Sayings of the Messenger

 

Chapter No: 1

بابُ الأَمْرِ بِقَضَاءِ النَّذْرِ

Regarding the command to fulfill the vows

نذر پورا کرنے کا حکم

حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ يَحْيَى التَّمِيمِىُّ وَمُحَمَّدُ بْنُ رُمْحِ بْنِ الْمُهَاجِرِ قَالاَ أَخْبَرَنَا اللَّيْثُ ح وَحَدَّثَنَا قُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ حَدَّثَنَا لَيْثٌ عَنِ ابْنِ شِهَابٍ عَنْ عُبَيْدِ اللَّهِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ أَنَّهُ قَالَ اسْتَفْتَى سَعْدُ بْنُ عُبَادَةَ رَسُولَ اللَّهِ -صلى الله عليه وسلم- فِى نَذْرٍ كَانَ عَلَى أُمِّهِ تُوُفِّيَتْ قَبْلَ أَنْ تَقْضِيَهُ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ -صلى الله عليه وسلم- « فَاقْضِهِ عَنْهَا ».

It was narrated that Ibn 'Abbas said: "Sa'd bin 'Ubadah asked the Messenger of Allah (s.a.w) about a vow that his mother had made, but she died before she could fulfill it. The Messenger of Allah (s.a.w) said: 'Fulfill it on her behalf."'

حضرت ابن عباس رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ حضرت سعد بن عبادہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے رسول اللہ ﷺسے اس نذر کے بارے میں فتوی پوچھا جو ان کی والدہ پر تھی ، اور وہ اسے پورا کرنے سے پہلے وفات پاگئی ، تو رسول اللہ ﷺنے فرمایا: تم ان کی طرف سے نذر پورا کردو۔


وَحَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ يَحْيَى قَالَ قَرَأْتُ عَلَى مَالِكٍ ح وَحَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِى شَيْبَةَ وَعَمْرٌو النَّاقِدُ وَإِسْحَاقُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ عَنِ ابْنِ عُيَيْنَةَ ح وَحَدَّثَنِى حَرْمَلَةُ بْنُ يَحْيَى أَخْبَرَنَا ابْنُ وَهْبٍ أَخْبَرَنِى يُونُسُ ح وَحَدَّثَنَا إِسْحَاقُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ وَعَبْدُ بْنُ حُمَيْدٍ قَالاَ أَخْبَرَنَا عَبْدُ الرَّزَّاقِ أَخْبَرَنَا مَعْمَرٌ ح وَحَدَّثَنَا عُثْمَانُ بْنُ أَبِى شَيْبَةَ حَدَّثَنَا عَبْدَةُ بْنُ سُلَيْمَانَ عَنْ هِشَامِ بْنِ عُرْوَةَ عَنْ بَكْرِ بْنِ وَائِلٍ كُلُّهُمْ عَنِ الزُّهْرِىِّ. بِإِسْنَادِ اللَّيْثِ وَمَعْنَى حَدِيثِهِ.

A similar Hadith (as no. 4235) was narrated from Az-Zuhri with the chain of Al-Laith.

مختلف اسانید سے یہ روایت اسی طرح مروی ہے۔

Chapter No: 2

بابُ النَّهْيِ عَنِ النَّذْرِ وَأَنَّهُ لاَ يَرُدُّ شَيْئًا

The forbiddance of vows, and the fact that it does not avert anything

نذر ماننے کی ممانعت اور وہ تقدیر کو نہیں ٹال سکتی ۔

وَحَدَّثَنِى زُهَيْرُ بْنُ حَرْبٍ وَإِسْحَاقُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ قَالَ إِسْحَاقُ أَخْبَرَنَا وَقَالَ زُهَيْرٌ حَدَّثَنَا جَرِيرٌ عَنْ مَنْصُورٍ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ مُرَّةَ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عُمَرَ قَالَ أَخَذَ رَسُولُ اللَّهِ -صلى الله عليه وسلم- يَوْمًا يَنْهَانَا عَنِ النَّذْرِ وَيَقُولُ « إِنَّهُ لاَ يَرُدُّ شَيْئًا وَإِنَّمَا يُسْتَخْرَجُ بِهِ مِنَ الشَّحِيحِ ».

It was narrated that 'Abdullah bin 'Umar said: "One day the Messenger of Allah (s.a.w) starting telling us not to make vows, and he said: 'They do not avert anything, all they do is get something out of a stingy person."'

حضرت عبد اللہ بن عمر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ ایک دن رسو ل اللہﷺہمیں نذر سے منع کرنے لگے اور فرمایا: نذر کسی چیز کو ٹال نہیں سکتی ، نذر کی وجہ سے بخیل سے مال نکلوایا جاتا ہے۔


حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ يَحْيَى حَدَّثَنَا يَزِيدُ بْنُ أَبِى حَكِيمٍ عَنْ سُفْيَانَ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ دِينَارٍ عَنِ ابْنِ عُمَرَ عَنِ النَّبِىِّ -صلى الله عليه وسلم- أَنَّهُ قَالَ « النَّذْرُ لاَ يُقَدِّمُ شَيْئًا وَلاَ يُؤَخِّرُهُ وَإِنَّمَا يُسْتَخْرَجُ بِهِ مِنَ الْبَخِيلِ ».

It was narrated from Ibn 'Umar that the Prophet (s.a.w) said: "A vow does not bring anything forward nor delay it, all it does is get something out of a miser."

حضرت عبد اللہ بن عمر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے نبی ﷺنے فرمایا: نذر کسی چیز کو آگے یا پیچھے نہیں کرتی ، یہ تو صرف بخیل سے مال نکلوانے کا ذریعہ ہے۔


حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِى شَيْبَةَ حَدَّثَنَا غُنْدَرٌ عَنْ شُعْبَةَ ح وَحَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ الْمُثَنَّى وَابْنُ بَشَّارٍ - وَاللَّفْظُ لاِبْنِ الْمُثَنَّى - حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ جَعْفَرٍ حَدَّثَنَا شُعْبَةُ عَنْ مَنْصُورٍ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ مُرَّةَ عَنِ ابْنِ عُمَرَ عَنِ النَّبِىِّ -صلى الله عليه وسلم- أَنَّهُ نَهَى عَنِ النَّذْرِ وَقَالَ « إِنَّهُ لاَ يَأْتِى بِخَيْرٍ وَإِنَّمَا يُسْتَخْرَجُ بِهِ مِنَ الْبَخِيلِ ».

It was narrated from Ibn 'Umar that the Prophet (s.a.w) forbade vows, and said: "They do not bring anything good, all they do is get something out of a miser."

حضرت عبد اللہ بن عمر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے نبی ﷺنے نذر سے منع فرمایا : کہ نذر کسی بھلائی کو نہیں لاتی، اس کے ذریعہ سے توصرف بخیل سے مال نکلوالیا جاتا ہے۔


وَحَدَّثَنِى مُحَمَّدُ بْنُ رَافِعٍ حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ آدَمَ حَدَّثَنَا مُفَضَّلٌ ح وَحَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ الْمُثَنَّى وَابْنُ بَشَّارٍ قَالاَ حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّحْمَنِ عَنْ سُفْيَانَ كِلاَهُمَا عَنْ مَنْصُورٍ بِهَذَا الإِسْنَادِ نَحْوَ حَدِيثِ جَرِيرٍ.

A Hadith like that of Jarir (no. 4237) was narrated from Mansur with this chain.

دو اور سندوں سے بھی یہ روایت اسی طرح مروی ہے۔


وَحَدَّثَنَا قُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ حَدَّثَنَا عَبْدُ الْعَزِيزِ - يَعْنِى الدَّرَاوَرْدِىَّ - عَنِ الْعَلاَءِ عَنْ أَبِيهِ عَنْ أَبِى هُرَيْرَةَ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ -صلى الله عليه وسلم- قَالَ « لاَ تَنْذُرُوا فَإِنَّ النَّذْرَ لاَ يُغْنِى مِنَ الْقَدَرِ شَيْئًا وَإِنَّمَا يُسْتَخْرَجُ بِهِ مِنَ الْبَخِيلِ ».

It was narrated from Abu Hurairah that the Messenger of Allah (s.a.w) said: "Do not make vows, for a vow is of no avail against the Divine Decree; all it does is get something out of a miser."

حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺنے فرمایا: نذر مت مانا کرو، کیونکہ نذر تقدیر کو نہیں ٹال سکتی ، اس کے ذریعہ تو صرف بخیل سے مال نکلوایا جاتا ہے۔


وَحَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ الْمُثَنَّى وَابْنُ بَشَّارٍ قَالاَ حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ جَعْفَرٍ حَدَّثَنَا شُعْبَةُ قَالَ سَمِعْتُ الْعَلاَءَ يُحَدِّثُ عَنْ أَبِيهِ عَنْ أَبِى هُرَيْرَةَ عَنِ النَّبِىِّ -صلى الله عليه وسلم- أَنَّهُ نَهَى عَنِ النَّذْرِ وَقَالَ « إِنَّهُ لاَ يَرُدُّ مِنَ الْقَدَرِ وَإِنَّمَا يُسْتَخْرَجُ بِهِ مِنَ الْبَخِيلِ ».

It was narrated from Abu Hurairah that the Prophet (s.a.w) forbade vows and said: "They do not avert the Divine Decree; all they do is get something out of a miser ."

حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ نبیﷺنے نذر ماننے سے منع فرمایا ہے ،کیونکہ نذر تقدیر کو نہیں ٹال سکتی ہے ،یہ صرف بخیل سے مال نکلوانے کا ذریعہ ہے۔


حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ أَيُّوبَ وَقُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ وَعَلِىُّ بْنُ حُجْرٍ قَالُوا حَدَّثَنَا إِسْمَاعِيلُ - وَهُوَ ابْنُ جَعْفَرٍ - عَنْ عَمْرٍو - وَهْوَ ابْنُ أَبِى عَمْرٍو - عَنْ عَبْدِ الرَّحْمَنِ الأَعْرَجِ عَنْ أَبِى هُرَيْرَةَ أَنَّ النَّبِىَّ -صلى الله عليه وسلم- قَالَ « إِنَّ النَّذْرَ لاَ يُقَرِّبُ مِنِ ابْنِ آدَمَ شَيْئًا لَمْ يَكُنِ اللَّهُ قَدَّرَهُ لَهُ وَلَكِنِ النَّذْرُ يُوَافِقُ الْقَدَرَ فَيُخْرَجُ بِذَلِكَ مِنَ الْبَخِيلِ مَا لَمْ يَكُنِ الْبَخِيلُ يُرِيدُ أَنْ يُخْرِجَ ».

It was narrated from Abu Hurairah that the Prophet (s.a.w) said: "A vow does not bring closer to the son of Adam something that Allah has not decreed for him, but a vow sometimes coincides with the Divine Decree. And thus it gets from a miser something that the miser did not want to give."

حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ نبیﷺنے فرمایا: نذر ابن آدم کے پاس ایسی چیز نہیں لا سکتی جو اللہ نے مقدر نہ کی ہو، لیکن نذر تقدیر کے موافق ہوجاتی ہے ،اور بخیل جو مال نکالنا نہیں چاہتا ہے اس سے وہ مال نکلوا لیتی ہے ۔


حَدَّثَنَا قُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ حَدَّثَنَا يَعْقُوبُ - يَعْنِى ابْنَ عَبْدِ الرَّحْمَنِ الْقَارِىَّ - وَعَبْدُ الْعَزِيزِ - يَعْنِى الدَّرَاوَرْدِىَّ - كِلاَهُمَا عَنْ عَمْرِو بْنِ أَبِى عَمْرٍو بِهَذَا الإِسْنَادِ مِثْلَهُ.

A similar report (as no. 4243) was narrated from 'Amr bin Abi 'Amr with this chain.

ایک اور سند سے بھی یہ حدیث اسی طرح مروی ہے۔

Chapter No: 3

باب لاَ وَفَاءَ لِنَذْرٍ فِي مَعْصِيَةِ اللَّهِ وَلاَ فِيمَا لاَ يَمْلِكُ الْعَبْدُ

Any vow containing disobedience of Allah should not be fulfilled, nor that over which a man has no control

اللہ کی معصیت میں مانی ہوئی اور ایسے کام کی نذر جس کا بندہ مالک نہ ہو، پورا کرنا بندے پر لازم نہیں ہے۔

وَحَدَّثَنِى زُهَيْرُ بْنُ حَرْبٍ وَعَلِىُّ بْنُ حُجْرٍ السَّعْدِىُّ - وَاللَّفْظُ لِزُهَيْرٍ - قَالاَ حَدَّثَنَا إِسْمَاعِيلُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ حَدَّثَنَا أَيُّوبُ عَنْ أَبِى قِلاَبَةَ عَنْ أَبِى الْمُهَلَّبِ عَنْ عِمْرَانَ بْنِ حُصَيْنٍ قَالَ كَانَتْ ثَقِيفُ حُلَفَاءَ لِبَنِى عُقَيْلٍ فَأَسَرَتْ ثَقِيفُ رَجُلَيْنِ مِنْ أَصْحَابِ رَسُولِ اللَّهِ -صلى الله عليه وسلم- وَأَسَرَ أَصْحَابُ رَسُولِ اللَّهِ -صلى الله عليه وسلم- رَجُلاً مِنْ بَنِى عُقَيْلٍ وَأَصَابُوا مَعَهُ الْعَضْبَاءَ فَأَتَى عَلَيْهِ رَسُولُ اللَّهِ -صلى الله عليه وسلم- وَهْوَ فِى الْوَثَاقِ قَالَ يَا مُحَمَّدُ. فَأَتَاهُ فَقَالَ « مَا شَأْنُكَ ». فَقَالَ بِمَ أَخَذْتَنِى وَبِمَ أَخَذْتَ سَابِقَةَ الْحَاجِّ فَقَالَ إِعْظَامًا لِذَلِكَ « أَخَذْتُكَ بِجَرِيرَةِ حُلَفَائِكَ ثَقِيفَ ». ثُمَّ انْصَرَفَ عَنْهُ فَنَادَاهُ فَقَالَ يَا مُحَمَّدُ يَا مُحَمَّدُ. وَكَانَ رَسُولُ اللَّهِ -صلى الله عليه وسلم- رَحِيمًا رَقِيقًا فَرَجَعَ إِلَيْهِ فَقَالَ « مَا شَأْنُكَ ». قَالَ إِنِّى مُسْلِمٌ. قَالَ « لَوْ قُلْتَهَا وَأَنْتَ تَمْلِكُ أَمْرَكَ أَفْلَحْتَ كُلَّ الْفَلاَحِ ». ثُمَّ انْصَرَفَ فَنَادَاهُ فَقَالَ يَا مُحَمَّدُ يَا مُحَمَّدُ. فَأَتَاهُ فَقَالَ « مَا شَأْنُكَ ». قَالَ إِنِّى جَائِعٌ فَأَطْعِمْنِى وَظَمْآنُ فَأَسْقِنِى. قَالَ « هَذِهِ حَاجَتُكَ ». فَفُدِىَ بِالرَّجُلَيْنِ - قَالَ - وَأُسِرَتِ امْرَأَةٌ مِنَ الأَنْصَارِ وَأُصِيبَتِ الْعَضْبَاءُ فَكَانَتِ الْمَرْأَةُ فِى الْوَثَاقِ وَكَانَ الْقَوْمُ يُرِيحُونَ نَعَمَهُمْ بَيْنَ يَدَىْ بُيُوتِهِمْ فَانْفَلَتَتْ ذَاتَ لَيْلَةٍ مِنَ الْوَثَاقِ فَأَتَتِ الإِبِلَ فَجَعَلَتْ إِذَا دَنَتْ مِنَ الْبَعِيرِ رَغَا فَتَتْرُكُهُ حَتَّى تَنْتَهِىَ إِلَى الْعَضْبَاءِ فَلَمْ تَرْغُ قَالَ وَنَاقَةٌ مُنَوَّقَةٌ فَقَعَدَتْ فِى عَجُزِهَا ثُمَّ زَجَرَتْهَا فَانْطَلَقَتْ وَنَذِرُوا بِهَا فَطَلَبُوهَا فَأَعْجَزَتْهُمْ - قَالَ - وَنَذَرَتْ لِلَّهِ إِنْ نَجَّاهَا اللَّهُ عَلَيْهَا لَتَنْحَرَنَّهَا فَلَمَّا قَدِمَتِ الْمَدِينَةَ رَآهَا النَّاسُ. فَقَالُوا الْعَضْبَاءُ نَاقَةُ رَسُولِ اللَّهِ -صلى الله عليه وسلم-. فَقَالَتْ إِنَّهَا نَذَرَتْ إِنْ نَجَّاهَا اللَّهُ عَلَيْهَا لَتَنْحَرَنَّهَا. فَأَتَوْا رَسُولَ اللَّهِ -صلى الله عليه وسلم- فَذَكَرُوا ذَلِكَ لَهُ. فَقَالَ « سُبْحَانَ اللَّهِ بِئْسَمَا جَزَتْهَا نَذَرَتْ لِلَّهِ إِنْ نَجَّاهَا اللَّهُ عَلَيْهَا لَتَنْحَرَنَّهَا لاَ وَفَاءَ لِنَذْرٍ فِى مَعْصِيَةٍ وَلاَ فِيمَا لاَ يَمْلِكُ الْعَبْدُ ». وَفِى رِوَايَةِ ابْنِ حُجْرٍ « لاَ نَذْرَ فِى مَعْصِيَةِ اللَّهِ ».

It was narrated that 'Imran bin Husain said: "Thaqif were allies of Banu 'Uqail, and Thaqif captured two of the Companions of the Messenger of Allah (s.a.w). And the Companions of the Messenger of Allah (s.a.w) captured a man from Banu 'Uqail, and along with him they caught (the camel) Al' Adba'. The Messenger of Allah (s.a.w) passed by him when he was in chains. He said: 'O Muhammad!' So he came to him and said: 'What is the matter with you?' He said: 'Why did you capture me, and why did you capture the one who precedes the pilgrims (the camel)?' He said: 'I captured you because of the wrongdoing of your allies Ihaqif.' Then he turned away, and he called out to him, saying: 'O Muhammad!' The Messenger of Allah (s.a.w) was compassionate and kind, so he came back to him and said: 'What is the matter with you?' He said: 'I am a Muslim.' He said: 'If you had said that when you were still in control of your affairs, you would have gained every success.' Then he turned away, and he called him, saying: 'O Muhammad! O Muhammad!' He came to him and said: 'What is the matter with you?' He said: 'I am hungry, feed me, and I am thirsty, give me to drink.' He said: 'That is what you need,' and he ransomed him for the two (Muslim) men." He said: "And a woman of the Ansar was taken captive and Al' Adba' was captured, and the woman was put in chains. The people were letting their animals graze in front of their houses. She escaped from her chains one night and went to the camels. Every time she came near a camel it groaned, so she left it alone, until she came to Al'-Adba', which did not groan. She was a docile camel, so the woman sat on her back and prodded her, and she moved off. They were alerted about her and they looked for her, but she got away from them. She vowed to Allah that if Allah saved her by means of (the camel), she would sacrifice her. When she reached Al-Madinah, the people saw her and said: 'Al-'Adba', the she-camel of the Messenger of Allah (s.a.w).' She said that she had vowed that if Allah saved her by means of her, she would sacrifice her. They came to the Messenger of Allah (s.a.w) and told him about that, and he said: 'Subhan-Allah, what a bad reward! She vowed to Allah that if Allah saved her by means of her, she would sacrifice her. There is no fulfillment of a vow that involves sin, or a vow that involves something that a person does not own."' According to the report of Ibn Hujr: "There is no vow in that which involves disobedience towards Allah."

حضرت عمران بن حصین رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ ثقیف، بنوعقیل کے حلیف تھے ثقیف نے اصحاب رسول اللہ ﷺمیں سے دو آدمیوں کو قید کرلیا اور اصحاب رسول اللہ ﷺنے بنوعقیل میں سے ایک آدمی کو قید کرلیا اور اس کے ساتھ عضباء اونٹنی کو بھی گرفتار کیا ۔ رسول اللہ ﷺاس کے پاس تشریف لائے اس حال میں کہ وہ بندھا ہوا تھا ۔ اس نے کہا: اے محمدﷺ! آپ ﷺاس کے پاس آئے اور اس سے کہا کیا بات ہے؟ تو اس نے عرض کیا آپ نے مجھے کیوں پکڑا اور کس وجہ سے حاجیوں پر سبقت لے جانے والی (او نٹنی) کو گرفتار کیا ہے؟ تو آپ ﷺنے فرمایا اس بڑے قصور کی وجہ سے، میں نے تجھے تمہارے حلیف ثقیف کے بدلے گرفتار کیا ہے۔ پھر آپ چلے گئے ، تو اس نے کہا: یا محمد! یا محمد!اور رسول اللہ ﷺمہربان اور نرم دل تھے آپ اس کے پاس گئے اور فرمایا کیا بات ہے؟ تو اس نے کہا میں مسلمان ہوں آپ نے فرمایا کاش تو یہ بات اس وقت کہتا جب تو اپنے معاملہ کا مکمل طور پر مالک تھا تو تو پوری کامیابی حاصل کر چکا ہوتا یہ کہہ کر آپ ﷺچلے گئے ،اس نے پھر کہا: یا محمد! یا محمد! آپ ﷺاس کے پاس آئے اور فرمایا کیا بات ہے؟ اس نے کہا میں بھوکا ہوں مجھے کچھ کھلائیے اور میں پیاسا ہو مجھے کچھ پلائیے ۔ تو آپﷺ نے فرمایا: یہ تیری حاجت و ضرورت ہے یعنی اسے کھلایا اور پلایا ۔ پھر اس کو ان دو آدمیوں کے عوض چھوڑ دیا گیا ۔ (جنہیں ثقیف نے گرفتار کیا تھا) راوی کہتا ہے کہ انصار میں سے ایک عورت اور عضباء (اونٹنی) گرفتار کرلی گئی اور وہ عورت بندھی ہوئی تھی اور ثقیف کے لوگ اپنے گھروں کے سامنے اپنے جانوروں کو آرام دے رہے تھے ایک دن وہ قید سے بھاگ نکلی اور اونٹوں کے پاس آئی جب وہ کسی اونٹ کے پاس جاتی وہ آواز نکالتا تو وہ اسے چھوڑ دیتی یہاں تک کہ وہ عضباء تک پہنچی تو اس نے آواز نہیں نکالی اور وہ اونٹنی نہایت مسکین تھی تو وہ عورت اس کی پیٹھ پر بیٹھ گئی پھر اسے ڈانٹا تو چل دی۔ثقیف نے اس عورت کو دھمکایا اور اس کا پیچھا کیا ،لیکن اس عورت نے ان کو عاجز کردیا، راوی کہتا ہے اس عورت نے اللہ کی نذر مانی تھی کہ اگر اللہ نے اس کو اس اونٹنی کے ساتھ نجات دے دی تو وہ اس کی قربانی دے گی، جب وہ مدینہ آئی اور لوگوں نے اسے دیکھا تو انہوں نے کہا: یہ عضباء تو رسول اللہ ﷺکی اونٹنی ہے ۔ اس عورت نے کہا: میں نے نذر مانی ہے کہ اگر اللہ اسے اس اونٹنی کے ساتھ نجات دے تو اسے قربان کرے گی۔ صحابہ رضی اللہ تعالیٰ عنہم نے رسول اللہ ﷺکی خدمت میں حاضر ہو کر اس کا ذکر کیا تو آپﷺ نے فرمایا اللہ پاک ہے اس عورت نے اس اونٹنی کو برا بدلہ دیا کہ اس نے اللہ کے لیے نذرمانی اگر اللہ اسے اس پر سوار ہونے کی صورت میں نجات دے تو وہ اسے نحر کرے گی۔ نافرمانی کے لیے مانی جانے والی نذر کا پورا کرنا ضرروی نہیں اور نہ ہی اس چیز کی نذر جس کا انسان مالک نہیں ہے اور ابن حجر کی روایت میں ہے اللہ کی نافرمانی میں نذر نہیں ہے۔


حَدَّثَنَا أَبُو الرَّبِيعِ الْعَتَكِىُّ حَدَّثَنَا حَمَّادٌ يَعْنِى ابْنَ زَيْدٍ ح وَحَدَّثَنَا إِسْحَاقُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ وَابْنُ أَبِى عُمَرَ عَنْ عَبْدِ الْوَهَّابِ الثَّقَفِىِّ كِلاَهُمَا عَنْ أَيُّوبَ بِهَذَا الإِسْنَادِ نَحْوَهُ وَفِى حَدِيثِ حَمَّادٍ قَالَ كَانَتِ الْعَضْبَاءُ لِرَجُلٍ مِنْ بَنِى عُقَيْلٍ وَكَانَتْ مِنْ سَوَابِقِ الْحَاجِّ وَفِى حَدِيثِهِ أَيْضًا فَأَتَتْ عَلَى نَاقِةٍ ذَلُولٍ مُجَرَّسَةٍ. وَفِى حَدِيثِ الثَّقَفِىِّ وَهِىَ نَاقَةٌ مُدَرَّبَةٌ.

A similar report (as no. 4245) was narrated from Ayyub with this chain. In the Hadith of Hammad it says: "Al-'Adba' belonged to a man of Banu 'Uqail, and she was one of those that preceded the pilgrims.'' In his Hadith it also says: "She came to a camel that was submissive and well-behaved." In the Hadith of Ath-Thaqafi it says: "She was a well-trained camel."

دیگر دو اور سندوں سے اسی طرح مروی ہے اور حماد کی روایت میں ہے کہ عضباء بنو عقیل کے ایک آدمی کی تھی اور وہ حجاج کو پہلے پہنچانے والی اونٹنیوں میں سے تھی اور اس روایت میں ہے کہ وہ عورت ایک مسکین اونٹنی کے پاس آئی جس کے گلے میں گھنٹی ڈالی ہوئی تھی ، اور ثقفی کی روایت میں ہے کہ وہ سدھائی ہوئی اونٹنی تھی۔

Chapter No: 4

بابُ مَنْ نَذَرَ أَنْ يَمْشِيَ إِلَى الْكَعْبَةِ

Regarding a person who vowed to walk to the Ka’bah

جس نے یہ نذر مانی کہ وہ کعبہ کی طرف پیدل چلے گا

حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ يَحْيَى التَّمِيمِىُّ أَخْبَرَنَا يَزِيدُ بْنُ زُرَيْعٍ عَنْ حُمَيْدٍ عَنْ ثَابِتٍ عَنْ أَنَسٍ ح وَحَدَّثَنَا ابْنُ أَبِى عُمَرَ - وَاللَّفْظُ لَهُ - حَدَّثَنَا مَرْوَانُ بْنُ مُعَاوِيَةَ الْفَزَارِىُّ حَدَّثَنَا حُمَيْدٌ حَدَّثَنِى ثَابِتٌ عَنْ أَنَسٍ أَنَّ النَّبِىَّ -صلى الله عليه وسلم- رَأَىَ شَيْخًا يُهَادَى بَيْنَ ابْنَيْهِ فَقَالَ « مَا بَالُ هَذَا ». قَالُوا نَذَرَ أَنْ يَمْشِىَ. قَالَ « إِنَّ اللَّهَ عَنْ تَعْذِيبِ هَذَا نَفْسَهُ لَغَنِىٌّ ». وَأَمَرَهُ أَنْ يَرْكَبَ.

It was narrated from Anas that the Prophet (s.a.w) saw an old man being supported between two of his sons. He said: "What is the matter with this one?" They said: "He vowed to walk." He said: "Alla.h has no need of this man's torturing himself." And he ordered him to ride.

حضرت انس رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ نبیﷺنے ایک بوڑھے کو اپنے دو بیٹوں کے درمیان ٹیک لگائے (چلتے) ہوئے دیکھا تو فرمایا اس کو کیا ہوا؟ صحابہ رضی اللہ تعالیٰ عنہم نے عرض کیا کہ اس نے پیدل چلنے کی نذر مانی ہے ۔ آپ ﷺنے فرمایا: اللہ اس کے نفس کو عذاب دینے سے بے پرواہ ہے پھر آپﷺ اسے سوار ہونے کا حکم دیا۔


وَحَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ أَيُّوبَ وَقُتَيْبَةُ وَابْنُ حُجْرٍ قَالُوا حَدَّثَنَا إِسْمَاعِيلُ - وَهُوَ ابْنُ جَعْفَرٍ - عَنْ عَمْرٍو - وَهُوَ ابْنُ أَبِى عَمْرٍو - عَنْ عَبْدِ الرَّحْمَنِ الأَعْرَجِ عَنْ أَبِى هُرَيْرَةَ أَنَّ النَّبِىَّ -صلى الله عليه وسلم- أَدْرَكَ شَيْخًا يَمْشِى بَيْنَ ابْنَيْهِ يَتَوَكَّأُ عَلَيْهِمَا فَقَالَ النَّبِىُّ -صلى الله عليه وسلم- « مَا شَأْنُ هَذَا ». قَالَ ابْنَاهُ يَا رَسُولَ اللَّهِ كَانَ عَلَيْهِ نَذْرٌ. فَقَالَ النَّبِىُّ -صلى الله عليه وسلم- « ارْكَبْ أَيُّهَا الشَّيْخُ فَإِنَّ اللَّهَ غَنِىٌّ عَنْكَ وَعَنْ نَذْرِكَ ». وَاللَّفْظُ لِقُتَيْبَةَ وَابْنِ حُجْرٍ.

It was narrated from Abu Hurairah that the Prophet (s.a.w) caught up with an old man who was walking between his two sons, leaning on them. The Prophet (s.a.w) said: "What is the matter with him?" His sons said to him: "O Messenger of Allah, he made a vow." The Prophet (s.a.w) said: "Ride, O old man, for Allah has no need of you and your vow."

حضرت ابوہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ نبیﷺنے ایک بوڑھے کو اپنے بیٹوں پر ٹیک لگا کر چلتے ہوئے پایا تو نبی ﷺ نے فرمایا: اسے کیا ہوا؟ تو اس کے بیٹوں نے عرض کیا: اے اللہ کے رسولﷺاس پر ایک نذر تھی ۔ تو نبیﷺنے فرمایا : اے بوڑھے! سوار ہوجاؤ کیونکہ اللہ تعالی تجھ سے اور تیری نذر سے بے پرواہ ہے۔یہ الفاظ قتیبہ اور ابن حجر کے ہیں۔


وَحَدَّثَنَا قُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ حَدَّثَنَا عَبْدُ الْعَزِيزِ - يَعْنِى الدَّرَاوَرْدِىَّ - عَنْ عَمْرِو بْنِ أَبِى عَمْرٍو بِهَذَا الإِسْنَادِ مِثْلَهُ.

A similar report (as no. 4248) was narrated from Ibn Abi 'Amr with this chain.

ایک اور سند سے بھی یہ روایت اسی طرح منقول ہے۔


وَحَدَّثَنَا زَكَرِيَّاءُ بْنُ يَحْيَى بْنِ صَالِحٍ الْمِصْرِىُّ حَدَّثَنَا الْمُفَضَّلُ - يَعْنِى ابْنَ فَضَالَةَ - حَدَّثَنِى عَبْدُ اللَّهِ بْنُ عَيَّاشٍ عَنْ يَزِيدَ بْنِ أَبِى حَبِيبٍ عَنْ أَبِى الْخَيْرِ عَنْ عُقْبَةَ بْنِ عَامِرٍ أَنَّهُ قَالَ نَذَرَتْ أُخْتِى أَنْ تَمْشِىَ إِلَى بَيْتِ اللَّهِ حَافِيَةً فَأَمَرَتْنِى أَنْ أَسْتَفْتِىَ لَهَا رَسُولَ اللَّهِ -صلى الله عليه وسلم- فَاسْتَفْتَيْتُهُ فَقَالَ « لِتَمْشِ وَلْتَرْكَبْ ».

It was narrated from Yazid bin Abi Habib, from Abul-Khair, that 'Uqbah bin 'Arnir said: "My sister vowed to walk to the House of Allah barefoot, and she told me to ask the Messenger of Allah (s.a.w) about that for her. So I asked the Messenger of Allah (s.a.w) and he said: 'Let her walk and let her ride."'

حضرت عقبہ بن عامر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ میری بہن نے بیت اللہ تک ننگے پاؤں چل کر جانے کی نذر مانی، انہوں نے مجھے حکم دیا کہ میں اس کے لیے رسول اللہ ﷺسے فتوی طلب کروں تو آپ ﷺنے فرمایا: وہ پیدل بھی چلے اور سوار بھی ہو ۔


وَحَدَّثَنِى مُحَمَّدُ بْنُ رَافِعٍ حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّزَّاقِ أَخْبَرَنَا ابْنُ جُرَيْجٍ أَخْبَرَنَا سَعِيدُ بْنُ أَبِى أَيُّوبَ أَنَّ يَزِيدَ بْنَ أَبِى حَبِيبٍ أَخْبَرَهُ أَنَّ أَبَا الْخَيْرِ حَدَّثَهُ عَنْ عُقْبَةَ بْنِ عَامِرٍ الْجُهَنِىِّ أَنَّهُ قَالَ نَذَرَتْ أُخْتِى. فَذَكَرَ بِمِثْلِ حَدِيثِ مُفَضَّلٍ وَلَمْ يَذْكُرْ فِى الْحَدِيثِ حَافِيَةً. وَزَادَ وَكَانَ أَبُو الْخَيْرِ لاَ يُفَارِقُ عُقْبَةَ.

It was narrated from Yazid bin Abi Habib, that Abul-Khair narrated to him from 'Uqbah bin 'Amir Al-Juhani, that he said: "My sister made a vow..." and he mentioned a Hadith like that of Mufaddal (no. 4250), but he did not mention in the Hadith: "barefoot," and he added: "Abul-Khair did not leave 'Uqbah."

ایک اور سند سے بھی یہ روایت اسی طرح مروی ہے اور مفضل کی حدیث میں ننگے پاؤں کا ذکر نہیں ہے۔اور اس میں یہ اضافہ ہے کہ ابو الخیر عقبہ سے جدا نہیں ہوتے تھے۔


وَحَدَّثَنِيهِ مُحَمَّدُ بْنُ حَاتِمٍ وَابْنُ أَبِى خَلَفٍ قَالاَ حَدَّثَنَا رَوْحُ بْنُ عُبَادَةَ حَدَّثَنَا ابْنُ جُرَيْجٍ أَخْبَرَنِى يَحْيَى بْنُ أَيُّوبَ أَنَّ يَزِيدَ بْنَ أَبِى حَبِيبٍ أَخْبَرَهُ بِهَذَا الإِسْنَادِ. مِثْلَ حَدِيثِ عَبْدِ الرَّزَّاقِ.

Yazid bin Abi Habib narrated a Hadith like that of 'Abdur-Razzaq (no. 4251) with this chain.

ایک اور سند سے بھی مذکورہ بالا حدیث کی طرح مروی ہے۔

Chapter No: 5

بابٌ فِي كَفَّارَةِ النَّذْرِ

Regarding the expiation of a vow

نذر کے کفارہ کا بیان

وَحَدَّثَنِى هَارُونُ بْنُ سَعِيدٍ الأَيْلِىُّ وَيُونُسُ بْنُ عَبْدِ الأَعْلَى وَأَحْمَدُ بْنُ عِيسَى قَالَ يُونُسُ أَخْبَرَنَا وَقَالَ الآخَرَانِ حَدَّثَنَا ابْنُ وَهْبٍ أَخْبَرَنِى عَمْرُو بْنُ الْحَارِثِ عَنْ كَعْبِ بْنِ عَلْقَمَةَ عَنْ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ شُمَاسَةَ عَنْ أَبِى الْخَيْرِ عَنْ عُقْبَةَ بْنِ عَامِرٍ عَنْ رَسُولِ اللَّهِ -صلى الله عليه وسلم- قَالَ « كَفَّارَةُ النَّذْرِ كَفَّارَةُ الْيَمِينِ ».

It was narrated from 'Uqbah bin 'Amir that the Messenger of Allah (s.a.w) said: "The expiation for breaking a vow is Kafaratul-Yamin (the expiation for breaking an oath)."

حضرت عقبہ بن عامر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺنے فرمایا: نذر کا وہی کفارہ ہے جو قسم کا کفارہ ہے۔