Sayings of the Messenger احادیثِ رسول اللہ

 
Donation Request

Sahih Al-Bukhari

Book: Call for Prayers (10)    كتاب الأذان

1234Last ›

Chapter No: 11

باب أَذَانِ الأَعْمَى إِذَا كَانَ لَهُ مَنْ يُخْبِرُهُ

The call of Adhan by a blind man (is allowed) when there is a person to inform him about the time of prayer

باب: اندھا اگر اس کو کوئی وقت بتانے والا ہو تو اذان دے سکتا ہے

حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ مَسْلَمَةَ، عَنْ مَالِكٍ، عَنِ ابْنِ شِهَابٍ، عَنْ سَالِمِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ، عَنْ أَبِيهِ، أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم قَالَ ‏"‏ إِنَّ بِلاَلاً يُؤَذِّنُ بِلَيْلٍ، فَكُلُوا وَاشْرَبُوا حَتَّى يُنَادِيَ ابْنُ أُمِّ مَكْتُومٍ ‏"‏‏.‏ ثُمَّ قَالَ وَكَانَ رَجُلاً أَعْمَى لاَ يُنَادِي حَتَّى يُقَالَ لَهُ أَصْبَحْتَ أَصْبَحْتَ‏

Narrated By Salim bin Abdullah : My father said that Allah's Apostle said, "Bilal pronounces 'Adhan at night, so keep on eating and drinking (Suhur) till Ibn Um Maktum pronounces Adhan." Salim added, "He was a blind man who would not pronounce the Adhan unless he was told that the day had dawned."

حضرت عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺ نے فرمایا: بلال تو رات رہے اذان دیتے ہیں اس لیے تم لو گ کھا تے پیتے رہو جب تک کہ ابن ام مکتوم اذان نہ دے۔ (ابن عمر یا ابن شہا ب ) نے کہا: ابن ام مکتوم اندھا تھا، وہ اس وقت تک اذان نہیں دیتا تھا جب تک کہ لو گ یہ نہ کہتے صبح ہوگئی، صبح ہوگئی ہے۔

Chapter No: 12

باب الأَذَانِ بَعْدَ الْفَجْرِ

The Adhan after dawn (Fajr).

باب: صبح ہونے کے بعد اذان دینا۔

حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ يُوسُفَ، قَالَ أَخْبَرَنَا مَالِكٌ، عَنْ نَافِعٍ، عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عُمَرَ، قَالَ أَخْبَرَتْنِي حَفْصَةُ، أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم كَانَ إِذَا اعْتَكَفَ الْمُؤَذِّنُ لِلصُّبْحِ وَبَدَا الصُّبْحُ صَلَّى رَكْعَتَيْنِ خَفِيفَتَيْنِ قَبْلَ أَنْ تُقَامَ الصَّلاَةُ

Narrated By Hafsa : When the Muadh-dhin pronounced the Adhan for Fajr prayer and the dawn became evident the Prophet ordered a two Rakat light prayer (Sunna) before the Iqama of the compulsory (congregational) prayer.

حضرت ام المؤمنین حفصہ رضی اللہ عنہا نے خبر دی کہ رسول اللہﷺکی عادت تھی کہ جب مؤذن صبح کی اذان صبح صادق کے طلوع ہونے کے بعد دے چکا ہوتا، تو آپﷺاذان اور تکبیر کے درمیان نماز قائم ہونے سے پہلے ہلکی دو رکعتیں پڑھتے۔


حَدَّثَنَا أَبُو نُعَيْمٍ، قَالَ حَدَّثَنَا شَيْبَانُ، عَنْ يَحْيَى، عَنْ أَبِي سَلَمَةَ، عَنْ عَائِشَةَ، كَانَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم يُصَلِّي رَكْعَتَيْنِ خَفِيفَتَيْنِ بَيْنَ النِّدَاءِ وَالإِقَامَةِ مِنْ صَلاَةِ الصُّبْحِ‏

Narrated By 'Aisha : The Prophet used to offer two light Rakat between the Adhan and the Iqama of the Fajr prayer.

حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا سے روایت ہے کہ نبیﷺ صبح کی اذان اور تکبیر کے درمیان میں دو ہلکی پھلکی رکعتیں (سنت کی) پڑھا کرتے تھے۔


حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ يُوسُفَ، أَخْبَرَنَا مَالِكٌ، عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ دِينَارٍ، عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عُمَرَ، أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم قَالَ ‏"‏ إِنَّ بِلاَلاً يُنَادِي بِلَيْلٍ، فَكُلُوا وَاشْرَبُوا حَتَّى يُنَادِيَ ابْنُ أُمِّ مَكْتُومٍ ‏"‏‏

Narrated By 'Abdullah bin 'Umar : Allah's Apostle said, "Bilal pronounces the Adhan at night, so keep on eating and drinking (Suhur) till Ibn Um Maktum pronounces the Adhan."

حضرت عبد اللہ بن عمر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺ نے فرمایا: بلال را ت رہے اذان دے دیتا ہے تو جب تک ابن اُم مکتوم اذان نہ دے تم کھاتے پیتے رہو۔

Chapter No: 13

باب الأَذَانِ قَبْلَ الْفَجْرِ

The Adhan before dawn (Fajr).

باب: صبح سے پہلے اذان کہنا۔

حَدَّثَنَا أَحْمَدُ بْنُ يُونُسَ، قَالَ حَدَّثَنَا زُهَيْرٌ، قَالَ حَدَّثَنَا سُلَيْمَانُ التَّيْمِيُّ، عَنْ أَبِي عُثْمَانَ النَّهْدِيِّ، عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ مَسْعُودٍ، عَنِ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم قَالَ ‏"‏ لاَ يَمْنَعَنَّ أَحَدَكُمْ ـ أَوْ أَحَدًا مِنْكُمْ ـ أَذَانُ بِلاَلٍ مِنْ سَحُورِهِ، فَإِنَّهُ يُؤَذِّنُ ـ أَوْ يُنَادِي ـ بِلَيْلٍ، لِيَرْجِعَ قَائِمَكُمْ وَلِيُنَبِّهَ نَائِمَكُمْ، وَلَيْسَ أَنْ يَقُولَ الْفَجْرُ أَوِ الصُّبْحُ ‏"‏‏.‏ وَقَالَ بِأَصَابِعِهِ وَرَفَعَهَا إِلَى فَوْقُ وَطَأْطَأَ إِلَى أَسْفَلُ حَتَّى يَقُولَ هَكَذَا‏.‏ وَقَالَ زُهَيْرٌ بِسَبَّابَتَيْهِ إِحْدَاهُمَا فَوْقَ الأُخْرَى ثُمَّ مَدَّهَا عَنْ يَمِينِهِ وَشِمَالِهِ‏

Narrated By 'Abdullah bin Mas'ud : The Prophet said, "The Adhan pronounced by Bilal should not stop you from taking Suhur, for he pronounces the Adhan at night, so that the one offering the late night prayer (Tahajjud) from among you might hurry up and the sleeping from among you might wake up. It does not mean that dawn or morning has started." Then he (the Prophet) pointed with his fingers and raised them up (towards the sky) and then lowered them (towards the earth) like this (Ibn Mas'ud imitated the gesture of the Prophet). Az-Zuhri gestured with his two index fingers which he put on each other and then stretched them to the right and left. These gestures illustrate the way real dawn appears. It spreads left and right horizontally. The dawn that appears in the high sky and lowers down is not the real dawn).

حضرت عبد اللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ انہوں نے نبیﷺ سے کہ آپﷺ نے فرمایا: تم میں کسی کو سحری کھانے سے بلال کی اذان نہ روکے کیونکہ وہ رات رہے سے اذان دیتا ہے اس لئے (رات کو) قیام کرنے والے آرام کرنے کےلیے لوٹ جائیں۔ اور جو ابھی سوئے ہوئے ہیں وہ ہوشیار ہوجائیں۔کوئی یہ سمجھ نہ بیٹھے کہ فجر یا صبح صادق ہوگئی ہے،اور آپﷺنے اپنی انگلیوں کے اشارے سے(طلوع صبح کی کیفیت) بتائی۔ انگلیوں کو اوپر کی طرف اٹھایا اور پھر آہستہ سے انہیں نیچے لائے اور پھر فرمایا: کہ اس طرح (فجر ہوتی ہے) حضرت الزهري نے بھی شہادت کی انگلی ایک دوسری پر رکھی ، پھر انہیں دائیں بائیں جانب پھیلا دیا۔


حَدَّثَنى إِسْحَاقُ، قَالَ أَخْبَرَنَا أَبُو أُسَامَةَ، قَالَ عُبَيْدُ اللَّهِ حَدَّثَنَا عَنِ الْقَاسِمِ بْنِ مُحَمَّدٍ، عَنْ عَائِشَةَ،‏.‏ وَعَنْ نَافِعٍ، عَنِ ابْنِ عُمَرَ، أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم ح قَالَ‏ وَحَدَّثَنِي يُوسُفُ بْنُ عِيسَى الْمَرْوَزِيُّ، قَالَ حَدَّثَنَا الْفَضْلُ، قَالَ حَدَّثَنَا عُبَيْدُ اللَّهِ بْنُ عُمَرَ، عَنِ الْقَاسِمِ بْنِ مُحَمَّدٍ، عَنْ عَائِشَةَ، عَنِ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم أَنَّهُ قَالَ ‏"‏ إِنَّ بِلاَلاً يُؤَذِّنُ بِلَيْلٍ، فَكُلُوا وَاشْرَبُوا حَتَّى يُؤَذِّنَ ابْنُ أُمِّ مَكْتُومٍ ‏"‏‏

Narrated By 'Aisha : The Prophet said, "Bilal pronounces the Adhan at night, so eat and drink (Suhur) till Ibn Um Maktum pronounces the Adhan."

حضرت عا ئشہ رضی اللہ عنہا سے مروی ہے اُنہو ں نے نبیﷺ سے روایت کی ہے کہ آپﷺ نے فرمایا: بلال را ت رہے اذان دیتا ہے اس لیے تم کھا تے پیتے رہو جب تک کہ ابن ام مکتو م رضی اللہ عنہ اذان نہ دے۔


حَدَّثَنى إِسْحَاقُ، قَالَ أَخْبَرَنَا أَبُو أُسَامَةَ، قَالَ عُبَيْدُ اللَّهِ حَدَّثَنَا عَنِ الْقَاسِمِ بْنِ مُحَمَّدٍ، عَنْ عَائِشَةَ،‏.‏ وَعَنْ نَافِعٍ، عَنِ ابْنِ عُمَرَ، أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم ح قَالَ‏ وَحَدَّثَنِي يُوسُفُ بْنُ عِيسَى الْمَرْوَزِيُّ، قَالَ حَدَّثَنَا الْفَضْلُ، قَالَ حَدَّثَنَا عُبَيْدُ اللَّهِ بْنُ عُمَرَ، عَنِ الْقَاسِمِ بْنِ مُحَمَّدٍ، عَنْ عَائِشَةَ، عَنِ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم أَنَّهُ قَالَ ‏"‏ إِنَّ بِلاَلاً يُؤَذِّنُ بِلَيْلٍ، فَكُلُوا وَاشْرَبُوا حَتَّى يُؤَذِّنَ ابْنُ أُمِّ مَكْتُومٍ ‏"‏‏

Narrated By 'Aisha : The Prophet said, "Bilal pronounces the Adhan at night, so eat and drink (Suhur) till Ibn Um Maktum pronounces the Adhan."

حضرت عا ئشہ رضی اللہ عنہا سے مروی ہے اُنہو ں نے نبیﷺ سے روایت کی ہے کہ آپﷺ نے فرمایا: بلال را ت رہے اذان دیتا ہے اس لیے تم کھا تے پیتے رہو جب تک کہ ابن ام مکتو م رضی اللہ عنہ اذان نہ دے۔

Chapter No: 14

باب كَمْ بَيْنَ الأَذَانِ وَالإِقَامَةِ وَمَنْ يَنْتَظِرُ الإِقَامَةَ

How long should the interval between the Adhan and the Iqama be? The one who waits for the Iqama.

باب: اذان اور تکبیر میں کتنا وقفہ ہونا چاہئیے اور ان کا بیان جو تکبیر کا انتظار کریں ۔

حَدَّثَنَا إِسْحَاقُ الْوَاسِطِيُّ، قَالَ حَدَّثَنَا خَالِدٌ، عَنِ الْجُرَيْرِيِّ، عَنِ ابْنِ بُرَيْدَةَ، عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ مُغَفَّلٍ الْمُزَنِيِّ، أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم قَالَ ‏"‏ بَيْنَ كُلِّ أَذَانَيْنِ صَلاَةٌ ـ ثَلاَثًا ـ لِمَنْ شَاءَ ‏"‏‏

Narrated By 'Abdullah bin Mughaffal Al-Muzani : Allah's Apostle said thrice, "There is a prayer between the two Adhans (Adhan and Iqama)," and added, "For the one who wants to pray."

حضرت عبد اللہ بن مغفل رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا: ہر اذان اورتکبیر کے درمیان میں جو کو ئی چاہیے نما ز پڑھے یہ آپﷺ نے تین مرتبہ فرمایا۔


حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ بَشَّارٍ، قَالَ حَدَّثَنَا غُنْدَرٌ، قَالَ حَدَّثَنَا شُعْبَةُ، قَالَ سَمِعْتُ عَمْرَو بْنَ عَامِرٍ الأَنْصَارِيَّ، عَنْ أَنَسِ بْنِ مَالِكٍ، قَالَ كَانَ الْمُؤَذِّنُ إِذَا أَذَّنَ قَامَ نَاسٌ مِنْ أَصْحَابِ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم يَبْتَدِرُونَ السَّوَارِيَ حَتَّى يَخْرُجَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم وَهُمْ كَذَلِكَ يُصَلُّونَ الرَّكْعَتَيْنِ قَبْلَ الْمَغْرِبِ، وَلَمْ يَكُنْ بَيْنَ الأَذَانِ وَالإِقَامَةِ شَىْءٌ‏.‏ قَالَ عُثْمَانُ بْنُ جَبَلَةَ وَأَبُو دَاوُدَ عَنْ شُعْبَةَ لَمْ يَكُنْ بَيْنَهُمَا إِلاَّ قَلِيلٌ‏

Narrated By Anas bin Malik : "When the Mu'adhdhin pronounced the Adhan, some of the companions of the Prophet would proceed to the pillars of the mosque (for the prayer) till the Prophet arrived and in this way they used to pray two Rakat before the Maghrib prayer. There used to be a little time between the Adhan and the Iqama." Shu'ba said, "There used to be a very short interval between the two (Adhan and Iqama)."

حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ اُنہو ں نے کہا: جب مؤذن اذان دیتا تو آپﷺ کے صحابہ (مسجد کے) ستونو ں کی طر ف لپکتے آپﷺ کے باہر تشریف لانے تک لوگ اسی طرح مغرب سے پہلے کی دو رکعتیں پڑھ رہے ہوتے ۔ اور اذان اورتکبیر میں کچھ زیا دہ وقفہ نہ ہوتا، اور عثمان بن جبلہ اور ابو داود طیالسی نےشعبہ سے یوں نقل کیا ہےاذان اور تکبیر میں تھوڑا ہی وقفہ ہوتا تھا ۔

Chapter No: 15

باب مَنِ انْتَظَرَ الإِقَامَةَ

Whoever waits for the Iqama

باب: اذان سن کر تکبیر کا انتظار ( گھر میں) کرتے رہنا۔

حَدَّثَنَا أَبُو الْيَمَانِ، قَالَ أَخْبَرَنَا شُعَيْبٌ، عَنِ الزُّهْرِيِّ، قَالَ أَخْبَرَنِي عُرْوَةُ بْنُ الزُّبَيْرِ، أَنَّ عَائِشَةَ، قَالَتْ كَانَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم إِذَا سَكَتَ الْمُؤَذِّنُ بِالأُولَى مِنْ صَلاَةِ الْفَجْرِ قَامَ فَرَكَعَ رَكْعَتَيْنِ خَفِيفَتَيْنِ قَبْلَ صَلاَةِ الْفَجْرِ بَعْدَ أَنْ يَسْتَبِينَ الْفَجْرُ، ثُمَّ اضْطَجَعَ عَلَى شِقِّهِ الأَيْمَنِ حَتَّى يَأْتِيَهُ الْمُؤَذِّنُ لِلإِقَامَةِ‏

Narrated By 'Aisha : Allah's Apostle used to pray two light Rakat before the morning (compulsory) prayer after the day dawned and the Mu'adhdhin had finished his Adhan. He then would lie on his right side till the Mu'adhdhin came to pronounce the Iqama.

حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا نے کہا: جب مؤذن صبح کی دوسری اذان دے کر خاموش ہوجاتا تو رسول اللہﷺ اُٹھتےاور فرض سے پہلے دو رکعتیں (سنت کی) ہلکی پھلکی ادا کرتے، صبح صا دق رو شن ہوجانے کے بعد پھر داہنی کروٹ پر لیٹ جاتے یہا ں تک کہ مؤذن تکبیر کہنے کےلئے آپﷺ کے پا س آتا۔

Chapter No: 16

باب بَيْنَ كُلِّ أَذَانَيْنِ صَلاَةٌ لِمَنْ شَاءَ

Between every two Adhan (Adhan and Iqama), (Nawwafil) Salat can be offered by the one who wants to

باب: ہر اذان اور تکبیر کے بیچ میں جو کوئی چاہے (نفل) نماز پڑھے۔

حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ يَزِيدَ، قَالَ حَدَّثَنَا كَهْمَسُ بْنُ الْحَسَنِ، عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ بُرَيْدَةَ، عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ مُغَفَّلٍ، قَالَ قَالَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ بَيْنَ كُلِّ أَذَانَيْنِ صَلاَةٌ بَيْنَ كُلِّ أَذَانَيْنِ صَلاَةٌ ـ ثُمَّ قَالَ فِي الثَّالِثَةِ ـ لِمَنْ شَاءَ ‏"‏‏

Narrated By 'Abdullah bin Mughaffal : The prophet said, "There is a prayer between the two Adhans (Adhan and Iqama), there is a prayer between the two Adhans." And then while saying it the third time he added, "For the one who wants to (pray)."

حضرت عبداللہ بن مغفل رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ انہوں نے کہا: نبیﷺ نے فرمایا: ہر اذان اور اقامت کے درمیان میں نماز ہے، ہر اذان اور اقامت کے درمیان میں نماز ہے، تیسری باربھی یہی فرمایا: جو پڑھنا چا ہے۔

Chapter No: 17

باب مَنْ قَالَ لِيُؤَذِّنْ فِي السَّفَرِ مُؤَذِّنٌ وَاحِدٌ

Whoever said that there should be one Mu’adh-dhin in the journey.

باب: سفر میں ایک ہی شخص اذان دے جیسے حضر میں۔

حَدَّثَنَا مُعَلَّى بْنُ أَسَدٍ، قَالَ حَدَّثَنَا وُهَيْبٌ، عَنْ أَيُّوبَ، عَنْ أَبِي قِلاَبَةَ، عَنْ مَالِكِ بْنِ الْحُوَيْرِثِ، أَتَيْتُ النَّبِيَّ صلى الله عليه وسلم فِي نَفَرٍ مِنْ قَوْمِي فَأَقَمْنَا عِنْدَهُ عِشْرِينَ لَيْلَةً، وَكَانَ رَحِيمًا رَفِيقًا، فَلَمَّا رَأَى شَوْقَنَا إِلَى أَهَالِينَا قَالَ ‏"‏ ارْجِعُوا فَكُونُوا فِيهِمْ وَعَلِّمُوهُمْ وَصَلُّوا، فَإِذَا حَضَرَتِ الصَّلاَةُ فَلْيُؤَذِّنْ لَكُمْ أَحَدُكُمْ وَلْيَؤُمَّكُمْ أَكْبَرُكُمْ ‏"‏‏

Narrated By Malik bin Huwairth : I came to the Prophet with some men from my tribe and stayed with him for twenty nights. He was kind and merciful to us. When he realized our longing for our families, he said to us, "Go back and stay with your families and teach them the religion, and offer the prayer and one of you should pronounce the Adhan for the prayer when its time is due and the oldest one amongst you should lead the prayer."

حضرت ما لک بن حویرث رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ اُنہو ں نے کہا: میں اپنی قوم کے چند آدمیوں کے ساتھ نبیﷺ کے پاس آیا، بیس راتیں آپﷺ کے پاس رہا ،آپﷺ بہت رحمدل اور ملنسار تھے۔ جب آپﷺ نے ہمارے اپنے گھر جانے کا شوق محسوس کیا تو فرمایا: اب تم جاسکتے ہو،اپنی قوم میں رہو، ان کو (دین کی باتیں) سکھلاؤ ،اور (سفر میں) نما ز پڑھتے رہنا جب نما ز کا وقت آئے تو تم میں سے ایک شخص اذان دے اور جو بڑا ہو وہ امامت کرائے ۔

Chapter No: 18

باب الأَذَانِ لِلْمُسَافِرِ إِذَا كَانُوا جَمَاعَةً، وَالإِقَامَةِ، وَكَذَلِكَ بِعَرَفَةَ وَجَمْعٍ

If there are many travelers, Adhan and Iqama should be pronounced, Similar is the case in Arafat and Al-Muzdalifa.

باب: اگر کئی مسافر ہوں تو نماز کےلئے اذان دیں اور تکبیر بھی کہیں اور عرفات اور مزدلفہ میں بھی ایسا ہی کریں

وَقَوْلِ الْمُؤَذِّنِ الصَّلاَةُ فِي الرِّحَالِ‏.‏ فِي اللَّيْلَةِ الْبَارِدَةِ أَوِ الْمَطِيرَةِ

On a very cold or rainy night, the Mu'adh-dhin saying, 'As-Salatu fir-Rihal' (Salat is to be offered at homes)

اور جب سردی یا بارش کی رات ہو تو مؤذن یوں پکارےاپنے اپنے ٹھکانوں میں نماز پڑھ لو۔

حَدَّثَنَا مُسْلِمُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ، قَالَ حَدَّثَنَا شُعْبَةُ، عَنِ الْمُهَاجِرِ أَبِي الْحَسَنِ، عَنْ زَيْدِ بْنِ وَهْبٍ، عَنْ أَبِي ذَرٍّ، قَالَ كُنَّا مَعَ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم فِي سَفَرٍ فَأَرَادَ الْمُؤَذِّنُ أَنْ يُؤَذِّنَ فَقَالَ لَهُ ‏"‏ أَبْرِدْ ‏"‏‏.‏ ثُمَّ أَرَادَ أَنْ يُؤَذِّنَ فَقَالَ لَهُ ‏"‏ أَبْرِدْ ‏"‏‏.‏ ثُمَّ أَرَادَ أَنْ يُؤَذِّنَ‏.‏ فَقَالَ لَهُ ‏"‏ أَبْرِدْ ‏"‏‏.‏ حَتَّى سَاوَى الظِّلُّ التُّلُولَ فَقَالَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم ‏{‏إِنَّ شِدَّةَ الْحَرِّ مِنْ فَيْحِ جَهَنَّمَ‏}‏

Narrated By Abu Dhar : We were in the company of the Prophet on a journey and the Mu'adhdhin wanted to pronounce the Adhan for the prayer. The Prophet said to him, "Let it become cooler." Then he again wanted to pronounce the Adhan but the Prophet; said to him, "Let it become cooler." The Mu'adh-dhin again wanted to pronounce the Adhan for the prayer but the Prophet said, "Let it become cooler," till the shadows of the hillocks become equal to their sizes. The Prophet added, "The severity of the heat is from the raging of Hell."

حضرت ابو ذر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ اُنہوں نے کہا: ہم ایک سفر میں نبی ﷺ کے ساتھ تھے مؤذن نے اذان دینا چاہی،آپﷺنے فرمایا: ٹھنڈا ہونے دے، پھر اُس نے اذان دینا چاہی،آپﷺنے یہی فرمایا: پھر اُس نے اذان دینا چاہی آپﷺنے یہی فرمایا یہاں تک کہ سا یہ ٹیلوں کے برابر ہوگیا اس کے بعد آپﷺ نے فرمایا: گرمی کی شدّت دوزخ کی بھا پ سے ہوتی ہے۔


حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ يُوسُفَ، قَالَ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ، عَنْ خَالِدٍ الْحَذَّاءِ، عَنْ أَبِي قِلاَبَةَ، عَنْ مَالِكِ بْنِ الْحُوَيْرِثِ، قَالَ أَتَى رَجُلاَنِ النَّبِيَّ صلى الله عليه وسلم يُرِيدَانِ السَّفَرَ فَقَالَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ إِذَا أَنْتُمَا خَرَجْتُمَا فَأَذِّنَا ثُمَّ أَقِيمَا ثُمَّ لِيَؤُمَّكُمَا أَكْبَرُكُمَا ‏"

Narrated By Malik bin Huwairth : Two men came to the Prophet with the intention of a journey. The Prophet said, "When (both of) you set out, pronounce Adhan and then Iqama and the oldest of you should lead the prayer."

حضرت ما لک بن حویرث رضی اللہ عنہ سے مروی ہے اُنہوں نے کہا: دو شحص نبیﷺ کے پاس آئے وہ سفر کرنا چاہتے تھےآپﷺ نے فرمایا: جب تم سفر کےلئے نکلو تو (راستے میں) اذان دینا پھر اقامت کہنا پھر تم دونو ں میں وہ امامت کرائے جو عمر میں بڑا ہو ۔


حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ الْمُثَنَّى، قَالَ حَدَّثَنَا عَبْدُ الْوَهَّابِ، قَالَ حَدَّثَنَا أَيُّوبُ، عَنْ أَبِي قِلاَبَةَ، قَالَ حَدَّثَنَا مَالِكٌ، أَتَيْنَا إِلَى النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم وَنَحْنُ شَبَبَةٌ مُتَقَارِبُونَ، فَأَقَمْنَا عِنْدَهُ عِشْرِينَ يَوْمًا وَلَيْلَةً، وَكَانَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم رَحِيمًا رَفِيقًا، فَلَمَّا ظَنَّ أَنَّا قَدِ اشْتَهَيْنَا أَهْلَنَا أَوْ قَدِ اشْتَقْنَا سَأَلَنَا عَمَّنْ تَرَكْنَا بَعْدَنَا فَأَخْبَرْنَاهُ قَالَ ‏"‏ ارْجِعُوا إِلَى أَهْلِيكُمْ فَأَقِيمُوا فِيهِمْ وَعَلِّمُوهُمْ وَمُرُوهُمْ ـ وَذَكَرَ أَشْيَاءَ أَحْفَظُهَا أَوْ لاَ أَحْفَظُهَا ـ وَصَلُّوا كَمَا رَأَيْتُمُونِي أُصَلِّي، فَإِذَا حَضَرَتِ الصَّلاَةُ فَلْيُؤَذِّنْ لَكُمْ أَحَدُكُمْ وَلْيَؤُمَّكُمْ أَكْبَرُكُمْ ‏"‏‏

Narrated By Malik : We came to the Prophet and stayed with him for twenty days and nights. We were all young and of about the same age. The Prophet was very kind and merciful. When he realized our longing for our families, he asked about our homes and the people there and we told him. Then he asked us to go back to our families and stay with them and teach them (the religion) and to order them to do good things. He also mentioned some other things which I have (remembered or) forgotten. The Prophet then added, "Pray as you have seen me praying and when it is the time for the prayer one of you should pronounce the Adhan and the oldest of you should lead the prayer.

حضرت مالک بن حویرث رضی اللہ عنہ نے بیان کیا: کہ ہم نبی ﷺ کے پاس آئے ہم سب نوجوان اور ہم عمر تھے، تو بیس راتیں آپ ﷺکے پاس رہے اور آپﷺ بہت رحم دل اور ملنسار تھے، جب آپﷺ نے دیکھا ہم اپنے گھر جانا چاہتے ہیں یا ہم کو اپنے گھر جا نے کا شو ق ہے تو آپﷺنے پوچھا ہم (وطن میں ) اپنے اپنے کن کن عزیزوں کو چھوڑ آئے ہیں ہم نے آپﷺکو بتادیا۔ آپﷺ نے فرمایا: اچھا اب اپنے گھر والوں کے پاس لوٹ جاؤ وہاں رہو اور ان کو دین کی باتوں پر عمل کرنے کا حکم دو۔ حضرت ما لک رضی اللہ عنہ نے کئی باتیں بیان کیں لیکن راوی ایوب نے کہا: کہ راوی ابو قلابہ نے یوُں کہا: وہ باتیں مجھ کو یاد ہیں یا یوں کہا: مجھ کو یاد نہیں اور فرمایا: کہ جیسے تم نے مجھ کو نماز پڑھتے دیکھا اسی طرح نما ز پڑھتے رہو، اور جب نما ز کا وقت ہوجائے تو تم میں سے ایک اذان دے اور جو بڑا ہو وہ امامت کرائے۔


حَدَّثَنَا مُسَدَّدٌ، قَالَ أَخْبَرَنَا يَحْيَى، عَنْ عُبَيْدِ اللَّهِ بْنِ عُمَرَ، قَالَ حَدَّثَنِي نَافِعٌ، قَالَ أَذَّنَ ابْنُ عُمَرَ فِي لَيْلَةٍ بَارِدَةٍ بِضَجْنَانَ ثُمَّ قَالَ صَلُّوا فِي رِحَالِكُمْ، فَأَخْبَرَنَا أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم كَانَ يَأْمُرُ مُؤَذِّنًا يُؤَذِّنُ، ثُمَّ يَقُولُ عَلَى إِثْرِهِ، أَلاَ صَلُّوا فِي الرِّحَالِ‏.‏ فِي اللَّيْلَةِ الْبَارِدَةِ أَوِ الْمَطِيرَةِ فِي السَّفَرِ

Narrated By Nafi : Once in a cold night, Ibn 'Umar pronounced the Adhan for the prayer at Dajnan (the name of a mountain) and then said, "Pray at your homes", and informed us that Allah's Apostle used to tell the Mu'adhdin to pronounce Adhan and say, "Pray at your homes" at the end of the Adhan on a rainy or a very cold night during the journey."

نا فع سے مروی ہے کہ حضرت عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہ نے ایک سرد رات میں ضجنان میں اذان دی پھر کہا: اپنے اپنے ٹھکانوں میں نما ز پڑھ لو اور ہم سے بیان کیا کہ رسول اللہﷺ مؤذن کو حکم دیتے کہ وہ اذا ن دے اور آخر میں یوں کہے: لوگو اپنے اپنے ٹھکانوں میں نماز پڑھ لو۔ سردی یا بارش کی را ت میں سفر میں ایسا کرتے۔


حَدَّثَنَا إِسْحَاقُ، قَالَ أَخْبَرَنَا جَعْفَرُ بْنُ عَوْنٍ، قَالَ حَدَّثَنَا أَبُو الْعُمَيْسِ، عَنْ عَوْنِ بْنِ أَبِي جُحَيْفَةَ، عَنْ أَبِيهِ، قَالَ رَأَيْتُ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم بِالأَبْطَحِ فَجَاءَهُ بِلاَلٌ فَآذَنَهُ بِالصَّلاَةِ، ثُمَّ خَرَجَ بِلاَلٌ بِالْعَنَزَةِ حَتَّى رَكَزَهَا بَيْنَ يَدَىْ رَسُولِ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم بِالأَبْطَحِ وَأَقَامَ الصَّلاَةَ‏

Narrated By 'Aun bin Abi Juhaifa : My father said, "I saw Allah's Apostle at a place called Al-Abtah. Bilal came and informed him about the prayer and then came out with an Anza and planted it in front of Allah's Apostle at Al-Abtah and pronounced the Iqama."

حضرت ابو جحیفہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ اُنہو ں نے کہا: میں نے رسول اللہﷺ کو ابطح میں دیکھا حضرت بلال رضی اللہ عنہ آپﷺ کے پاس آئے اور نماز کی خبر دی۔ پھر حضرت بلال رضی اللہ عنہ نکلے اور برچھی کو آپ ﷺکے سامنے ابطح میں گاڑدیا اور نماز کےلیے اقامت کہی۔

Chapter No: 19

باب هَلْ يَتَتَبَّعُ الْمُؤَذِّنُ فَاهُ هَا هُنَا وَهَا هُنَا ? وَهَلْ يَلْتَفِتُ فِي الأَذَانِ

Should the Mu’adh-dhin turn his face and look from side to side during the Adhan?

باب: کیا مؤذن اذان میں اپنا منہ ادھر اُدھر (داہنے بائیں ) پھرائے اور کیا اذان میں اِدھر اُدھر دیکھ سکتا ہے

وَيُذْكَرُ عَنْ بِلاَلٍ أَنَّهُ جَعَلَ إِصْبَعَيْهِ فِي أُذُنَيْهِ‏.‏ وَكَانَ ابْنُ عُمَرَ لاَ يَجْعَلُ إِصْبَعَيْهِ فِي أُذُنَيْهِ‏.‏ وَقَالَ إِبْرَاهِيمُ لاَ بَأْسَ أَنْ يُؤَذِّنَ عَلَى غَيْرِ وُضُوءٍ‏.‏ وَقَالَ عَطَاءٌ الْوُضُوءُ حَقٌّ وَسُنَّةٌ‏.‏ وَقَالَتْ عَائِشَةُ كَانَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم يَذْكُرُ اللَّهَ عَلَى كُلِّ أَحْيَانِهِ

It is stated that Bilal used to put his fingers in his ears whereas Ibn Umar never did so. Ibrahim said that there is no harm in calling for prayers without ablution. Ata said, "Ablution is important and also a Sunnah." Aisha said, "The Prophet (s.a.w) use to remember Allah at all times."

اور بلالؓ سے روایت ہے کہ انہوں نے (اذان میں )اپنی دونوں انگلیاں کانوں میں ڈالیں اور عبد اللہ بن عمرؓ تو اذان میں کانوں میں انگلیاں نہیں ڈالتے تھے۔ اور ابراہیم نخعی نے کہا بے وضو اذان دینے میں کوئی قباحت نہیں اور عطاء نے کہا (اذان میں ) وضو ضروری ہے اور سنت ہے اور حضرت عائشہؓ نے کہا کہ نبی ﷺ سب وقتوں میں اللہ کی یاد کیا کرتے۔

حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ يُوسُفَ، قَالَ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ، عَنْ عَوْنِ بْنِ أَبِي جُحَيْفَةَ، عَنْ أَبِيهِ، أَنَّهُ رَأَى بِلاَلاً يُؤَذِّنُ فَجَعَلْتُ أَتَتَبَّعُ فَاهُ هَا هُنَا وَهَا هُنَا بِالأَذَانِ‏

Narrated By 'Aun bin Abi Juhaifa : My father said, "I saw Bilal turning his face from side to side while pronouncing the Adhan for the prayer."

حضرت ابو جحیفہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے اُنہوں نے حضرت بلال رضی اللہ عنہ کو اذان دیتے دیکھا، تو کہتے ہیں میں بھی (اُن کے منہ کے ساتھ) اِدھر اُدھر اذان میں منہ پھیرنے لگا۔

Chapter No: 20

باب قَوْلِ الرَّجُلِ فَاتَتْنَا الصَّلاَةُ

The saying of a person, "We have missed As-Salat."

باب: یوں کہنا کیسا ہے ہماری نماز جاتی رہی

وَكَرِهَ ابْنُ سِيرِينَ أَنْ يَقُولَ فَاتَتْنَا الصَّلاَةُ وَلَكِنْ لِيَقُلْ لَمْ نُدْرِكْ‏.‏ وَقَوْلُ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم أَصَحُّ‏

According to Ibn Sirin, it is disliked to say, "We have missed As-Salat." Instead it is better to say, "We have not been able to offer As-Salat", but the statement of the Prophet (s.a.w) is better.

اور ابن سیرین نے اس کو مکروہ جانا ہے اور کہا ہے یوں کہنا چائیے ہم نے نماز نہیں پائی اور نبی ﷺ کا فرمانا ٹھیک ہے۔

حَدَّثَنَا أَبُو نُعَيْمٍ، قَالَ حَدَّثَنَا شَيْبَانُ، عَنْ يَحْيَى، عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ أَبِي قَتَادَةَ، عَنْ أَبِيهِ، قَالَ بَيْنَمَا نَحْنُ نُصَلِّي مَعَ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم إِذْ سَمِعَ جَلَبَةَ رِجَالٍ فَلَمَّا صَلَّى قَالَ ‏"‏ مَا شَأْنُكُمْ ‏"‏‏.‏ قَالُوا اسْتَعْجَلْنَا إِلَى الصَّلاَةِ‏.‏ قَالَ ‏"‏ فَلاَ تَفْعَلُوا، إِذَا أَتَيْتُمُ الصَّلاَةَ فَعَلَيْكُمْ بِالسَّكِينَةِ، فَمَا أَدْرَكْتُمْ فَصَلُّوا وَمَا فَاتَكُمْ فَأَتِمُّوا ‏"‏‏

Narrated By 'Abdullah bin Abi Qatada : My father said, "While we were praying with the Prophet he heard the noise of some people. After the prayer he said, 'What is the matter?' They replied 'We were hurrying for the prayer.' He said, 'Do not make haste for the prayer, and whenever you come for the prayer, you should come with calmness, and pray whatever you get (with the people) and complete the rest which you have missed."

حضرت ابوقتادہ رضی اللہ عنہ سے مروی ہے اُنہوں نے کہا: ہم نبیﷺ کے ساتھ نماز پڑھ رہے تھے، اتنے میں آپﷺ نے کچھ لوگوں کے دوڑنے کی آواز سُنی نماز کے بعد فرمایا: یہ کیا آوازتھی؟ صحابہ نے کہا: ہم نماز کےلئے جلدی دوڑ کر آئے تھے آپﷺنے فرمایا: ( آئندہ ) ایسا نہ کرنا جب تم نماز کےلئے آؤ تو اطمینان اور سہولت کو لازم پکڑو جتنی نماز پالو اتنی( امام کے ساتھ پڑھو ) اور جتنی نماز جاتی رہے وہ (امام کے سلا م پھیرنے کے بعد ) پوری کرلو ۔

1234Last ›