‘Here I am at your service, O Messenger of Allah (SAW).’ He said: ‘I would not like to have this Uhud of gold and third night comes and I have a Dinar left of it, except a Dinar, that I put aside for debt, without giving to the slaves of Allah like this- and he gestured in front of him- and like this- to his right-and like this-to his left’ Then we walked on and he said: ‘O Abu Dharr!’ I said: ‘Here I am at your service, O Messenger of Allah (SAW) ’.He said ‘Those who have the most will have the least on the Day of Resurrection, except those who do like this and like this and like this’. (And he gestured) as he had done the first time. Then we walked on, and he said: ‘O Abu Dharr!, stay where you are, until I come to you’. He set off until he disappeared from me, and I heard a voice and a sound. I said: ‘Perhaps something has happened to the Messenger of Allah (SAW)’and I thought of following him, then I remembered what he had said: ‘Do not leave until I come to you’. So I waited for him, and when he came back I told him what I had heard. He said: ‘That was Jibril- peace be upon him – who came to me and said: ‘Whoever among your Ummah does not associating anything with Allah will enter Paradise. I said: Even if he comments Zina and steal? He said: Even he commits Zina and steals.’”

حضرت ابوذر رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ میں رسول اللہ ﷺکے ساتھ عشاء کی نماز کے وقت مدینہ کی زمین حرۃمیں چل رہا تھا اور ہم احد کو دیکھ رہے تھے تو مجھے رسول اللہ ﷺنے فرمایا، اے ابوذر! میں نے کہا لبیک یارسول اللہ!آپﷺنے فرمایا: میں یہ پسند نہیں کرتا کہ احد پہاڑ میرے پاس سونے کا ہو اور تیسری شب تک میرے پاس اس میں سے ایک دینار بھی بچ جائے سوائے اس دینار کے جس کو میں اپنے قرض کی ادائیگی کے لیے باقی رکھوں مگر میں یہ چاہتا ہوں کہ میں مٹھی بھر بھر کے اللہ کے بندوں میں وہ مال تقسیم کردوں دائیں ، بائیں اور آگے دیتا رہوں۔ حضرت ابو ذر رضی اللہ عنہ کہتے ہیں ہم پھر چلتے رہے ۔آپ ﷺنے فرمایا، اے ابوذر! میں نے کہا لبیک یارسول اللہ! فرمایا کثرت مال والے قیامت کے دن مفلس ہوں گے سوائے ان لوگوں کے جو مال (اللہ کی راہ میں ) دیتے رہے۔ جیسا کہ آپ ﷺنے پہلی مرتبہ کیا ۔پھر ہم چلے آپ ﷺنے فرمایا، اے ابوذر! تم یہاں ہی رہنا جب تک میں تمہارے پاس نہ آؤں آپ ﷺچلے کہ مجھ سے چھپ گئے پھر میں نے کچھ گنگناہٹ اور آواز سنی تو میں نے کہا شاید رسول اللہ ﷺکو کوئی امر پیش آگیا ہو میں نے آپ ﷺکے پیچھے جانے کا ارادہ کیا تو مجھے آپ ﷺکا حکم یاد آگیا کہ جب تک میں تمہارے پاس نہ آجاؤں تم اپنی جگہ پر ہی رہنا میں نے آپ ﷺکا انتظار کیا جب آپ ﷺتشریف لائے تو میں نے اس کا ذکر کیا جو میں نے سنا تو آپ ﷺنے فرمایا جبرائیل علیہ السلام میرے پاس آئے فرمایا کہ آپ ﷺکی امت میں سے جو فوت ہوا اس حال میں کہ اللہ کے ساتھ کسی چیز کو شریک نہ کرتا ہو تو جنت میں داخل ہوگا، ابوذر کہتے ہیں میں نے کہا اگر اس نے زنا کیا یا چوری کی فرمایا اگرچہ اس نے زنا یا چوری کی۔


وَحَدَّثَنَا قُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ حَدَّثَنَا جَرِيرٌ عَنْ عَبْدِ الْعَزِيزِ - وَهُوَ ابْنُ رُفَيْعٍ - عَنْ زَيْدِ بْنِ وَهْبٍ عَنْ أَبِى ذَرٍّ قَالَ خَرَجْتُ لَيْلَةً مِنَ اللَّيَالِى فَإِذَا رَسُولُ اللَّهِ -صلى الله عليه وسلم- يَمْشِى وَحْدَهُ لَيْسَ مَعَهُ إِنْسَانٌ قَالَ فَظَنَنْتُ أَنَّهُ يَكْرَهُ أَنْ يَمْشِىَ مَعَهُ أَحَدٌ - قَالَ - فَجَعَلْتُ أَمْشِى فِى ظِلِّ الْقَمَرِ فَالْتَفَتَ فَرَآنِى فَقَالَ « مَنْ هَذَا ». فَقُلْتُ أَبُو ذَرٍّ جَعَلَنِى اللَّهُ فِدَاءَكَ. قَالَ « يَا أَبَا ذَرٍّ تَعَالَهْ ». قَالَ فَمَشَيْتُ مَعَهُ سَاعَةً فَقَالَ « إِنَّ الْمُكْثِرِينَ هُمُ الْمُقِلُّونَ يَوْمَ الْقِيَامَةِ إِلاَّ مَنْ أَعْطَاهُ اللَّهُ خَيْرًا فَنَفَحَ فِيهِ يَمِينَهُ وَشِمَالَهُ وَبَيْنَ يَدَيْهِ وَوَرَاءَهُ وَعَمِلَ فِيهِ خَيْرًا ». قَالَ فَمَشَيْتُ مَعَهُ سَاعَةً فَقَالَ « اجْلِسْ هَا هُنَا ». قَالَ فَأَجْلَسَنِى فِى قَاعٍ حَوْلَهُ حِجَارَةٌ فَقَالَ لِىَ « اجْلِسْ هَا هُنَا حَتَّى أَرْجِعَ إِلَيْكَ ». قَالَ فَانْطَلَقَ فِى الْحَرَّةِ حَتَّى لاَ أَرَاهُ فَلَبِثَ عَنِّى فَأَطَالَ اللَّبْثَ ثُمَّ إِنِّى سَمِعْتُهُ وَهُوَ مُقْبِلٌ وَهُوَ يَقُولُ « وَإِنْ سَرَقَ وَإِنْ زَنَى ». قَالَ فَلَمَّا جَاءَ لَمْ أَصْبِرْ فَقُلْتُ يَا نَبِىَّ اللَّهِ جَعَلَنِى اللَّهُ فِدَاءَكَ مَنْ تُكَلِّمُ فِى جَانِبِ الْحَرَّةِ مَا سَمِعْتُ أَحَدًا يَرْجِعُ إِلَيْكَ شَيْئًا. قَالَ « ذَاكَ جِبْرِيلُ عَرَضَ لِى فِى جَانِبِ الْحَرَّةِ فَقَالَ بَشِّرْ أُمَّتَكَ أَنَّهُ مَنْ مَاتَ لاَ يُشْرِكُ بِاللَّهِ شَيْئًا دَخَلَ الْجَنَّةَ. فَقُلْتُ يَا جِبْرِيلُ وَإِنْ سَرَقَ وَإِنْ زَنَى قَالَ نَعَمْ. قَالَ قُلْتُ وَإِنْ سَرَقَ وَإِنْ زَنَى قَالَ نَعَمْ. قَالَ قُلْتُ وَإِنْ سَرَقَ وَإِنْ زَنَى قَالَ نَعَمْ وَإِنْ شَرِبَ الْخَمْرَ ».

It was narrated that Abu Dharr said: “I went out one night and saw Messenger of Allah (SAW) walking alone and there was no one with him. I thought that he did not want anyone to walk with him, so I stated walking in the shade , away from the moon light, then he turned and saw me, and said ‘Who is this?’ I said: ‘Abu Dharr, may Allah cause me your ransom’ He said: ‘O Abu Dharr, come here’ So I walked with him for a while, then he said,: ‘Those who have the most will have the least on Day of Resurrection, except the one to whom Allah gives good things and he spends them right and left, in front of him and behind him, and does good with them.’ I walked with him for a while, and then he said: ‘Sit here’ He sat me down in an open space, which as surrounded with rocks and said to me ‘Sit here until I come back to you’. Then he set off in the Harrah until I could not longer see him, and he stayed away from me for a long time. Then I heard him as he was coming back, saying: ‘Even if he steals or commits Zina’. When he came, I could not wait and said: ‘’O Prophet of Allah! May Allah cause me your ransom! To whom you were speaking at the edge of Harrah! I did not hear anyone responding to you He said: ‘That was Jibril- peace be upon him- who appeared to me at the edge of Harrah and said “Give your Ummah the glad tidings that whoever dies not associating anything with Allah will enter Paradise”. I said: O Jibril, even if he steals and commits Zina? “He said: Yes, and even if he drinks alcohol.”

حضرت ابوذر رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ میں ایک رات نکلا تو دیکھا کہ رسول اللہ اکیلے بغیر کسی ہمراہ انسان کے ٹہل رہے تھے میں نے گمان کیا آپ ﷺاپنے ساتھ کسی کے چلنے کو ناپسند فرمائیں گے تو میں نے چاند کے سایہ میں چلنا شروع کردیا آپ ﷺمیری طرف متوجہ ہوئے مجھے دیکھ کر فرمایا کون ہے؟ میں نے کہا ابوذر اللہ مجھے آپ ﷺپر قربان کرے، فرمایا اے ابوذر رضی اللہ تعالیٰ عنہ میرے پاس آؤ میں آپ ﷺکے ساتھ کچھ دیر چلا تو آپ ﷺنے فرمایا مالدار لوگ ہی قیامت کے دن مفلس ہوں گے سوائے ان لوگوں کے جن کو اللہ نے مال عطا کیا انہوں نے اپنے دائیں بائیں یا سامنے اور پیچھے خرچ کردیا اور اس میں نیکی کے کام کئے۔ پھر میں آپ ﷺکے ساتھ کچھ دیر چلا تو آپ ﷺنے فرمایا یہاں بیٹھ جا اور آپ ﷺنے مجھے ایک ہموار زمین پر بٹھا دیا جس کے اردگرد پتھر تھے آپ ﷺنے فرمایا میرے آ نے تک یہاں بیٹھے رہو آپ ﷺزمین حرہ میں ایک طرف چل دیے یہاں تک کہ میں نے آپ ﷺکو نہ دیکھا کافی دیر ٹھہر نے کے بعد میں نے آپ ﷺسے آتے ہوئے سنا اگرچہ اس نے چوری اور اس نے زنا کیا آپ ﷺجب تشریف لائے تو میں نے صبر کئے بغیر عرض کیا اے اللہ کے نبی ﷺاللہ مجھے آپ ﷺپر قربان کرے آپ ﷺسے حرہ کی طرف کون گفتگو کر رہا تھا میں نے تو کسی کو نہیں دیکھا فرمایا وہ جبرائیل تھے جو حرہ میں میرے پاس آئے تو انہوں نے کہا اپنی امت کو خوشخبری دے دو جو اللہ کے ساتھ شرک کئے بغیر مر گیا جنت میں داخل ہوگا میں نے کہا اے جبرائیل اگرچہ اس نے چوری یا زنا کیا ہو؟ اس نے کہا جی ہاں۔ فرمایا میں نے کہا اگرچہ اس نے چوری اور زنا کیاہو؟ اس نے کہا جی ہاں ۔میں نے کہا اگرچہ اس نے چوری اور زنا کیا ہو؟ اس نے کہا ہاں اگرچہ اس نے شراب پی ہو۔

Chapter No: 10

بَاب فِي الْكَنَّازِينَ لِلْأَمْوَالِ وَالتَّغْلِيظِ عَلَيْهِمْ

Regarding the hoarders of wealth and stern warning to them

اموال کو خزانوں میں جمع کرنے والوں پر سختی کا بیان

وَحَدَّثَنِى زُهَيْرُ بْنُ حَرْبٍ حَدَّثَنَا إِسْمَاعِيلُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ عَنِ الْجُرَيْرِىِّ عَنْ أَبِى الْعَلاَءِ عَنِ الأَحْنَفِ بْنِ قَيْسٍ قَالَ قَدِمْتُ الْمَدِينَةَ فَبَيْنَا أَنَا فِى حَلْقَةٍ فِيهَا مَلأٌ مِنْ قُرَيْشٍ إِذْ جَاءَ رَجُلٌ أَخْشَنُ الثِّيَابِ أَخْشَنُ الْجَسَدِ أَخْشَنُ الْوَجْهِ فَقَامَ عَلَيْهِمْ فَقَالَ بَشِّرِ الْكَانِزِينَ بِرَضْفٍ يُحْمَى عَلَيْهِ فِى نَارِ جَهَنَّمَ فَيُوضَعُ عَلَى حَلَمَةِ ثَدْىِ أَحَدِهِمْ حَتَّى يَخْرُجَ مِنْ نُغْضِ كَتِفَيْهِ وَيُوضَعُ عَلَى نُغْضِ كَتِفَيْهِ حَتَّى يَخْرُجَ مِنْ حَلَمَةِ ثَدْيَيْهِ يَتَزَلْزَلُ قَالَ فَوَضَعَ الْقَوْمُ رُءُوسَهُمْ فَمَا رَأَيْتُ أَحَدًا مِنْهُمْ رَجَعَ إِلَيْهِ شَيْئًا - قَالَ - فَأَدْبَرَ وَاتَّبَعْتُهُ حَتَّى جَلَسَ إِلَى سَارِيَةٍ فَقُلْتُ مَا رَأَيْتُ هَؤُلاَءِ إِلاَّ كَرِهُوا مَا قُلْتَ لَهُمْ. قَالَ إِنَّ هَؤُلاَءِ لاَ يَعْقِلُونَ شَيْئًا إِنَّ خَلِيلِى أَبَا الْقَاسِمِ -صلى الله عليه وسلم- دَعَانِى فَأَجَبْتُهُ فَقَالَ « أَتَرَى أُحُدًا ». فَنَظَرْتُ مَا عَلَىَّ مِنَ الشَّمْسِ وَأَنَا أَظُنُّ أَنَّهُ يَبْعَثُنِى فِى حَاجَةٍ لَهُ فَقُلْتُ أَرَاهُ. فَقَالَ « مَا يَسُرُّنِى أَنَّ لِى مِثْلَهُ ذَهَبًا أُنْفِقُهُ كُلَّهُ إِلاَّ ثَلاَثَةَ دَنَانِيرَ ». ثُمَّ هَؤُلاَءِ يَجْمَعُونَ الدُّنْيَا لاَ يَعْقِلُونَ شَيْئًا. قَالَ قُلْتُ مَا لَكَ وَلإِخْوَتِكَ مِنْ قُرَيْشٍ لاَ تَعْتَرِيهِمْ وَتُصِيبُ مِنْهُمْ. قَالَ لاَ وَرَبِّكَ لاَ أَسْأَلُهُمْ عَنْ دُنْيَا وَلاَ أَسْتَفْتِيهِمْ عَنْ دِينٍ حَتَّى أَلْحَقَ بِاللَّهِ وَرَسُولِهِ.

It was narrated that Al-Ahnaf bin Qais said: I arrived in Al-Madinah, and while I was in a circle that included some leaders of the Quraish, a man came coarse clothes, a coarse body and a coarse face. He stood in front of them and said: “Give tidings to the hoarders of stones heated in the fire of Hell and placed on the nipples of one of them until it comes out from his shoulder bone, and placed on his shoulder bone until it comes out of his nipple, and he will tremble.” He said: “The people hung their heads, and I did not see anyone of them responding to him at all. He turned and left, and I followed him until he sat down by a pillar, I said: ‘I think that these people did not like what you said to them.’ He said: ‘They do not understand anything. My beloved AbuAl-Qasim (SAW) called me and I responded, and he said: “Do you see Uhud (mountain)?” I looked, and saw the sun shining, and I thought that he was going to send me on an errand. I said: “I can see it.” He said: “I would not like to have its equivalent in gold without spending all of it except of three Dinar, and these people gather worldly wealth and do not understand anything.’” I said: “What is the matter with you and the brothers of Quraish, that you do not ask them for anything and do not get any help from them?” He said: “No by your Lord. I will not ask them for any worldly matter, nor will I consult them about any religious matter, until I meet Allah and his Messenger.”

حضرت احنف بن قیس رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ میں مدینہ آیا ، میں ایک ایسے حلقہ میں جا بیٹھا جس میں قریش کے سردار بھی تھے ، اچانک ایک شخص آیا جس نے موٹے کپڑے پہنے ہوئے تھے ، اس کا جسم باوقار اور چہرہ بارعب تھا اس نے ان لوگوں کے پاس کھڑے ہوکر کہا ، مال جمع کرکے خزانہ اکٹھے کرنے والوں کو اس پتھر کی بشارت ہو جس کو جہنم کی آگ میں گرم کیا جائے گا اور وہ پھر ان کی چھاتی کی نوک پر رکھا جائے گا حتیٰ کہ وہ شانہ کی ہڈی سے پھوٹ نکلے گا اور وہ پتھر یونہی آرپار ہوتا رہے گا۔ راوی کہتے ہیں ان لوگوں نے اپنے سر جھکالیے اور میں نے ان سے کسی کو انہیں جواب دیتے ہوئے نہیں دیکھا۔ پھر وہ لوگ لوٹ گیا اور میں اس شخص کے پیچھے گیا حتیٰ کہ وہ ایک ستون کے پاس بیٹھ گئے اور کہا میرا خیال ہے ان لوگوں نے آپ کی بات ناپسند کی ہے۔اس شخص نے کہا یہ لوگ کچھ عقل نہیں رکھتے، میرے محبوب ابو القاسمﷺنے مجھے بلایا میں ان کے پاس گیا۔ انہوں نے فرمایا کیا تم احد (پہاڑ) کو دیکھتے ہو؟ میں نے دھوپ کو دیکھا اور یہ سمجھا کہ شاید آپ کسی کام کے لیے مجھے وہاں بھیجنا چاہتے ہیں میں نے عرض کیا جی ہاں ! میں دیکھتا ہوں ۔ آپﷺنے فرمایا مجھے اس بات سے خوشی نہیں ہوتی کہ میرے پاس اس پہاڑ جتنا سونا ہو اور اگر ہو تو میں قرض ادا کرنے کے لیے تین دینار کے سوا باقی سب خیرات کردوں گا ، پھر یہ لوگ دنیا جمع کرتے ہیں اور کچھ نہیں سمجھتے۔میں نے ان سے کہا آپ کا ان قریشی بھائیوں کے ساتھ کیا معاملہ ہے کیونکہ آپ کسی ضرورت کی بناء پر ان کے پاس جاتے ہیں نہ ان سے کوئی سوال کرتے ہیں انہوں نے کہا قسم ہے تمہارے پروردگار کی میں ان سے دنیا کا کوئی سوال کروں گا نہ دین کا کوئی مسئلہ دریافت کروں گا حتیٰ کہ میں اللہ تعالیٰ اور اس کے رسول اللہ ﷺسے جاملوں۔


وَحَدَّثَنَا شَيْبَانُ بْنُ فَرُّوخَ حَدَّثَنَا أَبُو الأَشْهَبِ حَدَّثَنَا خُلَيْدٌ الْعَصَرِىُّ عَنِ الأَحْنَفِ بْنِ قَيْسٍ قَالَ كُنْتُ فِى نَفَرٍ مِنْ قُرَيْشٍ فَمَرَّ أَبُو ذَرٍّ وَهُوَ يَقُولُ بَشِّرِ الْكَانِزِينَ بِكَىٍّ فِى ظُهُورِهِمْ يَخْرُجُ مِنْ جُنُوبِهِمْ وَبِكَىٍّ مِنْ قِبَلِ أَقْفَائِهِمْ يَخْرُجُ مِنْ جِبَاهِهِمْ. - قَالَ - ثُمَّ تَنَحَّى فَقَعَدَ. - قَالَ - قُلْتُ مَنْ هَذَا قَالُوا هَذَا أَبُو ذَرٍّ. قَالَ فَقُمْتُ إِلَيْهِ فَقُلْتُ مَا شَىْءٌ سَمِعْتُكَ تَقُولُ قُبَيْلُ قَالَ مَا قُلْتُ إِلاَّ شَيْئًا قَدْ سَمِعْتُهُ مِنْ نَبِيِّهِمْ -صلى الله عليه وسلم-. قَالَ قُلْتُ مَا تَقُولُ فِى هَذَا الْعَطَاءِ قَالَ خُذْهُ فَإِنَّ فِيهِ الْيَوْمَ مَعُونَةً فَإِذَا كَانَ ثَمَنًا لِدِينِكَ فَدَعْهُ.

It was narrated that Al-Ahnaf bin Qais said: “I was with the group of the Quraish when Abu Dharr passed by saying: ‘Give tidings to the hoarders of a branding iron on their backs that will come out from their sides, and the branding-iron on their necks that will come out from their foreheads.’ Then he went away and sat down. I said: ‘Who is that?’ They said: ‘That is Abu-Dharr.’ I got up and went to him and said: ‘What did I hear you say just now?” He said: ‘I did not say anything that I did not hear from their Prophet (SAW). ‘I said: ‘What do you say about this gift?’ He said: ‘Take it, for it is a help today, but if it is at the expense of your religious commitment, then leave it.’

حضرت احنف بن قیس رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ میں قریش کے چند لوگوں کے درمیان بیٹھا ہوا تھا اچانک حضرت ابو ذر رضی اللہ عنہ تشریف لے آئے اور کہنے لگے خزانہ جمع کرنے والوں کو ان داغوں کی بشارت دو جو ان کی پیٹھوں پر لگائے جائیں گے اور ان کے پہلوؤں سے نکل جائیں گے اور ان کی گردنوں میں لگائے جائیں گے تو ان کی پیشانیوں سے نکل جائیں گے ۔ پھر وہ ایک جانب رخ کرکے بیٹھ گئے میں نے پوچھا یہ کون ہیں ؟ حاضرین نے جواب دیا ابو ذر ہیں ۔ میں نے ان کے سامنے جاکر کہا آپ جو کچھ بیان کررہے تھے وہ سب کیا تھا ؟ انہوں نے کہا میں نے وہی کچھ کہا ہے جو رسول اللہ ﷺسے سنا ہے ، میں نے کہا حکومت سے وظائف لینے کے بارے میں آپ کی کیا رائے ہے ؟ کہا لے لیا کرو، کیونکہ اس سے تم کو آج کل مدد حاصل ہوگی ، ہاں ! جب یہ مال تمہارے دین کا معاوضہ ہوجائے تو چھوڑ دینا۔

123Last ›