Sayings of the Messenger

 

123Last ›

Chapter No: 1

باب تَحْرِيمِ الْخَمْرِ وَبَيَانِ أَنَّهَا تَكُونُ مِنْ عَصِيرِ الْعِنَبِ وَمِنَ التَّمْرِ وَالْبُسْرِ وَالزَّبِيبِ وَغَيْرِهَا مِمَّا يُسْكِرُ

Concerning the forbiddance of wine and explanation that it may be made from the juice of grapes, dried dates, unripe dates, raisins and other things that intoxicate

شراب کی حرمت اور اس بات کا بیان کہ شراب انگور کے شیرہ ،کھجور، اور کچی کھجور ، اور منقیٰ وغیرہ سے بنتی ہے جو نشہ دے۔

حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ يَحْيَى التَّمِيمِيُّ، أَخْبَرَنَا حَجَّاجُ بْنُ مُحَمَّدٍ، عَنِ ابْنِ جُرَيْجٍ، حَدَّثَنِي ابْنُ شِهَابٍ، عَنْ عَلِيِّ بْنِ حُسَيْنِ بْنِ عَلِيٍّ، عَنْ أَبِيهِ حُسَيْنِ بْنِ عَلِيٍّ ، عَنْ عَلِيِّ بْنِ أَبِي طَالِبٍ، قَالَ: أَصَبْتُ شَارِفًا مَعَ رَسُولِ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فِي مَغْنَمٍ يَوْمَ بَدْرٍ ، وَأَعْطَانِي رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ شَارِفًا أُخْرَى، فَأَنَخْتُهُمَا يَوْمًا عِنْدَ بَابِ رَجُلٍ مِنَ الأَنْصَارِ، وَأَنَا أُرِيدُ أَنْ أَحْمِلَ عَلَيْهِمَا إِذْخِرًا لأَبِيعَهُ، وَمَعِي صَائِغٌ مِنْ بَنِي قَيْنُقَاعَ فَأَسْتَعِينَ بِهِ عَلَى وَلِيمَةِ فَاطِمَةَ ، وَحَمْزَةُ بْنُ عَبْدِ الْمُطَّلِبِ يَشْرَبُ فِي ذَلِكَ الْبَيْتِ ، مَعَهُ قَيْنَةٌ تُغَنِّيهِ ، فَقَالَتْ. أَلاَ يَا حَمْزُ لِلشُّرُفِ النِّوَاءِ ... فَثَارَ إِلَيْهِمَا حَمْزَةُ بِالسَّيْفِ فَجَبَّ أَسْنِمَتَهُمَا وَبَقَرَ خَوَاصِرَهُمَا ... ثُمَّ أَخَذَ مِنْ أَكْبَادِهِمَا قُلْتُ لاِبْنِ شِهَابٍ: وَمِنِ السَّنَامِ ؟ قَالَ : قَدْ جَبَّ أَسْنِمَتَهُمَا ، فَذَهَبَ بِهَا. قَالَ ابْنُ شِهَابٍ: قَالَ عَلِيٌّ: فَنَظَرْتُ إِلَى مَنْظَرٍ أَفْظَعَنِي ، فَأَتَيْتُ نَبِيَّ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَعِنْدَهُ زَيْدُ بْنُ حَارِثَةَ ، فَأَخْبَرْتُهُ الْخَبَرَ ، فَخَرَجَ وَمَعَهُ زَيْدٌ، وَانْطَلَقْتُ مَعَهُ، فَدَخَلَ عَلَى حَمْزَةَ فَتَغَيَّظَ عَلَيْهِ ، فَرَفَعَ حَمْزَةُ بَصَرَهُ، فَقَالَ: هَلْ أَنْتُمْ إِلاَّ عَبِيدٌ لِآبَائِي ، فَرَجَعَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يُقَهْقِرُ حَتَّى خَرَجَ عَنْهُمْ.

It was narrated from Ibn Jurairj (who said): "Ibn Shihab narrated to me, from 'Ali bin Al-Husain bin 'Ali, from his father Husain bin 'Ali, from 'Ali bin Abi Talib who said: "I got an old she-camel from the spoils of war on the Day of Badr, and the Messenger of Allah (s.a.w) gave me another she-camel. I made them kneel at the door of a man from among the Ansar, intending to carry Idhkhir on them to sell it - and there was a goldsmith of Banu Qainuqa' with me - so that I could use the money to give a wedding feast for my marriage to Fatimah. Hamzah bin 'Abdul-Muttalib was drinking in that house, and there was a singing-girl with him who said: 'O Hamzah, get up and slaughter the fat she-camels.' So Hamzah attacked them with his sword, cutting off their humps and cutting open their flanks, then he took out their livers." I said to Ibn Shihab: "Did he take out anything from their humps?" He said: "He cut off their humps and took them away." Ibn Shihab said: "Ali said: 'I looked at a sight that shocked me. I went to the Prophet (s.a.w), and Zaid bin Harithah was with him, and I told him what had happened. He went out, accompanied by Zaid, and I went with him. He entered upon Hamzah and expressed his anger to him. Hamzah looked up and said: "Are you anything more than the slaves of my forefathers?" The Messenger of Allah (s.a.w) backed off until he departed from them."'

حضرت علی بن ابی طالب رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہےوہ فرماتے ہیں کہ بدر کے مال غنیمت سے رسول اللہﷺ کے ساتھ مجھے ایک اونٹنی ملی اور رسول اللہﷺ نے مجھے ایک اور اونٹنی عطاء فرما دی، میں نے ان دونوں اونٹنیوں کو ایک انصاری کے دروازہ پر بٹھا دیا اور میں یہ چاہتا تھا کہ میں ان پر اذخر (ایک قسم کی گھاس) لاد کر لاؤں تاکہ اس کو فروخت کروں، اور میرے ساتھ بنو قینقاع کا ایک سنار بھی تھا ، الغرض میرا حضرت فاطمہ کے ولیمہ کی تیاری کا ارادہ تھا اور اسی گھر میں حضرت حمزہ بن عبدالمطلب شراب پی رہے تھے ان کے ساتھ ایک باندی تھی جو گا رہی تھی اے حمزہ! ان موٹی اونٹنیوں کو ذبح کرنے کے لئے اٹھو، حضرت حمزہ یہ سن کر اپنی تلوار لے کر ان اونٹنیوں پر دوڑے اور ان کی کوہان کاٹ دی اور ان کی کوکھوں کو پھاڑ ڈالا پھر ان کا کلیجہ نکال دیا۔ راوی کہتا ہے کہ میں نے ابن شہاب سے کہا: کیا کوہان بھی کچھ لے گئے؟ انہوں نے کہا: ہاں کوہان بھی کاٹ کر لے گئے، ابن شہاب کہتے ہیں کہ حضرت علی رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے فرمایا: جب میں نے یہ اندوہاظک منظر دیکھا تو میں اسی وقت اللہ کے نبیﷺ کی خدمت میں آیا اور حضرت زید بن حارثہ بھی آپﷺ کے پاس موجود تھے میں نے آپﷺ کو اس سارے واقعہ کی خبر دی، تو آپﷺ باہر نکلے اور حضرت زید رضی اللہ عنہ بھی آپﷺ کے ساتھ تھے اور میں بھی آپ کے ساتھ چل پڑا، آپ حضرت حمزہ کے پاس تشریف لے گئے اور ان پر غضبناک ہوئے ۔ حضرت حمزہ رضی اللہ عنہ نے آپ ﷺ کی طرف نظر اٹھا کر دیکھا اور کہنے لگے: کہ آپ لوگ تو میرے آباؤ اجداد کے غلام ہو، رسول اللہﷺ الٹے پاؤں واپس لوٹ پڑے یہاں تک کہ وہاں سے چلے آئے۔


حَدَّثَنَا عَبْدُ بْنُ حُمَيْدٍ ، أَخْبَرَنِي عَبْدُ الرَّزَّاقِ ، أَخْبَرَنِي ابْنُ جُرَيْجٍ ، بِهَذَا الإِسْنَادِ مِثْلَهُ.

Ibn Juraij narrated a similar report (as no. 5127) with this chain of narrators.

یہ حدیث ایک اور سند سے بھی اسی طرح مروی ہے۔


وحَدَّثَنِي أَبُو بَكْرِ بْنُ إِسْحَاقَ ، أَخْبَرَنَا سَعِيدُ بْنُ كَثِيرِ بْنِ عُفَيْرٍ أَبُو عُثْمَانَ الْمِصْرِيُّ ، حَدَّثَنَا عَبْدُ اللهِ بْنُ وَهْبٍ ، حَدَّثَنِي يُونُسُ بْنُ يَزِيدَ ، عَنِ ابْنِ شِهَابٍ ، أَخْبَرَنِي عَلِيُّ بْنُ حُسَيْنِ بْنِ عَلِيٍّ ، أَنَّ حُسَيْنَ بْنَ عَلِيٍّ ، أَخْبَرَهُ ، أَنَّ عَلِيًّا ، قَالَ : كَانَتْ لِي شَارِفٌ مِنْ نَصِيبِي مِنَ الْمَغْنَمِ يَوْمَ بَدْرٍ ، وَكَانَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ أَعْطَانِي شَارِفًا مِنَ الْخُمُسِ يَوْمَئِذٍ ، فَلَمَّا أَرَدْتُ أَنْ أَبْتَنِيَ بِفَاطِمَةَ بِنْتِ رَسُولِ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، وَاعَدْتُ رَجُلاً صَوَّاغًا مِنْ بَنِي قَيْنُقَاعَ يَرْتَحِلُ مَعِيَ ، فَنَأْتِي بِإِذْخِرٍ أَرَدْتُ أَنْ أَبِيعَهُ مِنَ الصَّوَّاغِينَ فَأَسْتَعِينَ بِهِ فِي وَلِيمَةِ عُرْسِي ، فَبَيْنَا أَنَا أَجْمَعُ لِشَارِفَيَّ مَتَاعًا مِنَ الأَقْتَابِ ، وَالْغَرَائِرِ وَالْحِبَالِ ، وَشَارِفَايَ مُنَاخَتَانِ إِلَى جَنْبِ حُجْرَةِ رَجُلٍ مِنَ الأَنْصَارِ ، وَجَمَعْتُ حِينَ جَمَعْتُ مَا جَمَعْتُ ، فَإِذَا شَارِفَايَ قَدِ اجْتُبَّتْ أَسْنِمَتُهُمَا ، وَبُقِرَتْ خَوَاصِرُهُمَا ، وَأُخِذَ مِنْ أَكْبَادِهِمَا ، فَلَمْ أَمْلِكْ عَيْنَيَّ حِينَ رَأَيْتُ ذَلِكَ الْمَنْظَرَ مِنْهُمَا ، قُلْتُ : مَنْ فَعَلَ هَذَا ؟ قَالُوا : فَعَلَهُ حَمْزَةُ بْنُ عَبْدِ الْمُطَّلِبِ وَهُوَ فِي هَذَا الْبَيْتِ فِي شَرْبٍ مِنَ الأَنْصَارِ غَنَّتْهُ قَيْنَةٌ وَأَصْحَابَهُ ، فَقَالَتْ فِي غِنَائِهَا : أَلاَ يَا حَمْزُ لِلشُّرُفِ النِّوَاءِ ... فَقَامَ حَمْزَةُ بِالسَّيْفِ فَاجْتَبَّ أَسْنِمَتَهُمَا وَبَقَرَ خَوَاصِرَهُمَا ... فَأَخَذَ مِنْ أَكْبَادِهِمَا فَقَالَ عَلِيٌّ : فَانْطَلَقْتُ حَتَّى أَدْخُلَ عَلَى رَسُولِ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَعِنْدَهُ زَيْدُ بْنُ حَارِثَةَ ، قَالَ : فَعَرَفَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فِي وَجْهِيَ الَّذِي لَقِيتُ ، فَقَالَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ : مَا لَكَ ؟ قُلْتُ : يَا رَسُولَ اللهِ ، وَاللَّهِ مَا رَأَيْتُ كَالْيَوْمِ قَطُّ ، عَدَا حَمْزَةُ عَلَى نَاقَتَيَّ ، فَاجْتَبَّ أَسْنِمَتَهُمَا ، وَبَقَرَ خَوَاصِرَهُمَا ، وَهَا هُوَ ذَا فِي بَيْتٍ مَعَهُ شَرْبٌ ، قَالَ : فَدَعَا رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ بِرِدَائِهِ فَارْتَدَاهُ ، ثُمَّ انْطَلَقَ يَمْشِي وَاتَّبَعْتُهُ أَنَا وَزَيْدُ بْنُ حَارِثَةَ حَتَّى جَاءَ الْبَابَ الَّذِي فِيهِ حَمْزَةُ ، فَاسْتَأْذَنَ فَأَذِنُوا لَهُ ، فَإِذَا هُمْ شَرْبٌ ، فَطَفِقَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يَلُومُ حَمْزَةَ فِيمَا فَعَلَ ، فَإِذَا حَمْزَةُ مُحْمَرَّةٌ عَيْنَاهُ ، فَنَظَرَ حَمْزَةُ إِلَى رَسُولِ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، ثُمَّ صَعَّدَ النَّظَرَ إِلَى رُكْبَتَيْهِ ، ثُمَّ صَعَّدَ النَّظَرَ فَنَظَرَ إِلَى سُرَّتِهِ ، ثُمَّ صَعَّدَ النَّظَرَ فَنَظَرَ إِلَى وَجْهِهِ ، فَقَالَ حَمْزَةُ : وَهَلْ أَنْتُمْ إِلاَّ عَبِيدٌ لأَبِي ، فَعَرَفَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ أَنَّهُ ثَمِلٌ ، فَنَكَصَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَلَى عَقِبَيْهِ الْقَهْقَرَى ، وَخَرَجَ وَخَرَجْنَا مَعَهُ.

Hussain bin 'Ali narrated that 'Ali said: "I had a she-camel that was my share of the spoils of war on the Day of Badr, and the Messenger of Allah (s.a.w) had also given me a she-camel from the Khumus on that day. When I wanted to consummate my marriage to Fatimah, the daughter of the Messenger of Allah (s.a.w), I made a deal a man who was a goldsmith from Banu Qainuqa' to go with me so that we could bring some Idhkhir. I wanted to sell it to the goldsmiths and use the money for my wedding feast. While I was gathering the equipment for my two she-camels, such as saddles, sacks and ropes, and my two she-camels were sitting by the door of an apartment belonging to an Ansari man until I collected those things, my two she-camels were attacked; their humps were cut off, their flanks cut open and their livers taken out. I could not help weeping when I saw what had happened to them. I said: 'Who did this?' They said: 'Hamzah bin 'Abdul-Muttalib did it; he is in this house, drinking with some of the Ansar, and a singing girl is singing to him and his companions. She said in her song: "O Hamzah, get up and attack that fat she-camel." So Hamzah stood up with his sword and cut off their humps, cut open their flanks and took out their livers."' 'Ali said: "I went and entered upon the Messenger of Allah (s.a.w), and Zaid bin Harithah was with him. The Messenger of Allah ~(s.a.w)saw in my face that something had happened and the Messenger of Allah (s.a.w) said: 'What is the matter with you?' I said: 'O Messenger of Allah, by Allah, I have never seen anything like today. Hamzah attacked my two she-camels. He cut off their humps and cut open their sides. He is there in a house and he is drinking.' The Messenger of Allah (s.a.w) called for his Rida' (cloak) and put it on, then he set out walking, and Zaid bin Harithah and I followed him. When he came to the door (of the house) in which Hamzah was, he asked for permission to enter and they gave him permission, and they were drinking. The Messenger of Allah (s.a.w) started to rebuke Hamzah for what he had done. Hamzah's eyes were red, and he looked at the Messenger of Allah (s.a.w), then he lifted his gaze and looked at his knees, then he lifted his gaze and looked at his waist, then he lifted his gaze and looked at his face, and Hamzah said: 'Are you anything more than the slaves of my father?' The Messenger of Allah (s.a.w) realized that he was drunk, so the Messenger of Allah (s.a.w) started backing off and left, and we left with him."

حضرت علی رضی اللہ تعالیٰ عنہ فرماتے ہیں کہ بدر کے دن مال غنیمت سے میرے حصہ میں ایک اونٹنی آئی تھی اور اسی دن رسول اللہ ﷺ نے خمس میں سے مجھے ایک اونٹنی عطا فرمائی تو جب میں نے ارادہ کیا کہ میں حضرت فاطمہ بنت رسول اللہ ﷺ سے شب زفاف گرارنے کا ارادہ کیا ، تو میں نے بنو قینقاع کے ایک سنار سے اپنے ساتھ چلنے کا وعدہ لے لیا تاکہ ہم اذخر گھاس لا کر سناروں کے ہاتھ فروخت کردیں اور پھر اس کی رقم سے میں اپنی شادی کا ولیمہ کروں تو اسی دوران میں اپنی اونٹنیوں کا سامان پالان کے تختے، بوریاں اور رسیاں جمع کرنے لگا اور اس وقت میری دونوں اونٹنیاں انصاری کے گھر کے پاس بیٹھیں تھیں جب میں نے سامان اکٹھا کرلیا تو میں کیا دیکھتا ہوں کہ دونوں اونٹنیوں کے کوہان کٹے ہوئے ہیں اور ان کی کھوکھیں بھی کٹی ہوئی ہیں اور ان کے کلیجے نکلے ہوئے ہیں میں دیکھ کر اپنے آنسوؤں پر قابو نہ کر سکا میں نے کہا: یہ کس نے کیا ہے؟ لوگوں نے کہا: حضرت حمزہ بن عبدالمطلب نے اور حضرت حمزہ چند شراب خور انصاریوں کے ساتھ اسی گھر میں موجود ہیں حضرت حمزہ اور ان کے ساتھیوں کو ایک گانے والی عورت نے ایک شعر سنایا تھا کہ سنو اے حمزہ ! ان موٹی موٹی اونٹنیوں کو ذبح کرنے کے لئے اٹھو،حضرت حمزہ تلوار لے کر اٹھے اور ان اونٹنیوں کے کوہان کو کاٹ دیا اور ان کو کھوکھیں کاٹ دیں اور ان کے کلیجے نکال دیے، حضرت علی رضی اللہ تعالیٰ عنہ فرماتے ہیں کہ میں فوراً رسول اللہ ﷺ کی خدمت میں حاضر ہونے کے لئے چل پڑا یہاں تک کہ میں آپ ﷺ کی خدمت میں آگیا حضرت زید بن حارث بھی آپ ﷺ کے پاس موجود تھے حضرت علی رضی اللہ تعالیٰ عنہ فرماتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ نے مجھے دیکھتے ہی میرے چہرے کے آثار سے حالات معلوم کر لئے تھے رسول اللہ ﷺ نے فرمایا تجھے کیا ہوا؟ میں نے عرض کیا اے اللہ کے رسول ﷺ اللہ کی قسم! میں نے آج کے دن کی طرح کبھی کوئی دن نہیں دیکھا حمزہ نے میری اونٹویرں پر حملہ کر کے ان کے کوہان کاٹ لئے ہیں اور ان کی کھوکھیں پھاڑ ڈالی ہیں اور حمزہ اس وقت گھر میں موجود ہیں اور ان کے ساتھ کچھ اور شراب خور بھی ہیں حضرت علی رضی اللہ تعالیٰ عنہ فرماتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ نے اپنی چادر منگوائی اور اسے اوڑھ کر پیدل ہی چل پڑے اور میں اور حضرت زید بن حارثہ بھی آپ ﷺ کے پیچھے پیچھے چل پڑے یہاں تک کہ آپ ﷺ اس دروازہ میں آئے جہاں حضرت حمزہ تھے آپ ﷺ نے اندر آنے کی اجازت مانگی تو انہوں نے آپ ﷺ کو اجازت دے دی تو دیکھا کہ وہ سب شراب پیئے ہوئے ہیں رسول اللہ ﷺ نے حضرت حمزہ کو ان کے اس فعل پر ملامت کرنا شروع کی، حمزہ کی آنکھیں سرخ ہوگئیں اور رسول اللہ ﷺ کی طرف دیکھا پھر آپ ﷺ کے گھٹنوں کی طرف دیکھا پھر نگاہ بلند کی تو آپ ﷺ کی ناف کی طرف دیکھا پھر نگاہ بلند کی تو آپ ﷺ کے چہرہ مبارک کی طرف دیکھا پھر حمزہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کہنے لگے: تم تو میرے باپ کے غلام ہو ،رسول اللہ ﷺ نے جان لیا کہ اس وقت حضرت حمزہ نشہ میں ہیں ، پھر رسول اللہ ﷺ الٹے پاؤں باہر تشریف لائے اور ہم بھی آپ ﷺ کے ساتھ باہر نکل آئے۔


وحَدَّثَنِيهِ مُحَمَّدُ بْنُ عَبْدِ اللهِ بْنِ قُهْزَاذَ ، حَدَّثَنِي عَبْدُ اللهِ بْنُ عُثْمَانَ ، عَنْ عَبْدِ اللهِ بْنِ الْمُبَارَكِ ، عَنْ يُونُسَ ، عَنِ الزُّهْرِيِّ بِهَذَا الإِسْنَادِ مِثْلَهُ.

A similar report (as no. 5129) was narrated from Az-Zuhri with this chain of narrators.

امام مسلم رحمہ اللہ نے اس حدیث کی ایک اور سند بیان کی ہے۔


حَدَّثَنِي أَبُو الرَّبِيعِ سُلَيْمَانُ بْنُ دَاوُدَ الْعَتَكِيُّ ، حَدَّثَنَا حَمَّادٌ ، يَعْنِي ابْنَ زَيْدٍ ، أَخْبَرَنَا ثَابِتٌ ، عَنْ أَنَسِ بْنِ مَالِكٍ ، قَالَ : كُنْتُ سَاقِيَ الْقَوْمِ يَوْمَ حُرِّمَتِ الْخَمْرُ فِي بَيْتِ أَبِي طَلْحَةَ ، وَمَا شَرَابُهُمْ إِلاَّ الْفَضِيخُ : الْبُسْرُ وَالتَّمْرُ ، فَإِذَا مُنَادٍ يُنَادِي ، فَقَالَ: اخْرُجْ فَانْظُرْ ، فَخَرَجْتُ ، فَإِذَا مُنَادٍ يُنَادِي: أَلاَ إِنَّ الْخَمْرَ قَدْ حُرِّمَتْ ، قَالَ: فَجَرَتْ فِي سِكَكِ الْمَدِينَةِ ، فَقَالَ لِي أَبُو طَلْحَةَ: اخْرُجْ فَاهْرِقْهَا ، فَهَرَقْتُهَا ، فَقَالُوا ، أَوْ قَالَ بَعْضُهُمْ : قُتِلَ فُلاَنٌ ، قُتِلَ فُلاَنٌ ، وَهِيَ فِي بُطُونِهِمْ. قَالَ: فَلاَ أَدْرِي هُوَ مِنْ حَدِيثِ أَنَسٍ ، فَأَنْزَلَ اللَّهُ عَزَّ وَجَلَّ: {لَيْسَ عَلَى الَّذِينَ آمَنُوا وَعَمِلُوا الصَّالِحَاتِ جُنَاحٌ فِيمَا طَعِمُوا إِذَا مَا اتَّقَوْا وَآمَنُوا وَعَمِلُوا الصَّالِحَاتِ}.

It was narrated that Anas bin Malik said: "I was pouring drinks for the people in the house of Abu Talhah on the day that Khamr was forbidden, and they were not drinking anything but date wine made from unripe dates and dried dates. Then a caller cried out and he said: 'Go out and see.' So I went out and a caller was crying out: 'Khamr has been forbidden.' So it was spilled out in the lanes of Al-Madinah. Abu Talhah said to me: 'Go out and spill it.' So I went out and spilled it. They said - or some of them said - 'so-and-so was killed and so-and-so was killed while wine was in their stomachs."' - He (one of the narrators) said: "I do not know if this was part of the Hadith of Anas." - "And Allah revealed the words: 'Those who believe and do righteous good deeds, there is no sin on them for what they ate (in the past), if they fear Allah (by keeping away from His forbidden things), and believe and do righteous good deeds..."

حضرت انس بن مالک رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے وہ فرماتے ہیں کہ جس دن شراب حرام کی گئی اس دن میں حضرت ابوطلحہ کے گھر میں لوگوں کو شراب پلا رہا تھا وہ شراب کشمش اور چھوہاروں کی بنی ہوئی تھی اتنے میں کسی منادی کی آواز سنائی دی ، حضرت ابو طلحہ نے کہا: دیکھو، میں جاکر دیکھا تو ایک منادی یہ آواز دے رہا تھا ، سنو! شراب حرام کردی گئی ،اور مدینہ کی گلیوں میں شراب بہہ رہی تھی ، حضرت ابو طلحہ نے مجھے سے کہا: اٹھو اور تمام شراب بہا د، تو میں نے شراب کو بہا دیا، اس وقت لوگوں میں سے بعض نے کہا: فلاں فلاں شہید ہوئے تھے ، اور ان کے پیٹوں میں شراب تھی، راوی کہتے ہیں کہ میں نہیں جانتا کہ یہ حضرت انس رضی اللہ تعالیٰ عنہ کی حدیث کا حصہ ہے یا نہیں، تب اللہ تعالی نے یہ آیت کریمہ نازل فرمائی جو لوگ ایمان لائے اور نیک کام کئے ان پر اس میں کوئی گناہ نہیں جو پہلے کھا چکے جبکہ آئندہ پرہیزگار ہوئے اور ایمان لائے اور نیک اعمال کئے۔


وحَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ أَيُّوبَ ، حَدَّثَنَا ابْنُ عُلَيَّةَ ، أَخْبَرَنَا عَبْدُ الْعَزِيزِ بْنُ صُهَيْبٍ ، قَالَ : سَأَلُوا أَنَسَ بْنَ مَالِكٍ عَنِ الْفَضِيخِ ، فَقَالَ : مَا كَانَتْ لَنَا خَمْرٌ غَيْرَ فَضِيخِكُمْ هَذَا الَّذِي تُسَمُّونَهُ الْفَضِيخَ ، إِنِّي لَقَائِمٌ أَسْقِيهَا أَبَا طَلْحَةَ ، وَأَبَا أَيُّوبَ ، وَرِجَالاً مِنْ أَصْحَابِ رَسُولِ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فِي بَيْتِنَا إِذْ جَاءَ رَجُلٌ ، فَقَالَ : هَلْ بَلَغَكُمُ الْخَبَرُ ؟ قُلْنَا: لاَ ، قَالَ: فَإِنَّ الْخَمْرَ قَدْ حُرِّمَتْ ، فَقَالَ: يَا أَنَسُ ، أَرِقْ هَذِهِ الْقِلاَلَ قَالَ: فَمَا رَاجَعُوهَا ، وَلاَ سَأَلُوا عَنْهَا بَعْدَ خَبَرِ الرَّجُلِ.

'Abdul-'Aziz bin Suhaib said: "They asked Anas bin Malik about date wine. He said: 'We did not have any other wine except this date wine of yours that you call Al-Fadikh. I was pouring it for Abu Talhah, Abu Ayyub and some other Companions of the Messenger of Allah (s.a.w) in our house, when a man came and said: "Have you heard the news?" We said: "No." He said: "Khamr has been forbidden." He said: "O Anas, spill these large pitchers." And they did not go back to it or ask about it, after hearing the news of that man."'

حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ سے لوگوں نے فضیخ شراب(کھجوروں کا کچا شیرہ جو پڑے پڑے جو ش کھا کر جھاگ چھوڑدے) کے بارے میں پوچھا تو انہوں نے فرمایا: تمہارے اس فضیخ شراب کے علاوہ ہماری کوئی شراب نہیں تھی ، یہ وہی شراب ہے جس کو تم فضیخ کہتے ہو، میں حضرت ابوطلحہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ اور حضرت ابو ایوب رضی اللہ عنہ اور رسول اللہﷺ کے صحابہ کرام میں سے کچھ لوگوں کو اپنے گھر میں (شراب) پلا رہا تھا کہ اچانک ایک آدمی آیا اور اس نے کہا: کیا آپ کو یہ خبر پہنچی ہے؟ ہم نے کہا: نہیں، اس نے کہا: شراب حرام کر دی گئی ہے تو حضرت ابوطلحہ نے کہا: اے انس! ان مٹکوں کو بہا دو ، راوی کہتے ہیں کہ اس خبر کے بعد نہ ہی انہوں نے شراب پی اور نہ ہی شراب کے بارے میں کبھی پوچھا۔


وحَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ أَيُّوبَ ، حَدَّثَنَا ابْنُ عُلَيَّةَ ، قَالَ: وَأَخْبَرَنَا سُلَيْمَانُ التَّيْمِيُّ ، حَدَّثَنَا أَنَسُ بْنُ مَالِكٍ ، قَالَ: إِنِّي لَقَائِمٌ عَلَى الْحَيِّ عَلَى عُمُومَتِي أَسْقِيهِمْ مِنْ فَضِيخٍ لَهُمْ وَأَنَا أَصْغَرُهُمْ سِنًّا ، فَجَاءَ رَجُلٌ ، فَقَالَ: إِنَّهَا قَدْ حُرِّمَتِ الْخَمْرُ ، فَقَالُوا: اكْفِئْهَا يَا أَنَسُ ، فَكَفَأْتُهَا. قَالَ: قُلْتُ لأَنَسٍ: مَا هُوَ ؟ قَالَ: بُسْرٌ وَرُطَبٌ. قَالَ: فَقَالَ أَبُو بَكْرِ بْنُ أَنَسٍ: كَانَتْ خَمْرَهُمْ يَوْمَئِذٍ.قَالَ سُلَيْمَانُ: وَحَدَّثَنِي رَجُلٌ ، عَنْ أَنَسِ بْنِ مَالِكٍ ، أَنَّهُ قَالَ ذَلِكَ أَيْضًا.

Anas bin Malik said: "I was looking after the uncles (elders) of my tribe, pouring date wine for them, and I was the youngest of them. Then a man came and said: 'Khamr has been forbidden.' They said: 'Spill it out, O Anas,' so I spilled it out." I (the sub narrator) said to Anas: "What was it?" He said: "Unripe dates and fresh dates." And Abu Bakr bin Anas said: "That was their Khamr in those days."

حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ میں اپنے چچا زاد قبیلہ والوں کو کھڑے کھڑے فضیخ (ایک قسم کی شراب) پلارہا تھا،اور میں ان میں سب سے کم سن تھا، تو اچانک ایک آدمی آیا اور اس نے کہا: شراب حرام کردی گئی،صحابہ نے کہا: اے انس ! اس کو بہادو،تو میں نے وہ شراب بہادی۔ راوی کہتا ہے کہ میں نے حضرت انس رضی اللہ عنہ سے پوچھا کہ وہ شراب کس چیز کی تھی؟ انہوں نے کہا: وہ کچی او رپکی ہوئی کھجوروں کی شراب تھی، ابو بکر بن انس نے کہا: اس وقت ان کی شراب یہی تھی۔ سلیمان کہتے ہیں کہ مجھ سے ایک آدمی نے حضرت انس رضی اللہ عنہ سے روایت کرتے ہوئے بیان کیا وہ بھی اسی طرح فرماتے تھے۔


حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ عَبْدِ الأَعْلَى ، حَدَّثَنَا الْمُعْتَمِرُ ، عَنْ أَبِيهِ ، قَالَ: قَالَ أَنَسٌ: كُنْتُ قَائِمًا عَلَى الْحَيِّ أَسْقِيهِمْ ... بِمِثْلِ حَدِيثِ ابْنِ عُلَيَّةَ، غَيْرَ أَنَّهُ قَالَ: فَقَالَ أَبُو بَكْرِ بْنُ أَنَسٍ: كَانَ خَمْرَهُمْ يَوْمَئِذٍ ، وَأَنَسٌ شَاهِدٌ ، فَلَمْ يُنْكِرْ أَنَسٌ ذَاكَ. وَقَالَ ابْنُ عَبْدِ الأَعْلَى، حَدَّثَنَا الْمُعْتَمِرُ ، عَنْ أَبِيهِ ، قَالَ: حَدَّثَنِي بَعْضُ مَنْ كَانَ مَعِي، أَنَّهُ سَمِعَ أَنَسًا، يَقُولُ: كَانَ خَمْرَهُمْ يَوْمَئِذٍ.

Al-Mu'tamir narrated that his father said: "Anas said: 'I was looking after the people, pouring drinks for them..."' a Hadith like that of Ibn 'Ulayyah (no. 5133), except that he said: "And Abu Bakr bin Anas said: 'That was their Khamr in those days.' Anas was present and Anas did not object to that." Ibn 'Abdul-A'la said: "Al-Mu'tamir narrated that his father said: 'One of those who were with me told me that he heard Anas say: "That was their Khamr in those days."

حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ میں اپنے قبیلہ کو کھڑے کھڑے شراب پلارہا تھا، اس کے بعد ابن علیہ کی روایت کی طرح ہے ، البتہ اس میں یہ ہے کہ ابو بکر بن انس نے کہا: ان وقت ان کی شراب یہی تھی، اور اس وقت حضرت انس رضی اللہ عنہ موجود تھے ، اور انہوں نے اس کا انکار نہیں کیا ، اور بعض روایات میں یہ ہے کہ حضرت انس رضی اللہ عنہ نے کہا: ان وقت ان کی شراب یہی تھی۔


وحَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ أَيُّوبَ ، حَدَّثَنَا ابْنُ عُلَيَّةَ ، قَالَ: وَأَخْبَرَنَا سَعِيدُ بْنُ أَبِي عَرُوبَةَ ، عَنْ قَتَادَةَ ، عَنْ أَنَسِ بْنِ مَالِكٍ ، قَالَ: كُنْتُ أَسْقِي أَبَا طَلْحَةَ ، وَأَبَا دُجَانَةَ ، وَمُعَاذَ بْنَ جَبَلٍ فِي رَهْطٍ مِنَ الأَنْصَارِ ، فَدَخَلَ عَلَيْنَا دَاخِلٌ ، فَقَالَ: حَدَثَ خَبَرٌ نَزَلَ تَحْرِيمُ الْخَمْرِ ، فَأَكْفَأْنَاهَا يَوْمَئِذٍ وَإِنَّهَا لَخَلِيطُ الْبُسْرِ وَالتَّمْرِ. قَالَ قَتَادَةُ: وَقَالَ أَنَسُ بْنُ مَالِكٍ: لَقَدْ حُرِّمَتِ الْخَمْرُ ، وَكَانَتْ عَامَّةُ خُمُورِهِمْ يَوْمَئِذٍ خَلِيطَ الْبُسْرِ وَالتَّمْرِ.

It was narrated that Anas bin Malik said: "I was pouring drinks for Abu Talhah, Abu Dujanah, Mu'adh bin Jabal and a group of the Ansar when someone came in and said: 'There is fresh news! It has been revealed that Khamr is forbidden.' We spilled it out on that day, and it was a mixture of unripe dates and dried dates." Qatadah said: "And Anas bin Malik said: 'Khamr was forbidden, and most of their Khamr in those days was a mixture of unripe dates and dried dates."'

حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ حضرت ابو طلحہ ، حضرت ابو دجانہ ، حضرت معاذ بن جبل اور انصار کی ایک جماعت کو شراب پلا رہا تھا، ہم پر ایک آنے والا داخل ہوا ، اس نے کہا: ایک نئی خبر آئی ہے، شراب کی حرمت نازل ہوگئی ہے ، تو ہم نے اسی وقت شراب کو بہادیا ، وہ کچی کھجوروں اور چھواروں کی شراب تھی ، قتادہ کہتے ہیں کہ حضرت انس بن مالک نے کہا: شراب حرام کردی گئی اور اس وقت ان کی عام شرابیں کچی کھجوروں اور چھواروں سے بنائی جاتی تھیں۔


وحَدَّثَنَا أَبُو غَسَّانَ الْمِسْمَعِيُّ ، وَمُحَمَّدُ بْنُ الْمُثَنَّى ، وَابْنُ بَشَّارٍ ، قَالُوا: أَخْبَرَنَا مُعَاذُ بْنُ هِشَامٍ ، حَدَّثَنِي أَبِي ، عَنْ قَتَادَةَ ، عَنْ أَنَسِ بْنِ مَالِكٍ ، قَالَ: إِنِّي لأَسْقِي أَبَا طَلْحَةَ ، وَأَبَا دُجَانَةَ ، وَسُهَيْلَ بْنَ بَيْضَاءَ ، مِنْ مَزَادَةٍ فِيهَا خَلِيطُ بُسْرٍ ، وَتَمْرٍ ، بِنَحْوِ حَدِيثِ سَعِيدٍ.

It was narrated that Anas bin Malik said: "I was pouring drinks for Abu Talhah, Abu Dujanah, and Suhail bin Baida' from a skin which contained a mixture made from unripe dates and dried dates..." a Hadith like that of Sa'eed (no. 5135).

حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ میں حضرت ابو طلحہ ، حضرت ابو دجانہ اور حضرت سہل بن بیضاء کو ایک مشکیزے سے شراب پلا رہا تھا ، جس میں کچی کھجوروں اور چھواروں کی شراب تھی۔


وحَدَّثَنِي أَبُو الطَّاهِرِ أَحْمَدُ بْنُ عَمْرِو بْنِ سَرْحٍ ، أَخْبَرَنَا عَبْدُ اللهِ بْنُ وَهْبٍ ، أَخْبَرَنِي عَمْرُو بْنُ الْحَارِثِ ، أَنَّ قَتَادَةَ بْنَ دِعَامَةَ حَدَّثَهُ ، أَنَّهُ سَمِعَ أَنَسَ بْنَ مَالِكٍ ، يَقُولُ: إِنَّ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ نَهَى أَنْ يُخْلَطَ التَّمْرُ وَالزَّهْوُ ، ثُمَّ يُشْرَبَ ، وَإِنَّ ذَلِكَ كَانَ عَامَّةَ خُمُورِهِمْ يَوْمَ حُرِّمَتِ الْخَمْرُ.

Anas bin Malik said: "The Messenger of Allah (s.a.w) forbade mixing dried dates and unripe dates and drinking the mixture, for that was what most of their Khamr was on the day when Khamr was forbidden."

حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہﷺنے کچی کھجوروں اور چھواروں کو ملاکر بھگونے اور پھر اس کو پینے سے منع فرمایا ہے ، اور جس دن شراب حرام ہوئی اس دن ان کی عام شراب یہی ہوتی تھی۔


وحَدَّثَنِي أَبُو الطَّاهِرِ ، أَخْبَرَنَا ابْنُ وَهْبٍ ، أَخْبَرَنِي مَالِكُ بْنُ أَنَسٍ ، عَنْ إِسْحَاقَ بْنِ عَبْدِ اللهِ بْنِ أَبِي طَلْحَةَ ، عَنْ أَنَسِ بْنِ مَالِكٍ ، أَنَّهُ ، قَالَ: كُنْتُ أَسْقِي أَبَا عُبَيْدَةَ بْنَ الْجَرَّاحِ ، وَأَبَا طَلْحَةَ ، وَأُبَيَّ بْنَ كَعْبٍ شَرَابًا مِنْ فَضِيخٍ وَتَمْرٍ ، فَأَتَاهُمْ آتٍ ، فَقَالَ: إِنَّ الْخَمْرَ قَدْ حُرِّمَتْ ، فَقَالَ أَبُو طَلْحَةَ: يَا أَنَسُ ، قُمْ إِلَى هَذِهِ الْجَرَّةِ فَاكْسِرْهَا ، فَقُمْتُ إِلَى مِهْرَاسٍ لَنَا فَضَرَبْتُهَا بِأَسْفَلِهِ حَتَّى تَكَسَّرَتْ.

It was narrated that Anas bin Malik said: "I was pouring date wine made from dried dates for Abu 'Ubaidah bin Al-Jarrah, Abu Talhah and Ubayy bin Ka'b, when someone came to them and said: 'Khamr has been forbidden.' Abu Talhah said: 'O Anas, go to this pitcher and break it.' So I went and got a pointed stone of ours, and I struck the lower part of it, until I broke it."

حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ میں حضرت ابو عبیدہ بن جراح ، حضرت ابو طلحہ ، ارو حضرت ابی بن کعب کو فضیخ (ایک قسم کی شراب) اور چھواروں کی شراب پلا رہا تھا، اس وقت ان کے پاس ایک آنے والا آیا اور اس نے کہا: اب شراب حرام کردی گئی ہے ، حضرت ابو طلحہ نے کہا: اے انس ! اس گھڑے کو توڑ دو، میں نے پتھر کا ایک ٹکڑا اٹھایا اور اس گھڑے کو نیچے سےمارا یہاں تک کہ وہ ٹوٹ گیا۔


وَحَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ الْمُثَنَّى ، حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرٍ يَعْنِي الْحَنَفِيَّ ، حَدَّثَنَا عَبْدُ الْحَمِيدِ بْنُ جَعْفَرٍ ، حَدَّثَنِي أَبِي ، أَنَّهُ سَمِعَ أَنَسَ بْنَ مَالِكٍ ، يَقُولُ : لَقَدْ أَنْزَلَ اللَّهُ الآيَةَ الَّتِي حَرَّمَ اللَّهُ فِيهَا الْخَمْرَ ، وَمَا بِالْمَدِينَةِ شَرَابٌ يُشْرَبُ إِلاَّ مِنْ تَمْرٍ.

Anas bin Malik said: "Allah revealed the Verse in which Allah forbade Khamr, and there was no drink that was drunk in Al-Madinah except drinks made from dates."

حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں کہ اللہ تعالی نے وہ آیت نازل فرمائی جس آیت میں شراب کو حرام قرار دیا گیا تھا، اس وقت مدینہ میں کھجوروں کی شراب کے علاوہ اور کوئی شراب نہیں پی جاتی تھی۔

Chapter No: 2

باب تَحْرِيمِ تَخْلِيلِ الْخَمْرِ

The forbiddance of making vinegar from wine

خمر کو سرکہ بنانے کی ممانعت

حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ يَحْيَى ، أَخْبَرَنَا عَبْدُ الرَّحْمَنِ بْنُ مَهْدِيٍّ (ح) وحَدَّثَنَا زُهَيْرُ بْنُ حَرْبٍ ، حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّحْمَنِ ، عَنْ سُفْيَانَ ، عَنِ السُّدِّيِّ ، عَنْ يَحْيَى بْنِ عَبَّادٍ ، عَنْ أَنَسٍ ، أَنَّ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ سُئِلَ عَنِ الْخَمْرِ تُتَّخَذُ خَلًّا ، فَقَالَ : لاَ.

It was narrated from Anas that the Prophet (s.a.w) was asked about wine, should it be made into vinegar. He said: "No."

حضرت انس رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ نبی ﷺ سے شراب کو سرکہ بنانے کے بارے میں سوال کیا گیا ، تو آپﷺنے فرمایا: نہیں۔

Chapter No: 3

باب تَحْرِيمِ التَّدَاوِي بِالْخَمْرِ وبيان أنها ليست بدواء

The forbiddance of using wine as a medicine and the explanation that it is not a medicine

خمر(شراب) سے علاج کرنے کی حرمت

حدثنا محمد بن المثنى ومحمد بن بشار واللفظ لابن المثنى قال حدثنا محمد بن جعفر حدثنا شعبة عن سماك بن حرب عن علقمة بن وائل عن أبيه وائل الحضرمي أن طارق بن سويد الجعفي سأل النبي صلى الله عليه وسلم عن الخمر فنهاه أو كره أن يصنعها فقال إنما أصنعها للدواء فقال إنه ليس بدواء ولكنه داء.

It was narrated from 'Alqamah bin Wa'il, from his father Wa'il Al-Hadrami, that Tariq bin Suwaid Al-Ju'fi asked the Prophet (s.a.w) about Khamr, and he forbade him or expressed his disapproval of his making it. He said: "I only make it as a remedy." He said: "It is not a remedy, but it is a disease."

حضرت طارق بن سوید جعفی نے نبی ﷺ سے شراب کے بارے میں سوال پوچھا تو آپ ﷺ نے اس سے منع فرمایا ، یا اس کے بنانے کو ناپسند فرمایا ، حضرت طارق نے عرض کیا: میں شراب کو دوا کے لئے بناتا ہوں تو آپ ﷺ نے فرمایا: وہ دوا نہیں بلکہ بیماری ہے۔

Chapter No: 4

باب بَيَانِ أَنَّ جَمِيعَ مَا يُنْبَذُ مِمَّا يُتَّخَذُ مِنَ النَّخْلِ وَالْعِنَبِ يُسَمَّى خَمْرًا

Any wine made out of dates and grapes is called Khamr

کھجور اور انگور سے بنی ہوئی شراب کا خمر ہونا

حَدَّثَنِي زُهَيْرُ بْنُ حَرْبٍ ، حَدَّثَنَا إِسْمَاعِيلُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ ، أَخْبَرَنَا الْحَجَّاجُ بْنُ أَبِي عُثْمَانَ ، حَدَّثَنِي يَحْيَى بْنُ أَبِي كَثِيرٍ ، أَنَّ أَبَا كَثِيرٍ ، حَدَّثَهُ ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ ، قَالَ: قَالَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ: الْخَمْرُ مِنْ هَاتَيْنِ الشَّجَرَتَيْنِ: النَّخْلَةِ وَالْعِنَبَةِ.

It was narrated that Abu Hurairah said: "The Messenger of Allah (s.a.w) said: 'Khamr comes from these two trees, the date palm and the grapevine."'

حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺنے فرمایا: شراب ان دو درختوں سے بنائی جاتی ہے کھجور ، اور انگور۔


وحَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ عَبْدِ اللهِ بْنِ نُمَيْرٍ ، حَدَّثَنَا أَبِي ، حَدَّثَنَا الأَوْزَاعِيُّ ، حَدَّثَنَا أَبُو كَثِيرٍ ، قَالَ : سَمِعْتُ أَبَا هُرَيْرَةَ ، يَقُولُ : سَمِعْتُ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، يَقُولُ : الْخَمْرُ مِنْ هَاتَيْنِ الشَّجَرَتَيْنِ : النَّخْلَةِ وَالْعِنَبَةِ.

Abu Hurairah said: "I heard the Messenger of Allah (s.a.w) say: 'Khamr comes from these two trees, the date palm and the grapevine."'

حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے وہ فرماتے ہیں کہ میں نے رسول اللہﷺ کو فرماتے سنا : شراب ان دو درختوں سے بنائی جاتی ہے کھجور ، اور انگور۔


وحَدَّثَنَا زُهَيْرُ بْنُ حَرْبٍ ، وَأَبُو كُرَيْبٍ ، قَالاَ : حَدَّثَنَا وَكِيعٌ ، عَنِ الأَوْزَاعِيِّ ، وَعِكْرِمَةَ بْنِ عَمَّارٍ ، وَعُقْبَةَ بْنِ التَّوْأَمِ ، عَنْ أَبِي كَثِيرٍ ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ ، قَالَ: قَالَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:الْخَمْرُ مِنْ هَاتَيْنِ الشَّجَرَتَيْنِ: الْكَرْمَةِ وَالنَّخْلَةِ. وَفِي رِوَايَةِ أَبِي كُرَيْبٍ: الْكَرْمِ وَالنَّخْلِ.

It was narrated that Abu Hurairah said: "The Messenger of Allah (s.a.w) said: 'Khamr comes from these two trees, the grapevine and the date palm."'

حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺنے فرمایا: شراب ان دو درختوں سے بنائی جاتی ہے انگور اور کھجور۔

Chapter No: 5

باب كَرَاهَةِ انْتِبَاذِ التَّمْرِ وَالزَّبِيبِ مَخْلُوطَيْنِ

The disapproval of making Nabidh by mixing dried dates and raisins

چھواروں اور کشمش کو ملاکرنبیذ بنانے کا حکم

حَدَّثَنَا شَيْبَانُ بْنُ فَرُّوخَ ، حَدَّثَنَا جَرِيرُ بْنُ حَازِمٍ ، سَمِعْتُ عَطَاءَ بْنَ أَبِي رَبَاحٍ ، حَدَّثَنَا جَابِرُ بْنُ عَبْدِ اللهِ الأَنْصَارِيُّ ، أَنَّ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ نَهَى أَنْ يُخْلَطَ الزَّبِيبُ وَالتَّمْرُ ، وَالْبُسْرُ وَالتَّمْرُ.

Jabir bin 'Abdullah Al-Ansari narrated that the Prophet (s.a.w) forbade mixing raisins and dried dates, and unripe dates and dried dates.

حضرت جابر بن عبد اللہ انصاری رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ نبی ﷺنے کشمش اور چھواروں ، اورکچی کھجوروں اور چھواروں کو ملاکر نبیذ بنانے سے منع فرمایا ہے ۔


حَدَّثَنَا قُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ ، حَدَّثَنَا لَيْثٌ ، عَنْ عَطَاءِ بْنِ أَبِي رَبَاحٍ ، عَنْ جَابِرِ بْنِ عَبْدِ اللهِ الأَنْصَارِيِّ ، عَنْ رَسُولِ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، أَنَّهُ نَهَى أَنْ يُنْبَذَ التَّمْرُ وَالزَّبِيبُ جَمِيعًا ، وَنَهَى أَنْ يُنْبَذَ الرُّطَبُ وَالْبُسْرُ جَمِيعًا.

It was narrated from Jabir bin 'Abdullah Al-Anssri that the Messenger of Allah (s.a.w) forbade making Nabidh with dried dates and raisins together, and he forbade making Nabidh with fresh dates and unripe dates together.

حضرت جابر بن عبد اللہ انصاری رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺنے چھواروں اور کشمش کو ملاکر نبیذ بنانے سے منع فرمایا ہے ، اور پکی اور کچی کھجوروں کو ملاکر نبیذ بنانے سے منع فرمایا ہے۔


وحَدَّثَنِي مُحَمَّدُ بْنُ حَاتِمٍ ، حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ سَعِيدٍ ، عَنِ ابْنِ جُرَيْجٍ (ح) وحَدَّثَنَا إِسْحَاقُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ ، وَمُحَمَّدُ بْنُ رَافِعٍ ، وَاللَّفْظُ لاِبْنِ رَافِعٍ ، قَالاَ: حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّزَّاقِ ، أَخْبَرَنَا ابْنُ جُرَيْجٍ ، قَالَ: قَالَ لِي عَطَاءٌ: سَمِعْتُ جَابِرَ بْنَ عَبْدِ اللهِ ، يَقُولُ: قَالَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ: لاَ تَجْمَعُوا بَيْنَ الرُّطَبِ وَالْبُسْرِ ، وَبَيْنَ الزَّبِيبِ وَالتَّمْرِ نَبِيذًا.

Jabir bin 'Abdullah said: "The Messenger of Allah (s.a.w) said: "Do not mix fresh dates and unripe dates, or raisins and dried dates when making Nabidh."

حضرت جابر بن عبد اللہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺنے فرمایا: پکی کھجور اور کچی کھجور کو ملاکر اور کشمش اور چھواروں کو ملاکر نبیذ مت بناؤ۔


وحَدَّثَنَا قُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ ، حَدَّثَنَا لَيْثٌ (ح) وحَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ رُمْحٍ ، أَخْبَرَنَا اللَّيْثُ ، عَنْ أَبِي الزُّبَيْرِ الْمَكِّيِّ ، مَوْلَى حَكِيمِ بْنِ حِزَامٍ ، عَنْ جَابِرِ بْنِ عَبْدِ اللهِ الأَنْصَارِيِّ ، عَنْ رَسُولِ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، أَنَّهُ نَهَى أَنْ يُنْبَذَ الزَّبِيبُ وَالتَّمْرُ جَمِيعًا ، وَنَهَى أَنْ يُنْبَذَ الْبُسْرُ وَالرُّطَبُ جَمِيعًا.

It was narrated from Jabir bin 'Abdullah Al-Ansari that the Messenger of Allah (s.a.w) forbade making Nabidh with raisins and dried dates together, and he forbade making Nabidh with unripe dates and fresh dates together.

حضرت جابر بن عبد اللہ انصاری رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺنے کشمش اور چھواروں کو ملاکر نبیذ بنانے سے منع فرمایا ہے اور کچی کھجور اور پکی کھجور کو ملاکر نبیذ بنانے سے منع فرمایا ہے۔


حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ يَحْيَى ، أَخْبَرَنَا يَزِيدُ بْنُ زُرَيْعٍ ، عَنِ التَّيْمِيِّ ، عَنْ أَبِي نَضْرَةَ ، عَنْ أَبِي سَعِيدٍ ، أَنَّ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ نَهَى عَنِ التَّمْرِ وَالزَّبِيبِ أَنْ يُخْلَطَ بَيْنَهُمَا، وَعَنِ التَّمْرِ وَالْبُسْرِ أَنْ يُخْلَطَ بَيْنَهُمَا.

It was narrated from Abu Sa'eed that the Prophet (s.a.w) forbade mixing dried dates and raisins, and mixing dried dates and unripe dates.

حضرت ابو سعید خدری رضی اللہ سے روایت ہے کہ نبی ﷺنے چھواروں اور کشمش کو ملانے سے منع فرمایا ہے اور چھواروں اور کچی کھجوروں کو ملانے سے منع فرمایا ہے۔


حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ أَيُّوبَ ، حَدَّثَنَا ابْنُ عُلَيَّةَ ، حَدَّثَنَا سَعِيدُ بْنُ يَزِيدَ أَبُو مَسْلَمَةَ ، عَنْ أَبِي نَضْرَةَ ، عَنْ أَبِي سَعِيدٍ ، قَالَ: نَهَانَا رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ أَنْ نَخْلِطَ بَيْنَ الزَّبِيبِ وَالتَّمْرِ ، وَأَنْ نَخْلِطَ الْبُسْرَ وَالتَّمْرَ.

It was narrated that Abu Sa'eed said: "The Messenger of Allah (s.a.w) forbade us to mix raisins and dried dates, and to mix unripe dates and dried dates."

حضرت ابو سعید خدری رضی اللہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺنے ہمیں کشمش اور چھواروں کے ملانے سے اور کچی کھجوروں اور چھواروں کو ملانے سے منع فرما دیا ہے۔


وحَدَّثَنَا نَصْرُ بْنُ عَلِيٍّ الْجَهْضَمِيُّ ، حَدَّثَنَا بِشْرٌ ، يَعْنِي ابْنَ مُفَضَّلٍ ، عَنْ أَبِي مَسْلَمَةَ ، بِهَذَا الإِسْنَادِ مِثْلَهُ.

A similar report (as no. 5150) was narrated from Maslamah with this chain of narrators.

ایک اور سند سے بھی اسی طرح مروی ہے۔


وحَدَّثَنَا قُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ ، حَدَّثَنَا وَكِيعٌ ، عَنْ إِسْمَاعِيلَ بْنِ مُسْلِمٍ الْعَبْدِيِّ ، عَنْ أَبِي الْمُتَوَكِّلِ النَّاجِيِّ ، عَنْ أَبِي سَعِيدٍ الْخُدْرِيِّ ، قَالَ: قَالَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ: مَنْ شَرِبَ النَّبِيذَ مِنْكُمْ فَلْيَشْرَبْهُ زَبِيبًا فَرْدًا ، أَوْ تَمْرًا فَرْدًا ، أَوْ بُسْرًا فَرْدًا.

It was narrated that Abu Sa'eed Al-Khudri said: "The Messenger of Allah (s.a.w) said: 'Whoever among you drinks Nabidh, let him drink it made from raisins on their own, or dried dates on their own, or unripe dates on their own.'"

حضرت ابو سعید خدری رضی اللہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺنے فرمایا: جو آدمی تم میں سے نبیذ پیئے وہ صرف کشمش کا پیئے یا صرف چھواروں کا پیئے یا صرف کچی کھجور کا پیئے ۔


وحَدَّثَنِيهِ أَبُو بَكْرِ بْنُ إِسْحَاقَ ، حَدَّثَنَا رَوْحُ بْنُ عُبَادَةَ ، حَدَّثَنَا إِسْمَاعِيلُ بْنُ مُسْلِمٍ الْعَبْدِيُّ ، بِهَذَا الإِسْنَادِ ، قَالَ: نَهَانَا رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ أَنْ نَخْلِطَ بُسْرًا بِتَمْرٍ ، أَوْ زَبِيبًا بِتَمْرٍ ، أَوْ زَبِيبًا بِبُسْرٍ ، وَقَالَ: مَنْ شَرِبَهُ مِنْكُمْ ، فَذَكَرَ بِمِثْلِ حَدِيثِ وَكِيعٍ.

Isma'il bin Muslim Al-'Abdi narrated with this chain narrators: "The Messenger of Allah (s.a.w) forbade us to mix unripe dates with dried dates, or raisins with dried dates, or raisins with unripe dates." He (s.a.w) said: "Whoever among you drinks it" ...and he mentioned a Hadith like that of Waki' (no. 5152).

حضرت ابو سعید خدری رضی اللہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺنے ہمیں کچی کھجورں کو چھواروں کے ساتھ ملانے سے ، یا کشمش کو چھواروں یا کشمش کو کچی کھجوروں کے ساتھ ملانے سے منع فرما دیا ہے، اور فرمایا: تم میں سے جو نبیذ پیئے ۔۔۔ اس کے بعد مذکورہ بالا حدیث کی طرح ہے۔


حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ أَيُّوبَ ، حَدَّثَنَا ابْنُ عُلَيَّةَ ، أَخْبَرَنَا هِشَامٌ الدَّسْتُوَائِيُّ ، عَنْ يَحْيَى بْنِ أَبِي كَثِيرٍ ، عَنْ عَبْدِ اللهِ بْنِ أَبِي قَتَادَةَ ، عَنْ أَبِيهِ ، قَالَ: قَالَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ: لاَ تَنْتَبِذُوا الزَّهْوَ وَالرُّطَبَ جَمِيعًا ، وَلاَ تَنْتَبِذُوا الزَّبِيبَ وَالتَّمْرَ جَمِيعًا ، وَانْتَبِذُوا كُلَّ وَاحِدٍ مِنْهُمَا عَلَى حِدَتِهِ.

It was narrated from 'Abdullah bin Abi Qatadah that his father said: "The Messenger of Allah (s.a.w) said: 'Do not make Nabidh with Az- Zahw and fresh dates together, and do not make Nabidh with raisins and dried dates together. Steep each one of them on its own."

حضرت ابو قتادہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺنے فرمایا: گدری کھجوروں اور پکی کھجوروں کو ملاکر نبیذ نہ بناؤ اور کشمش اور چھواروں کو ملاکر نبیذ مت بناؤ اور ہر جنس کا الگ الگ نبیذ بناؤ۔


وحَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ ، حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ بِشْرٍ الْعَبْدِيُّ ، عَنْ حَجَّاجِ بْنِ أَبِي عُثْمَانَ ، عَنْ يَحْيَى بْنِ أَبِي كَثِيرٍ ، بِهَذَا الإِسْنَادِ مِثْلَهُ.

A similar report (as no. 5154) was narrated from Yahya bin Abi Kathir with this chain of narrators.

ایک اور سند سے بھی حسب سابق مروی ہے۔


حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ الْمُثَنَّى ، حَدَّثَنَا عُثْمَانُ بْنُ عُمَرَ ، أَخْبَرَنَا عَلِيٌّ ، وَهُوَ ابْنُ الْمُبَارَكِ ، عَنْ يَحْيَى ، عَنْ أَبِي سَلَمَةَ ، عَنْ أِبِي قَتَادَةَ ، أَنَّ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ: لاَ تَنْتَبِذُوا الزَّهْوَ وَالرُّطَبَ جَمِيعًا ، وَلاَ تَنْتَبِذُوا الرُّطَبَ وَالزَّبِيبَ جَمِيعًا ، وَلَكِنِ انْتَبِذُوا كُلَّ وَاحِدٍ عَلَى حِدَتِهِ. وَزَعَمَ يَحْيَى ، أَنَّهُ لَقِيَ عَبْدَ اللهِ بْنَ أَبِي قَتَادَةَ ، فَحَدَّثَهُ عَنْ أَبِيهِ ، عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ بِمِثْلِ هَذَا.

It was narrated from Abu Qatadah that the Messenger of Allah (s.a.w) said: "Do not make Nabidh with unripe dates and ripe dates together, and do not make Nabidh with fresh dates and raisins together, rather steep each one on its own." Yahya said that he met 'Abdullah bin Abi Qatadah and he narrated a similar report to him from his father, from the Prophet (s.a.w).

حضرت ابو قتادہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺنے فرمایا: گدری کھجور اور پکی کھجور کو ملاکر نبیذ مت بناؤ، اور نہ ہی پکی کھجور اور کشمش کو ملاکر نبیذ بناؤ بلکہ علیٰحدہ علیٰحدہ ہر جنس کا نبیذ بناؤ۔ یحییٰ کہتے ہیں کہ ان کی ملاقات عبد اللہ بن ابی قتادہ سے ہوئی وہ اپنے والد سے اور وہ نبی ﷺسے اسی طرح روایت بیان کرتے ہیں۔


وحَدَّثَنِيهِ أَبُو بَكْرِ بْنُ إِسْحَاقَ ، حَدَّثَنَا رَوْحُ بْنُ عُبَادَةَ ، حَدَّثَنَا حُسَيْنٌ الْمُعَلِّمُ ، حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ أَبِي كَثِيرٍ ، بِهَذَيْنِ الإِسْنَادَيْنِ غَيْرَ أَنَّهُ ، قَالَ: الرُّطَبَ وَالزَّهْوَ ، وَالتَّمْرَ وَالزَّبِيبَ.

Yahya bin Abi Kathir narrated it with these two chain of narrators, except that he said: "Fresh dates and Az-Zahw, and dried dates and raisins."

ایک اور سند سے بھی اسی طرح مروی ہے البتہ اس میں پکی کھجور ، اور گدری کھجور ، اور خشک کھجور اور کشمش کا ذکر ہے۔


وحَدَّثَنِي أَبُو بَكْرِ بْنُ إِسْحَاقَ ، حَدَّثَنَا عَفَّانُ بْنُ مُسْلِمٍ ، حَدَّثَنَا أَبَانُ الْعَطَّارُ ، حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ أَبِي كَثِيرٍ ، حَدَّثَنِي عَبْدُ اللهِ بْنُ أَبِي قَتَادَةَ ، عَنْ أَبِيهِ ، أَنَّ نَبِيَّ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ نَهَى عَنْ خَلِيطِ التَّمْرِ وَالْبُسْرِ ، وَعَنْ خَلِيطِ الزَّبِيبِ وَالتَّمْرِ ، وَعَنْ خَلِيطِ الزَّهْوِ وَالرُّطَبِ ، وَقَالَ: انْتَبِذُوا كُلَّ وَاحِدٍ عَلَى حِدَتِهِ.

'Abdullah bin Abi Qatadah narrated from his father that the Prophet of Allah (s.a.w) forbade mixing dried dates and unripe dates, and mixing raisins and dried dates, and mixing Az-Zahw and fresh dates, and he said: "Steep each one on its own."

حضرت ابو قتادرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ نبی ﷺنے چھواروں اور کچی کھجوروں ، اور کشمش اور خشک کھجوروں ، اور گدری کھجور اور پکی کھجور کو ملانے سے منع کیا ہے ، اور فرمایا: ہر جنس کا علیٰحدہ علیٰحدہ نبیذ بناؤ۔


وحَدَّثَنِي أَبُو سَلَمَةَ بْنُ عَبْدِ الرَّحْمَنِ ، عَنْ أَبِي قَتَادَةَ ، عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ بِمِثْلِ هَذَا الْحَدِيثِ.

A similar Hadith (as no. 5158) was narrated from Abu Qatadah, from the Prophet (s.a.w).

ایک اور سند سے بھی اسی طرح مروی ہے۔


حَدَّثَنَا زُهَيْرُ بْنُ حَرْبٍ ، وَأَبُو كُرَيْبٍ ، وَاللَّفْظُ لِزُهَيْرٍ ، قَالاَ: حَدَّثَنَا وَكِيعٌ ، عَنْ عِكْرِمَةَ بْنِ عَمَّارٍ ، عَنْ أَبِي كَثِيرٍ الْحَنَفِيِّ ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ ، قَالَ: نَهَى رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنِ الزَّبِيبِ وَالتَّمْرِ ، وَالْبُسْرِ وَالتَّمْرِ ، وَقَالَ: يُنْبَذُ كُلُّ وَاحِدٍ مِنْهُمَا عَلَى حِدَتِهِ.

It was narrated that Abu Hurairah said: "The Messenger of Allah (s.a.w) forbade raisins and dried dates, and unripe dates and dried dates, and he said: 'Each of them should be steeped on its own."'

حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺنے کشمش اور خشک کھجور اور کچی کھجور اور خشک کھجور کو (ملانے سے) منع کیا ہے اور فرمایا: ہر ایک کا علیٰحدہ علیٰحدہ طور پر نبیذ بنایا جائے۔


وحَدَّثَنِيهِ زُهَيْرُ بْنُ حَرْبٍ ، حَدَّثَنَا هَاشِمُ بْنُ الْقَاسِمِ ، حَدَّثَنَا عِكْرِمَةُ بْنُ عَمَّارٍ ، حَدَّثَنَا يَزِيدُ بْنُ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ أُذَيْنَةَ وَهُوَ أَبُو كَثِيرٍ الْغُبَرِيُّ ، حَدَّثَنِي أَبُو هُرَيْرَةَ ، قَالَ: قَالَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ: بِمِثْلِهِ.

Abu Hurairah said: "The Messenger of Allah (s.a.w) said..." a similar report (as no. 5160).

حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے ایک اور سند سے نبی ﷺسے اسی طرح مروی ہے۔


وحَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ ، حَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ مُسْهِرٍ ، عَنِ الشَّيْبَانِيِّ ، عَنْ حَبِيبٍ ، عَنْ سَعِيدِ بْنِ جُبَيْرٍ ، عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ ، قَالَ : نَهَى النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ أَنْ يُخْلَطَ التَّمْرُ وَالزَّبِيبُ جَمِيعًا ، وَأَنْ يُخْلَطَ الْبُسْرُ وَالتَّمْرُ جَمِيعًا ، وَكَتَبَ إِلَى أَهْلِ جُرَشَ يَنْهَاهُمْ عَنْ خَلِيطِ التَّمْرِ وَالزَّبِيبِ.

It was narrated that Ibn 'Abbas said: "The Prophet (s.a.w) forbade mixing dried dates and raisins together, or mixing unripe dates and dried dates together, and he wrote to the people of Jurash forbidding them to mix dried dates and raisins."

حضرت ابن عباس رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺنے چھواروں اور کشمش کو ملانے سے منع فرمایا ہے ۔اور کچی کھجور اور خشک کھجور کو ملانے سے منع فرمایا ہے، اور آپﷺنے اہل جرش کی طرح لکھا اور ان کو چھواروں اور کشمش کو ملاکر (نبیذ) بنانے سے منع کیا ہے۔


وحَدَّثَنِيهِ وَهْبُ بْنُ بَقِيَّةَ ، أَخْبَرَنَا خَالِدٌ يَعْنِي الطَّحَّانَ ، عَنْ الشَّيْبَانِيِّ ، بِهَذَا الإِسْنَادِ فِي التَّمْرِ وَالزَّبِيبِ ، وَلَمْ يَذْكُرِ الْبُسْرَ وَالتَّمْرَ.

It was narrated from Ash-Shaibani with this chain of narrators concerning dried dates and raisins (a similar report as no. 5162), but he did not mention unripe dates and dried dates.

چھواروں اور کشمش کے بارے میں ایک اور روایت حسب سابق ہے لیکن اس میں کچی کھجور اور چھواروں کا ذکر نہیں ہے۔


حَدَّثَنِي مُحَمَّدُ بْنُ رَافِعٍ ، حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّزَّاقِ ، أَخْبَرَنَا ابْنُ جُرَيْجٍ ، أَخْبَرَنِي مُوسَى بْنُ عُقْبَةَ ، عَنْ نَافِعٍ ، عَنِ ابْنِ عُمَرَ ، أَنَّهُ كَانَ يَقُولُ: قَدْ نُهِيَ أَنْ يُنْبَذَ الْبُسْرُ وَالرُّطَبُ جَمِيعًا ، وَالتَّمْرُ وَالزَّبِيبُ جَمِيعًا.

It was narrated from Ibn 'Umar that he used to say: "It was forbidden to make Nabidh with unripe dates and fresh dates together, or dried dates and raisins together."

حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے وہ فرماتے ہیں کہ کچی کھجور اور پکی کھجور کو اور خشک کھجور اور کشمش کو ملاکر نبیذ بنانے سے منع کیا گیا۔


وحَدَّثَنِي أَبُو بَكْرِ بْنُ إِسْحَاقَ ، حَدَّثَنَا رَوْحٌ ، حَدَّثَنَا ابْنُ جُرَيْجٍ ، أَخْبَرَنِي مُوسَى بْنُ عُقْبَةَ ، عَنْ نَافِعٍ ، عَنِ ابْنِ عُمَرَ ، أَنَّهُ قَالَ: قَدْ نُهِيَ أَنْ يُنْبَذَ الْبُسْرُ وَالرُّطَبُ جَمِيعًا ، وَالتَّمْرُ وَالزَّبِيبُ جَمِيعًا.

It was narrated that Ibn 'Umar said: "It was forbidden to make Nabidh with unripe dates and fresh dates together, or dried dates and raisins together."

حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے وہ فرماتے ہیں کہ کچی کھجور اور پکی کھجور کو اور خشک کھجور اور کشمش کو ملاکر نبیذ بنانے سے منع کیا گیا۔

Chapter No: 6

باب النَّهْيِ عَنْ الاِنْتِبَاذِ فِي الْمُزَفَّتِ وَالدُّبَّاءِ وَالْحَنْتَمِ وَالنَّقِيرِ وَبَيَانِ أَنَّهُ مَنْسُوخٌ وَأَنَّهُ الْيَوْمَ حَلاَلٌ مَا لَمْ يَصِرْ مُسْكِرًا

Concerning, the forbiddance of making Nabidh in Al-Muzaffat (varnished jar), Ad-Dubba (gourds), Al-Hantam (earthenware jar) and Al-Naqeer (hollow stumps), and the explanation that this has been abrogated, and now it is permitted as long as it does not become intoxicating

روغن قیر اور کھوکھلے کدو کے برتنوں ، سبز گھڑوں اور کھوکھلی لکڑی کے برتنوں میں نبیذ بنانے کی ممانعت اور اس کے منسوخ ہونے کا بیان

حَدَّثَنَا قُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ ، حَدَّثَنَا لَيْثٌ ، عَنِ ابْنِ شِهَابٍ ، عَنْ أَنَسِ بْنِ مَالِكٍ ، أَنَّهُ أَخْبَرَهُ ، أَنَّ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ نَهَى عَنِ الدُّبَّاءِ وَالْمُزَفَّتِ أَنْ يُنْبَذَ فِيهِ.

It was narrated from Anas bin Malik that the Messenger of Allah (s.a.w) forbade making Nabidh in gourds and Al-Muzaffat.

حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺنے کھوکھلے کدو، اور روغن قیر ملے ہوئے برتن میں نبیذ بنانے سے منع فرمایا ہے۔


وحَدَّثَنِي عَمْرٌو النَّاقِدُ ، حَدَّثَنَا سُفْيَانُ بْنُ عُيَيْنَةَ ، عَنِ الزُّهْرِيِّ ، عَنْ أَنَسِ بْنِ مَالِكٍ ، أَنَّ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ نَهَى عَنِ الدُّبَّاءِ وَالْمُزَفَّتِ أَنْ يُنْتَبَذَ فِيهِ.

It was narrated from Anas bin Malik that the Messenger of Allah (s.a.w) forbade making Nabidh in gourds and Al-Muzaffat.

حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺنے کھوکھلے کدو، اور روغن قیر ملے ہوئے برتن میں نبیذ بنانے سے منع فرمایا ہے۔


قَالَ: وَأَخْبَرَهُ أَبُو سَلَمَةَ ، أَنَّهُ سَمِعَ أَبَا هُرَيْرَةَ ، يَقُولُ: قَالَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ: لاَ تَنْتَبِذُوا فِي الدُّبَّاءِ ، وَلاَ فِي الْمُزَفَّتِ. ثُمَّ يَقُولُ أَبُو هُرَيْرَةَ : وَاجْتَنِبُوا الْحَنَاتِمَ.

Abu Hurairah said: "The Messenger of Allah (s.a.w) said: 'Do not make Nabidh in gourds or Al-Muzaffat."' Then Abu Hurairah said: "And avoid Al-Hantam."

حضرت ابو سلمہ رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺنے فرمایا: کھوکھلے کدو میں نبیذ مت بناؤ، اور نہ روغن قیر ملے ہوئے برتن میں نبیذ بناؤ، پھر حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ کہتے تھے کہ سبز گھڑوں سے پرہیز کرو۔


حَدَّثَنِي مُحَمَّدُ بْنُ حَاتِمٍ ، حَدَّثَنَا بَهْزٌ ، حَدَّثَنَا وُهَيْبٌ ، عَنْ سُهَيْلٍ ، عَنْ أَبِيهِ ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ ، عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، أَنَّهُ نَهَى عَنِ الْمُزَفَّتِ وَالْحَنْتَمِ وَالنَّقِيرِ. قَالَ: قِيلَ لأَبِي هُرَيْرَةَ: مَا الْحَنْتَمُ ؟ قَالَ: الْجِرَارُ الْخُضْرُ.

It was narrated from Wuhaib, from Suhail, from his father, from Abu Hurairah that the Prophet (s.a.w) forbade Al-Muzaffat, Al-Hantam and An-Naqir. He said: "It was said to Abu Hurairah: 'What is Al-Hantam?' He said: 'The green earthenware jars."'

حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ نبیﷺنے روغن قیر ملے ہوئے برتن ، سبز گھڑے اور کھوکھلی لکڑی کے برتن سے منع فرمایا ، حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے سوال کیا گیا کہ حنتم کیا ہے ؟ انہوں نے کہا: سبز گھڑے۔


حَدَّثَنَا نَصْرُ بْنُ عَلِيٍّ الْجَهْضَمِيُّ ، أَخْبَرَنَا نُوحُ بْنُ قَيْسٍ ، حَدَّثَنَا ابْنُ عَوْنٍ ، عَنْ مُحَمَّدٍ ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ ، أَنَّ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ لِوَفْدِ عَبْدِ الْقَيْسِ: أَنْهَاكُمْ عَنِ الدُّبَّاءِ وَالْحَنْتَمِ وَالنَّقِيرِ وَالْمُقَيَّرِ وَالْحَنْتَمُ وَالْمَزَادَةُ الْمَجْبُوبَةُ، وَلَكِنِ اشْرَبْ فِي سِقَائِكَ وَأَوْكِهِ.

It was narrated from Abu Hurairah that the Prophet (s.a.w) said to the delegation of 'Abdul-Qais: "I forbid you to use gourds, Al-Hantam, An-Naqir and Al-Muqayyar - Al-Hantam are skins cut at the top - but drink from your water-skins, and keep them tied up."

حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ نبیﷺنے عبد القیس کے وفد سے فرمایا: میں تم کو کھوکھلے کدو کے برتن ، اور سبز گھڑے، کھوکھلی لکڑی کے برتن، روغن ملے ہوئے برتن،اور منہ کٹے ہوئے مشکیزے سے منع کرتا ہوں ،اور تم صرف اپنے مشکیزوں میں پیا کرو اور ان کا منہ باندھ دیا کرو۔


حَدَّثَنَا سَعِيدُ بْنُ عَمْرٍو الأَشْعَثِيُّ ، أَخْبَرَنَا عَبْثَرٌ (ح) وحَدَّثَنِي زُهَيْرُ بْنُ حَرْبٍ ، حَدَّثَنَا جَرِيرٌ (ح) وحَدَّثَنِي بِشْرُ بْنُ خَالِدٍ ، أَخْبَرَنَا مُحَمَّدٌ ، يَعْنِي ابْنَ جَعْفَرٍ ، عَنْ شُعْبَةَ ، كُلُّهُمْ عَنِ الأَعْمَشِ ، عَنْ إِبْرَاهِيمَ التَّيْمِيِّ ، عَنِ الْحَارِثِ بْنِ سُوَيْدٍ ، عَنْ عَلِيٍّ ، قَالَ : نَهَى رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ أَنْ يُنْتَبَذَ فِي الدُّبَّاءِ وَالْمُزَفَّتِ. هَذَا حَدِيثُ جَرِيرٍ. وَفِي حَدِيثِ عَبْثَرٍ ، وَشُعْبَةَ ، أَنَّ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ نَهَى عَنِ الدُّبَّاءِ وَالْمُزَفَّتِ.

It was narrated that 'Ali said: "The Messenger of Allah (s.a.w) forbade making Nabidh in gourds and Al-Muzaffat." This is the Hadith of Jarir. According to the Hadith of 'Abthar and Shu'bah, the Prophet (s.a.w) forbade gourds and Al-Muzaffat.

حضرت علی رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺنے کھوکھلے کدو اور روغن کیے ہوئے برتن میں نبیذ بنانے سے منع کیا ، اور شعبہ کی روایت میں ہے کہ نبیﷺنے کھوکھلے کدو او ر روغن ملے ہوئے برتن سے منع فرمایا ہے۔


وحَدَّثَنَا زُهَيْرُ بْنُ حَرْبٍ ، وَإِسْحَاقُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ ، كِلاَهُمَا عَنْ جَرِيرٍ ، قَالَ زُهَيْرٌ: حَدَّثَنَا جَرِيرٌ ، عَنْ مَنْصُورٍ ، عَنْ إِبْرَاهِيمَ ، قَالَ: قُلْتُ لِلأَسْوَدِ: هَلْ سَأَلْتَ أُمَّ الْمُؤْمِنِينَ عَمَّا يُكْرَهُ أَنْ يُنْتَبَذَ فِيهِ ؟ قَالَ: نَعَمْ ، قُلْتُ: يَا أُمَّ الْمُؤْمِنِينَ ، أَخْبِرِينِي عَمَّا نَهَى عَنْهُ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ أَنْ يُنْتَبَذَ فِيهِ ، قَالَتْ: نَهَانَا أَهْلَ الْبَيْتِ أَنْ نَنْتَبِذَ فِي الدُّبَّاءِ ، وَالْمُزَفَّتِ. قَالَ: قُلْتُ لَهُ: أَمَا ذَكَرَتِ الْحَنْتَمَ وَالْجَرَّ ؟ قَالَ: إِنَّمَا أُحَدِّثُكَ بِمَا سَمِعْتُ ، أَأُحَدِّثُكَ مَا لَمْ أَسْمَعْ ؟.

It was narrated that Ibrahim said: "I said to Al-Aswad: 'Did you ask the Mother of the Believers about what it is Makruh (undesirable, disliked) to make Nabidh in?' He said: 'Yes. I said: "O Mother of the Believers, tell me what the Messenger of Allah (s.a.w) forbade making Nabidh in." She said: "He forbade us, the members of his household, to make Nabidh in gourds and Al-Muzaffat." He said: "I said to him: 'Did she not mention Al-Hantam and earthenware jars?' He said: 'I only tell you what I heard. Do you want me to tell you what I did not hear?"'

ابراہیم کہتے ہیں کہ میں نے اسود سے کہا: کیا تم نے ام المؤمنین سے پوچھا تھا کہ کن برتنوں میں نبیذ بنانا مکروہ ہے ؟ انہوں نے کہا: ہاں ! میں نے عرض کیا : اے ام المؤمنین ! مجھے بتائیے کہ رسول اللہ ﷺنے کن برتنوں میں نبیذ بنانے سے منع فرمایا ہے ؟ حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا نے فرمایا: آپ نے اہل بیت کو کھوکھلے کدو اور روغن کیے ہوئے برتن میں نبیذ بنانے سے منع فرمایا ، میں نے پوچھا : کیا آپ نے حنتم اور گھڑے کا ذکر نہیں کیا تھا ؟ راوی نے کہا: میں تم کو وہی حدیث بیان کرتا ہوں جو میں نے سنی ہے، کیا میں وہ بات بیان کروں جو میں نے نہیں سنی؟


وحَدَّثَنَا سَعِيدُ بْنُ عَمْرٍو الأَشْعَثِيُّ ، أَخْبَرَنَا عَبْثَرٌ ، عَنِ الأَعْمَشِ ، عَنْ إِبْرَاهِيمَ ، عَنِ الأَسْوَدِ ، عَنْ عَائِشَةَ ، أَنَّ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ نَهَى عَنِ الدُّبَّاءِ وَالْمُزَفَّتِ.

It was narrated from 'Aishah that the Prophet (s.a.w) forbade gourds and Al-Muzaffat.

حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺنے کھوکھلے کدو ، اور روغن کیے ہوئے برتن سے منع فرمایا ہے۔


وحَدَّثَنِي مُحَمَّدُ بْنُ حَاتِمٍ ، حَدَّثَنَا يَحْيَى وَهُوَ الْقَطَّانُ ، حَدَّثَنَا سُفْيَانُ ، وَشُعْبَةُ ، قَالاَ: حَدَّثَنَا مَنْصُورٌ ، وَسُلَيْمَانُ ، وَحَمَّادٌ ، عَنْ إِبْرَاهِيمَ، عَنِ الأَسْوَدِ ، عَنْ عَائِشَةَ ، عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، بِمِثْلِهِ.

A similar report (as no. 5173) was narrated from 'Aishah, from the Prophet (s.a.w).

حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا نے نبی ﷺسے مذکورہ بالا حدیث کی طرح مروی ہے۔


حَدَّثَنَا شَيْبَانُ بْنُ فَرُّوخَ ، حَدَّثَنَا الْقَاسِمُ ، يَعْنِي ابْنَ الْفَضْلِ ، حَدَّثَنَا ثُمَامَةُ بْنُ حَزْنٍ الْقُشَيْرِيُّ ، قَالَ: لَقِيتُ عَائِشَةَ ، فَسَأَلْتُهَا عَنِ النَّبِيذِ ، فَحَدَّثَتْنِي أَنَّ وَفْدَ عَبْدِ الْقَيْسِ قَدِمُوا عَلَى النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، فَسَأَلُوا النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنِ النَّبِيذِ ، فَنَهَاهُمْ أَنْ يَنْتَبِذُوا فِي الدُّبَّاءِ وَالنَّقِيرِ وَالْمُزَفَّتِ وَالْحَنْتَمِ.

Thumamah bin Hazn Al-Qushairi said: "I met 'Aishah and asked her about Nabidh. She told me that the delegation of 'Abdul-Qais came to the Prophet (s.a.w) and they asked the Prophet (s.a.w) about Nabidh. He forbade them to make Nabidh in gourds, An-Naqir, Al-Muzaffat and Al-Hantam."

ثمامہ بن حزن قشیری بیان کرتے ہیں کہ میری حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا سے ملا ، میں نے نبیذ کے بارے میں سوال کیا ، تو انہوں نے بیان کیا کہ عبد القیس کا وفد نبی ﷺکے پاس آیا اور انہوں نے نبی ﷺسے نبیذ کے بارے میں سوال کیا ، آپﷺنے ان کو کھوکھلے کدو، اور کھوکھلی لکڑی ، روغن ملے ہوئے برتن اور سبز گھڑے میں نبیذ بنانے سے منع فرمایا ہے۔


وحَدَّثَنَا يَعْقُوبُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ ، حَدَّثَنَا ابْنُ عُلَيَّةَ ، حَدَّثَنَا إِسْحَاقُ بْنُ سُوَيْدٍ ، عَنْ مُعَاذَةَ ، عَنْ عَائِشَةَ ، قَالَتْ : نَهَى رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنِ الدُّبَّاءِ وَالْحَنْتَمِ وَالنَّقِيرِ وَالْمُزَفَّتِ.

It was narrated that 'Aishah said: "The Messenger of Allah (s.a.w) forbade gourds, Al-Hantam, An-Naqir and Al-Muzaffat."

حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺنے کھوکھلے کدو، سبز گھڑے ، کھوکھلی لکڑی ، اور روغن قیر کیے ہوئے برتن کے استعمال سے منع کیا ہے ۔


وَحَدَّثَنَاهُ إِسْحَاقُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ ، أَخْبَرَنَا عَبْدُ الْوَهَّابِ الثَّقَفِيُّ ، حَدَّثَنَا إِسْحَاقُ بْنُ سُوَيْدٍ ، بِهَذَا الإِسْنَادِ إِلاَّ أَنَّهُ جَعَلَ مَكَانَ الْمُزَفَّتِ: الْمُقَيَّرَ.

Ishaq bin Suwaid narrated it with this chain of narrators, except that instead of Al-Muzaffat he said: ''Al-Muqayyar."

ایک اور سند سے بھی اسی طرح مروی ہے لیکن اس میں مزفت کی جگہ مقیر کا لفظ ہے۔


حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ يَحْيَى ، أَخْبَرَنَا عَبَّادُ بْنُ عَبَّادٍ ، عَنْ أَبِي جَمْرَةَ ، عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ (ح) وحَدَّثَنَا خَلَفُ بْنُ هِشَامٍ ، حَدَّثَنَا حَمَّادُ بْنُ زَيْدٍ ، عَنْ أَبِي جَمْرَةَ ، قَالَ: سَمِعْتُ ابْنَ عَبَّاسٍ ، يَقُولُ: قَدِمَ وَفْدُ عَبْدِ الْقَيْسِ عَلَى رَسُولِ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، فَقَالَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ: أَنْهَاكُمْ عَنِ الدُّبَّاءِ وَالْحَنْتَمِ وَالنَّقِيرِ وَالْمُقَيَّرِ. وَفِي حَدِيثِ حَمَّادٍ: جَعَلَ مَكَانَ الْمُقَيَّرِ الْمُزَفَّتِ.

It was narrated that Abu Jamrah said: "I heard Ibn 'Abbas say: 'The delegation of 'Abdul-Qais came to the Messenger of Allah (s.a.w) and the Prophet (s.a.w) said: "I forbid you to use gourds, Al-Hantam, An-Naqir and Al-Muqayyar."

حضرت ابن عباس رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺکی خدمت میں عبد القیس کا وفد حاضر ہوا ، نبی ﷺنے فرمایا: میں تم کو کھوکھلے کدو، سبز گھڑے ، کھوکھلی لکڑی اور روغن کیے ہوئے برتن سے منع کرتا ہوں ، حماد کی روایت میں مقیر کی جگہ مزفت کا لفظ استعمال ہوا ہے۔


حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ ، حَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ مُسْهِرٍ ، عَنِ الشَّيْبَانِيِّ ، عَنْ حَبِيبٍ ، عَنْ سَعِيدِ بْنِ جُبَيْرٍ ، عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ ، قَالَ: نَهَى رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنِ الدُّبَّاءِ وَالْحَنْتَمِ وَالْمُزَفَّتِ وَالنَّقِيرِ.

It was narrated that Ibn 'Abbas said: "The Messenger of Allah (s.a.w) forbade gourds, Al-Hantam, Al-Muzaffat and An-Naqir."

حضرت ابن عباس رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺنے کھوکھلے کدو، سبز گھڑے ، روغن کیے ہوئے برتن ، اور کھوکھلی لکڑی سے منع کیا ہے۔


حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ ، حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ فُضَيْلٍ ، عَنْ حَبِيبِ بْنِ أَبِي عَمْرَةَ ، عَنْ سَعِيدِ بْنِ جُبَيْرٍ ، عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ ، قَالَ: نَهَى رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنِ الدُّبَّاءِ وَالْحَنْتَمِ وَالْمُزَفَّتِ وَالنَّقِيرِ ، وَأَنْ يُخْلَطَ الْبَلَحُ بِالزَّهْوِ.

It was narrated that Ibn 'Abbas said: "The Messenger of Allah (s.a.w) forbade gourds, Al-Hantam, Al-Muzaffat and An-Naqir, and mixing Al-Balkh with Az-Zahw."

حضرت ابن عباس رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺنے کھوکھلے کدو، سبز گھڑے ، روغن کیے ہوئے برتن ،اور کچی اور گدری کھجور کو ملانے سے منع کیا ہے ۔


حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ الْمُثَنَّى ، حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّحْمَنِ بْنُ مَهْدِيٍّ ، عَنْ شُعْبَةَ ، عَنْ يَحْيَى الْبَهْرَانِيِّ ، قَالَ: سَمِعْتُ ابْنَ عَبَّاسٍ (ح) وحَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ بَشَّارٍ ، حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ جَعْفَرٍ ، حَدَّثَنَا شُعْبَةُ ، عَنْ يَحْيَى أَبِي عُمَرَ، عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ ، قَالَ: نَهَى رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنِ الدُّبَّاءِ وَالنَّقِيرِ وَالْمُزَفَّتِ.

It was narrated that Ibn 'Abbas said: "The Messenger of Allah (s.a.w) forbade gourds, An-Naqir and Al-Muzaffat."

حضرت ابن عباس رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺنے کھوکھلے کدو، کھوکھلی لکڑی ، اور روغن کیے ہوئے برتن سے منع کیا ہے ۔


حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ يَحْيَى ، أَخْبَرَنَا يَزِيدُ بْنُ زُرَيْعٍ ، عَنِ التَّيْمِيِّ (ح) وحَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ أَيُّوبَ ، حَدَّثَنَا ابْنُ عُلَيَّةَ ، أَخْبَرَنَا سُلَيْمَانُ التَّيْمِيُّ ، عَنْ أَبِي نَضْرَةَ ، عَنْ أَبِي سَعِيدٍ ، أَنَّ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ نَهَى عَنِ الْجَرِّ أَنْ يُنْبَذَ فِيهِ.

It was narrated from Abu Sa'eed that the Messenger of Allah (s.a.w) forbade making Nabidh in Al-Jarr.

حضرت ابو سعید خدری رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺنے گھڑے میں نبیذ بنانے سے منع کیا ہے۔


حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ أَيُّوبَ ، حَدَّثَنَا ابْنُ عُلَيَّةَ ، أَخْبَرَنَا سَعِيدُ بْنُ أَبِي عَرُوبَةَ ، عَنْ قَتَادَةَ ، عَنْ أَبِي نَضْرَةَ ، عَنْ أَبِي سَعِيدٍ الْخُدْرِيِّ ، أَنَّ نَبِيَ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ نَهَى عَنِ الدُّبَّاءِ وَالْحَنْتَمِ وَالنَّقِيرِ وَالْمُزَفَّتِ.

It was narrated from Abu Sa'eed Al-Khudri that the Messenger of Allah (s.a.w) forbade (making Nabidh in) gourds, Al-Hantam, An-Naqir and Al-Muzaffat.

حضرت ابو سعید خدری رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺنے کھوکھلے کدو، سبز گھڑے ، کھوکھلی لکڑی ، اور روغن کیے ہوئے برتن سے منع کیا ہے۔


وَحَدَّثَنَاهُ مُحَمَّدُ بْنُ الْمُثَنَّى ، حَدَّثَنَا مُعَاذُ بْنُ هِشَامٍ ، حَدَّثَنِي أَبِي ، عَنْ قَتَادَةَ ، بِهَذَا الإِسْنَادِ ، أَنَّ نَبِيَّ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ نَهَى أَنْ يُنْتَبَذَ فَذَكَرَ مِثْلَهُ.

It was narrated from Qatadah with this chain of narrators that the Prophet of Allah forbade making Nabidh... and he mentioned a similar report (as no. 5183).

یہ حدیث ایک اور سند سے بھی مروی ہے کہ نبیﷺنے نبیذ بنانے سے منع کیا ہے اس کے بعد مذکورہ بالا حدیث کی طرح ہے۔


وحَدَّثَنَا نَصْرُ بْنُ عَلِيٍّ الْجَهْضَمِيُّ ، حَدَّثَنِي أَبِي ، حَدَّثَنَا الْمُثَنَّى ، يَعْنِي ابْنَ سَعِيدٍ ، عَنْ أَبِي الْمُتَوَكِّلِ ، عَنْ أَبِي سَعِيدٍ ، قَالَ: نَهَى رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنِ الشُّرْبِ فِي الْحَنْتَمَةِ وَالدُّبَّاءِ وَالنَّقِيرِ.

It was narrated that Abu Sa'eed said: "The Messenger of Allah (s.a.w) forbade drinking from Al-Hantam, gourds and An-Naqir."

حضرت ابو سعید رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہﷺنے سبز گھڑے ، کھوکھلے کدو، اور کھوکھلی لکڑی میں پینے سے منع کیاہے۔


وحَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ ، وَسُرَيْجُ بْنُ يُونُسَ ، وَاللَّفْظُ لأَبِي بَكْرٍ ، قَالاَ: حَدَّثَنَا مَرْوَانُ بْنُ مُعَاوِيَةَ ، عَنْ مَنْصُورِ بْنِ حَيَّانَ ، عَنْ سَعِيدِ بْنِ جُبَيْرٍ ، قَالَ: أَشْهَدُ عَلَى ابْنِ عُمَرَ ، وَابْنِ عَبَّاسٍ ، أَنَّهُمَا شَهِدَا ، أَنَّ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ نَهَى عَنِ الدُّبَّاءِ وَالْحَنْتَمِ وَالْمُزَفَّتِ وَالنَّقِيرِ.

It was narrated that Sa'eed bin Jubair said: "I bear witness that Ibn 'Umar and Ibn 'Abbas bore witness that the Messenger of Allah (s.a.w) forbade (making Nabidh in) gourds, Al-Hantam, Al-Muzaffat and An-Naqir."

سعید بن جبیر کہتے ہیں کہ میں حضرت ابن عمر اور ابن عباس رضی اللہ عنمہا کے بارے میں شہادت دیتا ہوں کہ انہوں نے رسول اللہﷺکے متعلق گواہی دی کہ آپﷺنے کھوکھلے کدو، سبز گھڑے ، روغن کیے ہوئے برتن، اور کھوکھلی لکڑی سے منع کیا ہے ۔


حَدَّثَنَا شَيْبَانُ بْنُ فَرُّوخَ ، حَدَّثَنَا جَرِيرٌ ، يَعْنِي ابْنَ حَازِمٍ ، حَدَّثَنَا يَعْلَى بْنُ حَكِيمٍ ، عَنْ سَعِيدِ بْنِ جُبَيْرٍ ، قَالَ: سَأَلْتُ ابْنَ عُمَرَ عَنْ نَبِيذِ الْجَرِّ ، فَقَالَ: حَرَّمَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ نَبِيذَ الْجَرِّ ، فَأَتَيْتُ ابْنَ عَبَّاسٍ ، فَقُلْتُ: أَلاَ تَسْمَعُ مَا يَقُولُ ابْنُ عُمَرَ ؟ قَالَ: وَمَا يَقُولُ ؟ قُلْتُ: قَالَ: حَرَّمَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ نَبِيذَ الْجَرِّ ، فَقَالَ: صَدَقَ ابْنُ عُمَرَ ، حَرَّمَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ نَبِيذَ الْجَرِّ.فَقُلْتُ: وَأَيُّ شَيْءٍ نَبِيذُ الْجَرِّ ؟ فَقَالَ:كُلُّ شَيْءٍ يُصْنَعُ مِنَ الْمَدَرِ.

It was narrated that Sa'eed bin Jubair said: "I asked Ibn 'Umar about Nabidh made in earthenware jars. He said: 'The Messenger of Allah (s.a.w) declared Nabidh made in earthenware jars to be Haram.' I went to Ibn 'Abbas and said: 'Have you heard what Ibn 'Umar is saying?' He said: 'What is he saying?' I said: 'He said: "The Messenger of Allah (s.a.w) declared Nabidh made in earthenware jars to be Haram."' He said: 'Ibn 'Umar is telling the truth. The Messenger of Allah (s.a.w) declared Nabidh made in earthenware jars to be Haram.' I said: 'What is Nabidh made in earthenware jars?' He said: 'Everything (every vessel) that is made of earth."'

سعید بن جبیر کہتے ہیں کہ میں نے حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ سے گھڑے کے نبیذ کے بارے میں سوال کیا ، انہوں نے کہا : رسو ل اللہﷺنے گھڑے میں بنائے ہوئے نبیذ کو حرام کیا ہے، میں حضرت ابن عباس رضی اللہ عنہ کے پاس گیا اور میں نے کہا: کیا آپﷺنے نہیں سنا کہ حضرت ابن عمر کیا فرماتے ہیں ؟ انہوں نے کہا: وہ کیا کہتے ہیں ؟ میں نے کہا: وہ کہتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺنے گھڑے میں نبیذ بنانے کو حرام کردیا ہے ، حضرت ابن عباس رضی اللہ عنہ نے کہا: حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ نے سچ فرمایا: رسو ل اللہﷺنے گھڑے میں نبیذ بنانے کو حرام کردیا ہے ، میں نے پوچھا کہ گھڑے کا نبیذ کیا ہوتا ہے ؟ انہوں نے کہا: ہر وہ برتن جو مٹی سے بنایا جائے۔


حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ يَحْيَى ، قَالَ: قَرَأْتُ عَلَى مَالِكٍ ، عَنْ نَافِعٍ ، عَنِ ابْنِ عُمَرَ ، أَنَّ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ خَطَبَ النَّاسَ فِي بَعْضِ مَغَازِيهِ ، قَالَ ابْنُ عُمَرَ: فَأَقْبَلْتُ نَحْوَهُ ، فَانْصَرَفَ قَبْلَ أَنْ أَبْلُغَهُ ، فَسَأَلْتُ مَاذَا ، قَالَ: قَالُوا: نَهَى أَنْ يُنْتَبَذَ فِي الدُّبَّاءِ وَالْمُزَفَّتِ.

It was narrated from Ibn 'Umar that the Messenger of Allah (s.a.w) addressed the people during one of his campaigns. Ibn 'Umar said: "I turned towards him and he moved away before I reached him. I asked: 'What did he say?' They said: 'He forbade making Nabfdh in gourds and Al-Muzaffat.'"

حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺنے کسی غزوہ میں لوگوں کو خطبہ دیا ، حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ نے کہا: میں بھی اس کی طرف چل دیا لیکن میرے پہنچنے سے قبل آپ کا خطبہ ختم ہوگیا ، میں نے پوچھا :آپ نے کیا فرمایا تھا؟ لوگوں نے کہا: آپﷺنے کھوکھلے کدو، اور روغن کیے ہوئے برتن میں نبیذ بنانے سے منع فرمایا ہے۔


وحَدَّثَنَا قُتَيْبَةُ ، وَابْنُ رُمْحٍ ، عَنِ اللَّيْثِ بْنِ سَعْدٍ (ح) وحَدَّثَنَا أَبُو الرَّبِيعِ ، وَأَبُو كَامِلٍ ، قَالاَ: حَدَّثَنَا حَمَّادٌ (ح) وحَدَّثَنِي زُهَيْرُ بْنُ حَرْبٍ ، حَدَّثَنَا إِسْمَاعِيلُ ، جَمِيعًا عَنْ أَيُّوبَ (ح) وحَدَّثَنَا ابْنُ نُمَيْرٍ ، حَدَّثَنَا أَبِي ، حَدَّثَنَا عُبَيْدُ اللهِ (ح) وحَدَّثَنَا ابْنُ الْمُثَنَّى ، وَابْنُ أَبِي عُمَرَ ، عَنِ الثَّقَفِيِّ ، عَنْ يَحْيَى بْنِ سَعِيدٍ (ح) وحَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ رَافِعٍ ، حَدَّثَنَا ابْنُ أَبِي فُدَيْكٍ ، أَخْبَرَنَا الضَّحَّاكُ ، يَعْنِي ابْنَ عُثْمَانَ (ح) وحَدَّثَنِي هَارُونُ الأَيْلِيُّ ، أَخْبَرَنَا ابْنُ وَهْبٍ ، أَخْبَرَنِي أُسَامَةُ ، كُلُّ هَؤُلاَءِ عَنْ نَافِعٍ ، عَنِ ابْنِ عُمَرَ ، بِمِثْلِ حَدِيثِ مَالِكٍ ، وَلَمْ يَذْكُرُوا فِي بَعْضِ مَغَازِيهِ إِلاَّ مَالِكٌ ، وَأُسَامَةُ.

A Hadith like that of Malik (no. 5188) was narrated from Ibn 'Umar, but they did not mention (the words) 'during one of his campaigns,' apart from Malik and Usamah.

یہ حدیث سات سندوں سے مروی ہے اور حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ سے مذکورہ بالا حدیث کی طرح مروی ہے اور سوائے مالک اور اسامہ کے اور کسی نے کسی غزوہ کا ذکر نہیں کیا۔


وحَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ يَحْيَى ، أَخْبَرَنَا حَمَّادُ بْنُ زَيْدٍ ، عَنْ ثَابِتٍ ، قَالَ: قُلْتُ لاِبْنِ عُمَرَ: نَهَى رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنْ نَبِيذِ الْجَرِّ ؟ قَالَ: فَقَالَ: قَدْ زَعَمُوا ذَاكَ ، قُلْتُ: أَنَهَى عَنْهُ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ؟ قَالَ: قَدْ زَعَمُوا ذَاكَ.

It was narrated that Thabit said: "I said to Ibn 'Umar: 'Did the Messenger of Allah (s.a.w) forbid Nabidh made in earthenware jars?' He said: 'They say so.' I said: 'Did the Messenger of Allah (s.a.w) forbid it?' He said: 'They say so.'"

ثابت کہتے ہیں کہ میں نے حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ سے پوچھا: کیا رسول اللہﷺنے مٹی کے گھڑے کے نبیذ سے منع کردیا تھا ؟ انہوں نےکہا: لوگوں کا یہی کہنا ہے ، میں نے پھر پوچھا : کیا رسول اللہﷺنے اس سے منع فرمایا تھا ، حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ نے کہا: لوگوں کا یہی کہنا ہے۔


حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ أَيُّوبَ ، حَدَّثَنَا ابْنُ عُلَيَّةَ ، حَدَّثَنَا سُلَيْمَانُ التَّيْمِيُّ ، عَنْ طَاوُوسٍ ، قَالَ: قَالَ رَجُلٌ لاِبْنِ عُمَرَ: أَنَهَى نَبِيُّ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنْ نَبِيذِ الْجَرِّ ؟ قَالَ: نَعَمْ. ثُمَّ قَالَ طَاوُوسٌ: وَاللَّهِ إِنِّي سَمِعْتُهُ مِنْهُ.

It was narrated that Tawus said: "A man said to Ibn 'Umar: 'Did the Prophet of Allah (s.a.w) forbid Nabidh made in earthenware jars?' He said: 'Yes."' Then Tawus said: "By Allah, I heard that from him."

طاؤس کہتے ہیں کہ ایک آدمی نے ابن عمر رضی اللہ عنہ سے پوچھا : کیا نبی ﷺنے گھڑے کے نبیذ سے منع فرمایا تھا، انہوں نے کہا: ہاں ، طاؤس نے کہا: ہاں ! اللہ کی قسم! میں نے حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ سے اسی طرح سنا ہے۔


وحَدَّثَنِي مُحَمَّدُ بْنُ رَافِعٍ ، حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّزَّاقِ ، أَخْبَرَنَا ابْنُ جُرَيْجٍ ، أَخْبَرَنِي ابْنُ طَاوُوسٍ ، عَنْ أَبِيهِ ، عَنِ ابْنِ عُمَرَ ، أَنَّ رَجُلاً جَاءَهُ ، فَقَالَ: أَنَهَى النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ أَنْ يُنْبَذَ فِي الْجَرِّ وَالدُّبَّاءِ ؟ قَالَ: نَعَمْ.

It was narrated from Ibn 'Umar that a man came to him and said: "Did the Prophet (s.a.w) forbid making Nabidh in earthenware jars and gourds?" He said: "Yes."

طاؤوس سے روایت ہے کہ حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ کے پاس ایک آدمی آیا اور اس نے پوچھا: کیا رسول اللہﷺنے مٹی کے گھڑے اور کھوکھلے کدو میں نبیذ بنانے سے منع فرمایا تھا؟ انہوں نے کہا: ہاں۔


وحَدَّثَنِي مُحَمَّدُ بْنُ حَاتِمٍ ، حَدَّثَنَا بَهْزٌ ، حَدَّثَنَا وُهَيْبٌ ، حَدَّثَنَا عَبْدُ اللهِ بْنُ طَاوُوسٍ ، عَنْ أَبِيهِ ، عَنِ ابْنِ عُمَرَ ، أَنَّ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ نَهَى عَنِ الْجَرِّ وَالدُّبَّاءِ.

It was narrated from Ibn 'Umar that the Messenger of Allah (s.a.w) forbade earthenware jars and gourds.

حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺنے مٹی کے گھڑے اور کھوکھلے کدو میں نبیذ بنانے سے منع کردیا ہے۔


حَدَّثَنَا عَمْرٌو النَّاقِدُ ، حَدَّثَنَا سُفْيَانُ بْنُ عُيَيْنَةَ ، عَنْ إِبْرَاهِيمَ بْنِ مَيْسَرَةَ ، أَنَّهُ سَمِعَ طَاوُوسًا ، يَقُولُ : كُنْتُ جَالِسًا عِنْدَ ابْنِ عُمَرَ ، فَجَاءَهُ رَجُلٌ ، فَقَالَ : أَنَهَى رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنْ نَبِيذِ الْجَرِّ وَالدُّبَّاءِ وَالْمُزَفَّتِ ؟ قَالَ: نَعَمْ.

It was narrated from Ibrahim bin Maisarah that he heard Tawus say: "I was sitting with Ibn 'Umar, when a man came to him and said: 'Did the Messenger of Allah (s.a.w) forbid Nabidh made in earthenware jars, gourds and Al-Muzaffat?' He said: 'Yes."'

طاؤس کہتے ہیں کہ میں حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ کے پاس بیٹھا ہوا تھا کہ ایک آدمی آیا اس نے پوچھا: کیا رسول اللہﷺنے مٹی کے گھڑے ، کھوکھلے کدو، اور روغن کیے ہوئے برتن میں نبیذ بنانے سے منع کیا ہے ؟انہوں نے کہا: ہاں ۔


حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ الْمُثَنَّى ، وَابْنُ بَشَّارٍ ، قَالاَ : حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ جَعْفَرٍ ، حَدَّثَنَا شُعْبَةُ ، عَنْ مُحَارِبِ بْنِ دِثَارٍ ، قَالَ: سَمِعْتُ ابْنَ عُمَرَ ، يَقُولُ: نَهَى رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنِ الْحَنْتَمِ وَالدُّبَّاءِ وَالْمُزَفَّتِ. قَالَ: سَمِعْتُهُ غَيْرَ مَرَّةٍ.

It was narrated that Muharib bin Dithar said: "I heard Ibn 'Umar say: 'The Messenger of Allah (s.a.w) forbade Al-Hantam, gourds and Al-Muzaffat.'" He said: "I heard it more than once.''

حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسو ل اللہ ﷺنے سبز گھڑے ، کھوکھلے کدو، روغن کیے ہوئے برتن میں نبیذ بنانے سے منع فرمایا ہے اور کہا: کہ میں نے آپﷺسے یہ ایک سے زائد مرتبہ سنا ہے۔


وحَدَّثَنَا سَعِيدُ بْنُ عَمْرٍو الأَشْعَثِيُّ ، أَخْبَرَنَا عَبْثَرٌ ، عَنِ الشَّيْبَانِيِّ ، عَنْ مُحَارِبِ بْنِ دِثَارٍ ، عَنِ ابْنِ عُمَرَ ، عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، بِمِثْلِهِ. قَالَ: وَأُرَاهُ قَالَ: وَالنَّقِيرِ.

A similar report (as no. 5195) was narrated from Ibn 'Umar from the Prophet (s.a.w). He said: "And I think he said: 'And An-Naqir.'"

حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ نے نبی ﷺسے مذکورہ بالا حدیث کی طرح بیان کیا ہے ، اور راوی کہتاہے کہ میرا خیال ہے کہ کھوکھلی لکڑی کا بھی ذکر کیا ہے۔


حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ الْمُثَنَّى ، وَابْنُ بَشَّارٍ ، قَالاَ: حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ جَعْفَرٍ ، حَدَّثَنَا شُعْبَةُ ، عَنْ عُقْبَةَ بْنِ حُرَيْثٍ ، قَالَ: سَمِعْتُ ابْنَ عُمَرَ ، يَقُولُ: نَهَى رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنِ الْجَرِّ وَالدُّبَّاءِ وَالْمُزَفَّتِ ، وَقَالَ: انْتَبِذُوا فِي الأَسْقِيَةِ.

It was narrated that 'Uqbah bin Huraith said: "I heard Ibn 'Umar say: 'The Messenger of Allah (s.a.w) forbade earthenware jars, gourds and Al-Muzaffat, and he said: "Make Nabidh in skins."

حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺنے مٹی کے گھڑے ، کھوکھلے کدو اور روغن کئے ہوئے برتن سے منع کیا ہے ، اور فرمایا: مشکیزوں میں نبیذ بناؤ۔


حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ الْمُثَنَّى ، حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ جَعْفَرٍ ، حَدَّثَنَا شُعْبَةُ ، عَنْ جَبَلَةَ ، قَالَ : سَمِعْتُ ابْنَ عُمَرَ ، يُحَدِّثُ ، قَالَ : نَهَى رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنِ الْحَنْتَمَةِ ، فَقُلْتُ: مَا الْحَنْتَمَةُ ؟ قَالَ: الْجَرَّةُ.

It was narrated that Jabalah said: "I heard Ibn 'Umar say: 'The Messenger of Allah (s.a.w) forbade Al-Hantam.' I said: 'What are Al-Hantam?' He said: 'Earthenware jars.'"

حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺنے سبز گھڑے (میں نبیذ بنانے ) سے منع فرمایا ہے، میں نے پوچھا: حنتمہ کیا ہے ؟ آپﷺنے فرمایا: گھڑا ۔


حَدَّثَنَا عُبَيْدُ اللهِ بْنُ مُعَاذٍ ، حَدَّثَنَا أَبِي ، حَدَّثَنَا شُعْبَةُ ، عَنْ عَمْرِو بْنِ مُرَّةَ ، حَدَّثَنِي زَاذَانُ ، قَالَ : قُلْتُ لاِبْنِ عُمَرَ : حَدِّثْنِي بِمَا نَهَى عَنْهُ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ مِنَ الأَشْرِبَةِ بِلُغَتِكَ ، وَفَسِّرْهُ لِي بِلُغَتِنَا ، فَإِنَّ لَكُمْ لُغَةً سِوَى لُغَتِنَا ، فَقَالَ : نَهَى رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنِ الْحَنْتَمِ ، وَهِيَ الْجَرَّةُ ، وَعَنِ الدُّبَّاءِ ، وَهِيَ الْقَرْعَةُ ، وَعَنِ الْمُزَفَّتِ ، وَهُوَ الْمُقَيَّرُ ، وَعَنِ النَّقِيرِ ، وَهِيَ النَّخْلَةُ تُنْسَحُ نَسْحًا ، وَتُنْقَرُ نَقْرًا ، وَأَمَرَ أَنْ يُنْتَبَذَ فِي الأَسْقِيَةِ.

It was narrated that 'Amr bin Murrah said: "Zadhan said: 'I said to Ibn 'Umar: "Tell me about the drinks that the Messenger of Allah (s.a.w) forbade in your language, then explain to me in our language, for your language is different than ours." He said: "The Messenger of Allah (s.a.w) forbade Al-Hantam, which are earthenware jars; Ad-Dubba ', which are squashes; Al-Muzaffat which are Al-Muqayyar; and An-Naqir which are date palms from which vessels are fashioned or hollowed out, and he told us to make Nabidh in waterskins."

زاذان سے روایت ہے کہ میں نے حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ سے کہا: کہ شراب کے برتنوں کے منع کے متعلق نبی ﷺسے حدیث بیان کریں ، پہلے اپنی بولی میں بیان کریں اور پھر میری بولی میں اس کا مطلب سمجھائیں کیونکہ آپ کی اور ہماری زبان الگ الگ ہیں ، حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ نے کہا: رسول اللہ ﷺنے سبز گھڑوں ، کھوکھلے کدو، روغن کیے ہوئے برتنوں اور کھوکھلی لکڑی سے منع کیا ہے اور کھوکھلی لکڑی سے مراد کھجور کی لکڑی کو اندر سے چھیل کر برتن بنانا ،اور آپﷺنے مشکیزہ میں نبیذ بنانے کا حکم دیا ہے۔


وَحَدَّثَنَاهُ مُحَمَّدُ بْنُ الْمُثَنَّى ، وَابْنُ بَشَّارٍ ، قَالاَ : حَدَّثَنَا أَبُو دَاوُدَ ، حَدَّثَنَا شُعْبَةُ ، فِي هَذَا الإِسْنَادِ.

Shu'bah narrated it with this chain of narrators.

یہ حدیث ایک اور سند سے بھی اسی طرح مروی ہے۔


وحَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ ، حَدَّثَنَا يَزِيدُ بْنُ هَارُونَ ، أَخْبَرَنَا عَبْدُ الْخَالِقِ بْنُ سَلَمَةَ ، قَالَ: سَمِعْتُ سَعِيدَ بْنَ الْمُسَيَّبِ ، يَقُولُ: سَمِعْتُ عَبْدَ اللهِ بْنَ عُمَرَ ، يَقُولُ عِنْدَ هَذَا الْمِنْبَرِ ، وَأَشَارَ إِلَى مِنْبَرِ رَسُولِ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ: قَدِمَ وَفْدُ عَبْدِ الْقَيْسِ عَلَى رَسُولِ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، فَسَأَلُوهُ عَنِ الأَشْرِبَةِ ، فَنَهَاهُمْ عَنِ الدُّبَّاءِ وَالنَّقِيرِ وَالْحَنْتَمِ. فَقُلْتُ لَهُ : يَا أَبَا مُحَمَّدٍ ، وَالْمُزَفَّتِ ؟ وَظَنَنَّا أَنَّهُ نَسِيَهُ ، فَقَالَ : لَمْ أَسْمَعْهُ يَوْمَئِذٍ مِنْ عَبْدِ اللهِ بْنِ عُمَرَ ، وَقَدْ كَانَ يَكْرَهُ.

'Abdul-Khaliq bin Salamah said: "I heard Sa'eed bin Al-Musayyab saying: 'I heard 'Abdullah bin 'Umar say beside this Minbar - and he pointed to the Minbar of the Messenger of Allah (s.a.w): "When the delegation of 'Abdul-Qais came to the Messenger of Allah (s.a.w) and asked him about drinks, he forbade them to use gourds, An-Naqir and Al-Hantam."' I said to him: 'O Abu Muhammad, what about Al-Muzaffat?' We thought that he had forgotten them, but he said: 'I did not hear it that day from 'Abdullah bin 'Umar. But he did dislike it."'

عبد الخالق بن سلمہ کہتےہیں کہ سعید بن المسیب نےرسول اللہﷺکے منبر کی طرف اشارہ کرکے کہا: کہ اس منبر کے پاس میں نے حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ کو یہ فرماتے ہوئے سنا کہ رسول اللہﷺکی خدمت میں عبد القیس کا وفد آیا اور انہوں نے پینے(کے برتنوں) کے متعلق پوچھا ، تو آپﷺنے ان کو کھوکھلے کدو، کھوکھلی لکڑی اور سبز گھڑوں سے منع کیا ہے ، میں نے کہا: اے ابو محمد!روغن کیے ہوئے برتنوں سے بھی منع کیا ہے ؟ ہمارے خیال میں آپ شاید یہ بیان کرنا بھول گئے ہیں انہوں نے کہا: میں نے عبد اللہ بن عمر رضی اللہ عنہ سے یہ لفظ نہیں سنا، وہ اس کو ناپسند سمجھتے تھے۔


وحَدَّثَنَا أَحْمَدُ بْنُ يُونُسَ ، حَدَّثَنَا زُهَيْرٌ ، حَدَّثَنَا أَبُو الزُّبَيْرِ (ح) وحَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ يَحْيَى ، أَخْبَرَنَا أَبُو خَيْثَمَةَ ، عَنْ أَبِي الزُّبَيْرِ ، عَنْ جَابِرٍ ، وَابْنِ عُمَرَ ، أَنَّ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ نَهَى عَنِ النَّقِيرِ وَالْمُزَفَّتِ وَالدُّبَّاءِ.

It was narrated from Jabir and Ibn 'Umar that the Messenger of Allah (s.a.w) forbade An-Naqir, Al-Muzaffat and gourds.

حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺنے کھوکھلی لکڑی ، روغن کیے ہوئے برتن ، اور کھوکھلے کدو سے منع فرمایا ہے۔


وحَدَّثَنِي مُحَمَّدُ بْنُ رَافِعٍ ، حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّزَّاقِ ، أَخْبَرَنَا ابْنُ جُرَيْجٍ ، أَخْبَرَنِي أَبُو الزُّبَيْرِ ، أَنَّهُ سَمِعَ ابْنَ عُمَرَ ، يَقُولُ : سَمِعْتُ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، يَنْهَى عَنِ الْجَرِّ وَالدُّبَّاءِ وَالْمُزَفَّتِ.

Ibn 'Umar said: "I heard the Messenger of Allah (s.a.w) forbid earthenware jars, gourds and Al-Muzaffat."

حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺنے مٹی کے گھڑے ، کھوکھلے کدو، اور روغن ملے برتن سے منع کیا ہے ۔


قَالَ أَبُو الزُّبَيْرِ: وَسَمِعْتُ جَابِرَ بْنَ عَبْدِ اللهِ ، يَقُولُ : نَهَى رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنِ الْجَرِّ وَالْمُزَفَّتِ وَالنَّقِيرِ. وَكَانَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ إِذَا لَمْ يَجِدْ شَيْئًا يُنْتَبَذُ لَهُ فِيهِ ، نُبِذَ لَهُ فِي تَوْرٍ مِنْ حِجَارَةٍ.

Jabir bin 'Abdullah said: "The Messenger of Allah (s.a.w) forbade earthenware jars, Al-Muzaffat and An-Naqir." And if the Messenger of Allah (s.a.w) could not find anything for Nabidh to be made for him, it would be prepared in a bowl made of stone.

ابو الزبیر نے کہا: میں نے حضرت جابر بن عبد اللہ رضی اللہ عنہ سے یہ سنا ہے کہ رسول اللہﷺنےمٹی کے گھڑے ، روغن ملے برتن اور کھوکھلی لکڑی سے منع فرمایا ہے ، اور جب رسول اللہ ﷺکے نبیذ بنانے کے لیے کوئی برتن نہ ملتا تو پتھر کے برتن میں آپﷺکے لیے نبیذ بنایا جاتا۔


حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ يَحْيَى ، أَخْبَرَنَا أَبُو عَوَانَةَ ، عَنْ أَبِي الزُّبَيْرِ ، عَنْ جَابِرِ بْنِ عَبْدِ اللهِ ، أَنَّ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ كَانَ يُنْبَذُ لَهُ فِي تَوْرٍ مِنْ حِجَارَةٍ.

It was narrated from Jabir bin 'Abdullah that the Prophet (s.a.w) would have Nabidh prepared for him in a bowl made of stone.

حضرت جابر بن عبد اللہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ پتھر کے ایک برتن میں نبی ﷺکے لیے نبیذ بنایا جاتا تھا۔


وحَدَّثَنَا أَحْمَدُ بْنُ يُونُسَ ، حَدَّثَنَا زُهَيْرٌ ، حَدَّثَنَا أَبُو الزُّبَيْرِ (ح) وحَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ يَحْيَى ، أَخْبَرَنَا أَبُو خَيْثَمَةَ ، عَنْ أَبِي الزُّبَيْرِ ، عَنْ جَابِرٍ ، قَالَ:كَانَ يُنْتَبَذُ لِرَسُولِ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فِي سِقَاءٍ ، فَإِذَا لَمْ يَجِدُوا سِقَاءً نُبِذَ لَهُ فِي تَوْرٍ مِنْ حِجَارَةٍ. فَقَالَ بَعْضُ الْقَوْمِ وَأَنَا أَسْمَعُ لأَبِي الزُّبَيْرِ: مِنْ بِرَامٍ ؟ قَالَ: مِنْ بِرَامٍ.

It was narrated that Jabir said: "Nabidh would be made for the Messenger of Allah (s.a.w) in a waterskin. If they could not find a waterskin it would be prepared in a bowl made of stone."

حضرت جابر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺکے لیے ایک مشکیزے میں نبیذ بنایا جاتا تھا ، اور جب مشکیزہ نہیں ملتی تو پتھر کے ایک برتن میں نبیذ بنایا جاتا تھا ، کسی آدمی نے کہا: میں نے ابو الزبیر سے سنا ہے کہ وہ برام یعنی پتھر کا ایک برتن تھا۔


حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ ، وَمُحَمَّدُ بْنُ الْمُثَنَّى ، قَالاَ: حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ فُضَيْلٍ ، قَالَ أَبُو بَكْرٍ: عَنْ أَبِي سِنَانٍ ، وقَالَ ابْنُ الْمُثَنَّى : عَنْ ضِرَارِ بْنِ مُرَّةَ ، عَنْ مُحَارِبٍ ، عَنِ ابْنِ بُرَيْدَةَ ، عَنْ أَبِيهِ (ح) وحَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ عَبْدِ اللهِ بْنِ نُمَيْرٍ ، حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ فُضَيْلٍ ، حَدَّثَنَا ضِرَارُ بْنُ مُرَّةَ أَبُو سِنَانٍ ، عَنْ مُحَارِبِ بْنِ دِثَارٍ ، عَنْ عَبْدِ اللهِ بْنِ بُرَيْدَةَ ، عَنْ أَبِيهِ ، قَالَ: قَالَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ : نَهَيْتُكُمْ عَنِ النَّبِيذِ إِلاَّ فِي سِقَاءٍ ، فَاشْرَبُوا فِي الأَسْقِيَةِ كُلِّهَا ، وَلاَ تَشْرَبُوا مُسْكِرًا.

It was narrated from 'Abdullah bin Buraidah that his father said: "The Messenger of Allah (s.a.w) said: 'I used to forbid you to drink Nabidh except from waterskins, but now drink it from all kinds of vessels, but do not drink any intoxicant."'

حضرت بریدہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺنے فرمایا: میں نے تم کو مشکیزے کے علاوہ باقی تمام برتنوں میں نبیذ بنانے سے منع کیا تھا، اب ان برتنوں میں پیو ، اور نشہ آور چیز نہ پیو۔


وحَدَّثَنَا حَجَّاجُ بْنُ الشَّاعِرِ ، حَدَّثَنَا ضَحَّاكُ بْنُ مَخْلَدٍ ، عَنْ سُفْيَانَ ، عَنْ عَلْقَمَةَ بْنِ مَرْثَدٍ ، عَنِ ابْنِ بُرَيْدَةَ ، عَنْ أَبِيهِ ، أَنَّ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ: نَهَيْتُكُمْ عَنِ الظُّرُوفِ ، وَإِنَّ الظُّرُوفَ ، أَوْ ظَرْفًا ، لاَ يُحِلُّ شَيْئًا وَلاَ يُحَرِّمُهُ ، وَكُلُّ مُسْكِرٍ حَرَامٌ.

It was narrated from Ibn Buraidah, from his father, that the Messenger of Allah (s.a.w) said: "I forbade you to use vessels because vessels do not make anything Halal or Haram, and all intoxicants are Haram."

حضرت بریدہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺنے فرمایا: میں نے تم کو (کچھ) برتنوں سے منع کیا تھا، حالانکہ برتن کسی چیز کو حلال نہیں کرتے اور نہ ہی حرام کرتے ، اور ہر نشہ آور چیز حرام ہے۔


وحَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ ، حَدَّثَنَا وَكِيعٌ ، عَنْ مُعَرِّفِ بْنِ وَاصِلٍ ، عَنْ مُحَارِبِ بْنِ دِثَارٍ ، عَنِ ابْنِ بُرَيْدَةَ ، عَنْ أَبِيهِ ، قَالَ: قَالَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ: كُنْتُ نَهَيْتُكُمْ عَنِ الأَشْرِبَةِ فِي ظُرُوفِ الأَدَمِ ، فَاشْرَبُوا فِي كُلِّ وِعَاءٍ غَيْرَ أَنْ لاَ تَشْرَبُوا مُسْكِرًا.

It was narrated from Ibn Buraidah that his father said: "The Messenger of Allah (s.a.w) said: 'I used to forbid you to drink from leather vessels, but now drink from all kinds of vessels, but do not drink any intoxicant."'

حضرت بریدہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺنے فرمایا: میں نے تم کو چمڑے کے برتنوں میں پینے سے منع کیا تھا، اب ہر برتن میں پیو، البتہ نشہ آور چیز مت پیو۔


وحَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ ، وَابْنُ أَبِي عُمَرَ ، وَاللَّفْظُ لاِبْنِ أَبِي عُمَرَ ، قَالاَ : حَدَّثَنَا سُفْيَانُ ، عَنْ سُلَيْمَانَ الأَحْوَلِ ، عَنْ مُجَاهِدٍ ، عَنْ أَبِي عِيَاضٍ ، عَنْ عَبْدِ اللهِ بْنِ عَمْرٍو، قَالَ: لَمَّا نَهَى رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنِ النَّبِيذِ فِي الأَوْعِيَةِ ، قَالُوا: لَيْسَ كُلُّ النَّاسِ يَجِدُ ، فَأَرْخَصَ لَهُمْ فِي الْجَرِّ غَيْرِ الْمُزَفَّتِ.

It was narrated that 'Abdullah bin 'Amr said: "When the Messenger of Allah (s.a.w) forbade Nabidh in certain vessels they said: 'Not all people can afford (the right kind of vessels),' so he granted a dispensation with regard to unvarnished earthenware jars."

حضرت عبد اللہ بن عمرو رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ جب رسول اللہﷺنے برتنوں میں نبیذ سے منع فرمایا تھا تو صحابہ نے کہا: ہر آدمی کے پاس مشکیزہ نہیں ہے پھر آپﷺنے مٹی کے گھڑے میں پینے کی اجازت دی جس پر روغن کیا ہوا نہ ہو۔

Chapter No: 7

باب بَيَانِ أَنَّ كُلَّ مُسْكِرٍ خَمْرٌ وَأَنَّ كُلَّ خَمْرٍ حَرَامٌ

Every intoxicant is Khamr and all Khamr is prohibited

ہر نشہ آور مشروب کے خمر ہونے اور ہر خمر کے حرام ہونے کا بیان

حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ يَحْيَى ، قَالَ : قَرَأْتُ عَلَى مَالِكٍ ، عَنِ ابْنِ شِهَابٍ ، عَنْ أَبِي سَلَمَةَ بْنِ عَبْدِ الرَّحْمَنِ ، عَنْ عَائِشَةَ ، قَالَتْ: سُئِلَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنِ الْبِتْعِ ، فَقَالَ: كُلُّ شَرَابٍ أَسْكَرَ فَهُوَ حَرَامٌ.

It was narrated that 'Aishah said: "The Messenger of Allah (s.a.w) was asked about Al-Bit' (mead). He said: 'Every drink that intoxicates is Haram."'

حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺسےشہد کی شراب کے بارے میں سوال کیا گیا ، آپﷺنے فرمایا: جو مشروب بھی نشہ آور ہو وہ حرام ہے۔


وحَدَّثَنِي حَرْمَلَةُ بْنُ يَحْيَى التُّجِيبِيُّ ، أَخْبَرَنَا ابْنُ وَهْبٍ ، أَخْبَرَنِي يُونُسُ ، عَنِ ابْنِ شِهَابٍ ، عَنْ أَبِي سَلَمَةَ بْنِ عَبْدِ الرَّحْمَنِ ، أَنَّهُ سَمِعَ عَائِشَةَ ، تَقُولُ : سُئِلَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنِ الْبِتْعِ ، فَقَالَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ : كُلُّ شَرَابٍ أَسْكَرَ فَهُوَ حَرَامٌ.

'Aishah said: "The Messenger of Allah (s.a.w) was asked about mead. The Messenger of Allah (s.a.w) said: 'Every drink that intoxicates is Haram."'

حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺسےشہد کی شراب کے بارے میں سوال کیا گیا ، آپﷺنے فرمایا: جو مشروب بھی نشہ آور ہو وہ حرام ہے۔


حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ يَحْيَى ، وَسَعِيدُ بْنُ مَنْصُورٍ ، وَأَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ ، وَعَمْرٌو النَّاقِدُ ، وَزُهَيْرُ بْنُ حَرْبٍ ، كُلُّهُمْ عَنِ ابْنِ عُيَيْنَةَ (ح) وحَدَّثَنَا حَسَنٌ الْحُلْوَانِيُّ ، وَعَبْدُ بْنُ حُمَيْدٍ ، عَنْ يَعْقُوبَ بْنِ إِبْرَاهِيمَ بْنِ سَعْدٍ ، حَدَّثَنَا أَبِي ، عَنْ صَالِحٍ (ح) وحَدَّثَنَا إِسْحَاقُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ ، وَعَبْدُ بْنُ حُمَيْدٍ ، قَالاَ : أَخْبَرَنَا عَبْدُ الرَّزَّاقِ ، أَخْبَرَنَا مَعْمَرٌ ، كُلُّهُمْ عَنِ الزُّهْرِيِّ ، بِهَذَا الإِسْنَادِ. وَلَيْسَ فِي حَدِيثِ سُفْيَانَ ، وَصَالِحٍ ، سُئِلَ عَنِ الْبِتْعِ ، وَهُوَ فِي حَدِيثِ مَعْمَرٍ. وَفِي حَدِيثِ صَالِحٍ: أَنَّهَا سَمِعَتْ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يَقُولُ: كُلُّ شَرَابٍ مُسْكِرٍ حَرَامٌ.

It was narrated from Az-Zuhri with this chain (a Hadith similar to no. 5211). In the Hadith of Sufyan and Al-Salih t it does not say that he was asked about mead, which is mentioned in the Hadith of Ma'mar. In the Hadith of Salih it says: "She heard the Messenger of Allah (s.a.w) say: 'Every drink that intoxicates is Haram.'"

حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺنے فرمایا: ہر نشہ آور مشروب حرام ہے۔


وحَدَّثَنَا قُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ ، وَإِسْحَاقُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ ، وَاللَّفْظُ لِقُتَيْبَةَ ، قَالاَ: حَدَّثَنَا وَكِيعٌ ، عَنْ شُعْبَةَ ، عَنْ سَعِيدِ بْنِ أَبِي بُرْدَةَ ، عَنْ أَبِيهِ ، عَنْ أَبِي مُوسَى ، قَالَ: بَعَثَنِي النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ أَنَا وَمُعَاذَ بْنَ جَبَلٍ إِلَى الْيَمَنِ ، فَقُلْتُ: يَا رَسُولَ اللهِ ، إِنَّ شَرَابًا يُصْنَعُ بِأَرْضِنَا يُقَالُ لَهُ الْمِزْرُ مِنَ الشَّعِيرِ ، وَشَرَابٌ يُقَالُ لَهُ الْبِتْعُ مِنَ الْعَسَلِ ، فَقَالَ: كُلُّ مُسْكِرٍ حَرَامٌ.

It was narrated that Abu Musa said: "The Prophet (s.a.w) sent myself and Mu'adh bin Jabal to Yemen. I said: 'O Messenger of Allah, there is a drink that is made in our land that is called AI-Mizr (beer), which is made of barley, and another called Al-Bit' (mead), which is made of honey.' He said: 'Every intoxicant is Haram."'

حضرت ابو موسیٰ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ نبیﷺنے مجھے اور معاذ بن جبل رضی اللہ عنہ کو یمن بھیجا ، میں نے عرض کیا : اے اللہ کے رسول ﷺ!ہمارے ہاں جو سے ایک مشروب بنایا جاتا ہے اس کو مزر کہتے ہیں اور ایک مشروب شہد سے بنایا جاتا ہے اس کو بتع کہتے ہیں ، آپﷺنے فرمایا: ہر نشہ دینے والی چیز حرام ہے۔


حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ عَبَّادٍ ، حَدَّثَنَا سُفْيَانُ ، عَنْ عَمْرٍو ، سَمِعَهُ مِنْ سَعِيدِ بْنِ أَبِي بُرْدَةَ ، عَنْ أَبِيهِ ، عَنْ جَدِّهِ ، أَنَّ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ بَعَثَهُ وَمُعَاذًا إِلَى الْيَمَنِ ، فَقَالَ لَهُمَا : بَشِّرَا وَيَسِّرَا ، وَعَلِّمَا وَلاَ تُنَفِّرَا ، وَأُرَاهُ قَالَ: وَتَطَاوَعَا ، قَالَ: فَلَمَّا وَلَّى رَجَعَ أَبُو مُوسَى ، فَقَالَ: يَا رَسُولَ اللهِ ، إِنَّ لَهُمْ شَرَابًا مِنَ الْعَسَلِ يُطْبَخُ حَتَّى يَعْقِدَ ، وَالْمِزْرُ يُصْنَعُ مِنَ الشَّعِيرِ ، فَقَالَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ: كُلُّ مَا أَسْكَرَ عَنِ الصَّلاَةِ فَهُوَ حَرَامٌ.

It was narrated from Sa'eed bin Abi Burdah, from his father, from his grandfather, that the Prophet (s.a.w) sent him and Mu'adh to Yemen and he said to them: "Give glad tidings and make things easy, teach and do not repulse people." And I think he said: "And cooperate." When he turned to leave, Abu Musa came back and said: "O Messenger of Allah, they have a drink made of honey which is cooked until it becomes thick, and Al-Mizr, which is made of barley." The Messenger of Allah (s.a.w) said: "Everything that detains (a person) from As-Salat (prayer) is Haram.''

حضرت ابو موسیٰ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ نبی ﷺنے ان کو اور حضرت معاذ کو یمن کی طرف بھیجا ، اور ان کو دونوں کو فرمایا: لوگوں کو بشارت دینا اور آسان احکام بیان کرنا،ان کو علم سکھانا ، اور متنفر نہ کر نا ، اور میرا خیال ہےکہ آپ ﷺنے فرمایا: دونوں اتفاق سے رہنا ، جب حضرت موسیٰ واپس آئے تو انہوں نے کہا: اے اللہ کے رسول ﷺ! وہاں شہد سے ایک شراب پکائی جاتی ہے یہاں تک کہ وہ جم جاتی ہے،اور ایک مزر شراب جَوسے بنائی جاتی ہے ، تو رسول اللہﷺنے فرمایا: جو شراب نماز سے مدہوش کردے وہ حرام ہے۔


وحَدَّثَنَا إِسْحَاقُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ ، وَمُحَمَّدُ بْنُ أَحْمَدَ بْنِ أَبِي خَلَفٍ ، وَاللَّفْظُ لاِبْنِ أَبِي خَلَفٍ ، قَالاَ: حَدَّثَنَا زَكَرِيَّا بْنُ عَدِيٍّ ، حَدَّثَنَا عُبَيْدُ اللهِ ، وَهُوَ ابْنُ عَمْرٍو ، عَنْ زَيْدِ بْنِ أَبِي أُنَيْسَةَ ، عَنْ سَعِيدِ بْنِ أَبِي بُرْدَةَ ، حَدَّثَنَا أَبُو بُرْدَةَ ، عَنْ أَبِيهِ ، قَالَ: بَعَثَنِي رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَمُعَاذًا إِلَى الْيَمَنِ ، فَقَالَ: ادْعُوَا النَّاسَ ، وَبَشِّرَا وَلاَ تُنَفِّرَا ، وَيَسِّرَا وَلاَ تُعَسِّرَا ، قَالَ: فَقُلْتُ يَا رَسُولَ اللهِ ، أَفْتِنَا فِي شَرَابَيْنِ كُنَّا نَصْنَعُهُمَا بِالْيَمَنِ الْبِتْعُ وَهُوَ مِنَ الْعَسَلِ ، يُنْبَذُ حَتَّى يَشْتَدَّ ، وَالْمِزْرُ وَهُوَ مِنَ الذُّرَةِ وَالشَّعِيرِ ، يُنْبَذُ حَتَّى يَشْتَدَّ ، قَالَ: وَكَانَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَدْ أُعْطِيَ جَوَامِعَ الْكَلِمِ بِخَوَاتِمِهِ ، فَقَالَ: أَنْهَى عَنْ كُلِّ مُسْكِرٍ أَسْكَرَ عَنِ الصَّلاَةِ.

It was narrated that Sa'eed bin Abi Burdah narrated that his father said: "The Messenger of Allah (s.a.w) sent me and Mu'adh to Yemen, and he said: 'Call the people (to Islam), give glad tidings and do not repulse them, make things easy and do not make them difficult.' I said: 'O Messenger of Allah, advise us about two drinks that we used to make in Yemen: mead, which is made from honey that is steeped until it becomes strong, and Al-Mizr, which is made of corn and barley that are steeped until they become strong.' The Messenger of Allah (s.a.w) had been given the gift of concise speech and he said: 'I forbid every intoxicant that detains (a person) from As-Salat (prayer)."'

حضرت ابو بردہ اپنے والد سے روایت کرتےہیں کہ رسول اللہﷺنے مجھے اور حضرت معاذ کو یمن کی طرف بھیجا ، آپﷺنے فرمایا: لوگوں کو اسلام کی دعوت دینا ، ان کو خوشخبری دینا اور متنفر نہ کرنا، آسان احکام بیان کرنا، اور لوگوں کو مشکل میں نہ ڈالنا ، میں نے کہا: اے اللہ کے رسولﷺ!ہمیں دو مشروبوں کے بارے میں بتائیں ، جن کو ہم یمن میں تیار کرتے ہیں ، ایک مشروب بتع ہے جو شہد سے بنتا ہے یہاں تک کہ وہ گاڑھا ہوجاتا ہے ، اور ایک مزر ہے وہ مکئی اور جَوسے تیار ہوتی ہے یہاں تک کہ وہ گاڑھا ہوجاتا ہے اور رسول اللہﷺکو جامع مانع کلام کا ملکہ عطا کیا گیا تھا، آپﷺنے فرمایا: میں ہر اس نشہ دینے والی چیز سے منع کرتا ہوں جو نماز سے مدہوش کردے۔


حَدَّثَنَا قُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ ، حَدَّثَنَا عَبْدُ الْعَزِيزِ يَعْنِي الدَّرَاوَرْدِيَّ ، عَنْ عُمَارَةَ بْنِ غَزِيَّةَ ، عَنْ أَبِي الزُّبَيْرِ ، عَنْ جَابِرٍ ، أَنَّ رَجُلاً قَدِمَ مِنْ جَيْشَانَ ، وَجَيْشَانُ مِنَ الْيَمَنِ ، فَسَأَلَ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنْ شَرَابٍ يَشْرَبُونَهُ بِأَرْضِهِمْ مِنَ الذُّرَةِ ، يُقَالُ لَهُ : الْمِزْرُ ، فَقَالَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ : أَوَ مُسْكِرٌ هُوَ ؟ قَالَ : نَعَمْ ، قَالَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ : كُلُّ مُسْكِرٍ حَرَامٌ ، إِنَّ عَلَى اللهِ عَزَّ وَجَلَّ عَهْدًا لِمَنْ يَشْرَبُ الْمُسْكِرَ أَنْ يَسْقِيَهُ مِنْ طِينَةِ الْخَبَالِ قَالُوا : يَا رَسُولَ اللهِ ، وَمَا طِينَةُ الْخَبَالِ ؟ قَالَ : عَرَقُ أَهْلِ النَّارِ ، أَوْ عُصَارَةُ أَهْلِ النَّارِ.

It was narrated from Jabir that a man came from Jaishan - and Jaishan is in Yemen - and asked the Prophet (s.a.w) about a drink that they used to drink in their land, which was made of corn and was called Al-Mizr. The Prophet (s.a.w) said: "Is it an intoxicant?" He said: "Yes.'' The Messenger of Allah (s.a.w) said: "Every intoxicant is Haram. Allah has made a covenant that whoever drinks intoxicants, He will give him to drink of the mud of Al-Khabal." They said: "O Messenger of Allah, what is the mud of Al-Khabal?" He said: "The sweat of the people of Hell, or the juice of the people of Hell."

حضرت جابر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ ایک آدمی جیشان سے آیا ، اور جیشان یمن کا ایک شہر ہے ، اس نے نبیﷺسے مکئی سے بنے ایک مشروب کے بارے میں سوال کیا جس کو وہ اپنے علاقہ میں پیتے ہیں اس کو مزر کہتے ہیں ، نبی ﷺنے فرمایا : کیا وہ نشہ آور ہے ؟ ا س نے کہا: ہاں ! رسول اللہﷺنے فرمایا: ہر نشہ آور چیز حرام ہے اور اللہ تعالیٰ نے یہ عہد کرلیا ہے کہ جو آدمی نشہ آور مشروب پیئے گا اس کو طینۃ الخبال پلائے گا ، صحابہ نے عرض کیا: اے اللہ کے رسول ﷺ! طینۃ الخبال کیا ہے ؟ آپﷺنے فرمایا: جہنمیوں کا پسینہ یا فرمایا: جہنمیوں کا نچوڑ۔


حَدَّثَنَا أَبُو الرَّبِيعِ الْعَتَكِيُّ ، وَأَبُو كَامِلٍ ، قَالاَ : حَدَّثَنَا حَمَّادُ بْنُ زَيْدٍ ، حَدَّثَنَا أَيُّوبُ ، عَنْ نَافِعٍ ، عَنِ ابْنِ عُمَرَ ، قَالَ: قَالَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ: كُلُّ مُسْكِرٍ خَمْرٌ ، وَكُلُّ مُسْكِرٍ حَرَامٌ ، وَمَنْ شَرِبَ الْخَمْرَ فِي الدُّنْيَا فَمَاتَ وَهُوَ يُدْمِنُهَا لَمْ يَتُبْ ، لَمْ يَشْرَبْهَا فِي الآخِرَةِ.

It was narrated that Ibn 'Umar said: "The Messenger of Allah (s.a.w) said: 'Every intoxicant is Khamr and every intoxicant is Haram. Whoever drinks Khamr in this world and dies when he is addicted to it and has not repented, will not drink it in the Hereafter."'

حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺنے فرمایا: ہر نشہ دینے والی چیز شراب ہے اور ہر نشہ دینے والی چیز حرام ہے جس آدمی نے دنیا میں شراب پی اور پھر مرگیا اس حال میں کہ وہ شراب کا عادی تھا، اور اس نے توبہ بھی نہیں کی تو وہ آخرت میں شراب نہیں پیئے گا۔


وحَدَّثَنَا إِسْحَاقُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ ، وَأَبُو بَكْرِ بْنُ إِسْحَاقَ ، كِلاَهُمَا عَنْ رَوْحِ بْنِ عُبَادَةَ ، حَدَّثَنَا ابْنُ جُرَيْجٍ ، أَخْبَرَنِي مُوسَى بْنُ عُقْبَةَ ، عَنْ نَافِعٍ ، عَنِ ابْنِ عُمَرَ ، أَنَّ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ: كُلُّ مُسْكِرٍ خَمْرٌ ، وَكُلُّ مُسْكِرٍ حَرَامٌ.

It was narrated from Ibn 'Umar that the Messenger of Allah (s.a.w) said: "Every intoxicant is Khamr and every intoxicant is Haram."

حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺنے فرمایا: ہر نشہ دینے والی چیز شراب ہے اور ہر نشہ آور چیز حرام ہے۔


وحَدَّثَنَا صَالِحُ بْنُ مِسْمَارٍ السُّلَمِيُّ ، حَدَّثَنَا مَعْنٌ ، حَدَّثَنَا عَبْدُ الْعَزِيزِ بْنُ الْمُطَّلِبِ ، عَنْ مُوسَى بْنِ عُقْبَةَ ، بِهَذَا الإِسْنَادِ مِثْلَهُ.

A similar report was narrated from Musa bin 'Uqbah, with this chain of narrators.

ایک اور سند سے بھی اسی طرح مروی ہے۔


وحَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ الْمُثَنَّى ، وَمُحَمَّدُ بْنُ حَاتِمٍ ، قَالاَ : حَدَّثَنَا يَحْيَى وَهُوَ الْقَطَّانُ ، عَنْ عُبَيْدِ اللهِ ، أَخْبَرَنَا نَافِعٌ ، عَنِ ابْنِ عُمَرَ ، قَالَ: وَلاَ أَعْلَمُهُ إِلاَّ عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، قَالَ: كُلُّ مُسْكِرٍ خَمْرٌ ، وَكُلُّ خَمْرٍ حَرَامٌ.

It was narrated by Nafi' that Ibn 'Umar said, and I do not know if it was from the Prophet (s.a.w), "Every intoxicant is Khamr and all Khamr is Haram."

حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ اس بات کا مجھ کو صرف نبی ﷺ سے علم ہے کہ ہر نشہ دینے والی چیز شراب ہے اور ہر شراب حرام ہے۔

Chapter No: 8

باب عُقُوبَةِ مَنْ شَرِبَ الْخَمْرَ إِذَا لَمْ يَتُبْ مِنْهَا بِمَنْعِهِ إِيَّاهَا فِي الآخِرَةِ

Whoever drinks Khamr and does not repent, will be punished in the hereafter by its denial

شراب پی کر توبہ نہ کرنے والے کی آخرت میں سزا کا بیان

حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ يَحْيَى ، قَالَ: قَرَأْتُ عَلَى مَالِكٍ ، عَنْ نَافِعٍ ، عَنِ ابْنِ عُمَرَ ، أَنَّ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ: مَنْ شَرِبَ الْخَمْرَ فِي الدُّنْيَا حُرِمَهَا فِي الآخِرَةِ.

It was narrated from Ibn 'Umar that the Messenger of Allah (s.a.w) said: "Whoever drinks Khamr in this world will be denied it in the Hereafter."

حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺنے فرمایا: جس آدمی نے دنیا میں شراب پی وہ آخرت میں شراب سے محروم رہے گا۔


حَدَّثَنَا عَبْدُ اللهِ بْنُ مَسْلَمَةَ بْنِ قَعْنَبٍ ، حَدَّثَنَا مَالِكٌ ، عَنْ نَافِعٍ ، عَنِ ابْنِ عُمَرَ ، قَالَ: مَنْ شَرِبَ الْخَمْرَ فِي الدُّنْيَا ، فَلَمْ يَتُبْ مِنْهَا، حُرِمَهَا فِي الآخِرَةِ ، فَلَمْ يُسْقَهَا. قِيلَ لِمَالِكٍ: رَفَعَهُ ؟ قَالَ: نَعَمْ.

It was narrated that Ibn 'Umar said: "Whoever drinks Khamr in this world and does not repent from it, will be denied it in the Hereafter and he will not be given it to drink." It was said to Malik (a sub narrator): "Did he (i.e., Ibn 'Umar) attribute it to the Prophet (s.a.w)?" He said: "Yes."

حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ نے فرمایا: جس آدمی نے دنیا میں شراب پی اور اس سے توبہ نہیں کی وہ آخرت میں اس سے محروم رہے گا ، اور اس کو نہیں پی سکے گا، مالک سے پوچھا گیا : کیا یہ حدیث مرفوع ہے ؟ انہوں نے کہا: ہاں۔


وحَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ ، حَدَّثَنَا عَبْدُ اللهِ بْنُ نُمَيْرٍ (ح) وحَدَّثَنَا ابْنُ نُمَيْرٍ ، حَدَّثَنَا أَبِي ، حَدَّثَنَا عُبَيْدُ اللهِ ، عَنْ نَافِعٍ ، عَنِ ابْنِ عُمَرَ ، أَنَّ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ: مَنْ شَرِبَ الْخَمْرَ فِي الدُّنْيَا لَمْ يَشْرَبْهَا فِي الآخِرَةِ ، إِلاَّ أَنْ يَتُوبَ.

It was narrated from Ibn 'Umar that the Messenger of Allah (s.a.w) said: "Whoever drinks Khamr in this world will not drink it in the Hereafter, unless he repents."

حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺنے فرمایا: جس آدمی نے دنیا میں شراب پی وہ توبہ کیے بغیر آخرت میں اس کو نہیں پیئے گا۔


وحَدَّثَنَا ابْنُ أَبِي عُمَرَ ، حَدَّثَنَا هِشَامٌ ، يَعْنِي ابْنَ سُلَيْمَانَ الْمَخْزُومِيَّ ، عَنِ ابْنِ جُرَيْجٍ ، أَخْبَرَنِي مُوسَى بْنُ عُقْبَةَ ، عَنْ نَافِعٍ ، عَنِ ابْنِ عُمَرَ ، عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ...بِمِثْلِ حَدِيثِ عُبَيْدِ اللَّهِ.

A Hadith like that of 'Ubaidullah (no. 5224) was narrated from Ibn 'Umar, from the Prophet (s.a.w).

حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ نے نبی ﷺسے اس حدیث کی طرح روایت کی ہے۔

Chapter No: 9

باب إِبَاحَةِ النَّبِيذِ الَّذِي لَمْ يَشْتَدَّ وَلَمْ يَصِرْ مُسْكِرًا

The permissibility of Nabidh, which has not become strong and has not become intoxicating

جو نبیذ تیز اور نشہ آور نہ ہو اس کی اباحت کا بیان

حَدَّثَنَا عُبَيْدُ اللهِ بْنُ مُعَاذٍ الْعَنْبَرِيُّ ، حَدَّثَنَا أَبِي ، حَدَّثَنَا شُعْبَةُ ، عَنْ يَحْيَى بْنِ عُبَيْدٍ أَبِي عُمَرَ الْبَهْرَانِيِّ ، قَالَ: سَمِعْتُ ابْنَ عَبَّاسٍ ، يَقُولُ: كَانَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يُنْتَبَذُ لَهُ أَوَّلَ اللَّيْلِ ، فَيَشْرَبُهُ إِذَا أَصْبَحَ يَوْمَهُ ذَلِكَ ، وَاللَّيْلَةَ الَّتِي تَجِيءُ ، وَالْغَدَ وَاللَّيْلَةَ الأُخْرَى ، وَالْغَدَ إِلَى الْعَصْرِ ، فَإِنْ بَقِيَ شَيْءٌ سَقَاهُ الْخَادِمَ ، أَوْ أَمَرَ بِهِ فَصُبَّ.

Ibn 'Abbas said: "Nabidh would be made for the Messenger of Allah (s.a.w) at the beginning of the night, and he would drink it the next morning, during that day and the night, then during the following day and night, and the next day until 'Asr. Then if there was anything left of it, he would give it to his servant to drink or order that it be poured away."

حضرت ابن عباس رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺکے لیے ابتدائی رات میں نبیذ بنایا جاتا تھا ، پھر آپﷺاس کو صبح کے وقت پیتے تھے ، پھر اس کے بعد والی رات میں ، پھر اگلے دن اور را ت کو پیتے ،پھر اگلے دن عصر تک پیتے تھے ، پھر کچھ اگر بچ جاتا تو خادم کو پلا دیتے یا اس کو بہانے کا حکم دیتے ۔


حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ بَشَّارٍ ، حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ جَعْفَرٍ ، حَدَّثَنَا شُعْبَةُ ، عَنْ يَحْيَى الْبَهْرَانِيِّ ، قَالَ: ذَكَرُوا النَّبِيذَ عِنْدَ ابْنِ عَبَّاسٍ ، فَقَالَ: كَانَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يُنْتَبَذُ لَهُ فِي سِقَاءٍ ، قَالَ شُعْبَةُ: مِنْ لَيْلَةِ الاِثْنَيْنِ فَيَشْرَبُهُ يَوْمَ الاِثْنَيْنِ ، وَالثُّلاَثَاءِ إِلَى الْعَصْرِ ، فَإِنْ فَضَلَ مِنْهُ شَيْءٌ سَقَاهُ الْخَادِمَ ، أَوْ صَبَّهُ.

It was narrated that Yahya Al-Bahrani said: "They mentioned Nabidh in the presence of Ibn 'Abbas and he said: 'Nabidh would be made for him in a skin."' Shu'bah said: "On Monday night, and he would drink it on Monday and Tuesday until 'Asr, then if anything was left he would give it to his servant to drink or pour it away."

حضرت ابن عباس رضی اللہ عنہ کے پاس نبیذ کا ذکر ہوا تو انہوں نے کہا: رسول اللہﷺکے لیے پیر کی رات کو نبیذ بنایا جاتا ، تو آپ اس کو پیر کے دن اور منگل کو عصر تک پیتے اور اگر اس میں سے کچھ بچ جاتا تو خادم کو پلا دیتے یا اس کو بہا دیتے۔


وحَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ ، وَأَبُو كُرَيْبٍ ، وَ إِسْحَاقَ بْنُ إِبْرَاهِيمَ ، وَاللَّفْظُ لأَبِي بَكْرٍ ، وَأَبِي كُرَيْبٍ ، قَالَ إِسْحَاقُ: أَخْبَرَنَا ، وقَالَ الآخَرَانِ: حَدَّثَنَا أَبُو مُعَاوِيَةَ ، عَنِ الأَعْمَشِ ، عَنْ أَبِي عُمَرَ ، عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ ، قَالَ: كَانَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يُنْقَعُ لَهُ الزَّبِيبُ فَيَشْرَبُهُ الْيَوْمَ وَالْغَدَ وَبَعْدَ الْغَدِ إِلَى مَسَاءِ الثَّالِثَةِ ، ثُمَّ يَأْمُرُ بِهِ فَيُسْقَى ، أَوْ يُهَرَاقُ.

It was narrated that Ibn 'Abbas said: "Raisins would be soaked for the Messenger of Allah (s.a.w) and he would drink it for one day, then the next, then the next, until the evening of the third day. Then he would order that it be given to others to drink or be poured away."

حضرت ابن عباس رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺکے لیے کشمش کو پانی میں ڈال دیا جاتا ، آپ ﷺ اس نبیذ کو اس دن پیتے اور اس کے دوسرے دن اور تیسرے دن شام تک پیتے، پھر دوسروں کو پلانے کا حکم دیتے یا اس کو بہانے کا حکم دیتے۔


وحَدَّثَنَا إِسْحَاقُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ ، أَخْبَرَنَا جَرِيرٌ ، عَنِ الأَعْمَشِ ، عَنْ يَحْيَى بْنِ أَبِي عُمَرَ ، عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ ، قَالَ: كَانَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يُنْبَذُ لَهُ الزَّبِيبُ فِي السِّقَاءِ ، فَيَشْرَبُهُ يَوْمَهُ، وَالْغَدَ، وَبَعْدَ الْغَدِ، فَإِذَا كَانَ مَسَاءُ الثَّالِثَةِ شَرِبَهُ وَسَقَاهُ ، فَإِنْ فَضَلَ شَيْءٌ أَهَرَاقَهُ.

It was narrated that Ibn 'Abbas said: "Raisins would be steeped for the Messenger of Allah (s.a.w) in a skin and he would drink it that day, the next day and the next day, then when evening came on the third day, he would drink it and give it to others to drink, and if there was anything left over, he would spill it out."

حضرت ابن عباس رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺکے لیے مشکیزے میں کشمش کو ڈال دیا جاتا ، آپﷺاس کو اس دن پیتے اور اس کے بعد اگلے دن پیتے ، اور اس سے اگلے دن پیتے،جب تیسرے دن کی شام ہوتی تو آپﷺاس کو پیتے یا کسی اور کو پلادیتے ،پھر اگر بچ جاتا تو اس کو بہادیتے۔


وحَدَّثَنِي مُحَمَّدُ بْنُ أَحْمَدَ بْنِ أَبِي خَلَفٍ ، حَدَّثَنَا زَكَرِيَّا بْنُ عَدِيٍّ ، حَدَّثَنَا عُبَيْدُ اللهِ ، عَنْ زَيْدٍ ، عَنْ يَحْيَى أَبِي عُمَرَ النَّخَعِيِّ ، قَالَ: سَأَلَ قَوْمٌ ابْنَ عَبَّاسٍ عَنْ بَيْعِ الْخَمْرِ وَشِرَائِهَا وَالتِّجَارَةِ فِيهَا ، فَقَالَ: أَمُسْلِمُونَ أَنْتُمْ ؟ قَالُوا: نَعَمْ ، قَالَ: فَإِنَّهُ لاَ يَصْلُحُ بَيْعُهَا ، وَلاَ شِرَاؤُهَا، وَلاَ التِّجَارَةُ فِيهَا ، قَالَ: فَسَأَلُوهُ عَنِ النَّبِيذِ ، فَقَالَ: خَرَجَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فِي سَفَرٍ ، ثُمَّ رَجَعَ وَقَدْ نَبَذَ نَاسٌ مِنْ أَصْحَابِهِ فِي حَنَاتِمَ وَنَقِيرٍ وَدُبَّاءٍ ، فَأَمَرَ بِهِ فَأُهْرِيقَ ، ثُمَّ أَمَرَ بِسِقَاءٍ فَجُعِلَ فِيهِ زَبِيبٌ وَمَاءٌ ، فَجُعِلَ مِنَ اللَّيْلِ فَأَصْبَحَ ، فَشَرِبَ مِنْهُ يَوْمَهُ ذَلِكَ وَلَيْلَتَهُ الْمُسْتَقْبَلَةَ ، وَمِنَ الْغَدِ حَتَّى أَمْسَى ، فَشَرِبَ وَسَقَى ، فَلَمَّا أَصْبَحَ أَمَرَ بِمَا بَقِيَ مِنْهُ فَأُهْرِيقَ.

It was narrated that Yahya bin 'Umar Al-Nakha'i said: "Some people asked Ibn 'Abbas about buying and selling Khamr and dealing in it. He said: 'Are you Muslims?' They said: 'Yes.' He said: 'It is not permissible to buy it, sell it or deal in it.' They asked him about Nabidh and he said: 'The Messenger of Allah (s.a.w) went out on a journey, then he came back and some of his Companions had made Nabidh in Al-Hantam, An-Naqir and gourds. He ordered that it be spilled out, then he ordered that raisins and water be put in a skin overnight. The next day he drank from it, and the following night, and the next day until evening came. He drank from it and gave it to others to drink, and the following morning he poured away whatever was left of it."'

یحییٰ ابو عمر نخعی کہتے ہیں کہ ایک قوم نے حضرت ابن عباس رضی اللہ عنہ سے شراب کے بیچنے ، خریدنے اور اس کی تجارت کے بارے میں سوال کیا ، حضرت ابن عباس رضی اللہ عنہ نے فرمایا: کیا تم مسلمان ہو؟ انہوں نے کہا: ہاں ! حضرت ابن عباس رضی اللہ عنہ نے فرمایا: شراب کا بیچنا ، خریدنا اور اس کی تجارت کرنا جائز نہیں ہے ، پھر انہوں نے ان سے نبیذ کے بارے میں سوال کیا، حضرت ابن عباس رضی اللہ عنہ نے کہا: رسول اللہﷺایک سفر میں نکلے اور پھر آپ ﷺ واپس آگئے ، تو آپ کے اصحاب نے سبز گھڑوں میں ، کھوکھلی لکڑیوں میں اور کھوکھلے کدو میں نبیذ تیار کیا ہوا تھا ، آپﷺنے اس کو انڈیل دینے کا حکم دیا ، پھر آپﷺنے ایک مشکیزے میں کشمش اور پانی ڈالنے کا حکم دیا ، رات میں وہ پانی ڈالا گیا ، آپﷺنے اس مشکیزے سے صبح کو نبیذ پیا اور اس دن نبیذ پیا ، آنے والی رات کو نبیذ پیا ، پھر دوسرے روز شام تک نبیذ پیا اور پلایا ، اور جب صبح ہوئی تو آپﷺنے باقی ماندہ کو گرا دینے کا حکم دیا۔


حَدَّثَنَا شَيْبَانُ بْنُ فَرُّوخَ ، حَدَّثَنَا الْقَاسِمُ ، يَعْنِي ابْنَ الْفَضْلِ الْحُدَّانِيَّ ، حَدَّثَنَا ثُمَامَةُ ، يَعْنِي ابْنَ حَزْنٍ الْقُشَيْرِيَّ ، قَالَ: لَقِيتُ عَائِشَةَ ، فَسَأَلْتُهَا عَنِ النَّبِيذِ ، فَدَعَتْ عَائِشَةُ جَارِيَةً حَبَشِيَّةً ، فَقَالَتْ: سَلْ هَذِهِ ، فَإِنَّهَا كَانَتْ تَنْبِذُ لِرَسُولِ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، فَقَالَتِ الْحَبَشِيَّةُ: كُنْتُ أَنْبِذُ لَهُ فِي سِقَاءٍ مِنَ اللَّيْلِ وَأُوكِيهِ وَأُعَلِّقُهُ ، فَإِذَا أَصْبَحَ شَرِبَ مِنْهُ.

Thumamah bin Hazan Al-Qushairi said: "I met 'Aishah and asked her about Nabidh. 'Aishah called an Abyssinian slave woman and said: "Ask her, for she used to make Nabidh for the Messenger of Allah (s.a.w).' The Abyssinian woman said: 'I used to make it for him in a skin at night, which I would tie shut and hang up, and when morning came he would drink from it.'"

ثمامہ کہتے ہیں کہ میری حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا سے ملاقات ہوئی ، میں نے ان سے نبیذ کے بارے میں سوال کیا ، حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا نے ایک حبشی باندی کو بلایا اور فرمایا: اس سے پوچھو کیونکہ یہ رسول اللہ ﷺکے لیے نبیذ بناتی تھی ، اس حبشی عورت نے کہا: میں آپﷺکے لیے رات کو مشکیزے میں نبیذ بناکر اس کا منہ باندھ کر اس کو لٹکا دیا کرتی تھی، جب صبح ہوتی تو آپﷺاس سے نبیذ پی لیتے تھے۔


حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ الْمُثَنَّى الْعَنَزِيُّ ، حَدَّثَنَا عَبْدُ الْوَهَّابِ الثَّقَفِيُّ ، عَنْ يُونُسَ ، عَنِ الْحَسَنِ ، عَنْ أُمِّهِ ، عَنْ عَائِشَةَ ، قَالَتْ : كُنَّا نَنْبِذُ لِرَسُولِ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فِي سِقَاءٍ يُوكَى أَعْلاَهُ وَلَهُ عَزْلاَءُ ، نَنْبِذُهُ غُدْوَةً فَيَشْرَبُهُ عِشَاءً ، وَنَنْبِذُهُ عِشَاءً فَيَشْرَبُهُ غُدْوَةً.

It was narrated that 'Aishah said: "We used to make Nabidh for the Messenger of Allah (s.a.w) in a skin that was tied at the top and had a plugged hole in the bottom. We would make the Nabidh in the morning, and he would drink it in the evening, or we would make it in the evening and he would drink it in the morning.''

حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا سے روایت ہے کہ ہم رسول ا للہﷺکے لیے ایک مشکیزے میں نبیذ بناتے ،اس کے اوپر والے حصے کو باندھ دیتے ، اس مشکیزے کے نچلے حصہ میں سوراخ تھا ، ہم صبح کے وقت نبیذ کو تیار کرتے تو رسول اللہﷺاسے شام کو پیتے تھے ، اور شام کو نبیذ بناتے تو آپﷺ اس کو صبح کے وقت پیتے تھے ۔


حَدَّثَنَا قُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ ، حَدَّثَنَا عَبْدُ الْعَزِيزِ ، يَعْنِي ابْنَ أَبِي حَازِمٍ ، عَنْ أَبِي حَازِمٍ ، عَنْ سَهْلِ بْنِ سَعْدٍ ، قَالَ: دَعَا أَبُو أُسَيْدٍ السَّاعِدِيُّ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فِي عُرْسِهِ ، فَكَانَتِ امْرَأَتُهُ يَوْمَئِذٍ خَادِمَهُمْ وَهِيَ الْعَرُوسُ ، قَالَ سَهْلٌ: تَدْرُونَ مَا سَقَتْ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ؟ أَنْقَعَتْ لَهُ تَمَرَاتٍ مِنَ اللَّيْلِ فِي تَوْرٍ ، فَلَمَّا أَكَلَ سَقَتْهُ إِيَّاهُ.

It was narrated that Sahl bin Sa'd said: "Abu Usaid As-Sa'idi invited the Messenger of Allah (s.a.w) to his wedding, and his wife was serving them that day, and she was the bride.'' Sahl said: "Do you know what she gave the Messenger of Allah (s.a.w) to drink? She steeped some dates for him the night before in a bowl made of stone, and when he had eaten she gave him that to drink."

حضرت سہل بن سعد رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ حضرت ابو اسید ساعدی رضی اللہ عنہ نے اپنی شادی میں رسول اللہﷺکی دعوت کی ، اس دن ان کی بیوی کام کاج کررہی تھیں حالانکہ وہ خود دلہن تھیں ، سہل نے کہا: کیا تم جانتے ہو کہ اس نے رسول اللہﷺکو کیا پلایا تھا ، اس نے رات کو ایک برتن میں پانی کے اندر کچھ چھوارے ڈال دیئے تھے اور جب آپﷺکھانے سے فارغ ہوئے تو اس نے آپﷺکو وہی پلایا تھا ۔


وحَدَّثَنَا قُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ ، حَدَّثَنَا يَعْقُوبُ ، يَعْنِي ابْنَ عَبْدِ الرَّحْمَنِ ، عَنْ أَبِي حَازِمٍ ، قَالَ: سَمِعْتُ سَهْلاً ، يَقُولُ: أَتَى أَبُو أُسَيْدٍ السَّاعِدِيُّ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَدَعَا رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ بِمِثْلِهِ ، وَلَمْ يَقُلْ: فَلَمَّا أَكَلَ سَقَتْهُ إِيَّاهُ.

It was narrated that Abu Hazim said: "I heard Sahl say: 'Abu Usaid As-Sa'idi came to the Messenger of Allah (s.a.w) and invited the Messenger of Allah (s.a.w)..."' a similar report (as no. 5234), but he did not say: "When he had eaten she gave him that to drink."

حضرت سہل رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ ابو اسید ساعدی رسول اللہ ﷺکے پاس آئے اور رسول اللہ ﷺکو دعوت دی ، اس روایت میں یہ نہیں ہے ، کہ جب آپﷺنے کھانا کھالیا تو اس نے آپ ﷺکو نبیذ پلایا۔


وحَدَّثَنِي مُحَمَّدُ بْنُ سَهْلٍ التَّمِيمِيُّ ، حَدَّثَنَا ابْنُ أَبِي مَرْيَمَ ، أَخْبَرَنَا مُحَمَّدٌ يَعْنِي أَبَا غَسَّانَ ، حَدَّثَنِي أَبُو حَازِمٍ ، عَنْ سَهْلِ بْنِ سَعْدٍ ، بِهَذَا الْحَدِيثِ وَقَالَ : فِي تَوْرٍ مِنْ حِجَارَةٍ ، فَلَمَّا فَرَغَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ مِنَ الطَّعَامِ أَمَاثَتْهُ ، فَسَقَتْهُ تَخُصُّهُ بِذَلِكَ.

It was narrated from Sahl bin Sa'd with this chain (a Hadith similar to no. 5234). And he said: "In a bowl made of stone. And when the Messenger of Allah (s.a.w) had finished eating, she stirred it up for him and gave him that to drink, and she gave that only to him."

حضرت سہل بن سعد رضی اللہ عنہ سے یہی حدیث مروی ہے اور اس میں پتھر کے برتن کا ذکر ہے اور جب رسول اللہﷺکھانے سے فاغ ہوئے تو اس نے خصوصیت کے ساتھ صرف آپﷺکو نبیذ پلایا۔


حَدَّثَنِي مُحَمَّدُ بْنُ سَهْلٍ التَّمِيمِيُّ ، وَأَبُو بَكْرِ بْنُ إِسْحَاقَ ، قَالَ أَبُو بَكْرٍ : أَخْبَرَنَا ، وقَالَ ابْنُ سَهْلٍ : حَدَّثَنَا ابْنُ أَبِي مَرْيَمَ ، أَخْبَرَنَا مُحَمَّدٌ ، وَهُوَ ابْنُ مُطَرِّفٍ أَبُو غَسَّانَ ، أَخْبَرَنِي أَبُو حَازِمٍ ، عَنْ سَهْلِ بْنِ سَعْدٍ ، قَالَ : ذُكِرَ لِرَسُولِ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ امْرَأَةٌ مِنَ الْعَرَبِ ، فَأَمَرَ أَبَا أُسَيْدٍ أَنْ يُرْسِلَ إِلَيْهَا ، فَأَرْسَلَ إِلَيْهَا ، فَقَدِمَتْ ، فَنَزَلَتْ فِي أُجُمِ بَنِي سَاعِدَةَ ، فَخَرَجَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ حَتَّى جَاءَهَا فَدَخَلَ عَلَيْهَا ، فَإِذَا امْرَأَةٌ مُنَكِّسَةٌ رَأْسَهَا ، فَلَمَّا كَلَّمَهَا رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، قَالَتْ : أَعُوذُ بِاللَّهِ مِنْكَ ، قَالَ : قَدْ أَعَذْتُكِ مِنِّي ، فَقَالُوا لَهَا : أَتَدْرِينَ مَنْ هَذَا ؟ فَقَالَتْ : لاَ ، فَقَالُوا : هَذَا رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ جَاءَكِ لِيَخْطُبَكِ ، قَالَتْ : أَنَا كُنْتُ أَشْقَى مِنْ ذَلِكَ. قَالَ سَهْلٌ : فَأَقْبَلَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يَوْمَئِذٍ حَتَّى جَلَسَ فِي سَقِيفَةِ بَنِي سَاعِدَةَ هُوَ وَأَصْحَابُهُ ، ثُمَّ قَالَ : اسْقِنَا لِسَهْلٍ ، قَالَ : فَأَخْرَجْتُ لَهُمْ هَذَا الْقَدَحَ ، فَأَسْقَيْتُهُمْ فِيهِ. قَالَ أَبُو حَازِمٍ : فَأَخْرَجَ لَنَا سَهْلٌ ذَلِكَ الْقَدَحَ فَشَرِبْنَا فِيهِ ، قَالَ : ثُمَّ اسْتَوْهَبَهُ بَعْدَ ذَلِكَ عُمَرُ بْنُ عَبْدِ الْعَزِيزِ ، فَوَهَبَهُ لَهُ. وَفِي رِوَايَةِ أَبِي بَكْرِ بْنِ إِسْحَاقَ ، قَالَ : اسْقِنَا يَا سَهْلُ.

It was narrated that Sahl bin Sa'd said: "Mention was made to the Messenger of Allah (s.a.w) of an Arab woman, so he commanded Abu Usaid to send for her. He sent for her and she came, and she stayed in the fortress of Banu Sa'idah. The Messenger of Allah (s.a.w) went out to her and entered upon her, and he saw a woman with her head lowered. When the Messenger of Allah (s.a.w) spoke to her, she said: 'I seek refuge with Allah from you.' He said: 'You are protected from me.' They said to her: 'Do you know who this is?' She said: 'No.' They said: 'This is the Messenger of Allah (s.a.w), who came to propose marriage to you.' She said: 'Then I am most unfortunate.'" Sahl said: "Then the Messenger of Allah (s.a.w) came and sat that day beneath the pavilion of Banu Sa'idah, along with his Companions, and said: 'Give us something to drink.' So I brought this vessel out to them and gave them something to drink in it." Abu Hazim said: "Sahl brought that vessel out and we drank from it. Then after that 'Umar bin 'Abdul-'Aziz asked him to give it to him as a gift, and he gave it to him." According to the report of Abu Bakr bin Ishaq he said: "Give us something to drink, O Sahl."

حضرت سہل بن سعد رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺکے سامنے عرب کی ایک عورت کا ذکر کیا گیا ۔ آپﷺنے ابو اسید کو پیغام دینے کا حکم دیا ، انہوں نے اس کو پیغام دیا ، وہ عورت آکر بنو ساعدہ کے قلعوں میں ٹھہری ، رسول اللہ ﷺاس کے پاس تشریف لے گئے ، جب آپ اس کے پاس گئے تو وہ عورت سر جھکائے بیٹھی تھی ، جب رسول اللہ ﷺنے اس سے بات کی تو وہ عورت کہنے لگی : میں آپ سے اللہ کی پناہ میں آتی ہوں ، آپﷺنے فرمایا: تم نے اپنے آپ کو مجھ سے محفوظ کرلیا ، لوگوں نے اس سے کہا: کیا تم جانتی ہو یہ کون ہیں؟ اس نے کہا: نہیں ، لوگوں نے کہا: یہ رسول اللہ ﷺہیں اور تمہیں نکاح کا پیغام دینے تمہارے پاس آئے تھے ، اس نے کہا: تب تو میں بہت بدنصیب رہی، سہل کہتے ہیں کہ پھر رسول اللہ اسی وقت تشریف لے آئے یہاں تک کہ آپﷺاور آپﷺکے صحابہ بنوساعدہ کے چبوترہ میں بیٹھ گئے ،پھر آپ ﷺنے حضرت سہل سے کہا: مجھے پلاؤ ، پھر میں نے آپﷺکے لیے یہ پیالہ نکالا اور میں نے اس میں ان کو پلایا ۔ ابو حازم نے کہا: سہل نے ہمارے لیے وہ پیالہ نکالا اور ہم نے بھی اس پیالہ سے پی لیا ، پھر عمر بن عبد العزیز نے حضرت سہل سے وہ پیالہ مانگ لیا ،حضرت سہل نے وہ پیالہ ان کو دے دیا ، ابو بکر بن اسحاق کی روایت میں یہ ہے کہ اے سہل ! ہمیں پلاؤ۔


وحَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ ، وَزُهَيْرُ بْنُ حَرْبٍ ، قَالاَ: حَدَّثَنَا عَفَّانُ ، حَدَّثَنَا حَمَّادُ بْنُ سَلَمَةَ ، عَنْ ثَابِتٍ ، عَنْ أَنَسٍ ، قَالَ: لَقَدْ سَقَيْتُ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ بِقَدَحِي هَذَا الشَّرَابَ كُلَّهُ: الْعَسَلَ وَالنَّبِيذَ ، وَالْمَاءَ وَاللَّبَنَ.

It was narrated that Anas said: "I gave the Messenger of Allah (s.a.w) all kinds of drinks in this vessel of mine: Honey, Nabidh, water and milk."

حضرت انس رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ میں نے اپنے اس پیالہ سے رسول اللہ ﷺکو تمام مشروبات پلائے ہیں ، شہد ، نبیذ ، پانی اور دودھ۔

Chapter No: 10

باب جَوَازِ شُرْبِ اللَّبَنِ

Concerning the permissibility of drinking milk

دودھ پینے کا جواز

حَدَّثَنَا عُبَيْدُ اللهِ بْنُ مُعَاذٍ الْعَنْبَرِيُّ ، حَدَّثَنَا أَبِي ، حَدَّثَنَا شُعْبَةُ ، عَنْ أَبِي إِسْحَاقَ ، عَنِ الْبَرَاءِ ، قَالَ: قَالَ أَبُو بَكْرٍ الصِّدِّيقُ : لَمَّا خَرَجْنَا مَعَ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ مِنْ مَكَّةَ إِلَى الْمَدِينَةِ مَرَرْنَا بِرَاعٍ ، وَقَدْ عَطِشَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، قَالَ: فَحَلَبْتُ لَهُ كُثْبَةً مِنْ لَبَنٍ، فَأَتَيْتُهُ بِهَا فَشَرِبَ حَتَّى رَضِيتُ.

It was narrated that Al-Bara' said: "Abu Bakr As-Siddiq said: 'When we set out from Makkah to Al-Madinah with the Messenger of Allah (s.a.w). we passed by a shepherd. The Messenger of Allah (s.a.w) was thirsty, so I milked a small amount of milk for him and brought it to him, and he drank until I was happy."'

حضرت براء رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ حضرت ابو بکر صدیق رضی اللہ عنہ نے فرمایا: جب ہم نبی ﷺکے ساتھ مکہ سے مدینہ کی طرف گئے تو ہمارا ایک چروا ہے پر گزر ہوا ، اس وقت رسول اللہ ﷺکو پیاس لگی ہوئی تھی ،میں نے آپﷺکے لیے تھوڑا سا دودھ دوہا ، اور آپﷺکی خدمت میں اس کو لے آیا ، آپﷺنے اس کو پیا یہاں تک کہ میں راضی ہوگیا۔


حدثنا محمد بن المثنى ، وابن بشار ، واللفظ لابن المثنى ، قالا : حدثنا محمد بن جعفر ، حدثنا شعبة ، قال: سمعت أبا إسحاق الهمداني ، يقول: سمعت البراء ، يقول: لما أقبل رسول الله صلى الله عليه وسلم من مكة إلى المدينة فأتبعه سراقة بن مالك بن جعشم ، قال: فدعا عليه رسول الله صلى الله عليه وسلم فساخت فرسه ، فقال: ادع الله لي ولا أضرك ، قال : فدعا الله ، قال: فعطش رسول الله صلى الله عليه وسلم فمروا براعي غنم ، قال أبو بكر الصديق : فأخذت قدحا فحلبت فيه لرسول الله صلى الله عليه وسلم كثبة من لبن ، فأتيته به فشرب حتى رضيت.

Al-Bara' said: "When the Messenger of Allah (s.a.w) came from Makkah to Al-Madinah, he was pursued by Suraqah bin Malik bin Ju'sham. The Messenger of Allah (s.a.w) prayed against him and his horse sank into the sand. He said: 'Pray to Allah for me, and I will not harm you.' So he prayed to Allah. Then the Messenger of Allah (s.a.w) became thirsty, and they passed by a shepherd. Abu Bakr As-Siddiq said: 'I took a vessel and milked a small amount of milk into it for the Messenger of Allah (s.a.w), and I brought it to him and he drank until I was happy."'

حضرت براء رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ جب رسول اللہ ﷺ مکہ سے مدینہ تشریف لائے تو سراقہ بن مالک جعشم آپ ﷺ کا تعاقب کرنے لگا حضرت براء فرماتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ نے اس کے لئے بد دعا کی تو اس کا گھوڑا دھنس گیا، سراقہ نے عرض کیا: آپ ﷺ میرے لئے اللہ تعالی سے دعا فرمائیں میں آپ ﷺ کو کوئی نقصان نہیں پہنچاؤں گا راوی کہتے ہیں پھر آپﷺ نے اللہ سے دعا کی۔ پھر رسول اللہ ﷺ کو پیاس لگی اور بکریوں کے ایک چرواہے کے پاس سے گزر ہوا حضرت ابوبکر رضی اللہ تعالیٰ عنہ فرماتے ہیں کہ میں نے ایک پیالہ لیا اور اس میں رسول اللہ کے لئے دودھ دوہا اور وہ دودھ لے کے میں آپﷺ کی خدمت میں حاضر ہوا تو آپﷺ نے وہ دودھ پیا یہاں تک کہ میں راضی ہوگیا۔


حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ عَبَّادٍ ، وَزُهَيْرُ بْنُ حَرْبٍ ، وَاللَّفْظُ لاِبْنِ عَبَّادٍ ، قَالاَ : حَدَّثَنَا أَبُو صَفْوَانَ ، أَخْبَرَنَا يُونُسُ ، عَنِ الزُّهْرِيِّ ، قَالَ : قَالَ ابْنُ الْمُسَيَّبِ : قَالَ أَبُو هُرَيْرَةَ : إِنَّ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ أُتِيَ لَيْلَةَ أُسْرِيَ بِهِ بِإِيلِيَاءَ بِقَدَحَيْنِ مِنْ خَمْرٍ وَلَبَنٍ ، فَنَظَرَ إِلَيْهِمَا فَأَخَذَ اللَّبَنَ ، فَقَالَ لَهُ جِبْرِيلُ عَلَيْهِ السَّلاَمُ : الْحَمْدُ لِلَّهِ الَّذِي هَدَاكَ لِلْفِطْرَةِ ، لَوْ أَخَذْتَ الْخَمْرَ غَوَتْ أُمَّتُكَ.

Abu Hurairah said: "On the night on which he (s.a.w) was taken on the Night Journey, in Iliya' (Jerusalem), the Messenger of Allah (s.a.w) was brought two vessels, one of wine and the other of milk. He looked at them and chose the milk. Jibril' said to him: 'Praise be to Allah Who has guided you to the Fitrah. If you had chosen the wine, your Ummah would have gone astray."'

حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں کہ معراج کی رات ایلیاء (بیت المقدس) میں نبیﷺ کی خدمت میں دو پیالے پیش کئے گئے ایک پیالہ شراب کا ، اور دوسرا پیالہ دودھ کا ،آپ ﷺ نے دونوں کی طرف دیکھا اور پھر دودھ کا پیالہ لے لیا، حضرت جبرائیل نے آپ ﷺ سے کہا: تمام تعریفیں اس اللہ کے لئے ہیں کہ جس نے آپ ﷺ کو فطرت کی ہدایت دی اگر آپ ﷺ شراب کا پیالہ لے لیتے تو آپ ﷺ کی امت گمراہ ہو جاتی۔


وحَدَّثَنِي سَلَمَةُ بْنُ شَبِيبٍ ، حَدَّثَنَا الْحَسَنُ بْنُ أَعْيَنَ ، حَدَّثَنَا مَعْقِلٌ ، عَنِ الزُّهْرِيِّ ، عَنْ سَعِيدِ بْنِ الْمُسَيَّبِ ، أَنَّهُ سَمِعَ أَبَا هُرَيْرَةَ ، يَقُولُ : أُتِيَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ بِمِثْلِهِ وَلَمْ يَذْكُرْ بِإِيلِيَاءَ.

Abu Hurairah said: "The Messenger of Allah (s.a.w) was brought..." a similar report (as no. 5240), but he did not mention in "Iliya''.

حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں کہ رسول اللہﷺکے پاس دو پیالے لائے گئے ، اس کے بعد مذکورہ بالا حدیث کی طرح ہے ، اور اس میں ایلیاء(بیت المقدس ) کا ذکر نہیں ہے۔

123Last ›