Sayings of the Messenger احادیثِ رسول اللہ

 
Donation Request

Sahih Al-Bukhari

Book: Funerals (23)    كتاب الجنائز

‹ First8910

Chapter No: 91

باب مَا قِيلَ فِي أَوْلاَدِ الْمُسْلِمِينَ

What is said regarding the dead children of Muslims.

باب: مسلمانوں کی نابالغ اولاد کہاں رہے گی۔

قَالَ أَبُو هُرَيْرَةَ رضى الله عنه عَنِ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ مَنْ مَاتَ لَهُ ثَلاَثَةٌ مِنَ الْوَلَدِ لَمْ يَبْلُغُوا الْحِنْثَ كَانَ لَهُ حِجَابًا مِنَ النَّارِ، أَوْ دَخَلَ الْجَنَّةَ ‏"‏‏

And Abu Hurairah narrated that the Prophet (s.a.w) said, "He whose three children died before the age of puberty, they will shield him from the Hell-fire, or will make him enter Paradise."

اور ابو ہریرہؓ نے نبیﷺ سے روایت کی، جس کے تین لڑکے مر جائیں جو گناہ کو نہیں پہنچے (جوان نہیں ہوئے) تو وہ اس کے لیے دوزخ کی روک ہوں گے یا وہ بہشت میں جائے گا۔

حَدَّثَنَا يَعْقُوبُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ، حَدَّثَنَا ابْنُ عُلَيَّةَ، حَدَّثَنَا عَبْدُ الْعَزِيزِ بْنُ صُهَيْبٍ، عَنْ أَنَسِ بْنِ مَالِكٍ ـ رضى الله عنه ـ قَالَ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ مَا مِنَ النَّاسِ مُسْلِمٌ يَمُوتُ لَهُ ثَلاَثَةٌ مِنَ الْوَلَدِ لَمْ يَبْلُغُوا الْحِنْثَ إِلاَّ أَدْخَلَهُ اللَّهُ الْجَنَّةَ بِفَضْلِ رَحْمَتِهِ إِيَّاهُمْ ‏"‏‏

Narrated By Anas bin Malik : Allah's Apostle (p.b.u.h) said, "Any Muslim whose three children died before the age of puberty will be granted Paradise by Allah because of His mercy to them."

حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺنے فرمایا: جس مسلمان کے بھی تین نابالغ بچے مرجائیں تو اللہ تعالیٰ اپنے فضل و رحمت سے جو ان بچوں پر کرے گا، ان کو بھی جنت میں لے جائے گا۔


حَدَّثَنَا أَبُو الْوَلِيدِ، حَدَّثَنَا شُعْبَةُ، عَنْ عَدِيِّ بْنِ ثَابِتٍ، أَنَّهُ سَمِعَ الْبَرَاءَ ـ رضى الله عنه ـ قَالَ لَمَّا تُوُفِّيَ إِبْرَاهِيمُ ـ عَلَيْهِ السَّلاَمُ ـ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ إِنَّ لَهُ مُرْضِعًا فِي الْجَنَّةِ ‏"‏‏

Narrated By Al-Bara' : When Ibrahim (the son of Prophet) expired, Allah's Apostle said, "There is a wet-nurse for him in Paradise."

حضرت براء سے روایت ہے کہ جب حضرت ابراہیم رسول اللہ ﷺ کے صاحبزادے فوت ہوگئے تو آپﷺ نے فرمایا: جنت میں ان کےلیے ایک دودھ پلانے والی ہے۔

Chapter No: 92

باب مَا قِيلَ فِي أَوْلاَدِ الْمُشْرِكِينَ

What is said regarding the (dead) children of Al-Mushrikun.

باب:مشرکوں کی (نابالغ) اولاد کا بیان۔

حَدَّثَنَا حِبَّانُ، أَخْبَرَنَا عَبْدُ اللَّهِ، أَخْبَرَنَا شُعْبَةُ، عَنْ أَبِي بِشْرٍ، عَنْ سَعِيدِ بْنِ جُبَيْرٍ، عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ ـ رضى الله عنهم ـ قَالَ سُئِلَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم عَنْ أَوْلاَدِ الْمُشْرِكِينَ فَقَالَ ‏"‏ اللَّهُ إِذْ خَلَقَهُمْ أَعْلَمُ بِمَا كَانُوا عَامِلِينَ ‏"‏‏

Narrated By Ibn Abbas : Allah's Apostle (p.b.u.h) was asked about the children of (Mushrikeen) pagans. The Prophet replied, "Since Allah created them, He knows what sort of deeds they would have done."

حضرت ابن عباس رضی اللہ عنہ سے روایت ہے انہوں نے کہا: رسول اللہ ﷺ سے پوچھا گیا مشرکوں کی اولاد (آخرت میں) کہاں رہے گی آپﷺنے فرمایا: اللہ نے جب ان کو پیدا کیا وہ خوب جانتا تھا (اگر وہ بڑے ہوں تو) کیسے کام کریں گے۔


حَدَّثَنَا أَبُو الْيَمَانِ، أَخْبَرَنَا شُعَيْبٌ، عَنِ الزُّهْرِيِّ، قَالَ أَخْبَرَنِي عَطَاءُ بْنُ يَزِيدَ اللَّيْثِيُّ، أَنَّهُ سَمِعَ أَبَا هُرَيْرَةَ ـ رضى الله عنه ـ يَقُولُ سُئِلَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم عَنْ ذَرَارِيِّ الْمُشْرِكِينَ فَقَالَ ‏"‏ اللَّهُ أَعْلَمُ بِمَا كَانُوا عَامِلِينَ ‏"

Narrated By Abu Huraira : The Prophet was asked about the offspring of pagans (Mushrakeen); so he said, "Allah knows what sort of deeds they would have done."

حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ سنا وہ کہتے ہیں نبیﷺسے پوچھا گیا مشرکوں کی اولاد کہاں رہے گی۔آپﷺنے فرمایا: اللہ خوب جانتا ہے وہ کیسے عمل کرنے والے تھے۔


حَدَّثَنَا آدَمُ، حَدَّثَنَا ابْنُ أَبِي ذِئْبٍ، عَنِ الزُّهْرِيِّ، عَنْ أَبِي سَلَمَةَ بْنِ عَبْدِ الرَّحْمَنِ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ ـ رضى الله عنه ـ قَالَ قَالَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ كُلُّ مَوْلُودٍ يُولَدُ عَلَى الْفِطْرَةِ، فَأَبَوَاهُ يُهَوِّدَانِهِ أَوْ يُنَصِّرَانِهِ أَوْ يُمَجِّسَانِهِ، كَمَثَلِ الْبَهِيمَةِ تُنْتَجُ الْبَهِيمَةَ، هَلْ تَرَى فِيهَا جَدْعَاءَ ‏"‏‏

Narrated By Abu Huraira : The Prophet said, "Every child is born with a true faith of Islam (i.e. to worship none but Allah Alone) and his parents convert him to Judaism or Christianity or Magianism, as an animal delivers a perfect baby animal. Do you find it mutilated?"

حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ نبیﷺنے فرمایا: ہر بچّہ اپنی پیدائشی فطرت(یعنی اسلام) پر پیدا ہوتا ہے لیکن اس کے ماں باپ اس کو یہودی یا نصرانی یا مجوسی بنا دیتے ہیں جیسے جانور کا بچّہ(صحیح اور سالم) پیدا ہوتا ہے،کیا تم نے(پیدائشی طور پر) کوئی ان کے جسم کا حصہ کٹا ہوا دیکھا ہے۔

Chapter No: 93

باب

Chapter

باب:

حَدَّثَنَا مُوسَى بْنُ إِسْمَاعِيلَ، حَدَّثَنَا جَرِيرُ بْنُ حَازِمٍ، حَدَّثَنَا أَبُو رَجَاءٍ، عَنْ سَمُرَةَ بْنِ جُنْدَبٍ، قَالَ كَانَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم إِذَا صَلَّى صَلاَةً أَقْبَلَ عَلَيْنَا بِوَجْهِهِ فَقَالَ ‏"‏ مَنْ رَأَى مِنْكُمُ اللَّيْلَةَ رُؤْيَا ‏"‏‏.‏ قَالَ فَإِنْ رَأَى أَحَدٌ قَصَّهَا، فَيَقُولُ مَا شَاءَ اللَّهُ، فَسَأَلَنَا يَوْمًا، فَقَالَ ‏"‏ هَلْ رَأَى أَحَدٌ مِنْكُمْ رُؤْيَا ‏"‏‏.‏ قُلْنَا لاَ‏.‏ قَالَ ‏"‏ لَكِنِّي رَأَيْتُ اللَّيْلَةَ رَجُلَيْنِ أَتَيَانِي فَأَخَذَا بِيَدِي، فَأَخْرَجَانِي إِلَى الأَرْضِ الْمُقَدَّسَةِ، فَإِذَا رَجُلٌ جَالِسٌ، وَرَجُلٌ قَائِمٌ بِيَدِهِ كَلُّوبٌ مِنْ حَدِيدٍ ـ قَالَ بَعْضُ أَصْحَابِنَا عَنْ مُوسَى إِنَّهُ ـ يُدْخِلُ ذَلِكَ الْكَلُّوبَ فِي شِدْقِهِ، حَتَّى يَبْلُغَ قَفَاهُ، ثُمَّ يَفْعَلُ بِشِدْقِهِ الآخَرِ مِثْلَ ذَلِكَ، وَيَلْتَئِمُ شِدْقُهُ هَذَا، فَيَعُودُ فَيَصْنَعُ مِثْلَهُ‏.‏ قُلْتُ مَا هَذَا قَالاَ انْطَلِقْ‏.‏ فَانْطَلَقْنَا حَتَّى أَتَيْنَا عَلَى رَجُلٍ مُضْطَجِعٍ عَلَى قَفَاهُ، وَرَجُلٌ قَائِمٌ عَلَى رَأْسِهِ بِفِهْرٍ أَوْ صَخْرَةٍ، فَيَشْدَخُ بِهِ رَأْسَهُ، فَإِذَا ضَرَبَهُ تَدَهْدَهَ الْحَجَرُ، فَانْطَلَقَ إِلَيْهِ لِيَأْخُذَهُ، فَلاَ يَرْجِعُ إِلَى هَذَا حَتَّى يَلْتَئِمَ رَأْسُهُ، وَعَادَ رَأْسُهُ كَمَا هُوَ، فَعَادَ إِلَيْهِ فَضَرَبَهُ، قُلْتُ مَنْ هَذَا قَالاَ انْطَلِقْ‏.‏ فَانْطَلَقْنَا إِلَى ثَقْبٍ مِثْلِ التَّنُّورِ، أَعْلاَهُ ضَيِّقٌ وَأَسْفَلُهُ وَاسِعٌ، يَتَوَقَّدُ تَحْتَهُ نَارًا، فَإِذَا اقْتَرَبَ ارْتَفَعُوا حَتَّى كَادَ أَنْ يَخْرُجُوا، فَإِذَا خَمَدَتْ رَجَعُوا فِيهَا، وَفِيهَا رِجَالٌ وَنِسَاءٌ عُرَاةٌ‏.‏ فَقُلْتُ مَنْ هَذَا قَالاَ انْطَلِقْ‏.‏ فَانْطَلَقْنَا حَتَّى أَتَيْنَا عَلَى نَهَرٍ مِنْ دَمٍ، فِيهِ رَجُلٌ قَائِمٌ عَلَى وَسَطِ النَّهَرِ رَجُلٌ بَيْنَ يَدَيْهِ حِجَارَةٌ، فَأَقْبَلَ الرَّجُلُ الَّذِي فِي النَّهَرِ، فَإِذَا أَرَادَ أَنْ يَخْرُجَ رَمَى الرَّجُلُ بِحَجَرٍ فِي فِيهِ، فَرَدَّهُ حَيْثُ كَانَ، فَجَعَلَ كُلَّمَا جَاءَ لِيَخْرُجَ رَمَى فِي فِيهِ بِحَجَرٍ، فَيَرْجِعُ كَمَا كَانَ‏.‏ فَقُلْتُ مَا هَذَا قَالاَ انْطَلِقْ‏.‏ فَانْطَلَقْنَا حَتَّى انْتَهَيْنَا إِلَى رَوْضَةٍ خَضْرَاءَ، فِيهَا شَجَرَةٌ عَظِيمَةٌ، وَفِي أَصْلِهَا شَيْخٌ وَصِبْيَانٌ، وَإِذَا رَجُلٌ قَرِيبٌ مِنَ الشَّجَرَةِ بَيْنَ يَدَيْهِ نَارٌ يُوقِدُهَا، فَصَعِدَا بِي فِي الشَّجَرَةِ، وَأَدْخَلاَنِي دَارًا لَمْ أَرَ قَطُّ أَحْسَنَ مِنْهَا، فِيهَا رِجَالٌ شُيُوخٌ وَشَبَابٌ، وَنِسَاءٌ وَصِبْيَانٌ، ثُمَّ أَخْرَجَانِي مِنْهَا فَصَعِدَا بِي الشَّجَرَةَ فَأَدْخَلاَنِي دَارًا هِيَ أَحْسَنُ وَأَفْضَلُ، فِيهَا شُيُوخٌ وَشَبَابٌ‏.‏ قُلْتُ طَوَّفْتُمَانِي اللَّيْلَةَ، فَأَخْبِرَانِي عَمَّا رَأَيْتُ‏.‏ قَالاَ نَعَمْ، أَمَّا الَّذِي رَأَيْتَهُ يُشَقُّ شِدْقُهُ فَكَذَّابٌ يُحَدِّثُ بِالْكَذْبَةِ، فَتُحْمَلُ عَنْهُ حَتَّى تَبْلُغَ الآفَاقَ، فَيُصْنَعُ بِهِ إِلَى يَوْمِ الْقِيَامَةِ‏.‏ وَالَّذِي رَأَيْتَهُ يُشْدَخُ رَأْسُهُ فَرَجُلٌ عَلَّمَهُ اللَّهُ الْقُرْآنَ، فَنَامَ عَنْهُ بِاللَّيْلِ، وَلَمْ يَعْمَلْ فِيهِ بِالنَّهَارِ، يُفْعَلُ بِهِ إِلَى يَوْمِ الْقِيَامَةِ‏.‏ وَالَّذِي رَأَيْتَهُ فِي الثَّقْبِ فَهُمُ الزُّنَاةُ‏.‏ وَالَّذِي رَأَيْتَهُ فِي النَّهَرِ آكِلُو الرِّبَا‏.‏ وَالشَّيْخُ فِي أَصْلِ الشَّجَرَةِ إِبْرَاهِيمُ ـ عَلَيْهِ السَّلاَمُ ـ وَالصِّبْيَانُ حَوْلَهُ فَأَوْلاَدُ النَّاسِ، وَالَّذِي يُوقِدُ النَّارَ مَالِكٌ خَازِنُ النَّارِ‏.‏ وَالدَّارُ الأُولَى الَّتِي دَخَلْتَ دَارُ عَامَّةِ الْمُؤْمِنِينَ، وَأَمَّا هَذِهِ الدَّارُ فَدَارُ الشُّهَدَاءِ، وَأَنَا جِبْرِيلُ، وَهَذَا مِيكَائِيلُ، فَارْفَعْ رَأْسَكَ، فَرَفَعْتُ رَأْسِي فَإِذَا فَوْقِي مِثْلُ السَّحَابِ‏.‏ قَالاَ ذَاكَ مَنْزِلُكَ‏.‏ قُلْتُ دَعَانِي أَدْخُلْ مَنْزِلِي‏.‏ قَالاَ إِنَّهُ بَقِيَ لَكَ عُمْرٌ لَمْ تَسْتَكْمِلْهُ، فَلَوِ اسْتَكْمَلْتَ أَتَيْتَ مَنْزِلَكَ ‏"‏‏.

Narrated By Samura bin Jundab : Whenever the Prophet finished the (morning) prayer, he would face us and ask, "Who amongst you had a dream last night?" So if anyone had seen a dream he would narrate it. The Prophet would say: "Ma sha'a-llah" (An Arabic maxim meaning literally, 'What Allah wished,' and it indicates a good omen.) One day, he asked us whether anyone of us had seen a dream. We replied in the negative. The Prophet said, "But I had seen (a dream) last night that two men came to me, caught hold of my hands, and took me to the Sacred Land (Jerusalem). There, I saw a person sitting and another standing with an iron hook in his hand pushing it inside the mouth of the former till it reached the jaw-bone, and then tore off one side of his cheek, and then did the same with the other side; in the mean-time the first side of his cheek became normal again and then he repeated the same operation again. I said, 'What is this?' They told me to proceed on and we went on till we came to a man Lying flat on his back, and another man standing at his head carrying a stone or a piece of rock, and crushing the head of the Lying man, with that stone. Whenever he struck him, the stone rolled away. The man went to pick it up and by the time he returned to him, the crushed head had returned to its normal state and the man came back and struck him again (and so on). I said, 'Who is this?' They told me to proceed on; so we proceeded on and passed by a hole like an oven; with a narrow top and wide bottom, and the fire was kindling underneath that hole. Whenever the fire-flame went up, the people were lifted up to such an extent that they about to get out of it, and whenever the fire got quieter, the people went down into it, and there were naked men and women in it. I said, 'Who is this?' They told me to proceed on. So we proceeded on till we reached a river of blood and a man was in it, and another man was standing at its bank with stones in front of him, facing the man standing in the river. Whenever the man in the river wanted to come out, the other one threw a stone in his mouth and caused him to retreat to his original position; and so whenever he wanted to come out the other would throw a stone in his mouth, and he would retreat to his original position. I asked, 'What is this?' They told me to proceed on and we did so till we reached a well-flourished green garden having a huge tree and near its root was sitting an old man with some children. (I saw) Another man near the tree with fire in front of him and he was kindling it up. Then they (i.e. my two companions) made me climb up the tree and made me enter a house, better than which I have ever seen. In it were some old men and young men, women and children. Then they took me out of this house and made me climb up the tree and made me enter another house that was better and superior (to the first) containing old and young people. I said to them (i.e. my two companions), 'You have made me ramble all the night. Tell me all about that I have seen.' They said, 'Yes. As for the one whose cheek you saw being torn away, he was a liar and he used to tell lies, and the people would report those lies on his authority till they spread all over the world. So, he will be punished like that till the Day of Resurrection. The one whose head you saw being crushed is the one whom Allah had given the knowledge of Qur'an (i.e. knowing it by heart) but he used to sleep at night (i.e. he did not recite it then) and did not use to act upon it (i.e. upon its orders etc.) by day; and so this punishment will go on till the Day of Resurrection. And those you saw in the hole (like oven) were adulterers (those men and women who commit illegal sexual intercourse). And those you saw in the river of blood were those dealing in Riba (usury). And the old man who was sitting at the base of the tree was Abraham and the little children around him were the offspring of the people. And the one who was kindling the fire was Malik, the gate-keeper of the Hell-fire. And the first house in which you have gone was the house of the common believers, and the second house was of the martyrs. I am Gabriel and this is Michael. Raise your head.' I raised my head and saw a thing like a cloud over me. They said, 'That is your place.' I said, 'Let me enter my place.' They said, 'You still have some life which you have not yet completed, and when you complete (that remaining portion of your life) you will then enter your place.'"

سمرہ بن جندب رضی اللہ عنہ سے روایت ہے انہوں نے کہا: نبیﷺ جب (صبح کی) نماز سے فارغ ہوتے تو ہماری طرف متوجہ ہوتے اور فرماتے آج رات تم میں سے جس نے کوئی خواب دیکھا ہو وہ بیان کرے۔اگر کسی نے کوئی خواب دیکھا ہوتا تو بیان کرتا آپﷺ جو اللہ کو منظور ہوتا اس کی تعبیر بیان فرماتے ایک دن ایسا ہوا کہ آپﷺ نے ہم سے پوچھا کیا تم میں سے کسی نے کوئی خواب دیکھا ہے؟ ہم نے عرض کیا جی نہیں۔ آپ ﷺ نے فرمایا: مگر میں نے تو آج رات(خواب میں) دیکھا دو شخص (فرشتے) میرے پاس آئے اور میرا ہاتھ پکڑ کر بیت المقدس کی طرف لے گئے۔ وہاں کیا دیکھتا ہاں ایک شخص تو بیٹھا ہے اور دوسرا لوہے کا ٹکڑا ہاتھ میں لیے کھڑا ہے(امام بخاری رحمہ اللہ نے کہا) ہمارے بعض ساتھیوں نے موسیٰ بن اسمٰعیل سے(یوں روایت کیا ہے) جسے وہ بیٹھنے والے کے جبڑے میں ڈال کر اس کے سر کے پیچھے تک چیردیتا ، پھر دوسرے جبڑے کے ساتھ بھی اسی طرح کرتا تھا۔اس دوران میں اس کا پہلا جبڑا صحیح اور اپنی اصلی حالت پر آجاتا اور پھر پہلے کی طرح وہ اسے دوبارہ چیرتا۔ میں نے اپنے ساتھ والوں سے پوچھا یہ ہے کیا؟ انہوں نے کہا آگے تو چلو خیر ہم ایک مرد کے پاس پہنچے جو سر کے بل لیٹا ہوا ہے اور ایک دوسرا شخص اس کے سر پر بڑا پتھر لئے کھڑا ہے اور اس سے اسکا سر پھوڑ رہا ہے اسکے مارتے ہی پتھر (سر پھوڑ کر) لڑھک جاتا ہے، مارنے والا اسکے لینے کو جاتا ہے، ابھی لے کر نہیں لوٹتا کہ جس کو مارا تھا اس کا سر جڑ کر اچھا خاصا جیسا پہلے تھا ہوجاتا ہے پھر وہ لوٹ کر مارتا ہے۔ میں نے (اپنے ساتھیوں) سے پوچھا یہ ہے کون؟ انہوں نے کہا آگے تو چلو۔خیر ہم تنور کی طرح کے ایک گڑھے پر پہنچے اوپر سے اس کا منہ تنگ اور نیچے سے کشادہ، اس کے تلے آگ سلگ رہی تھی۔جب آگ کی لپٹ اوپر تنور کے کنارے تک آتی تو اس کے اندر جو لوگ تھے،وہ بھی اوپر اُٹھ آتے نکلنے کے قریب ہوجاتے پھر جب دھیمی ہوجاتی تو لوگ بھی اندر لوٹ جاتے۔ان لوگوں میں کئی عورتیں اور مرد ننگے تھے۔میں نے اپنے ساتھیوں سے پوچھا یہ ہے کیا؟ انہوں نے کہا آگے تو چلو۔خیر ہم پھر چلے۔ ایک خون کی ندّی پر پہنچے،اس ندی میں ایک شخص کھڑا ہے اور ندی کے ایک عمدہ مقام پر ایک شخص ہے جس کے سامنے پتّھر رکھے ہیں۔وہ شخص جو ندی کے اندر تھا بڑھ آیا اور ندی سے نکلنے لگا اس وقت دوسرے شخص نے ایک پتّھر اس کے منہ پر مارا اور جہاں وہ تھا وہیں اس کو لوٹا دیا۔پھر ایسا ہی کیا جب اس نے نکلنا چاہا اس نے ایک پتّھر اس کے منہ پر مار دیا وہ لوٹ کر اپنی جگہ جارہا۔میں نے(اپنے ساتھیوں سے) پوچھا یہ معاملہ کیا ہے؟ انہوں نے کہا آگے تو چلو۔خیر ہم چلتے چلتے ایک ہرے بھرے باغیچہ پر پہنچےٗوہاں ایک بڑا درخت تھا اس کی جڑ میں ایک بوڑھا بیٹھا تھا اور کئی بچّے اور اس درخت کے پاس ایک مرد اور تھا جو اپنے سامنے آگ سلگا رہا تھا۔خیر میرے دونوں ساتھی مجھ کو لے کر اس درخت پر چڑھے اور ایسے ایک گھر میں لے گئے کہ میں نے اس سے اچھا اور اس سے عمدہ کوئی گھر ہی نہیں دیکھا اس میں بوڑھے اور جوان اور عورتیں اور بچے(سب طرح کے لوگ) تھے۔میرے ساتھی مجھے اس گھر سے نکال کر پھر ایک اور درخت پر چڑھاکر مجھے ایک اور دوسرے گھر میں لے گئے جو نہایت خوبصورت اور بہتر تھا۔ وہاں بوڑھے جوان (دو طرح کے لوگ تھے) میں نے اپنے ساتھیوں سے کہا تم نے تو مجھ کو آج رات کو خوب گھمایا،اب جو میں نے دیکھا ہے اس کی کیفیت تو بتاؤ انہوں نے کیا اچھا تم نے دیکھا جس کا جبڑا لوہے کے ٹکڑے سے پھاڑا جا رہا تھاوہ ایک بڑا جھوٹا شخص ہے جو جھوٹی بات بیان کرتا لوگ اسے سن کر سب طرف مشہور کردیتے۔قیامت تک اس کو یہی سزا ملتی رہے گی اور جس کا سر تم نے دیکھا کہ پھوڑا جارہا تھا وہ شخص ہے جس کو(دنیا میں) اللہ نے قرآن کا علم دیا تھا لیکن رات کو وہ سوتا رہا اور دن کو اس پر عمل نہیں کیا ، قیامت تک اسکو ہی سزا ملتی رہے گی اور تنور میں جو لوگ تم نے دیکھے، وہ زانی بدکار لوگ ہیں اور نہر میں جن کو دیکھا وہ سودخوار ہے اور درخت کی جڑ میں جو بوڑھا دیکھا وہ ابراہیم علیہ السلام تھے۔ان کے گرد جو بچّے دیکھے وہ لوگوں کے نابالغ بچّے تھے۔ اور وہ شخص جو آگ جلار رہا تھا وہ دوزخ کا داروغہ مالک تھا۔ پہلے جس گھر میں تم گئے تھے وہ عام مسلمانوں کے رہنے کا گھر ہے اور یہ دوسرا شہیدوں کے رہنے کا گھر ہے اور میں جبریل علیہ السلام ہوں اور یہ(میرا ساتھی) میکائیل۔تم اپنا سر تو اٹھاؤ۔ میں نے سر اٹھایا دیکھا تو ابر کی طرح ایک چیز میرے اوپر ہے انہوں نے کہا یہ تمہارا مقام ہے۔میں نے کہا مجھ کو چھوڑو میں اپنے مقام میں جاؤں۔انہوں نے کہا ابھی دنیا میں رہنے کی تمہاری کچھ عمر باقی ہے جسے تم نے پورا نہیں کیا، اگر پورا کر چکے ہوتے تو اپنے مقام میں آجاتے۔

Chapter No: 94

باب مَوْتِ يَوْمِ الاِثْنَيْنِ

Dying on Monday.

باب: پیر کے دن مرنے کی فضیلت۔

حَدَّثَنَا مُعَلَّى بْنُ أَسَدٍ، حَدَّثَنَا وُهَيْبٌ، عَنْ هِشَامٍ، عَنْ أَبِيهِ، عَنْ عَائِشَةَ ـ رضى الله عنها ـ قَالَتْ دَخَلْتُ عَلَى أَبِي بَكْرٍ ـ رضى الله عنه ـ فَقَالَ فِي كَمْ كَفَّنْتُمُ النَّبِيَّ صلى الله عليه وسلم قَالَتْ فِي ثَلاَثَةِ أَثْوَابٍ بِيضٍ سَحُولِيَّةٍ، لَيْسَ فِيهَا قَمِيصٌ وَلاَ عِمَامَةٌ‏.‏ وَقَالَ لَهَا فِي أَىِّ يَوْمٍ تُوُفِّيَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم قَالَتْ يَوْمَ الاِثْنَيْنِ‏.‏ قَالَ فَأَىُّ يَوْمٍ هَذَا قَالَتْ يَوْمُ الاِثْنَيْنِ‏.‏ قَالَ أَرْجُو فِيمَا بَيْنِي وَبَيْنَ اللَّيْلِ‏.‏ فَنَظَرَ إِلَى ثَوْبٍ عَلَيْهِ كَانَ يُمَرَّضُ فِيهِ، بِهِ رَدْعٌ مِنْ زَعْفَرَانٍ فَقَالَ اغْسِلُوا ثَوْبِي هَذَا، وَزِيدُوا عَلَيْهِ ثَوْبَيْنِ فَكَفِّنُونِي فِيهَا‏.‏ قُلْتُ إِنَّ هَذَا خَلَقٌ‏.‏ قَالَ إِنَّ الْحَىَّ أَحَقُّ بِالْجَدِيدِ مِنَ الْمَيِّتِ، إِنَّمَا هُوَ لِلْمُهْلَةِ‏.‏ فَلَمْ يُتَوَفَّ حَتَّى أَمْسَى مِنْ لَيْلَةِ الثُّلاَثَاءِ وَدُفِنَ قَبْلَ أَنْ يُصْبِحَ‏

Narrated By Hisham's father : 'Aisha said, "I went to Abu Bakr (during his fatal illness) and he asked me, 'In how many garments was the Prophet shrouded?' She replied, 'In three Sahuliya pieces of white cloth of cotton, and there was neither a shirt nor a turban among them.' Abu Bakr further asked her, 'On which day did the Prophet die?' She replied, 'He died on Monday.' He asked, 'What is today?' She replied, 'Today is Monday.' He added, 'I hope I shall die sometime between this morning and tonight.' Then he looked at a garment that he was wearing during his illness and it had some stains of saffron. Then he said, 'Wash this garment of mine and add two more garments and shroud me in them.' I said, 'This is worn out.' He said, 'A living person has more right to wear new clothes than a dead one; the shroud is only for the body's pus.' He did not die till it was the night of Tuesday and was buried before the morning."

حضرت عائشہ رضی ا للہ عنہا سے روایت ہے کہ انہوں نے کہا : میں حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ کےپاس (ان کی بیماری میں ) گئی۔ انہوں نے پوچھا تم نے نبیﷺ کو کتنے کپڑوں میں کفن دیا؟ میں نے کہا : تین دھلے ہوئے سفید کپڑوں میں ۔ نہ ان میں قمیص تھی اور نہ عمامہ۔ انہوں نے یہ بھی پوچھا کہ رسول اللہﷺ کی وفات کس دن ہوئی تھی؟ میں نے کہا پیر کے دن ۔ انہوں نے کہا :آج کون سا دن ہے ؟ میں نے کہا :پیر کا دن۔ انہوں نے کہا :مجھے بھی امّید ہے کہ اب سے لے کر رات تک کسی وقت میں گزر جاؤں پھر اپنے کپڑے پر نگاہ ڈالی جو بیماری میں پہنے تھے، اس پر زعفران کا دھبّہ لگا تھا اور کہا یہ کپڑا دھوڈالنا اور دو کپڑے اور لے لینا ۔ ان میں میرا کفن کر دینا۔ میں نے کہا یہ کپڑا تو پرانا ہے ۔ انہوں نے کہا :نیا کپڑا تو زندہ آدمی کے لیے زیادہ درکار ہے بہ نسبت مردے کے کیونکہ مردے کا کپڑا تو پیپ اور خون کے نذر ہوجائے گا۔ پھر اس روز حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ فوت نہیں ہوئے یہاں تک کہ منگل کی رات آگئی اور صبح ہونے سے پہلے دفن کردیئے گئے۔

Chapter No: 95

باب مَوْتِ الْفَجْأَةِ الْبَغْتَةِ

Sudden unexpected death.

باب: ناگہانی موت کا بیان۔

حَدَّثَنَا سَعِيدُ بْنُ أَبِي مَرْيَمَ، حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ جَعْفَرٍ، قَالَ أَخْبَرَنِي هِشَامٌ، عَنْ أَبِيهِ، عَنْ عَائِشَةَ ـ رضى الله عنها ـ‏.‏ أَنَّ رَجُلاً، قَالَ لِلنَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم إِنَّ أُمِّي افْتُلِتَتْ نَفْسُهَا، وَأَظُنُّهَا لَوْ تَكَلَّمَتْ تَصَدَّقَتْ، فَهَلْ لَهَا أَجْرٌ إِنْ تَصَدَّقْتُ عَنْهَا قَالَ ‏"‏ نَعَمْ ‏"

Narrated By 'Aisha : A man said to the Prophet (p.b.u.h), "My mother died suddenly and I thought that if she had lived she would have given alms. So, if I give alms now on her behalf, will she get the reward?" The Prophet replied in the affirmative.

حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا سے روایت ہے کہ انہوں نے کہا: ایک شخص نے نبی ﷺ سے عرض کیا کہ میری ماں اچانک مرگئی اور اگر انہیں بات کرنے کا موقع ملتا تو ضرور کچھ خیرات کرتی۔ اب اگر میں اس کی طرف سے خیرات کردوں تو اس کو کچھ ثواب ملے گا۔آپ ﷺ نے فرمایا: ہاں۔

Chapter No: 96

باب مَا جَاءَ فِي قَبْرِ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم وَأَبِي بَكْرٍ وَعُمَرَ رضى الله عنهما

What is said regarding the graves of the Prophet (s.a.w), Abu Bakr and Umar.

باب: نبیﷺ اور ابو بکرؓ اور عمرؓ کی قبروں کا بیان۔

{‏فَأَقْبَرَهُ‏}‏ أَقْبَرْتُ الرَّجُلَ إِذَا جَعَلْتَ لَهُ قَبْرًا، وَقَبَرْتُهُ دَفَنْتُهُ‏.‏ ‏{‏كِفَاتًا‏}‏ يَكُونُونَ فِيهَا أَحْيَاءً، وَيُدْفَنُونَ فِيهَا أَمْوَاتًا‏

سورت عبس میں جو آیا ہے فاقبرہ تو عرب لوگ کہتے ہیں اقبرت الرجل اقبرہ یعنی میں نے اس کے لیے قبر بنائی اور قبرتہ کا معنی میں نے اس کو دفن کیا اور سورت المرسلات میں جو کفاتا کا لفظ ہے ۔ اس کا مطلب یہ ہے کہ زندگی بھی زمین میں پوری کروگے اور مر کر بھی اسی میں گڑو گے۔

 

Chapter No: 97

باب مَا يُنْهَى مِنْ سَبِّ الأَمْوَاتِ

What is forbidden as regards, Abusing the dead.

باب: جو لوگ مر گئے ان کو برا کہنا منع ہے۔

 

Chapter No: 98

باب ذِكْرِ شِرَارِ الْمَوْتَى

Talking about the wicked among the dead.

باب: برے مردوں کی برائی بیان کرنا درست ہے۔

 

‹ First8910